یہ مشغلہ ہے کسی کا، نجانے کیا چاہے ::: زاہد آفاق

فرقان احمد نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 25, 2018

  1. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    10,183
    ﯾﮧ ﻣﺸﻐﻠﮧ ﮨﮯ ﮐﺴﯽ ﮐا نجانے ﮐﯿﺎ ﭼﺎﮨﮯ
    ﻧﮧ ﻓﺎﺻﻠﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﭩﺎئے، ﻧﮧ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﭼﺎﮨﮯ!

    ﻣﯿﺮﯼ ﺑﺴﺎﻁ ﮨﮯ ﮐﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﮞ ﺑﺮﮒِ ﺁﻭﺍﺭﮦ
    ﺍﮌﺍ ﮐﮯ ﻟﮯ ﭼﻠﮯ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ، ﺟﺪﮬﺮ ﮨﻮﺍ ﭼﺎﮨﮯ

    ﺟﻮ ﺍﺻﻞ ﭼﮩﺮﮦ ﺩﮐﮭﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﺮﺟﻤﺎﮞ ﺑﻦ ﮐﺮ
    ﺍﺱ ﺁﺋﯿﻨﮯ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﮐﻮﻥ ﺩﯾﮑﮭﻨﺎ ﭼﺎﮨﮯ

    ﻧﮧ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯿﺎ ﻣﯿﺮﮮ ﺻﯿﺎﺩ ﮐﺎ ﺍﺭﺍﺩﮦ ﮨﮯ
    ﺟﻼ ﭼﮑﺎ ﮨﮯ ﻧﺸﯿﻤﻦ، ﺍﺏ ﺍﻭﺭ ﮐﯿﺎ ﭼﺎﮨﮯ

    ﮨﺰﺍﺭﻭﮞ ﮈﻭﺑﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺑﭽﺎ ﻟﯿﮯ، ﻟﯿﮑﻦ
    ﺍﺳﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺴﮯ ﺑﭽﺎﺅﮞ ﺟﻮ ﮈﻭﺑﻨﺎ ﭼﺎﮨﮯ

    ﻧﮧ ﺟﺎﻧﮯ ﺧﻮﻥِ ﺗﻤﻨﺎ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﮐﺲ ﮐﺲ ﻧﮯ
    ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﻓﻘﻂ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺧﻮﮞ ﺑﮩﺎ ﭼﺎﮨﮯ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. محمدظہیر

    محمدظہیر محفلین

    مراسلے:
    2,950
    عمدہ انتخاب :)
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر