وحدت الوجود

شاکرالقادری نے 'تاریخ کا مطالعہ' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 13, 2006

  1. محمود احمد غزنوی

    محمود احمد غزنوی محفلین

    مراسلے:
    6,435
    موڈ:
    Torn
    یہاں مناسب معلوم ہوتا ہے کہ شیخ عبدالغنی العمری کی تحریر میں سے ایک اقتباس کا عربی ترجمہ پیش کیا جائے۔۔۔۔فرماتے ہیں :
    ہم پڑھنے والے سے ایک سوال پوچھتے ہیں لیکن جواب کے منتظر نہیں ہیں۔ مقصد یہ ہے کہ وہ اس پر ذرا غور کرے تاکہ اسے اپنے مرتبے کا علم ہوسکے ، تاکہ وہ اس مرتبے کے مطابق اپنا عمل رکھے، اور مھض تقلیدی طور پر سنی سنائی باتوں کے پیچھے نہ چلے۔ایسی سنی سنائی باتیں جنکی صحت کا اسےکوئی علم نہیں، اور نہ ہی اسے ان پر کوئی واضح برہان میسر آسکی۔ پس ہم کہتے ہیں کہ:
    ۔۔۔کیا تم موجود ہو؟ اور اگر تم موجود ہو، تو کیا تمہارا یہ وجود، وجودِ حق ہے یا اسکا غیر ہے؟
    ۔۔۔پس اگر تمہارا وجود، وجودِ حق کے سوا ہے (اسکا غیر ہے)، تو یہی تو شرکِ جلی ہے۔ اور اگر تمہارا وجود، وجودِ حق کا عین ہے، تو یہی وہ معنوی توحید ہے جسکی طرف لغت بھی اشارہ کرتی ہے۔ یعنی دو یا دو سے زائد کو ایک بنادینا۔
    ۔۔۔لیکن اس توحید کو کسی مضبوط برہان کی ضرورت ہے۔ کیونکہ اگر وجودِ حق تمہارے لئے ہے، تو بالفاظِ دگر تم نے اللہ سبحانہ و تعالیٰ کو عدم سے ملحق کردیا، جبکہ ایسا نہیں ہے۔کیونکہ وہ تمہیں محیط ہے، جبکہ تم اسے محیط نہیں ہو۔ کیونکہ یہ سب بات، وجود کی حیثیت سے کی جارہی ہے۔
    ۔۔۔لیکن اگر وجودِ حق اللہ کیلئے ہے، تو اسکا مطلب یہ ہوا کہ تم نے اپنے آپ کو عدم سے ملحق کردیا۔لیکن اگر تم معدوم ہو، تو مشہود کیسے ہوگئے؟
    ۔۔۔یا پھر یہ کے ذات کے دو اعتبارات ہیں، ایک وجود اور ایک عدم؟ پس اگر بات ایس ہے تو ایک موصوف دو متضاد صفتوں سے بیک وقت کیسے متصف ہوسکتا ہے؟ یا یہ کہ دو متضاد صفات ایک ہی مقام و محل پر کیسے وارد ہوسکتی ہیں؟
    ۔۔۔یا پھر یہ کہ وجود و عدم کا اکٹھا ہونا، محض ایک عقلی اور ذہنی بات ہے، جبکہ حقیقت میں یہ تضاد کوئی بنیاد نہیں رکھتا؟
    ۔۔۔پس اگر عدم مشہود ہوسکتا ہے تو ایک مشہود دوسرے مشہود سے کیسے ممتاز ہوسکتا ہے جبکہ دونوں کی حقیقت ایک ہی ہو (یعنی عدم)؟؟
    یہ ایسے سوالات ہیں کہ جنکا جواب سوائے عارف باللہ کے، اور کوئی نہیں دے سکتا۔ اور جو ایسی معرفت کا حامل نہیں ہے، اسے چاہئیے کہ توقف کرے اور ارکانِ ایمان کو خود پر لازم کرے۔ تاکہ اسکا دین اسکے نفس کے مقابلے میں اسکی حفاظت کرے۔ اور وہ ایسے کام میں مشغول ہو جو اسکے رب کے نزدیک اسکے لئے زیادہ فائدہ مند ہو۔ اور اسے جان لینا چاہئیے کہ توحید ایک جلیل القدر بات ہے، اور اس تک پہنچنا ایک بہت بڑی بات ہے۔ اور توحید کے حوالے سے کلام کی ابتداء تو ہے، لیکن انتہاء کوئی نہیں۔ پس اس بات سے کا دھیان رکھو کہ کہیں تمہاری توحید ، شرک نہ بن جائے۔ اور اللہ سبحانہ تعالیٰ ہی اسکی حقیقت اور بلندیوں سے خوب آگاہ ہے۔
    اور بندے کو چاہئیے کہ اپنے نفس پر شیطان کو تسلط پانے کا موقع نہ دے۔کیونکہ وہ ہر قلبی و بدنی عمل کی تاک میں رہتا ہے۔ اور قلیل لیکن یقینی باتیں، ان باتوں سے بہرحال بہتر ہیں جو اگر چہ کثیر ہوں، لیکن ظن و تخمین اور گمان پر مبنی ہوں۔
    ترجمہ ختم ہوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • متفق متفق × 1
  2. نایاب

    نایاب لائبریرین

    مراسلے:
    13,421
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Goofy
    محترم بھائی دلی معذرت غلطی ہوئی ۔ " آپ کا اقتباس " میرے سوال کو غلط جگہ پہنچا گیا ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. نایاب

    نایاب لائبریرین

    مراسلے:
    13,421
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Goofy
    بہت خوب حکیمانہ انداز کی نصیحت
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. تلمیذ

    تلمیذ لائبریرین

    مراسلے:
    3,914
    موڈ:
    Cool
    یہ بات اس اقتباس کا حاصل ہے۔ اور تمام مباحث میں اسے ملحوظ خاطر رکھنا چاہئے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • متفق متفق × 1
  5. عظیم اللہ قریشی

    عظیم اللہ قریشی محفلین

    مراسلے:
    2,588
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Tolerant
    خاصاں دی گل ، عاماں اگے ، نئیں مناسب کرنی مِٹھی کھیر پکا محمد، ،،،کُتیاں اگے دھرنی
    نایاب جی دیکھئے محمود احمد غزنوی جی بھی میاں محمد بخش صاحب سے اتفاق کرتے ہیں۔اور پھر ان لوگوں سے بات کرنا تو ہر خوشہ زخمانے والی بات ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. محمود احمد غزنوی

    محمود احمد غزنوی محفلین

    مراسلے:
    6,435
    موڈ:
    Torn
    درست فرمایا بابا جی۔۔۔لیکن اُس اقتباس سے ایک بات سامنے آئی کہ :
    وہ لوگ صریح طور پر شرکِ جلی میں مبتلا ہیں جو یہ کہتے ہیں کہ خدا وہاں ہے، ہم یہاں ہیں خدا یہاں نہیں۔۔اور یہ کہ خدا بھی ہے اور اسکے ساتھ ساتھ ہم بھی ہیں، ہونا ایک صفت ہے اور خدا بھی ہے، اسی طرح ہم بھی ہیں۔۔۔
    یہی تو شرک ہے۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,872
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    مجھے ایک بات یاد آ گئی کہ میرے دوست کی والدہ کہا کرتی تھیں "وہابیوں کو ہر جگہ غیر اللہ ہی نظر آتا ہے۔ اللہ کہیں نظر نہیں آتا۔" :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
    • متفق متفق × 2
  8. محمود احمد غزنوی

    محمود احمد غزنوی محفلین

    مراسلے:
    6,435
    موڈ:
    Torn
    بالکل ٹھیک کہا انہوں نے۔
    بات تو سچ ہے مگر بات ہے رسوائی کی
     
    • زبردست زبردست × 2
    • متفق متفق × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. شہزاد احمد

    شہزاد احمد مہمان

    "ہمہ اوست" کے فلسفے کو درست مانا جائے یا "ہمہ از اوست" کے فلسفے کو ۔۔۔ اس سے کچھ خاص فرق نہیں پڑتا ۔۔۔ بات تو نیت کی ہے ۔۔۔ راہِ توحید پر چلنے والے کبھی بھٹکتے نہیں ۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  10. عظیم اللہ قریشی

    عظیم اللہ قریشی محفلین

    مراسلے:
    2,588
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Tolerant
    محمود احمد غزنوی جی سرِ وحدت سے اتنی آشنائی اور عواملِ جمعیت سے اتنی آشنائی کہ انسان کثرات سے نکل کر جمع الجمع کے مقام تک رسائی حاصل کرلے بہت دشوار ہے جب کسی کو یہ مقام حاصل ہوجاتا ہے تو وہ ہر کسی کے سامنے اس مقام کا راز نہیں بیان کرسکتا ہے کیونکہ اس کے لیئے بڑی تربیت اور ازحد تہذیب نفس کی ضرورت ہوتی ہے اسی لیئے تو صوفیوں کو اہلِ راز کہا گیا ہے۔
    گفت پیغمبر کہ ہر کو سرَ نہفت
    زود باشد بمراد خویش جفت
    دانہ چوں اندر زمیں پنہاں شود
    سرِ آں سر سبزی بستاں شود
    رازِ عرفانی کے افشاء میں دو قباحتیں ہیں ایک تو اہل ظاہر اور بے مغز پوست پرستوں کی طرف سے اور دوسرے اپنے آپ کو عالم ظاہر کرنے والوں کی طرف سے ۔ یہ ظاہری جنگ و جدل کے زور پر استدلال کرنا چاہتے ہیں جب تک عقل کا قیاس نور عرفان سے منور نہ ہوجائے لاکھ عقل سر پٹکے حق تک اس کی رسائی ممکن نہیں۔
     
    • زبردست زبردست × 2
    • متفق متفق × 1
  11. باباجی

    باباجی محفلین

    مراسلے:
    3,869
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Curmudgeon
    واہ بجا فرمایا آپ نے سر جی
    پل پل آگ پہ گزرتا ہے ایک َ اہلِ راز کا
    کندن بننے کا عمل اتنا آسان نہیں ہے
    اور اس پر ٹینشن یہ ہوتی ہے کہ
    آگ ہو کر ، ٹھنڈک پہنچانے کا حکم ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  12. شعبان نظامی

    شعبان نظامی محفلین

    مراسلے:
    499
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
  13. محمود احمد غزنوی

    محمود احمد غزنوی محفلین

    مراسلے:
    6,435
    موڈ:
    Torn
    غالباّ یہ سعد اللہ جان برق کا کالم ہے؟
     
    • متفق متفق × 1
  14. عظیم اللہ قریشی

    عظیم اللہ قریشی محفلین

    مراسلے:
    2,588
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Tolerant
    یہ بھی بس ایسے ہی ہے۔ مضمون پر دسترس ہے نہیں سوفسطائیت پھیلانے والی بات ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  15. شہزاد احمد

    شہزاد احمد مہمان

    وحدت الوجود پر ہونے والی بحث "لایعنی" نہیں ہے ۔۔۔ خاص اور عام کا سوال اٹھایا جانا بھی سمجھ سے بالاتر ہے ۔۔۔ وحدت الوجود کا نظریہ ایسا باطل کب سے ہو گیا کہ اکیسویں صدی میں اس کا دفاع نہ کیا جا سکے ۔۔۔
     
    • زبردست زبردست × 1
    • متفق متفق × 1
  16. شہزاد احمد

    شہزاد احمد مہمان

    پچھلے دنوں پی ایچ ڈی کا ایک مقالہ پڑھنے کا اتفاق ہوا ۔۔۔ اقبال کا تصورِ حقیقتِ مطلق از محمد قمر اقبال ۔۔۔
    اس مقالے کے ایک باب میں صاحبِ مقالہ نے وحدت الوجود کے حوالے سے علامہ اقبال کے افکار کا نچوڑ پیش کیا ہے ۔۔۔ سوچا، کیوں نہ شیئر کر دیا جائے ۔۔۔

    وحدۃ الوجود کی جانب علامہ اقبال کے رجحانات سے متعلق جو حقائق سامنے آتے ہیں، انہیں اجمالاََ یوں بیان کیا جا سکتا ہے کہ:
    1۔ علامہ اقبال اپنے ابتدائی دور میں تقریباََ 1908ء تک وحدۃ الوجود کے قائل رہے۔ اس دور میں وہ نو فلاطونی، ویدانتی اور شنکر اچاریہ کے نظریہء وحدۃ الوجود کے قریب دکھائی دیتے ہیں۔
    2۔ علامہ قیامِ یورپ کے دوران مستشرقین کی کتب اور گفتگوؤں سے مستفیض ہوئے جو وحدۃ الوجود کی اصل ویدانت اور نوفلاطونیت کو قرار دیتے ہوئے اسے حلول اور اتحاد کا مترادف سمجھتے ہیں نیز قیامِ یورپ کے دوران اور وطن لوٹ کر علامہ نے ابنِ عربی اور وحدۃ الوجود کے نقادوں کی کتب کا مطالعہ کیا تو وہ وحدۃ الوجود کے مخالف ہو گئے اور 1910ء سے لگ بھگ 1922ء تک اس نظریے کو حلول اور اتحاد کا مترادف سمجھتے ہوئے، اس کی شدید مخالفت پر کمربستہ رہے۔ 'اسرارِ خودی' اور اس کے نتیجے میں ہونے والی قلمی معرکہ آرائی اس مخالفت کا نقطہء عروج ہے۔
    3۔ اس بحث و مباحثہ اور بعض بزرگوں اور علماء سے خط و کتابت اور گفت گو کے نتیجے میں علامہ غیر اسلامی اور اسلامی وحدۃ الوجود میں فرق کرنے لگے اور 'اسرارِ خودی' کے بعد بتدریج اسلامی وحدۃ الوجود کی جانب بڑھنے لگے اور بالآخر پوری طرح اس کے قائل ہو گئے۔
    4۔ اقبال نظریہء وحدۃ الوجود کو کچھ تحدیدات کے ساتھ قبول کرتے ہیں۔ وہ ذاتِ باری کو کائنات میں جاری و ساری تسلیم کرتے ہیں مگر حلول و اتحاد کے قائل نہیں۔ اسلام کے مقتدر وحدۃ الوجودی صوفیاء اور علماء بھی اس کے قائل نہیں۔
    5۔ اس طرح اقبال، انسانی انا کے انائے مطلق میں فنا کو ناممکن قرار دیتے ہوئے ہر صورت میں انائے انسانی کی بقا پر زور دیتے ہیں۔
    6۔ علامہ اقبال، ذات باری کے کائنات میں جاری و ساری ہونے کو تسلیم کرتے ہوئے اگر سریانیت کا اقرار کرتے ہیں تو ساتھ ہی وہ ذاتِ باری کی ماورائیت پر بھی زور دیتے ہیں۔ اسی لیے وہ ذاتِ باری کو 'فرد' اور 'انا' کہتے ہیں اور پھر 'فردِ کامل' اور 'انائے مطلق' قرار دے کر اس کی ماورائیت کا اقرار کرتے ہیں۔
    7۔ اقبال کا موقف یہ معلوم ہوتا ہے کہ یہ عالم، ذاتِ الٰہیہ کا عین تو نہیں مگر غیر بھی نہیں یعنی علامہ کا تصورِ وحدۃ الوجود لاعین اور لاغیر کے تصور پر قائم ہے۔
    8۔ حقیقتِ اصلیہ صرف اور صرف ایک ہے اور وہ ذاتِ باری یعنی حقیقتِ مطلقہ ہے۔ کائنات اور اس کی اشیاء و مظاہر اعتباری ہیں، یعنی اصل میں یہ کائنات تجلیء صفات یا ظہورِ ذات ہے، اس کی اپنی کوئی حیثیت نہیں۔
    میں کہاں ہوں تو کہاں ہے یہ مکاں کہ لامکاں ہے
    یہ جہاں ترا جہاں ہے ۔۔۔۔۔ کہ تری کرشمہ سازی
    9۔ اقبال کے تصورِ وحدۃ الوجود میں ذاتِ باری کے علاوہ انسان بھی موجود ہے مگر اس کا وجود ظلی ہے، اصلی نہیں اور وہ قائم بالذات نہیں۔
    10۔ نفسِ انسانی یا خودی، ذاتِ مطلق کے اظہار کی ایک کیفیت ہے، لہٰذا واجب اور ممکن دو متضاد الاصل یا متضاد النوع وجود نہیں۔
    11۔ وجود اگر مطلق ہے تو خدا ہے اور اگر وہی وجود متعین ہو جائے تو انسانی خودی ہے۔
    12۔ خودی بہ اعتبارِ وجود عین خدا ہے لیکن بااعتبارِ ذات وہ غیر خدا ہے۔ خودی بااعتبارِ وجود عین خدا ہونے سے اقبال کی مراد یہ ہے کہ انسانی خودی (انائے مقید) مطلق خودی (انائے مطلق) کا مظہر ہے کیوں کہ ان کے نزدیک ذات باری 'انا' ہے یعنی 'انائے مطلق' اور انا سے اناؤں ہی کا صدور ہوتا ہے۔ یقیناََ یہ عینیت، حلول یا اتحاد نہیں کیوں کہ اقبال کے نزدیک خدا اور انسان میں بلحاظِ ذات مغائرت پائی جاتی ہے، یعنی بندہ لاکھ ترقی کرے مگر خدا نہیں بن سکتا۔ خدا، خدا ہے اور بندہ، بندہ ہے۔ حقیقتاََ ابن عربی کا بھی یہی نظریہ ہے۔
    13۔ اقبال کے نزدیک، حقیقتِ مطلقہ کی تعبیر، استدامِ محض ہی کے طور پر ممکن ہے، جس میں فکر، حیات اور غایت باہم مدغم ہو کر ایک وحدتِ نامیہ کی شکل اختیار کر لیتے ہیں۔ علامہ حقیقتِ مطلقہ کا قیاس ایک خودی ۔۔۔ محیط بر کل خودی ۔۔۔۔ کی وحدت پر کرتے ہیں جو ہر فرد کی زندگی، مشیت اور فکر کا حقیقی سرچشمہ ہے۔
    دما دم رواں ہے یمِ زندگی
    ہر اک شے سے پیدا رمِ زندگی
    اسی سے ہوئی ہے بدن کی نمود
    کہ شعلے میں پوشیدہ ہے موجِ دود
    یہ ثابت بھی ہے اور سیار بھی
    عناصر کے پھندوں سے بیزار بھی
    یہ وحدت ہے کثرت میں ہر دم اسیر
    مگر ہر کہیں بے چگوں بے نظیر
    14۔ علامہ کا نظریہ وحدۃ الوجود، حضرت مجدد الف ثانی کے نظریہ وحدۃ الشہور کے قریب دکھائی دیتا ہے لیکن ان کے آخری دور کے وحدۃ الوجودی خیالات کی شیخ اکبر کے خیالات سے خاصی مماثلت پائی جاتی ہے۔ ویسے بھی وحدۃ الوجود اور وحدۃ الشہور میں محض نزاعِ لفظی ہے ورنہ دونوں کی حقیقت ایک ہی ہے۔
     
    • زبردست زبردست × 5
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. فرسان

    فرسان محفلین

    مراسلے:
    290
    وحدت الوجود بلا شبه انتهائي خواص لوگوں كے بس كي بات هے۔

    اس كو سمجھنے كيلئے تقريبا اتنے هي دم خم كي ضرورت هے جتنا كه تثليث كو سمجھنے كيلئے۔

    يعني خدا ايك هي هے مگر تين هے۔ ايك تين كيسے هو سكتا هے اس كے لئے علوم ومعارف سے بھری بحثيں آپ كو روم میں مل سكتي هیں۔
    مگر افسوس كه يه بحثيں صرف خواص كي سمجھ میں آسكتي ہیں۔

    علوم اور عقل اور برصغير میں حديث كي آمد كے بعد صوفيوں كو بھی ويسا هي وختا پڑا هے جيسا كه عيسائيت كو سائنس سے پڑا تھا۔

    لوگوں كو چلے چالیسويں اور درباروں كي خاك چھاننے پر لگا كر خود خواص بنے بيٹھے ہیں۔

    بجائے اس كے كه كسي كي خطا په اس كے لئے دعا كي جائے یہاں صديوں اس دفاع جاري رهتا هے۔

    كاش صوفي شيخ الطائفه كي سنهري نصيحت كو پلے باندھتے "عِلْمُنَا مَضْبُوطٌ بِالكِتَابِ وَالسُّنَّةِ، مَنْ لَمْ يَحْفَظِ الكِتَابَ وَيَكْتُبِ الحَدِيْثَ وَلَمْ يَتَفَقَّهْ، لاَ يُقْتَدَى بِهِ

    یہاں حديث و فقه كي الف با معلوم نهيں هوتي اور خواص بنے كا جي چراتا ہے۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  18. فرسان

    فرسان محفلین

    مراسلے:
    290
    تصوف كو خود ساتويں صدي كي تاريخي غلطي كي لونڈی بنا دينا خود تصوف كے ساتھ انتهائي بھیانک ظلم هوگا۔
     
  19. عظیم اللہ قریشی

    عظیم اللہ قریشی محفلین

    مراسلے:
    2,588
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Tolerant
    معذرت کے ساتھ صوفیوں کو کوئی وختہ نہیں پڑا ہے بلکہ صوفیاء الحمد للہ اب بھی موجودہ سائنس اور ٹیکنالوجی سے ہزارہا گنا اپڈگریٹڈ یعنی بتدریج آگے ہیں اتنی بلند و بالا کہ آپ جیسے بونے ان کو دیکھ بھی نہیں سکتے ہیں اور آپ کے ساتھ کوئی کیا بحث کرے کہ جس کی تبحر علمی کا اندازہ تو لفظ وختہ سے ہی ہوجاتا ہے کہ میرا مخاطب کتنا علم دان اور مہذب ہے ۔۔۔۔کسی سیانے نے سچ کہا ہے کہ انسان اپنی گفتگو سے پہچانا جاتا ہے۔ سو اپ پر یہ کہاوت صادق آتی ہے۔
     
    • متفق متفق × 2
  20. فرسان

    فرسان محفلین

    مراسلے:
    290
    حضرت شاه صاحب رحمه الله كو وجودي كهنے كے بارے میں احتياط اور تثبت سے كام لينا چاہیے۔

    شاه صاحب فرماتے ہیں "وقد وقع عندنا أن المكشوفين صحيحان جميعا"۔ شاه صاحب نے ايك نئي جهت دي هے۔

    اس مسئله میں شاه صاحب كي تحقيقات كا جائزه لينے كي فرصت مجھ میں سردست تو نهيں هے بهرحال وحدة الوجود كے اوپر حضرت شاه صاحب كے فرزند ارجمند كي توجيهات بھی ضرور سامنے ركھ كر كام كرنا چاہیے۔
     

اس صفحے کی تشہیر