پیروڈی: "ذکر اس پری وش کا اور پھر بیاں اپنا"

عاطف ملک نے 'مزاحیہ شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 8, 2020

  1. عاطف ملک

    عاطف ملک محفلین

    مراسلے:
    1,299
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Innocent
    (غالبؔ کی روح سے معذرت)

    "ذکر اس پری وَش کا اور پھر بیاں اپنا"
    لے کے آ گیا رائفل ذوالجلال خاں اپنا

    لکھا تھا مقدر میں اور امتحاں اپنا
    نکلا اس کا منگیتر، تھا جو رازداں اپنا

    ہم کہیں کا دانہ ہوں، اور نہ کوئی بھُٹا ہوں
    ہم سے دور ہی رکھو مطلبی زباں اپنا

    منزل اک بلندی پر اور ہم بنا لیتے
    بیسمنٹ میں لیکن ہے ابھی مکاں اپنا

    اس کے دل میں الفت کی لانڈرنگ کرانی ہے
    ہے ایان علی جیسا کوئی مہرباں اپنا؟

    اس کا اور مرا رشتہ عینؔ اس طرح کا ہے
    ہم ہے دردِ سر اس کا، اور وہ حرزِ جاں اپنا

    عینؔ میم
    اکتوبر ۲۰۲۰
     
    آخری تدوین: ‏اکتوبر 8, 2020
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  2. میم الف

    میم الف محفلین

    مراسلے:
    300
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    غالب کی روح سے اتنی معذرتیں مانگی گئی ہیں کہ اب وہ بہت شرمندہ ہو گئی ہو گی۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  3. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    209,797
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    ہاہاہا زبردست۔

    منظر اک بلندی پر اور ہم بنا لیتے
    بیسمنٹ میں لیکن ہے ابھی مکاں اپنا

    یہ "منظر" ہی ہے یا "منزل" ہونا چاہیے؟
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  4. عاطف ملک

    عاطف ملک محفلین

    مراسلے:
    1,299
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Innocent
    ہے تو کچھ ایسا ہی۔۔۔۔۔لیکن کیا کریں۔۔۔۔مزاحیہ شاعری کا زمرہ بھی تو فعال رکھنا ہے :p
    ہاہاہاہا۔۔۔
    یہ بھی اچھی صلاح دی:)
    مصرع تبدیل کر دیا ہے۔شکریہ:)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر