’سمت‘ شمارہ 12 کا اجراء

الف عین نے 'اردو نامہ' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 10, 2008

  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,223
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    خرم۔ شکریہ مشورے کا۔
    بھئ میں تو اس سلسلے میں کچھ نہیں کر سکتا کہ اس کا با قاعدہ پنٹ ورژن بھی نکالا جائے۔ میرا مقصد اس کا صرف یہ ہے کہ اردو تحریر کا فروغ ہو، لوگوں کو احساس ہو کہ نستعلیق فانٹس بھی کمپیوتر کے لئے دستیاب ہیں اور وہ اردو تحریر کا استعمال کرنے پر راغب ہو جائیں۔
    ہاں، اگر آپ لوگ پاکستان میں اس کے شائع کرنے کا نظم کر سکیں تو بہت خوب۔۔۔
    یوں کئی دن سے ایک اور آئیڈیا بھی ذہن میں کلبلا رہا ہے۔ بیسیوں رسائل ہند و پاک میں اس لئے بند ہو جاتے ہیں کہ مدیران ان کا خرچ برداشت نہیں کر سکتے۔ میرا مشورہ یہ ہے کہ بجائے کاغذ کے جریدہ سی ڈٰ کی شکل میں جاری کیا جائے۔ اس پر خرچ بھی بہت کم آءے گا، دس بیس روپئے خریندے والے پر بھی بار نہیں پڑیں گے، اور محض پندرہ بیس روپئے میں ایک جریدہ ہی کیا، دس بیس جریدوں کے شمارے آسانی سے شامل کئے جا سکتے ہیں۔ اس ضمن میں کچھ اخبارات میں لکھنے کی سوچ رہا ہوں۔ کیا خیال ہے یہاں احباب کا؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  2. خاورچودھری

    خاورچودھری محفلین

    مراسلے:
    309

    خرم نے اگرچہ بہت اچھا مشورہ دیا ہے لیکن میں‌اس کا تجربہ کر چکا ہوں۔ ایک معیاری رسالے کی اشاعت پر یہاں پاکستان میں بیس سے تیس ہزار روپے خرچ آتے ہیں۔ میں‌نے سن 2000 میں ادبی رسالہ " سحرتاب " شروع کیا تھا صرف دو شمارے شائع کرکے بند کر دیا۔ اس کی وجہ یہی تھی کہ ہر کوئی مفت میں‌پڑھنا چاہتا تھا۔
    کراچی سے شائع ہونے والا مقبول رسالہ " سخنور" جسے محترم نقوش نقوی صاحب چھاپتے ہیں‌بھی سات سال کی اشاعت کے بعد بند رہا اور اب کل ہی اس کا تازہ شمارہ نئے عزم کے ساتھ سامنے آیا ہے۔ اس رسالے سے میری بھی وابستگی ہے یعنی سفیرانِ‌سخن ور میں‌میرا بھی نام چھپتا ہے۔

    اعجاز عبید صاحب آپ کا آئیڈیا لاجواب ہے مگر اس میں‌مشکل یہ ہے کہ سی ڈی زیادہ لوگ استعمال نہیں‌کرتے ۔خصوصا بزرگ ادیب تو کمپیوٹر بھی نہیں‌جانتے۔ ایسے میں چند لوگ ہی اس سے فایدہ اٹھا سکیں‌گے۔

    خرم اگر چاہتے ہیں پھر بھی رسالہ کاغذ پر شائع ہو تواس کی ایک صورت ہے۔ دل چسپی رکھنے والے تمام حضرات اخراجات آپس میں‌بانٹ لیں۔ اس طرح ممکن ہے یہ منصوبہ قابل عمل اور دیر پا ہو سکے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  3. خاورچودھری

    خاورچودھری محفلین

    مراسلے:
    309
    نبیل ______ !
    میں‌اس معاملے میں‌بالکل اناڑی ہوں۔ مجھے فنی حوالے سے معمولی سی بات بھی نہیں‌معلوم۔ یہاں‌ہمارے شہر میں ویب ڈویلپر/ ڈیزائنر نہیں‌ہیں‌اور نہ ہی کسی شخص سے رابطہ ہے۔
    میں‌یہ چاہتا تھا سادہ سی ویب تخلیق ہو جاتی جس پر ہم اپنا اخبار چھاپ سکتے۔ جس طرح دیگر اخبارات کرتے ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  4. خاورچودھری

    خاورچودھری محفلین

    مراسلے:
    309

    زبردست یہ تو اچھی خبر ہے۔ اللہ انہیں ترقی دے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. خرم شہزاد خرم

    خرم شہزاد خرم لائبریرین

    مراسلے:
    10,840
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    السلام علیکم بات تو اعجاز صاحب کی بھی ٹھیک ہے اور خاور صاحب آپ بھی ٹھیک فرما رہے ہیں سی ڈی میں اگر کرے تو خاور صاحب والی بات پر غور کرنا پڑھے گا کیوں کے بہت سارے لوگ سی ڈی استعمال نہیں کرتے ان میں میں بھی ہوں میں خود استعمال نہیں کرتا ہوں لیکن پھر بھی اس کو سی ڈی میں شائع کرنا چاہے لیکن اس سے پہلے اخبارات میں آرٹیکل شائع کروانے لازمی ہونگے تانکہ پہلے لوگوں کو پتہ چلے اس کے بعد سی ڈی میں شائع کیا جائے

    اور دوسری بات خاور صاحب کی مجھے پسند آئی ہے اگر سب مل کر اس پر کام کرئے تو ممکن ہے کہ یہ جریدہ شائع ہو جائے اصل میں خاور صاحب کی یہ بات بھی ٹھیک ہے کہ ادبی جریدہ مفت پڑھنا چاہتے ہیں لوگ لیکن دوسرے جریدہ کے لیے پیسے دے دیتے ہیں کل کی ہی بات ہے ہمارے ہاں ایک جریدہ آداب عرض کے نام سے شائع ہوتا ہے آج 19 تاریخ ہو چکی ہے لیکن ابھی تک جولائی کی کاپی نہیں آئی میں روز پتہ کرتا ہوں لیکن اس کے برعکس دوسرے جریدے 5 تاریخ تک ختم ہو جاتے ہیں

    اگر ایک جریدے میں 20 سے 30 ہزار لگتے ہیں تو 10 یا 15 لوگ مل کر اس کو شائع کرنے کا ارادہ کرئے تو میرا خیال ہے یہ کافی عرصے تک چل سکتا ہے کیا خیال ہے اگر سب مل کر اس بارے میں سوچیں چلو اس طرح کر لیتے ہیں کون کون چاہتا ہے کہ سمت کتابی شکل میں شائع ہو اور کون کون اس کے لیے کیا کیا کرنا چاہتا ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. خاورچودھری

    خاورچودھری محفلین

    مراسلے:
    309
    خرم میں‌حاضر ہوں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. خرم شہزاد خرم

    خرم شہزاد خرم لائبریرین

    مراسلے:
    10,840
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    اور کون کون
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. ابن سعید

    ابن سعید خادم

    مراسلے:
    60,174
    سلام مسنون!

    قابل مبارکباد ہیں آپ کہ بخوبی ایک ہفت روزہ شائع کر رہے ہیں۔ کچھ عرصہ قبل ہم نے بھی ایک عدد جریدہ (پیپر اور ویب دونوں پر) شائع کرنے کا سوچا تھا۔ اسے "ماہنامہ اظہار حق" کے نام سے ریجسٹر بھی کرا لیا اور اب تک اتفاق نہیں ہو سکا کے اسے جاری کیا جا سکے۔ ایک بار تقریباً پوری تیاری کر لی اور اداریہ بھی لکھ دیا (حالانکہ ان دنوں امتحانات چل رہے تھے۔) اس کے بعد کچھ مسائل در پیش آ گئے اور وہ بات وہیں رہ گئی۔ :)

    ویب کے معاملے میں نبیل بھائی کی بات بالکل صحیح ہے۔ خصوصاً ہفت روزہ جیسی چیز کے لئے اسکریچ سے کوڈنگ کا سوچا بھی نہیں جا سکتا۔ یا تو ایک ویب ڈیزائنر روز آنہ اس پر کام کرے۔ ممکن ہے کہ کچھ احباب ورڈپریس کا کوئی میگزین ٹیمپلیٹ تلاش کر اسے اردو کے لئے کسٹمائز کر دیں تو آپ آگے کا کام از خود کر سکیں گے۔ بس وہ سارا مواد (جو کہ یقیناً ان پیج میں ہوگا) کسی یونیکوڈ کنورٹر سے کنورٹ کر کے ایک ویب فارم میں پیسٹ کرکے پوسٹ کرنا ہوگا بس۔ :)

    والسلام!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. نبیل

    نبیل محفلین

    مراسلے:
    16,817
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Depressed
    خاور، اس کے لیے کوئی خاص تکنیکی مہارت کی ضرورت نہیں پڑے گی۔ تکنیکی مرحلہ ورڈپریس کی انسٹالیشن اور ٹیمپلیٹ سیٹ اپ کرنے کا ہے جو صرف ایک مرتبہ کرنے کی ضرورت پیش آتی ہے۔ اگر آپ ایک اچھی سائٹ بنانا چاہتے ہیں تو میں آپ کو باقاعدہ ایک ڈومین نیم رجسٹر کرنے کا مشورہ دوں گا۔ فری ویب ہوسٹنگ پر بنائی گئی سائٹس بہتر نہیں لگتیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. باسم

    باسم محفلین

    مراسلے:
    1,767
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  11. خاورچودھری

    خاورچودھری محفلین

    مراسلے:
    309

    ابن سعید گزشتہ آٹھ سال سے یہ اخبار میں‌شائع کر رہا ہوں۔
    میں ویب پر اتنا کام کر سکتا ہوں جتنا یہاں‌محفل پر۔ یعنی ان پیج سے یونی کوڈ میں‌کنورٹ کر کے پوسٹ کر سکتا ہوں۔ اگر کوئی صاحب آپ کی توجہ حاصل کر سکے تو میری مشکل حل ہو جائے گی۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  12. خاورچودھری

    خاورچودھری محفلین

    مراسلے:
    309
    سعود میں‌اتنا ہی کام کر سکتا ہوں جتنا آپ نے آخری لائن میں‌لکھا ہے۔ یعنی ان پیج سے کنورٹ کر کے پوسٹ کرنا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  13. خاورچودھری

    خاورچودھری محفلین

    مراسلے:
    309

    نبیل آپ کا مشورہ مجھے پسند آیا ہے۔ ڈومین نیم رجسٹر کرنے پر کتنا خرچ آئے گا؟
    لیکن مسئلہ تو پھر بھی موجود ہوگا کہ ویب کیسے ڈویلپ ہوگی اور پھر اسے مستقل کیسے اپ لوڈ رکھا جائے گا؟

    باسم کا مشورہ کیسا ہے ، کیا سیکھنے کے بعد ہی اپنی مستقل ڈومین نہ لی جائے؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  14. بلال

    بلال محفلین

    مراسلے:
    2,121
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    خالی ڈومین نیم رجسٹر کروانے کے کوئی زیادہ پیسے نہیں ہیں میرے خیال میں 6 ڈالر سالانہ ہیں شائد۔۔۔ یہاں کئی دوست یہ کام کرتے ہیں۔۔۔ اور رہی ویب ہوسٹنگ کے چارجز تو وہ بھی اتنے زیادہ نہیں۔۔۔ ہو سکتا ہے کوئی دوست اپنی خریدی ہوئی ویب ہوسٹنگ پر آپ کی ویب بھی رکھ دے۔۔۔ مزید ویب ڈویلپنگ کے لئے ہم حاضر ہیں۔۔۔ ویسے بھی کچھ خاص تو کرنا نہیں پڑے گا۔۔۔ کوئی اچھا سا سی ایم ایس استعمال کرنا ہوا گا یا پھر ورڈ پریس کے کسی نیوز تھیم کو استعمال میں لایا جا سکتا ہے۔۔۔ اور مزید ایڈیٹنگ بھی انشاءاللہ ہو جائے گی۔۔۔ اس بارے میں ایک پی ایم آپ کو کیا ہے۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  15. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,223
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    جب تک کہ میں باقاعدہ کوئی جریدہ ورڈ پریس کے کسی سانچے میں نہ دیکھ لوں، اس سلسلے میں کچھ کہہ نہیں سکتا۔۔ لیکن میں اب بھی نہیں سمجھ سکتا کہ جریدے اور نیو لیٹر میں بہت فرق ہے۔ نیوز لیٹر کو آپ اپ ڈیٹ کر سکتے ہیں کہ نئی خبریں سانے آ جائیں، پرانی خبریں پیچھے چلی جائیں۔ لیکن جریدہ۔۔ کم از کم اردو جریدہ کی ایک Periodicity ہوتی ہے، ماہانہ، یا سہ ماہی۔ اور ہر شمارہ اسی طرح ایک الگ لے آؤٹ کا ہو جس طرح پرنٹ ورژن کا جریدہ ہوتا ہے۔ اگر ایسا کوئی ٹمپلیٹ ہو، اور جسے پاک یا عماد نستعلیق میں کانفی گیور کیا جا سکتا ہو، تن ہی اردو جریدہ اردو والوں کو قابلَ قبول ہو سکتا ہے۔
    یہ تو تکنیکی بات ہو گئی۔
    ’سمت‘ کو پرنٹ ورژن شائع کرنا ہو تو اصل کوشش مستقل اشتہارات کی فراہمی ہے۔ اگر کوئی فرمس تینوں ٹائٹل پیجیز کے لئے اشتہارات مستقل فراہم کرنے کی حامی بھر لے تو پھر نیا پار ہے!!
    سی ڈی میں ایک سے زائد جریدے شامل کئے جا سکتے ہیں، اور یہ دس بیس روپئے وہ لوگ آرام سے خرچ کر سکتے ہیں جو کم از کم کمپیوٹر پر فلموں کی وی سی ڈیز بھی دیکھتے ہوں۔ بہر حال اس طرح جریدے کا تجربہ کرنے میں کیا حرج ہے؟ زیادہ خرچ تو نہیں ہونے والا۔ سی ڈی پر ٹائٹل پرنٹ ہونے کا خرچ ہی زیادہ ہو سکتا ہے۔ اس کا کسی کو آئڈیا ہے؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  16. ابن سعید

    ابن سعید خادم

    مراسلے:
    60,174
    چاچو سی ڈی کے ٹائٹل پرنٹ کا کوئی خاص خرچ نہیں ہے۔ اور اس کے اسٹیکر بھی آتے ہیں۔ :)

    ویسے سیڈی والے میں قباحت یہ ہے کہ اتنا مواد لائیں گے کہاں سے۔ پھر اس کی ڈیزائننگ وغیرہ۔ در اصل ایسی کوئی کوشش کرنے سے قبل ایک فلیش کا میگزین ریڈر بنانا ہوگا۔ وہ بھی مزید بہتر تب ہو سکے گا جب اس میں فانٹ امبیڈ کئے جا سکیں۔ اور ساتھ ہی ٹیکسٹ فائل بھی فراہم کی جا سکتی ہے اگر کاپی رائٹ فری رکھنا ہے تو۔

    لیکن سی ڈی میں میگزین کی ریڈر شپ عموماً کم ہوتی ہے۔ ہاں ایسے کام بچوں کی میگزین نکال کر کئے جا سکتے ہیں۔ جن میں ہر شمارے کے ساتھ کچھ اچھے گیم (اردو میں) وغیرہ شامل کئے جائیں۔ اب اگر اردو محفل پر ایک ایسا گروپ تشکیل پا جائے جو اس پروجیکٹ کو وقت دے سکے تو کیا ہی بات ہو۔ ساتھ ہی بچوں کے لئے اردو سائٹ والی بات بھی ہو جائے گی۔

    ویسے ایک بات طے ہے کہ سی ڈی میں ادبی جریدے کی ریڈر شپ انتہائی مایوس کن ہوگی۔ اگر آپ جامعہ میں اپنے واقف کار ادیبوں سے مل کر بھی ایسا خیال کرتے ہیں تو مجھے تعجب ہے چاچو۔ اور جو لوگ کمپیوٹر استعمال کرتے ہیں ان کی پہونچ عموماً انٹر نیٹ پر بھی ہوتی ہے۔ لہٰذا انہیں اس کی ضرورت ہی نہیں ہوگی۔ آپ کو یاد ہوگا کہ جن کے گھر ہم لوگ گئے تھے (نام میں یہاں جان بوجھ کر نہیں لکھ رہا) وہ موصوف ای میل بھی خود چیک نہیں کرتے بلکہ کلرک صاحبان سارے ای میلس کی پرنٹیڈ کاپی لے کے آتے ہیں۔

