تبسم چمکی تھی کبھی جو ترے نقشِ کفِ پا سے

الف نظامی نے 'حمد، نعت، مدحت و منقبت' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 3, 2014

  1. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    17,495
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    رخشندہ ترے حُسن سے رُخسارِ یقیں ہے
    تابندہ ترے عشق سے ایماں کی جبیں ہے

    چمکا ہے تیری ذات سے اِنساں کا مقدر
    تُو خاتمِ کونین کا رخشندہ نگیں ہے

    چمکی تھی کبھی جو ترے نقشِ کفِ پا سے
    اب تک وہ زمیں چاند ستاروں کی زمیں ہے


    جس میں ہو تیرا ذِکر، وہی بزم ہے رنگیں
    جس میں ہو تیرا نام ، وہی بات حسیں ہے

    آنکھوں میں ہے اُس خُلقِ مُجسّم کا تصور
    اِک خُلدِ مُسرت میری نظروں کے قریں ہے

    (صوفی غلام مصطفیٰ تبسم)​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. الشفاء

    الشفاء لائبریرین

    مراسلے:
    2,949
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    جس میں ہو تیرا ذِکر، وہی بزم ہے رنگیں
    جس میں ہو تیرا نام ، وہی بات حسیں ہے

    واہ۔ سبحان اللہ۔۔۔:)
     
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر