کیا گورخور (ضب) حلال ہے؟

مطیع الرحمٰن نے 'اِسلامی تعلیمات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 25, 2010

  1. شہزاد وحید

    شہزاد وحید محفلین

    مراسلے:
    2,567
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Psychedelic
    او مر گئے یاااااااار، پورا سوا گھنٹہ لگ گیا مجھے پورے دھاگے کا مطالعہ کرتے کرتے اور میرا سر درد کر رہا ہے اب۔ میں باہر جا رہا ہوں جوس پینے۔
     
  2. شہزاد وحید

    شہزاد وحید محفلین

    مراسلے:
    2,567
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Psychedelic
    ویسے اگر کوئی گور خور یہ دھاگہ پڑھ لے تو خود کو خوش قسمت تصور کرے گا۔ کیا پتہ کوئی گور خور فیس بُک استعمال کرتا ہو۔ اگر مجھے کبھی نظر آیا تو اُسے میں محفل کی راہ ضرور دکھاؤں گا اور اس دھاگے سے متعارف کرواؤں گا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. ابو کاشان

    ابو کاشان محفلین

    مراسلے:
    1,838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    شمشاد بھائی اب محفل میں آنا کم کر دیا ہے۔ جب آؤ کسی نہ کسی موضوع پر فصاحت و بلاغت کے در وا ہو جاتے ہیں۔ ماشاءاللہ بہت اچھا رجحان ہے لیکن بات بات رہے تو اچھا ہے کارزار بن جائے تو مزہ نہیں رہتا۔
    شریعت سے واقفیت کی جگہ بزرگانِ دین کی صحبت ہے اور صحیح حلال و حرام کی تمیز بھی انھی لوگوں سے حاصل ہو سکتی ہے۔ میں چار کتابیں پڑھ کر اپنے علم کی دھاک دوسروں پر ذبر دستی ٹھونکتا رہوں تو میری جگہ پاگل خانہ ہی ہونی چاہیے۔ اردو کا محاورہ ہے جس کا کام اسی کو ساجے۔ یہ بات کسی کی سمجھ میں کیوں نہیں آتی۔ اردو کا فورم ہے ۔ فورم ہی رہنا چاہئے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  4. طالوت

    طالوت محفلین

    مراسلے:
    8,353
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Bashful
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. انتہا

    انتہا محفلین

    مراسلے:
    1,110
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Persnickety
    اللہ ہمیں صحیح سمجھ عطا فرمائے۔
     
  6. طالوت

    طالوت محفلین

    مراسلے:
    8,353
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Bashful
    علم کسی کی میراث نہیں اور نہ ہی چار کتابیں پڑھ کا کسی موضوع پر بات کرنا ممنوع ہے ، تکبر و نخوت کسی عالم میں بھی ہو تو وہ کسی کام کا نہیں۔ اور علوم اسلامیہ پر تو کوئی اپنا اکلوتا حق نہ جما سکتا ہے اور نہ اس میں پاپائیت یا راہبانیت کی گنجائش ہے ، بات چیت مناسب انداز اور صحیح نیت کے ساتھ ہونا ضروری ہے چاہے وہ کوئی بھی ۔ عندلیب بی بی کے شروع کردہ ایک عجیب موضوع "مردوں کے جمگھٹ میں خاتون کی توتو میں میں؟؟‬ " سے ایک اچھی بات حاصل ہوئی اور ہے نبیل کا مذکورہ مراسلہ ، زیادہ بہتر ہے بات سمجھنے کے لئے۔

     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  7. کعنان

    کعنان محفلین

    مراسلے:
    865
    جھنڈا:
    England
    موڈ:
    Amused
    3796- حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَوْفٍ الطَّائِيُّ، أَنَّ الْحَكَمَ بْنَ نَافِعٍ حَدَّثَهُمْ، حَدَّثَنَا ابْنُ عَيَّاشٍ، عَنْ ضَمْضَمِ بْنِ زُرْعَةَ، عَنْ شُرَيْحِ بْنِ عُبَيْدٍ، عَنْ أَبِي رَاشِدٍ الْحُبْرَانِيِّ، عَنْ عَبْدِالرَّحْمَنِ بْنِ شِبْلٍ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ ﷺ نَهَى عَنْ أَكْلِ لَحْمِ الضَّبِّ۔
    * تخريج: تفرد بہ أبو داود، (تحفۃ الأشراف: ۹۷۰۲) (حسن)
    عبدالر حمن بن شبل اوسی انصاری رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے گوہ کا گوشت کھانے سے منع فرمایا۔
    ۱؎ ۔

    وضاحت ۱؎
    ضب : گوہ ایک رینگنے والا جانور جو چھپکلی کے مشابہ ہوتا ہے، اس کو سوسمار بھی کہتے ہیں،

    سانڈا بھی گوہ کی قسم کا ایک جانور ہے جس کا تیل نکال کر گٹھیا کے درد کے لئے یا طلاء کے لئے استعمال کرتے ہیں،

    یہ جانور نجد کے علاقہ میں بہت ہوتا ہے، حجاز میں نہ ہونے کی وجہ سے نبی اکرم ﷺ نے اس کو نہ کھایا لیکن آپ ﷺ کے دسترخوان پر یہ کھایا گیا اس لئے حلال ہے۔

    جس جانور کو نبی اکرمﷺ کے دسترخوان پر صحابہ کرام رضی اللہ عنہم نے کھایا اس کو عربی میں ضب کہتے ہیں اور خود حدیث میں اس کی صراحت ہے کہ یہ نجد کے علاقہ میں پایا جانے والا جانور ہے ، جو بلاشبہ حلال ہے۔ احناف اور شیعی فرقوں میں امامیہ کے نزدیک گوہ کا گوشت کھانا حرام ہے، فرقہ زیدیہ کے یہاں یہ مکروہ ہے ، لیکن صحیح بات اس کی حلت ہے ۔

    نجد کے علاقے میں پایا جانے والا یہ جانور برصغیر (ہندوستان، پاکستان، بنگلہ دیش) میں پائے جانے والے گوہ یا سانڈے سے بہت سی چیزوں میں مختلف ہے :

    * ضب نامی یہ جانور صحرائے عرب میں پایا جاتا ہے ، اور ہندوستان میں پایا جانے والا گوہ یا سانڈا زرعی اور پانی والے علاقوں میں عام طور پر پایا جاتا ہے۔

    * نجدی ضب (گوہ) پانی نہیں پیتا اور بلا کھائے اپنے سوراخ میں ایک لمبی مدت تک رہتا ہے، کبھی طویل صبر کے بعد اپنے بچوں کو کھا جاتا ہے، جب کہ برصغیرکا گوہ پانی کے کناروں پر پایا جاتا ہے ، اور خوب پانی پیتا ہے ۔

    * نجدی ضب (گوہ) شریف بلکہ سادہ لوح جانور ہے ، جلد شکار ہو جاتا ہے ، جب کہ ہندوستانی گوہ کا پکڑنا نہایت مشکل ہوتا ہے ۔

    * نجدی ضب (گوہ) کے پنجے آدمی کی ہتھیلی کی طرح نرم ہوتے ہیں، جب کہ ہندوستانی گوہ کے پنجے اور اس کی دم نہایت سخت ہوتی ہیں، اور اس کے ناخن اس قدر سخت ہوتے ہیں کہ اگر وہ کسی چیز کو پکڑلے تو اس سے اس کا چھڑانا نہایت دشوار ہوتا ہے ، ترقی یافتہ دور سے پہلے مشہور ہے کہ چور اس کی دم کے ساتھ رسی باندھ کر اسے مکان کے پچھواڑے سے اوپر چڑھا دیتے اور یہ جانور مکان کی منڈیر کے ساتھ جا کر مضبوطی سے چمٹ جاتا اور پنجے گاڑ لیتا اور چور اس کی دم سے بندھی رسی کے ذریعہ اوپر چڑھ جاتے اور چوری کرتے، جبکہ نجدی ضب (گوہ) کی دم اتنی قوت والی نہیں ہوتی ۔

    * ہندوستانی گوہ سانپ کی طرح زبان نکالتی اور پھنکارتی ہے ، جب کہ نجدی ضب (گوہ) ایسا نہیں کرتی ۔

    * ہندوستانی گوہ ایک بدبودار جانور ہے اور اس کے قریب سے نہایت ناگوار بدبو آتی ہے ،جب کہ نجدی ضب ( گوہ) میں یہ نشانی نہیں پائی جاتی، اس کی وجہ یہ ہے کہ ہندوستانی گوہ گندگی کھاتی ہے ، اور کیڑے مکوڑے بھی ، نجدی ضب ( گوہ) کیڑے مکوڑے اور خاص کر ٹڈی کھانے میں مشہور ہے ،لیکن صحراء میں گندگی کا عملاً وجود نہیں ہوتا اور اگر ہو بھی تو معمولی اور کبھی کبھار ، صحراء میں پائی جانے والی بوٹیوں کو بھی وہ کھاتا ہے ۔

    * نجدی ضب (گوہ) کی کھال کو پکا کر عرب اس کی کپی میں گھی رکھتے تھے ، جس کو'' ضبة'' کہتے ہیں اور ہندوستانی گوہ کی کھال کا ایسا استعمال کبھی سننے میں نہیں آیا اس لیے کہ وہ بدبودار ہوتی ہے۔

    * نجدی ضب نامی جانور اپنے بنائے ہوئے پُر پیچ اور ٹیڑھے میڑھے بلوں (سوراخوں) میں اس طرح رہتا ہے کہ اس تک کوئی جانور نہیں پہنچ سکتا، اور اسی لیے حدیث شریف میں امت محمدیہ کے بارے میں ضب (گوہ) کے سوراخ میں چلے جانے کی تعبیر موجود ہے ، اور یہ نبی اکرمﷺ کی کمال باریک بینی اور کمالِ بلاغت پر دال ہے ، امت محمدیہ سابقہ امتوں کے نقش قدم پر چلتے ہوئے طرح طرح کی گمراہیوں اور ضلالتوں کا شکار ہو گی ، حتی کہ اگر سابقہ امتیں اپنی گمراہی میں اس حد تک جا سکتی ہیں جس تک پہنچنا مشکل بات ہے تو امت محمدیہ وہ کام بھی کر گزرے گی ، اسی کو نبی اکرمﷺ نے اس طرح بیان کیا کہ اگر سابقہ امت اپنی گمراہی میں ضب (گوہ) کے سوراخ میں گھسی ہو گی تو امت محمدیہ کے لوگ بھی اس طرح کا ٹیڑھا میڑھا راستہ اختیار کریں گے اور یہ حدیث ضب (گوہ) کے مکان یعنی سوراخ کے پیچیدہ ہونے پر دلالت کر رہی ہے ، اور صحراء نجد کے واقف کار خاص کر ضب ( گوہ) کا شکار کرنے والے اس کو بخوبی جانتے ہیں ، اور ضب (گوہ) کو اس کے سوراخ سے نکالنے کے لیے پانی استعمال کرتے ہیں کہ پانی کے پہنچتے ہی وہ اپنے سوراخ سے باہر آ جاتی ہے ، جب کہ ہندوستانی گوہ پرائے گھروں یعنی مختلف سوراخوں اور بلوں اور پرانے درختوں میں موجود سوراخ میں رہتی ہے ۔

    ضب اور ورل میں کیا فرق ہے؟

    صحرائے عرب میں ضب کے مشابہ اور اس سے بڑا بالو، اور صحراء میں پائے جانے والے جانور کو ''وَرَل'' کہتے ہیں،
    تاج العروس میں ہے : ورل ضب کی طرح زمین پر رینگنے والا ایک جانور ہے ، جو ضب کی خلقت پر ہے ، إلا یہ کہ وہ ضب سے بڑا ہوتا ہے ، بالو اور صحراء میں پایا جاتا ہے، چھپکلی کی شکل کا بڑا جانور ہے ، جس کی دم لمبی اور سر چھوٹا ہوتا ہے ،
    ازہری کہتے ہیں: ''وَرَل'' عمدہ قامت اور لمبی دم والا جانور ہے، گویا کہ اس کی دم سانپ کی دم کی طرح ہے، بسااوقات اس کی دم دو ہاتھ سے بھی زیادہ لمبی ہوتی ہے ،
    اور ضب (گوہ) کی دم گانٹھ دار ہوتی ہے ، اور زیادہ سے زیادہ ایک بالشت لمبی ، عرب ورل کو خبیث سمجھتے اور اس سے گھن کرتے ہیں، اس لیے اسے کھاتے نہیں ہیں،
    رہ گیا ضب تو عرب اس کا شکار کرنے اور اس کے کھانے کے حریص اور شوقین ہوتے ہیں،
    ضب کی دم کھُردری ، سخت اور گانٹھ والی ہوتی ہے ، دم کا رنگ سبز زردی مائل ہوتا ہے ، اور خود ضب مٹ میلی سیاہی مائل ہوتی ہے ، اور موٹا ہونے پر اس کا سینہ پیلا ہو جاتا ہے ، اور یہ صرف ٹڈی ، چھوٹے کیڑے اور سبز گھاس کھاتی ہے ، اور زہریلے کیڑوں جیسے سانپ وغیرہ کو نہیں کھاتی ،
    اور ورل' بچھو ، سانپ ، گرگٹ اور گوبریلا سب کھاتا ہے،
    ورل کا گوشت بہت گرم ہوتا ہے ، تریاق ہے ، بہت تیز موٹا کرتا ہے ، اسی لیے عورتیں اس کو استعمال کرتی ہیں،
    اور اس کی بیٹ (کا سرمہ) نگاہ کو تیز کرتا ہے ،
    اور اس کی چربی کی مالش سے پینس موٹا ہوتا ہے۔
    (تاج العروس : مادہ ورل ، و لسان العرب )

    سابقہ فرق کی وجہ سے دونوں جگہ کے نجدی ضب اور ورل اور ہندوستان پائے جانے والے جانور جس کو گوہ یا سانڈا کہتے ہیں، ان میں واضح فرق ہے، بایں ہمہ نجدی ضب ( گوہ) کھانا احادیث نبویہ اور اس علاقہ کے مسلمانوں کے رواج کے مطابق حلال ہے، اور اس میں کسی طرح کی قباحت اور کراہت کی کوئی بات نہیں ،

    رہ گیا ہندوستانی گوہ کی حلت وحرمت کا مسئلہ تو سابقہ فروق کو سامنے رکھ کر اس کا فیصلہ کرنا چاہئے ، اگر ہندوستانی گوہ نجاست کھاتا اور اس نجاست کی وجہ سے اس کے گوشت سے یا اس کے جسم سے بدبو اٹھتی ہے تو یہ چیز علماء کے غور کرنے کی ہے ، جب گندگی کھانے سے گائے بکری اور مرغیوں کا گوشت متاثر ہو جائے تو اس کا کھانا منع ہے ، اس کو اصطلاح میں ''جلالہ'' کہتے ہیں، تو نجاست کھانے والا جانور گوہ ہو یا کوئی اور وہ بھی حرام ہو گا، البتہ برصغیر کے صحرائی علاقوں میں پایا جانے والا گوہ نجد کے ضب (گوہ) کے حکم میں ہو گا ۔

    ضب اور ورل کے سلسلے میں نے اپنے دوست ڈاکٹر محمد احمد المنیع پروفیسر کنگ سعود یونیورسٹی ، ریاض جو زراعت اور غذا سے متعلق کالج میں پڑھاتے ہیں، اور صحرائے نجد کے جانوروں کے واقف کار ہیں ، سوال کیا تو انہوں نے اس کی تفصیل مختصراً یوں لکھ کر دی :

    نجدی ضب نامی جانور کھایا جاتا ہے ، اور
    ''ورل '' نہیں کھایا جاتا ہے

    ضب کا شکار آسانی سے کیا جاسکتا ہے اور
    ورل کا شکار مشکل کام ہے ،

    ضب گھاس کھاتا ہے ، اور
    ورل گوشت کھاتا ہے ،

    ضب چیر پھاڑ کرنے والا جانور نہیں ہے ، جبکہ
    ورل چیر پھاڑ کرنے والا جانور ہے ،

    ضب کا ایک ہی رنگ ہوتا ہے، اور
    ورل دھاری دھار ہوتا ہے ،

    ضب کی جلد کھُردری ہوتی ہے اور
    ورل کی جلد نرم ہوتی ہے ،

    ضب کا سر چوڑا ہوتا ہے ، اور
    وَرل کا سر دم نما ہوتا ہے ،

    ضب کی گردن چھوتی ہوتی ہے ، اور
    ورل کی گردن لمبی ہوتی ہے ،

    ضب کی دم چھوٹی ہوتی ہے اور
    ورل کی دم لمبی ہوتی ہے ،

    ضب کھُردرا اور کانٹے دار ہوتا ہے ،اور
    ورل نرم ہوتا ہے ،

    ضب اپنی دم سے اپنا دفاع کرتا ہے ، اور
    ورل بھی اپنی دم سے اپنا دفاع کرتا ہے ، اور دُم سے شکار بھی کرتا ہے،

    ضب گوشت باکل نہیں کھاتا ، اور
    ورل ضب اور گرگٹ سب کھا جاتا ہے ،

    ضب تیز جانور ہے ، اور
    ورل تیزتر

    ضب میں حملہ آوری کی صفت نہیں پائی جاتی جب کہ
    ورل میں یہ صفت موجود ہے ، وہ دانتوں سے کاٹتا ہے ، اور دم اور ہاتھ سے حملہ کرتا ہے ،

    ضب ضرورت پڑنے پر اپنا دفاع کاٹ کر اور ہاتھوں سے نوچ کر یا دُم سے مار کر کرتا ہے ، اور
    وَرل بھی ایسا ہی کرتا ہے ،

    ضب میں کچلی دانت نہیں ہے ، اور
    وَرل میں کچلی دانت ہے ،

    ضب حلال ہے ، اور
    ورل حرام، ورل کے بارے میں یہ بھی کہا جاتا ہے کہ یہ زہریلا جانور ہے ۔

    صحرائے عرب کا ضب ، وَرل اور
    ہندوستانی گوہ یا سانڈا سے متعلق اس تفصیل کا مقصد صرف یہ ہے کہ اس جانور کے بارے میں صحیح صورتِ حال سامنے آ جائے ، حنفی مذہب میں بھینس کی قربانی جائز ہے اور دوسرے فقہائے کے یہاں بھی اس کی قربانی اس بنا پر جائز ہے کہ یہ گائے کی ایک قسم ہے ، جب کہ گائے کے بارے میں یہ مشہور ہے اور مشاہدہ بھی کہ وہ پانی میں نہیں جاتی جب کہ بھینس ایسا جانور ہے جس کو پانی سے عشق اور کیچڑ سے محبت ہے اور جب یہ تالاب میں داخل ہو جائے تو اس کو باہر نکالنا مشکل ہوتا ہے ، اگربھینس کی قربانی کو گائے پر قیاس کر کے فقہاء نے جائز کہا ہے تو دونوں جگہ گوہ کے بعض فرق کا اعتبار نہ کرتے ہوئے اس جنس کے جانوروں کو حلال ہونا چاہئے ، اہل علم کو فقہی تنگنائے سے ہٹ کر نصوص شرعیہ کی روشنی میں اس مسئلہ پر غور کرنا چاہئے اور عاملین حدیث کے نقطہ نظر کو صحیح ڈھنگ سے سمجھنا چاہئے ۔

    گوہ کی کئی قسمیں ہیں اور ہو سکتا ہے کہ بہت سی چیزیں سب میں قدر مشترک ہوں جیسے کہ قوت باہ میں اس کا مفید ہونا اس کی چربی کے طبی فوائد وغیرہ وغیرہ۔

    حکیم مظفر حسین اعوان گوہ کے بارے میں لکھتے ہیں: نیولے کے مانند ایک جنگلی جانور ہے ، دم سخت اور چھوٹی ، قد بلی کے برابر ہوتا ہے ، اس کے پنجے میں اتنی مضبوط گرفت ہوتی ہے کہ دیوار سے چمٹ جاتا ہے ، رنگ زرد سیاہی مائل ، مزاج گرم وخشک بدرجہ سوم ... اس کی کھال کے جوتے بنائے جاتے ہیں۔
    (کتاب المفردات : ۴۲۷)
    ظاہر ہے کہ یہ برصغیر میں پائے جانے والے جانور کی تعریف ہے ۔

    گوہ کی ایک قسم سانڈہ بھی ہے جس کے بارے میں حکیم مظفر حسین اعوان لکھتے ہیں: مشہور جانور ہے ، جو گرگٹ یا گلہری کی مانند لیکن اس سے بڑا ہوتا ہے ، اس کی چربی اور تیل دواء مستعمل ہے ، مزاج گرم و تر بدرجہ اوّل، افعال و استعمال بطور مقوی جاذب رطوبت ، معظم ذکر، اور مہیج باہ ہے
    (کتاب المفردات : صفحہ ۲۷۵)
     
    • معلوماتی معلوماتی × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. مبشر علی

    مبشر علی محفلین

    مراسلے:
    2
    محترم حضرات۔اسلام وعلیکم۔دلچسپ بحث کی وجہ سے شریک ہوں کچھ معلومات شئیر کرنا چاہونگا شاید اس سے مدد ہو۔
    ضب۔ کو انگلش میں spiny-tailed lizardکہتے ہیں جو کہ گوہ سے علیحدہ نسل ہے ۔عرب اسے کھاتے اور ادویات میں استعمال کرتے ہیں اردو پنجابی میں اسے سانڈا کہتے ہیں۔
    جبکہ گوہ کا انگلش نام Indian common monitor lizard ہے۔
    ضب اور گوہ کی شکل اور سائز بھی مختلف ہوتا ہے ۔گوہ گوشت خور بھی ہے جبکہ ضب کیڑے مکوڑوں کے ساتھ ساتھ نباتات بھی کھاتی ہے۔
    بدقسمتی سے اردو زبان میں انٹرنیٹ پر زیادہ معلومات عام طور پر مستند میسر نہیں ہوتیں ۔لہذا مذکورہ بالا انگریزی ناموں کو سرچ کریں تو کافی معلومات مل جاتی ہیں۔
     
  9. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    203,239
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
  10. مبشر علی

    مبشر علی محفلین

    مراسلے:
    2
    جی حضور ۔ پیشے سے وکیل ہوں ٹوبہ ٹیک سنگھ کا رہائشی ہوں۔
     

اس صفحے کی تشہیر