افتخار عارف

  1. سیما علی

    افتخار عارف میں نے خاکِ درِ حسان ؓ کو سُرمہ جانا

    میں نے خاکِ درِ حسان ؓ کو سُرمہ جانا اور ایک ایک سبق نعت کا ازبر رکھا میں نے قرآن کی تفسیر میں سیرت کو پڑھا نور کو دائرہ نور کے اندر رکھا نورِ مطلق نے اسے خلق کیا خلق سے قبل منصبِ کارِ رسالت میں مؤخر رکھا معنیِ اجرِ رسالت کو سمجھنے کے لیے زیرِ نگرانی سلمانؓ و ابوذرؓ رکھا خاتمیت کا شرف آپؐ کو...
  2. سیما علی

    افتخار عارف کا نمبر تیسرا ہے‘

    افتخار عارف کا نمبر تیسرا ہے‘ عارف وقار بی بی سی اردو ڈاٹ کام، لاہور افتخار عارف اور عبید اللہ بیگ ٹیلی وژن کے معروف معلوماتی پروگرام کسوٹی میں مشتاق احمد یوسفی کا کہنا ہے کہ بی سی سی آئی نے جن ادیبوں اور شاعروں کو خراب و خوار و خجل و خوشحال کیا اُن میں افتخار عارف کا نمبر تیسرا...
  3. سیما علی

    افتخار عارف میرا مالک جب توفیق ارزانی کرتا ہے !!!!!!!!!!

    میرا مالک جب توفیق ارزانی کرتا ہے گہرے زرد زمین کی رنگت دھانی کرتا ہے بجھتے ہوئے دیئے کی لو اور بھیگی آنکھ کے بیچ کوئی تو ہے جو خوابوں کی نگرانی کرتا ہے مالک سے اور مٹی سے اور ماں سے باغی شخص درد کے ہر میثاق سے رو گردانی کرتا ہے یادوں سے اور خوابوں سے اور امیدوں سے ربط ہو جائے تو جینے...
  4. سیما علی

    افتخار عارف لغزشوں سے ماورا تو بھی نہیں میں بھی نہیں

    لغزشوں سے ماورا تو بھی نہیں میں بھی نہیں دونوں انساں ہیں خدا تو بھی نہیں میں بھی نہیں تو مجھے اور میں تجھے الزام دیتا ہوں مگر اپنے اندر جھانکتا تو بھی نہیں میں بھی نہیں مصلحت نے کر دیا دونوں میں پیدا اختلاف ورنہ فطرت کا برا تو بھی نہیں میں بھی نہیں چاہتے دونوں بہت اک دوسرے کو ہیں مگر...
  5. زین علی شاہ زیب

    افتخار عارف سجل کہ شور زمینوں میں آشیانہ کرے

    سجل کہ شور زمینوں میں آشیانہ کرے نہ جانے اب کے مسافر کہاں ٹھکانا کرے بس ایک بار اسے پڑھ سکوں غزل کی طرح پھر اس کے بعد تو جو گردش زمانہ کرے ہوائیں وہ ہیں کہ ہر زلف پیچ دار ہوئی کسے دماغ کہ اب آرزوئے شانہ کرے ابھی تو رات کے سب نگہ دار جاگتے ہیں ابھی سے کون چراغوں کی لو نشانہ کرے سلوک میں بھی...
  6. منہاج علی

    افتخار عارف ابو طالبؑ کے بیٹے (نظم)

    جبینِ وقت پر لکھی ہوئی سچائیاں روشن رہی ہیں تا ابد روشن رہیں گی خدا شاہد ہے اور وہ ذات شاہد ہے کہ جو وجہِ اساسِ انفُس و آفاق ہے اور خیر کی تاریخ کا وہ بابِ اوّل ہے ابد تک جس کا فیضانِ کرم جاری رہے گا یقیں کے آگہی کے روشنی کے قافلے ہر دور میں آتے رہے ہیں تا ابد آتے رہیں گے ابو طالبؑ کے بیٹے...
  7. الف نظامی

    یہ دُنیا اک سور کے گوشت کی ہڈی کی صورت کوڑھیوں کے ہاتھ میں ہے

    یا سریع الرضا اغفر لمن لا یملک الالدعا اے جلدی راضی ہوجانے والے (میرے معبود) مجھے بخش دے، میرے پاس کوئی پونجی نہیں ہے بجز دُعا کے (امام علیؑ) یہ دُنیا اک سور کے گوشت کی ہڈی کی صورت کوڑھیوں کے ہاتھ میں ہے اور میں نان و نمک کی جستجو میں دربدر قریہ بہ قریہ مارا مارا پھر رہا ہوں ذرا سی دیر کی جھوٹی...
  8. فرحان محمد خان

    افتخار عارف غزل : قصۂ اہلِ جنوں کوئی نہیں لکھے گا - افتخار عارف

    غزل قصۂ اہلِ جنوں کوئی نہیں لِکھے گا جیسے ہم لِکھتے ہیں، یُوں کوئی نہیں لکھے گا وحشتِ قلبِ تپاں کیسے لکھی جائے گی! حالتِ سوزِ درُوں، کوئی نہیں لکھے گا کیسے ڈھہ جاتا ہے دل، بُجھتی ہیں آنکھیں کیسے؟ سر نوِشتِ رگِ خُوں، کوئی نہیں لکھے گا کوئی لکھے گا نہیں ، کیوں بڑھی، کیسے بڑھی بات؟ کیوں ہُوا...
  9. فرحان محمد خان

    افتخار عارف غزل : محافظِ روشِ رفتگاں، کوئی نہیں ہے - افتخار عارف

    غزل محافظِ روشِ رفتگاں کوئی نہیں ہے جہاں کا میں ہوں، مرا اب وہاں کوئی نہیں ہے محاذِ زیست کے ہر معرکے میں، فتح کے بعد کھُلا، کہ حاصلِ عمرِ رواں کوئی نہیں ہے ستارگاں سے جو پوچھا، کہ اُس طرف کیا ہے چمک کے بولے کہ اے جانِ جاں! کوئی نہیں ہے نگاہِ یار، نہ آب و ہوا، نہ دوست، نہ دل یہ ملکِ عشق...
  10. فرحان محمد خان

    افتخار عارف غزل : اکیلا میں نہیں کل کائنات رقص میں ہے- افتخار عارف

    غزل میانِ عرصۂ موت و حیات رقص میں ہے اکیلا میں نہیں کل کائنات رقص میں ہے مزارِ شمس پہ رومی ہیں حجتِ آخر کہ جو جہاں بھی ہے مرشد کے ساتھ رقص میں ہے ہر ایک ذرہ، ہر اک پارۂ زمین و زمان کسی کے حکم پہ، دن ہو کہ رات، رقص میں ہے اُتاق کنگرۂ عرش کے چراغ کی لو کسی گلی کے فقیروں کے ساتھ رقص میں ہے...
  11. فرحان محمد خان

    افتخار عارف غزل : سخنِ حق کو فضیلت نہیں مِلنے والی - افتخار عارف

    غزل سخنِ حق کو فضیلت نہیں مِلنے والی صبر پر دادِ شجاعت نہیں مِلنے والی وقتِ معلوم کی دہشت سے لرزتا ہوا دل ڈُوبا جاتا ہے کہ مُہلت نہیں مِلنے والی زندگی نذر گزاری تو مِلی چادرِ خاک اِس سے کم پر تو یہ نعمت نہیں مِلنے والی راس آنے لگی دُنیا تو کہا دِل نے کہ جا! اب تُجھے درد کی دولت نہیں مِلنے...
  12. فرقان احمد

    افتخار عارف امید و بیم کے محور سے ہٹ کے دیکھتے ہیں

    امید و بیم کے محور سے ہٹ کے دیکھتے ہیں ذرا سی دیر کو دُنیا سے کٹ کے دیکھتے ہیں بکھر چکے ہیں بہت باغ و دشت و دریا میں اب اپنے حجرہ جاں میں سمٹ کے دیکھتے ہیں تمام خانہ بدوشوں میں مشترک ہے یہ بات سب اپنے اپنے گھروں کو پلٹ کے دیکھتے ہیں پھر اس کے بعد جو ہونا ہے ہو رہے سر ِدست بساطِ عافیت ِجاں...
  13. فہد اشرف

    افتخار عارف نئے موسم کی خوشبو آزمانا چاہتی ہیں

    غزل نئے موسم کی خوشبو آزمانا چاہتی ہیں کھلی باہیں سمٹنےکا بہانا چاہتی ہیں فصیلِ جسم ہر طور ڈھانا چاہتی ہیں نمو کی خواہشیں اظہار پانا چاہتی ہیں نئے آہو، نئے صحرا، نئے خوابوں کے امکاں نئی آنکھیں، نئے فتنے جگانا چاہتی ہیں نگارِ شام بے منزل! بھٹکتی آرزوئیں بسیرے کے لیے کوئی ٹھکانا چاہتی ہیں بدن...
  14. فہد اشرف

    افتخار عارف کیسے کیسے خواب سجے ہیں دیکھو تو

    غزل کیسے کیسے خواب سجے ہیں دیکھو تو آنکھوں میں کُچھ رنگ نئے ہیں دیکھو تو دھنک کُنج سے آنے والے رنگ سفیر ڈالی ڈالی جھول رہے ہیں دیکھو تو پونم رات، اونچی پہاڑیاں اور چکور کِس کا رستہ دیکھ رہے ہیں دیکھو تو دُھول نہائے تھکن سمیٹے کُل سپنے سورج بن کر جاگ پڑے ہیں دیکھو تو نرم نرم شاخوں پر ننھے...
  15. محمداحمد

    افتخار عارف کوئی مژدہ نہ بشارت نہ دعا چاہتی ہے

    غزل کوئی مژدہ نہ بشارت نہ دعا چاہتی ہے روز اک تازہ خبر خلق خدا چاہتی ہے موج خوں سر سے گزرنی تھی سو وہ بھی گزری اور کیا کوچۂ قاتل کی ہوا چاہتی ہے شہر بے مہر میں لب بستہ غلاموں کی قطار نئے آئین اسیری کی بنا چاہتی ہے کوئی بولے کے نہ بولے قدم اٹھیں نہ اٹھیں وہ جو اک دل میں ہے دیوار اٹھا چاہتی...
  16. آتش ملیری

    مرگ_احساس

    "مرگ_احساس" سنا ہے کہ پتھروں کا دل ابلتے ہوئے چشموں سے آباد رہتا ہے اور ان ابلتے ہوئے چشموں کو پتھروں کی گداز چھاتیوں سےبڑی عقیدت ہوتی ہے۔۔ تو پھر کیوں لوگ انساں کے سینے میں چھپے اس دل کوپتھر سے تشبیہ دیتے ہیں؟؟ جسے پتھر سے کوئی نسبت ہی نہیں۔۔ احساس کے مفہوم سے ابلتے ہوئے وہ چشمے اور پتھروں...
  17. نیرنگ خیال

    افتخار عارف ہو کے دنیا میں بھی دنیا سے رہا اور طرف

    ہو کے دنیا میں بھی دنیا سے رہا اور طرف دل کسی اور طرف دستِ دعا اور طرف اک رجز خوان ہنر کاسہ و کشکول میں طاق جب صفِ آرا ہوئے لشکر تو ملا اور طرف اے کہ ہر لمحہ نئے وہم میں الجھے ہوئے شخص میری محفل میں الجھتا ہے تو جا اور طرف اہلِ تشہیر و تماشا کے طلسمات کی خیر چل پڑے شہر کے سب شعلہ نوا اور طرف...
  18. طارق شاہ

    افتخار عارف :::::: اِک خواب ِ دل آویز کی نِسبت سے مِلا کیا :::::: Iftikhar Arif

    غزل اِک خواب ِ دل آویز کی نِسبت سے مِلا کیا جُز دَربَدَرِی، اُس دَرِ دَولت سے مِلا کیا آشوبِ فراغت! تِرے مُجرم ، تِرے مجبوُر کہہ بھی نہیں سکتے کہ فراغت سے مِلا کیا اِک نغمہ کہ‌ خود اپنے ہی آہنگ سے محجوب اِک عُمر کہ پِندار ِ سماعت سے مِلا کیا اِک نقش کہ خود اپنے ہی رنگوں...
  19. طارق شاہ

    افتخار عارف ::::: کیا خزانہ تھا کہ چھوڑ آئے ہیں اغیار کے پاس :::::: Iftikhar Arif

    غزل کیا خزانہ تھا کہ چھوڑ آئے ہیں اغیار کے پاس ایک بستی میں کسی شہرِ خوش آثار کے پاس دِن نِکلتا ہے، تو لگتا ہے کہ جیسے سورج صُبحِ روشن کی امانت ہو شبِ تار کے پاس دیکھیے کُھلتے ہیں کب، انفس و آفاق کے بھید ہم بھی جاتے تو ہیں اِک صاحبِ اَسرار کے پاس خلقتِ شہر کو مُژدہ ہو کہ، اِس عہد...
  20. کاشفی

    افتخار عارف اب بھی توہینِ اطاعت نہیں ہوگی ہم سے - افتخار عارف

    غزل (افتخار عارف) اب بھی توہینِ اطاعت نہیں ہوگی ہم سے دل نہیں ہوگا تو بیعت نہیں ہوگی ہم سے روز اک تازہ قصیدہ نئی تشبیت کے ساتھ رزق برحق ہے یہ خدمت نہیں ہوگی ہم سے دل کے معبود جبینوں کے خدائی سے الگ ایسے عالم میں عبادت نہیں ہوگی ہم سے اجرت عشق وفا ہے تو ہم ایسے مزدور کچھ بھی کرلیں گے یہ محنت...
Top