    چاچو چند اولو العزم بزرگوں کو چھوڑ کے بوڑھوں کی ایک بہت بڑی تعداد کمپیوٹر سے گھبراتی ہے۔ (کم از کم ہمارے یہاں) اسی لئے میری صلاح ایسی انرجی نئی نسل کے لئے خرچ کرنے کی ہے۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,223
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    تمہاری بات ہے تو درست سعود۔۔ لیکن میرا مقصد یہ تھا کہ جب ہینگ اور پھٹکری کا خرچ بھی نہیں لگ رہا ہو تو کیوں نہ اس کا تجربہ کیا جائے۔ یہاں حیدر آباد میں نوجوان نسل تو بری طرح کمپیوٹر اور انٹر نیٹ سے جڑی ہے۔ کبھی کبھی تو میں نے یوں بھی سنا ہے کہ لوگوں نے کسی کا فون نمبر پوچھا ہے لیکن کہاں کاغذ پر لکھ کر دیا جائے تو یہ جواب ملا کہ ای میل سے بھیج دیں گے!!
    اس نسل کو اردو زبان و ادب سے دل چسپی پیدا کرنے کے لئے سی ڈی ایک اچھی چیز ہو سکتی ہے۔
    ویسے یہ بھی درست ہے کہ رتین چار سال پہلے ایک سی ڈی میں انگریزی جریدہ آتا تھا َ اس وقت نام یاد نہیں آ رہا، وہ بھی بعد میں بند ہو گیا۔ فی الحال صرف Cyber Edgeکے نام سے ایک جریدہ + سافٹ وئر۔ گیمس سی ڈی پر مبنی جریدہ نکلتا ہے۔
    میرے ذہن میں یہ خیال‌آیا کہ جو جریدے محض مالی مشکلات کی وجہ سے بند کرنے ہوتے ہیں، ان کو اس طرح جلا مل سکتی ہے۔ کم از کم یہ تو کہا ہی جا سکتا ہے کہ جریدہ جاری ہے برقی شکل میں۔ اس قسم کے تین چار جریدے ایک سی ڈی میں شامل کریں۔ اور ہر سی ڈی میں اردو کے مختلف ٹولس بھی شامل ہوں کہ پڑھنے والے خود بھی اردو لکھنے کے قابل ہو جائیں۔ اس طرح اردو تحریر کو بھی فروغ ممکن ہے۔
    پاکستان میں جو احباب پہلے سے ہی جریدوں سے متعلق ہیں۔وہ ذرا تجربہ کر کے دیکھیں۔ خاور چودھری، کیا خیال ہے۔ آپ کے جریدے کی سی ڈی کے ساتھ ’سمت‘ بھی شامل کر دیں!!
    اور پرنٹ ورژن کا ابھی لکھ ہی چکا ہوں کہ اشتہارات کا انتظام ہو سکے تو آسانی سے ممکن ہے یہ بھی۔
    مختصر یہ کہ کیوں کہ پرنٹ وررژن کی ریڈر شپ اگر دو سو بھی ہے (یوں بھی ہندوستان میں پرچے پانچ سو سے زیادہ نہیں چھپتے) تو اتنی تعداد تو سی ڈی کی بھی ممکن ہے، اور اگر سو کی بھی ریڈر شپ ہو، تو کیوں کہ خرچ تو محض پانچ فی صد ہو رہا ہے تو کیا حرج ہے اس میں بھی!!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  18. خاورچودھری

    خاورچودھری محفلین

    مراسلے:
    309
    بلال شکریہ
    میں‌منتظر ہوں۔۔۔۔ تفصیلات کے لیے
     
  19. خاورچودھری

    خاورچودھری محفلین

    مراسلے:
    309

    قابل قدر اعجاز صاحب
    مجھے سی ڈی کا تجربہ نہیں‌ہے۔کاغذ کے حوالے سے بات پہلے کر چکا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آپ جو بھی فیصلہ کر لیں حکم کیجیے گا تعمیل ہوگی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  20. خرم شہزاد خرم

    خرم شہزاد خرم لائبریرین

    مراسلے:
    10,840
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    تو پھر اس کا کیا فیصلہ ہوا ابھی تک
     

اس صفحے کی تشہیر