1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $413.00
    اعلان ختم کریں

جون ایلیا ہم کہ اے دل سخن سراپا تھے ------- متفرق کلام --- جون ایلیا

مغزل نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 28, 2009

  1. مغزل

    مغزل محفلین

    مراسلے:
    17,597
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce

    [youtube]06wY0DxEFAI[/youtube]

    ہم کہ اے دل سخن سراپا تھے
    ہم لبوں پر نہیں رہے آباد

    جانے کیا واقعہ ہوا کیوں لوگ
    اپنے اندر نہیں رہے آباد

    شہرِ دل میں عجب محلے تھے
    ان میں اکثر نہیں رہے آباد

    ---------------------------

    کوئی حالت نہیں یہ حالت ہے
    یہ تو آشوب ناک صورت ہے

    انجمن میں یہ میری خاموشی
    بردباری نہیں ہے وحشت ہے

    تجھ سے یہ گاہ گاہ کا شکوہ
    جب تلک ہے بسا غنیمت ہے

    خواہشیں دل کا ساتھ چھوڑ گئیں
    یہ اذیت بڑی اذیت ہے

    لوگ مصروف جانتے ہیں مجھے
    یاں مرا غم ہی میری فرصت ہے

    طنز پیرایہِ تبسم میں
    اس تکلف کی کیا ضرورت میں

    ہم نے دیکھا تو ہم نے یہ دیکھا
    جو نہیں ہے وہ خوبصورت ہے

    وار کرنے کو جانثار آئیں
    یہ تو ایثار ہے عنایت ہے

    گرمجو شی اور اس قدر کیا بات
    کیا تمھیں مجھ سے کچھ شکایت ہے

    اب نکل آؤ اپنے اندر سے
    گھر میں سامان کی ضرورت ہے

    ٓآج کا دن بھی عیش سے گزرا
    سر سے پا تک بدن سلامت ہے

    ------------------------------

    کسی لباس کی خوشبو جب اڑ کے آتی ہے
    ترے بدن کی جدائی بہت ستاتی ہے

    ترے بغیر مجھے چین کیسے پڑتا ہے
    مرے بغیر تجھے نیند کیسے آتی ہے

    ------------------------------

    منتیں ہیں خیال کی تیرے
    خوب گزری ترے خیال کے ساتھ

    میں نے اک زندگی بسر کردی
    تیرے نادیدہ خدو خال کے ساتھ

    ------------------------------

    ساری عقل و ہوش کی آسائشیں
    تم نے سانچے میں جنوں کے ڈھال دیں

    کرلیا تھا میں نے عہدِ ترک ِ عشق
    تم نے پھر بانہیں گلے میں ڈال دیں

    ------------------------------

    دل میں جن کا نشان بھی نہ رہا
    کیوں نہ چہروں پہ اب وہ رنگ کھلیں

    اب تو خالی ہے روح جذبوں سے
    اب بھی کیا ہم تپاک سے نہ ملیں

    ------------------------------

    میرے اور اس کے درمیاں اب تو
    صرف اک روبرو کا رشتہ ہے

    ہائے وہ رشتہ ہائے خاموشی
    اب فقط جستجو کا رشتہ ہے

    جون ایلیا
    مشاعرہ 87ء جشنِ خمار، امارات
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    25,019
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    بہت خوبصورت کلام ہے، شکریہ مغل صاحب شیئر کرنے کیلیے!
     
  3. آبی ٹوکول

    آبی ٹوکول محفلین

    مراسلے:
    3,499
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Drunk
    بہت خوب مغل بھائی زبردست لیکن سیکنڈ لاسٹ والے قطعے کہ پہلے شعر کہ پہلے مصرعے ۔ ۔ ۔
    دل میں زندہ نشان بھی نہ رہا
    کی بجائے ۔ ۔
    دل میں جنکا نشان بھی نہ رہا
    کیوں نہ چہروں پہ اب وہ رنگ کھلیں
    ہے ۔ ۔ ۔ ۔
     
  4. مغزل

    مغزل محفلین

    مراسلے:
    17,597
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    ٹھیک ہے آبی بھیا میں مدون کردیتا ہوں۔
     
  5. مغزل

    مغزل محفلین

    مراسلے:
    17,597
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    بہت بہت شکریہ وارث صاحب۔ بہت شکریہ
     
  6. عین عین

    عین عین لائبریرین

    مراسلے:
    795
    موڈ:
    Depressed
    عمدہ بہت خوب
     
  7. مغزل

    مغزل محفلین

    مراسلے:
    17,597
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    شکریہ بہت عمدہ بھائی اوہہہ میرا مطلب ہے عین عین بھائی۔
     
  8. مغزل

    مغزل محفلین

    مراسلے:
    17,597
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    یہ شکریہ کا بٹن کہاں چلا گیا ؟
     
  9. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    33,464
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    تم کو اب معلوم ہوا محمود۔ شکریے کا بٹن تو کم از کم پندرہ دن سے غائب ہے۔ رفتار کا معاینہ کرنے کے لئے بند کیا گیا ہے۔
     
  10. مغزل

    مغزل محفلین

    مراسلے:
    17,597
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    شکریہ بابا جانی ۔ میں یوں بھی کم آرہا ہوں۔ کبھی دھیان ہی نہیں دیا اس جانب۔۔
     

اس صفحے کی تشہیر