1. اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں فراخدلانہ تعاون پر احباب کا بے حد شکریہ نیز ہدف کی تکمیل پر مبارکباد۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    $500.00
    اعلان ختم کریں

کلیاتِ حفیظ تائبؒ سے نعتوں کا انتخاب۔۔۔ حفیظ تائبؒ

محمد بلال اعظم نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 18, 2014

  1. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    بلغ العُلٰے بکمَالِہٖ
    کشف الدُّجٰے بجمَالِہٖ
    حسُنت جمیع خِصَالِہٖ
    صَلوا علَیہِ و آلِہٖ


    (حضرت شیخ سعدیؒ)


    منظوم ترجمہ

    ہوئے کمال سے اپنے وہ فائزِ رفعت
    چھٹی جمال سے اُن کے تمام ظلمتِ شب
    خصائل اُن کے سبھی خوب اور پسندیدہ
    درود بھیجیں نبیﷺ پر اور اُن کی آل پہ سب​
     
    • زبردست زبردست × 1
  3. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    آیۂ نور

    جب کیا میں نے قصدِ نعتِ حضورﷺ
    ہوئے یکجا شعور و تحتِ شعور

    روحِ ممدوح دستگیر ہوئی
    شاملِ جاں تھا لطفِ ربِّ غفور

    ورنہ میں اور محامدِ احمدﷺ
    جس کی خاطر ہوا یہ نور و ظہور

    خود خدا جس کا ہے ستائش گر
    رحمتِ عالمیں ہے جو مذکور

    وہ کہ ہے مظہرِ دعائے خلیلؑ
    ذکر جس کا ہے جا بجا مسطور

    دی بشارت مسیحؑ نے جس کی
    لے کے آیا جو آخری منشور

    ذات جس کی مبشّر و مُنذِر
    جس کا دیں ہے مظفّر و منصور

    وہ کہ ہے عادل و عزیز و امیں
    وہ کہ ہے شاہد و شفیع و شکور

    مقتدی جس کے ہیں نبی سارے
    کلمہ گو جس کے ہیں وحش و طیور

    نطق جس کا حیات کا دستور
    زندگی جس کی ہے منارۂ نور

    حُسن سے جس کے کائنات حسیں
    خُلق سے جس کے خَلق ہے مسحور

    جس کے فقرِ غیور کے آگے
    منفعل فرِّ قیصرؔ و فغفورؔ

    ڈھال جس کی محافظِ اخیار
    تیغ جس کی عدوئے اہلِ شرور

    جس کے قدموں میں زندگی کی بہار
    جس کے دم سے ہے رنگ و بُو کا وفور

    وہ کہ ہے سوز و سازِ نبضِ حیات
    وہ کہ ہے غایتِ سنین و شہود

    وہ کہ ہے دولتِ دلِ مفلس
    وہ کہ ہے زورِ بازوئے مزدور

    اُس کی خدمت میں کچھ برنگِ غزل
    بہ امیدِ قبول و قرب و حضور
    ٭٭٭


    جی رہا ہوں مَیں اُس دیار سے دُور
    چارہ جُو جیسے چارہ کار سے دور

    ہوں سراپائے حسرتِ دیدار
    آج میں شہرِ شہریار سے دور

    آبجو کی طرح ہوں سر گرداں
    نکل آیا ہوں کوہسار سے دور

    اک بگولا ہوں دشتِ غربت میں
    قریۂ راحت و قرار سے دور

    اک گلِ حیرت و ملال ہوں
    مسکرایا ہوں شاخسار سے دور

    وہم ہوں، خواب ہوں، خیال ہوں میں
    بے حقیقت ہوں کوئے یار سے دور

    لب پہ آیا ہوا سوال ہوں میں
    محفل یارِ رازدار سے دور

    تیر کھایا ہوا غزال ہوں میں
    غمگسارانِ جانثار سے دور

    گم ہوں یادِ حبیبﷺ میں
    تائبؔفکرِ فردا کے خلفشار سے دور
    ٭٭٭


    پھر ہوا سازِ مدح زمزمہ سنج
    پھر ہوئی روح کیف سے معمور

    مٹ گئے فاصلے دل و جاں کے
    نہ رہا فرقِ ظاہر و مستور

    زہے الطافِ سیّدِؐ ابرار
    مطمئن ہو گیا دلِ رنجور

    زہے اکرامِ رحمتِؐ عالم
    محترم ہو گئے جو تھے مقہور

    امّئ نکتہ داں کی حکمت سے
    حل ہوئے سب مسائلِ جمہور

    آیۂ نور چہرۂ روشن
    کیوں نہ تابندہ ہوں شبِ دیجور

    دافعِ رنج و یاس و کرب و الم
    قاطعِ کفر و شرک و فسق و فجور

    محور و منتہائے فکر و نظر
    چارہ فرمائے خاطرِ مہجور

    راحت و اعتبارِ دیدۂ تر
    عظمت و اختیارِ ہر مجبور

    اُس کے اوصاف کا احاطہ کروں
    یہ کہاں تاب، یہ کہاں مقدور

    چارہ جُز اعترافِ عجز نہیں
    ذہن قاصر، شعور ہے معذور

    صلۂ مدحِ مصطفےٰﷺ چاہوں
    یہ نہیں میری طبع کو منظور

    کیا یہ اعزاز کم ہے میرے لئے
    نعتِ خیر الوریٰﷺ پہ مامور

    میرا ہر سانس ہے سپاس گزار
    اے خداوندِ فکر و فہم و شعور

    بہ تقاضائے دیدۂ بے تاب
    کچھ نہ کچھ مجھ کو مانگنا ہے ضرور

    سوچتا ہوں کہ تجھ سے کیا مانگوں
    اے خدائے کریم و ربِّ غیور

    میرا دامانِ آرزو محدود
    اور تیرا کرم ہے لا محصور

    ہاں خطا سے مری ہوں صرفِ نظر
    سعئ ناقص ہو مقبل و مشکور

    حرزِ جاں ہو مجھے ثنائے رسولﷺ
    رگ و پے میں ہو کیف و جذب و سرور

    لب رہیں ترجمانِ صدق و صفا
    دل ہو کذب و مبالغہ سے نفور

    قبر میری بحقِّ ختمِ رسلﷺ
    ہو فراخ و معنبر و پُر نور

    سائبانِ کرم ہوں سر پہ مرے
    سر میدانِ حشر، یومِ نشور

    آخرت کے سبھی مراحل میں
    میرے نزدیک تر ہوں حضورﷺ
    ٭٭٭​
     
    آخری تدوین: ‏جولائی 18, 2014
  4. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    التماسِ کرم بہ حضورِ تاجدارِؐ حرم

    اے مظہرِ لا یزال آقا
    سر تا بہ قدم جمال آقا

    وحشی ہے صرصرِ حوادث
    گرتا ہوں، مجھے سنبھال آقا

    دل دستِ فشار میں ہے ایسے
    جیسے کوئی یرغمال آقا

    رسمیں ہیں تمام جاہلانہ
    قدریں ہیں پائمال آقا

    اک وصف ہے انتہا پسندی
    اک عیب ہے اعتدال آقا

    دیکھا نہ تھا چشمِ آدمی نے
    اخلاص کا ایسا کال آقا

    اخلاق کا یہ کساد مولا
    انصاف کا یہ زوال آقا

    جاری ہے زیست کی رگوں میں
    زہرِ زر و سیم و مال آقا

    آتی ہے نظر سکوں کی مظہر
    صورت کوئی خال خال آقا

    جائیں تو کدھر کہ چار جانب
    فتنوں کے بچھے ہیں جال آقا

    اعصاب جواب دے چلے ہیں
    ہر شکل ہے اک سوال آقا

    بے صرفہ گزرتے جا رہے ہیں
    روز و شب و ماہ و سال آقا

    حالات سبھی ہیں بدلے بدلے
    ہر سانس ہُوا وبال آقا

    بے برگ ہوں، بے وقار ہوں میں
    بے ہمسر و بے مثال آقا

    میں غیر کے ہاتھ دیکھتا ہوں
    اے سر تا پا نوال آقا

    ہر سمت سے حسرتوں نے گھیرا
    ہوں آج شکستہ بال آقا

    ہو تیرے کرم سے مجھ کو شکوہ
    میری یہ کہاں مجال آقا

    گھبرا کے مصائب و فتن سے
    کی جرأتِ عرضِ حال آقا

    سینے کی جراحتوں کا تجھ بِن
    ممکن نہیں اندمال آقا

    دم گھٹنے لگا ہے تیرگی میں
    پھر جادۂ جاں اُجال آقا

    دریوزہ گرِ کرم رہا ہے
    فردا ہو کہ میرا حال آقا

    شاہا مرے جاں نواز شاہا
    آقا مرے خوش سگال آقا

    تو تیغ ہے جابروں کے حق میں
    تو ہر بیکس کی ڈھال آقا

    لرزاں تری عظمتوں کے آگے
    ذرّوں کی طرح جبال آقا

    بحر و بر و دشت پر ابھی تک
    طاری ہے ترا جلال آقا

    دیتا ہے سکوں دل و نظر کو
    ہر آن ترا خیال آقا

    اُمّت کو عروج پھر عطا ہو
    غم سے ہے بہت نڈھال آقا
    ٭٭٭​
     
  5. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    خوش خصال و خوش خیال و خوش خبر، خیر البشرﷺ


    خوش خصال و خوش خیال و خوش خبر، خیر البشرﷺ
    خوش نژاد و خوش نہاد و خوش نظر، خیر البشرﷺ

    دل نواز و دلپذیر و دل نشین و دلکشا
    چارہ ساز و چارہ کار و چارہ گر خیر البشرﷺ

    حسنِ فطرت، حسنِ موجودات، حسنِ کائنات
    نورِ ایقاں، نورِ جاں، نورِ بصر، خیر البشرﷺ

    سر بسر مہر و مروّت، سر بسر صدق و صفا
    سر بسر لطف و عنایت، سر بسر خیر البشرﷺ

    اعتدالِ دین و دنیا، اتصالِ جسم و جاں
    اندمالِ زخمِ ہر قلب و جگر، خیر البشرﷺ

    آفتابِ اوجِ خوبی، ماہتابِ برتری
    آب و تابِ چہرۂ شام و سحر خیر البشرﷺ

    ساحلِ بحرِ تمنّا، حاصلِ کشتِ وفا
    حاملِ قرآن و شمشیر و سپر خیر البشرﷺ

    صاحبِ خلقِ عظیم و صاحبِ لطفِ عمیم
    صاحبِ حق، صاحبِ شقّ القمر خیر البشرﷺ

    کارزارِ دہر میں وجہِ ظفر، وجہِ سکوں
    عرصۂ محشر میں وجہِ درگزر خیر البشرﷺ

    حدِّ فاصل خیر و شر کے درمیاں ذاتِ نبیﷺ
    شاہراہِ زندگی میں معتبر خیر البشرﷺ

    آدمی کے اوّلیں درد آشنا شاہِؐ ہدیٰ
    آگہی کے آخریں پیغامبر خیر البشرﷺ

    خیر ہر ذی روح کی خیر الوریٰﷺ، خیر الانامﷺ
    خیر ہر انسان کی خیر البشرﷺ، خیر البشرﷺ

    اپنی اُمّت کے برہنہ سر پہ رکھ شفقت کا ہاتھ
    پونچھ دے انسانیت کی چشمِ تر خیر البشرﷺ

    رُو نما کب ہو گا راہِ زیست پر منزل کا چاند
    ختم کب ہو گا اندھیروں کا سفر خیر البشرﷺ

    کب ملے گا ملّتِ بیضا کو پھر اوجِ کمال
    کب شبِ حالات کی ہو گی سحر خیر البشرﷺ

    خدمتِ اقدس میں یہ نذرِ عقیدت ہو قبول
    کیا سخن ور اور کیا عرضِ ہنر خیر البشرﷺ

    در پہ پہنچے کس طرح وہ بے نوا، بے بال و پر
    اک نظر تائبؔ کے حالِ زار پر خیر البشرﷺ
    ٭٭٭​
     

اس صفحے کی تشہیر