کیا آپ شاعری میں بہتری لانے کے قائل ہیں؟

معظم علی کاظمی نے 'بزم سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 4, 2018

  1. معظم علی کاظمی

    معظم علی کاظمی محفلین

    مراسلے:
    148
    بات یہ ہے کہ اگر مثلاً ایک پروگریمر یا مصور کے زندگی کے موجودہ کام کا موازنہ اس کی زندگی کے اوئل کام سے کیا جائے تو زمین آسمان کا فرق ہوگا۔ مجھے حیرت اس بات کی ہوتی ہے کہ شاعری میں ایسا نظر نہیں آتا۔ میں اپنی پہلی غزل کا موازنہ سب سے موجودہ غزل سے کروں تو مجھے تقریباً دونوں ایک ہی معیار کی معلوم ہوتی ہیں۔ یہی بات غالب یا میر یا کسی شاعر کےلیے بھی درست ہے۔(صرف وہ لوگ مستثنیٰ ہوں گے جو پہلے شاعری کے اصول سہی جیسے وزن کی سوجھ بوجھ نہیں رکھتے تھے اور بعد میں سیکھا۔)

    میں خود تو حتی کہ اس حد تک سمجھتا ہوں کہ وقت کہ ساتھ ساتھ ہماری شاعری کا لطف کم تر ہوتا چلا جاتا ہے۔

    اس کی کیا وجوہات ہو سکتی ہیں؟:

    کیا شاعری ایسی چیز ہے جس کے ساتھ کوئی پیدا ہوتا ہے (کیوں کہ قدرت کی عطا کردہ شے پر ہمارا اختیار نہیں ہوتا)؟
    یا ہمیں الہام ہوتا ہے اور اپنی محنت نہیں ہوتی (کیوں کہ بہتری تب ہی لائی جاسکتی ہے جب ہماری اپنی محنت ہو)؟

    اور کیا یہ بات پہلے شعرا کے شعور میں لائی جا چکی ہے؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  2. نمرہ

    نمرہ محفلین

    مراسلے:
    599
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Paranoid
    دلچسپ سوالات ہیں کافی۔
     
    • متفق متفق × 1
  3. محمد ریحان قریشی

    محمد ریحان قریشی محفلین

    مراسلے:
    1,914
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Devilish
    گو کہ میں نے بہت کم اشعار کہے ہیں اور میں اپنے آپ کو شاعر سے زیادہ ایک قاری کی حیثیت میں دیکھتا ہوں، اس کے باوجود مجھے اپنی پہلی غزل اور موجودہ شاعری میں کافی فرق نظر آتا ہے۔ مطالعے کے زیرِ اثر وقت کے ساتھ ساتھ خیالات اور زبان و بیان دونوں کسی حد تک ارتقا پذیر ہوتے رہتے ہیں۔
    قدر سخن بلندکن از مشق خامشی
    حرفِ نگفته معنی الهام داشته‌ست

    سخن کا مرتبہ خامشی کی مشق سے بلند کر کہ وہ حرف جو کہا نہ جائے الہام کے معانی رکھتا ہے۔

    بیدل دہلوی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
    • زبردست زبردست × 1
    • متفق متفق × 1
  4. معظم علی کاظمی

    معظم علی کاظمی محفلین

    مراسلے:
    148
    [QOUTE]

    سخن کا مرتبہ خامشی کی مشق سے بلند کر کہ وہ حرف جو کہا نہ جائے الہام کے معانی رکھتا ہے۔

    بیدل دہلوی[/QUOTE]

    ترجمے کے ساتھ بھی مطلب واضح نہیں ہوا (فارسی تو بدقسمتی سے بالکل نہیں آتی)۔
     
  5. محمد ریحان قریشی

    محمد ریحان قریشی محفلین

    مراسلے:
    1,914
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Devilish
    دراصل کوئی گہرا مطلب ہے ہی نہیں۔ بیدل کے نزدیک جو سخن کہا نہ جائے وہ الہام ہے اور جو کہہ دیا جائے وہ نہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. معظم علی کاظمی

    معظم علی کاظمی محفلین

    مراسلے:
    148
    خیالات کا تبدیل ہونا تو سمجھ میں آتا ہے۔ غالب مثال(جیسا کہ عام طور پر کہا جاتا ہے) کے طور پر سادگی کی طرف مائل ہو گئے تھے اور اقبال قوم پرستی کی طرف۔

    مگر بات ہےمعیار کی۔ بد قسمتی سے میں مطالعہ نہ ہونے کی وجہ سے کچھ نہیں کہہ سکتا۔ آپ سمجھتے ہیں کہ اکثر شعرا کا کلام وقت کے ساتھ ساتھ معیاری اور زیادہ پختہ ہو جاتا ہے؟
     
  7. محمد ریحان قریشی

    محمد ریحان قریشی محفلین

    مراسلے:
    1,914
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Devilish
    بالکل ایسا ہی ہے۔ اس بات کا مشاہدہ آپ دیوانِ غالب کے نسخۂ حمیدیہ میں بخوبی کر سکتے ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  8. ظہیراحمدظہیر

    ظہیراحمدظہیر محفلین

    مراسلے:
    2,725
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    ان نکات پر تو بلامبالغہ درجنوں مضامین اور کتابیں لکھی جاچکی ہیں ۔ تنقیدی ادب ان مباحث سے بھرا پڑا ہے ۔ وہ جو کسی نے کہا تھا نا کہ :
    بات یہ ہے کہ آدمی شاعر
    یا تو ہوتا ہے یا نہیں ہوتا
    میری ناقص رائے میں یہ بات خاصی حد تک درست ہے ۔ شعر کے دو بڑے پہلو ہیں ۔ خیال اور لفظی جامہ یا بالفاظِ دیگر تخیل اور محاکات ۔ شاعر جب اپنے تخیل کو الفاظ کا جامہ پہنادیتا ہے تو شعر تخلیق ہوتا ہے ۔ تخیل کے بغیر شعری تخلیق ممکن نہیں ۔ تخیل اکتسابی چیز نہیں ۔ یہ قدرت کی طرف سے ودیعت ہوتا ہے ۔ یا تو آپ کے پاس ہے یا نہیں ہے ۔ اس کے برعکس محاکات کا عمل یعنی خیال کو مناسب الفاظ اور مناسب پیرایہ استعمال کرتے ہوئے ایک ایسی لفظی تصویر کھینچنا کہ قاری تک آپ کے تخیل کا ابلاغ ہوسکے بہت حد تک اکتسابی ہوسکتا ہے ۔ مطالعے، تجزیے اور مشق کی مدد سے اس میں ترقی ممکن ہے ۔
    یہ آپ کے پیچیدہ سوالات کا انتہائی سادہ اور مختصر سا جواب ہے ۔ اگر بات کو طول دیا جائے تو جیسا کہ اوپر عرض کیا درجنوں صفحات سیاہ کئے جاسکتے ہیں ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
    • متفق متفق × 1
  9. نمرہ

    نمرہ محفلین

    مراسلے:
    599
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Paranoid
    اس خیال سے مجھے کچھ اختلاف ہے۔ میر کی سی نہ سہی، مگر قابل قبول شاعری تو ہر انسان کر سکتا ہے ، کم از کم ایک آدھ زبان میں۔ اگر مگر کی اصطلاح میں سوچنے کی صلاحیت بھی ہر کسی کے پاس ہے، اور محسوس کرنے کی بھی۔ میرے نزدیک تو یہ قدرتی ذوق سے بڑھ کر کچھ اس قسم کا معاملہ ہے کہ انسان ادھر ادھر سے شعر سنتا ہے اور پھر کہنا بھی شروع کر دیتا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. زویا شیخ

    زویا شیخ محفلین

    مراسلے:
    80
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Brooding
    میرا خیال تھوڑا سا الگ ہے سب سے شاعری شروع اور آخر کی نہیں ہوتی یہ تو بس خود سے ہو جاتی ہے کبھی کبھار بنا سوچے جو شاعری ہوتی ہے وہ سوچ کر لکھے جانے سے لاکھ گنا بہتر ہوتی . . .
     
  11. محمد ریحان قریشی

    محمد ریحان قریشی محفلین

    مراسلے:
    1,914
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Devilish
    متفق۔ یہی وجہ ہے کہ میں شاعری کو ایک انتہا درجے کی بے کار چیز سمجھنے پر مجبور ہو گیا ہوں۔ لوگوں کے پاس خوش نوائی اور مصوری جیسے ہنر موجود ہیں جن کی قدر پہچاننے کے لیے آشتیِ چشم و گوش کے سوا کچھ درکار نہیں۔ شاعری کا معاملہ مگر بہت مختلف ہے
    خشک سیروں تنِ شاعر میں لہو ہوتا ہے
    تب نظر آتی ہے اک مصرعِ تر کی صورت

    جسے صرف ایک خاص طبقہ ہی سمجھ سکتا ہے۔ یوں تو جس طرح کا بھی کسی میں ہو کمال اچھا ہے لیکن چونکہ ہنر کا مقصد انسان کو دوسروں کی نظر میں ممتاز کرنا اور داد کا حصول ہے، تو اس کام کے لیے شاعری نہایت غیر موزوں چیز ہے۔ شاید اس لیے کہ یہ کوئی ایسا ہنر نہیں جو قدرت خود انسان کو عطا کرتی ہو۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
    • غمناک غمناک × 1
  12. معظم علی کاظمی

    معظم علی کاظمی محفلین

    مراسلے:
    148
    یقین مانیں، دوسرے فنون کا بھی یہی حال ہے۔ اسی لیے تو میں یقینا ایک بیکار سے بیکار مصور یا کمپوزر کے کام کو وین گوغ یا موٹسرٹ سے جدا نہیں بتا پاؤں گا۔

    ان کا کام بھی تو خاص طبقہ کےلیے ہوا ؟ کم از کم میں تو اس طبقے میں شامل نہیں ہوں۔

    شاعری سے مجھے بھی ویسے ایک نفرت سی ہو گئی ہے مگر اس کی وجہ اس میں ایک قسم کی پیش رفت ، جیسے سائنس میں ایک سائینسدان کے کام کو دوسرے آگے بڑھاتے ہیں، کا نہ ہونا ہے۔ اور غزل میں توکئی ماہ کی محنت بھی نہیں کرنی پڑتی جوشاید مثنوی یا مرثیہ میں درکار ہو۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  13. نمرہ

    نمرہ محفلین

    مراسلے:
    599
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Paranoid
    بھئی اس وجہ سے تو میں پڑھانا نہیں چاہتی کہ بچے الگوردمز سیکھنے کے بجائے دنیا کیا ہے اور کیوں ہے اور بہرحال جو کچھ بھی ہے قطعی بیکار ہے کی گردان کرتے ہوئے نکلیں گے کلاس سے۔



    کم از کم موسیقی میں تو عوام اور خواص کی پسند میں اچھا خاصا فرق ہوتا ہے۔ شاعری کے ساتھ ایک اضافی معاملہ زبان کا ہے، اس لیے مجھے یہ تو احساس ہوتا ہے کہ ہم جو کچھ بھی لکھتے ہیں اس کی اپیل یونیورسل نہیں، اور نہ ہی اس کا ترجمہ کیا جا سکتا ہے۔ پھر غزلیں ہماری بہت ہی ریفائنیڈ اور niche چیز ہیں ۔ لیکن ادھر کا کلاسیکل میوزک بھی مغرب کے رہنے والوں کو کتنا پسند آ سکتا ہے۔


    یہ کس نے کہا؟ سوشل میڈیا کی بے اعتنائی کا غم مجھے ہے، یعنی محفل کے علاوہ، مگر مجھے نہیں لگتا کہ کسی دوسرے انسان کی داد کی خاطر کوئی بھی کام اعلی طریقے سے کیا جا سکتا ہے، نہ سائنس میں اور نہ فائن آرٹس میں۔ معجزہ فن کی ہے خون جگر سے نمود والی بات ٹھیک لگتی ہے مجھے اور خون جگر ، فنکار اپنی تسلی کی خاطر صرف کر سکتا ہے مگر اس کے علاوہ نہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  14. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    37,961
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Amused
    میری بیٹی کی نویں جماعت کی لٹریچر کلاس کو آپ سے اتفاق ہے کہ وہ سب آجکل دیئے گئے موضوع پر سونیٹ لکھ رہے ہیں
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  15. نمرہ

    نمرہ محفلین

    مراسلے:
    599
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Paranoid
    بالکل اور ادھر کرئیٹیو رائٹنگ بطور مضمون بھی پڑھاتے ہیں اور پروگرام بھی ہوتے ہیں ان کے گریڈ سکول میں ۔ کبھی کبھی جی چاہتا ہے کہ سائنس چھوڑ کر ایسی کسی جگہ پہنچ جاؤں۔ پاکستان میں ایک آدھ جگہ کے بارے میں سنا ہے کہ اس کی کلاسیں ہوتی ہیں۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  16. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    24,826
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    اس سے اتفاق نہیں کروں گا۔ یہ کوئی طے شدہ اصول نہیں ہے۔ بہت لوگ ایسے گزرے ہیں اور ہیں بھی، جو اپنے ہنر کو داد و تحسین کے حصول کے لیے استعمال نہیں کرتے۔ داد و تحسین کا حاصل ہو جانا یا نہ ہونا ان کے لیے معنی نہیں رکھتا۔ اس لیے اسے ہم ہنر کا مقصد نہیں کہہ سکتے۔
     
    • متفق متفق × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    24,826
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    جہاں تک بہتری کا تعلق ہے تو ہر کام کی طرح شاعری میں بھی لائی جا سکتی ہے۔ اور ہر شاعر کا کلام نہ صرف تکنیکی اعتبار سے بہتری کی منازل طے کرتا ہے، بلکہ تخیل میں بھی وسعت آتی ہے، جس کے سبب وقت کے ساتھ ساتھ مضامین میں تنوع بھی آتا ہے۔

    البتہ فطری طور پر موزوں طبع ہونا یا کوشش کر کے شاعر بننے پر اختلاف پایا جاتا ہے۔
    دونوں طرف سے دلائل اپنی جگہ موجود ہیں۔
    مگر ابھی تک جو بڑے یا استاد شعراء گزرے ہیں، ان میں سے کوئی مثال ایسی بمشکل ہی ملے گی کہ کسی نے قطعاً شاعر نہ ہوتے ہوئے باقاعدہ شاعری سیکھ کر شروع کی ہو۔ البتہ ایسے شعراء بھی کم ملیں گے کہ جنھوں نے کبھی کسی استاد کی رہنمائی حاصل نہ کی ہو۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. محمد ریحان قریشی

    محمد ریحان قریشی محفلین

    مراسلے:
    1,914
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Devilish
    بالکل درست۔

    نہ ستائش کی تمنا نہ صلے کی پروا

    مگر انسان پھر انسان ہے۔ وہ absolutely indifferent ہو نہیں سکتا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  19. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    24,826
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    میرے سامنے تو گھر کی مثال ہے۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  20. طاہر راجپوت ملتان

    طاہر راجپوت ملتان محفلین

    مراسلے:
    219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    سہی موازنہ برابر والوں سے کیا جاتا ہے شاعری صرف ایک بہترین خیال مناسب الفاظ اور ربط ہے بس وقت کے ساتھ ساتھ بہتری آتی ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر