1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $420.00
    اعلان ختم کریں
  2. اردو محفل سالگرہ چہاردہم

    اردو محفل کی یوم تاسیس کی چودہویں سالگرہ کے موقع پر تمام اردو طبقہ و محفلین کو دلی مبارکباد!

    اعلان ختم کریں

جون ایلیا نظم :ہجوِ معشوقان خود - جون ایلیا

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 18, 2018

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,050
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    ہجوِ معشوقان خود
    یہ جو معشوق ہیں مرے دو چار
    بدکنش ، بدکلام ، بد کردار
    کیسا بد صوت لفظ ہے معشوق
    ہے قوافی میں جس کے اک مغلوق
    یہ مرا جبر ہیں، ضرورت ہیں
    میں کہ نر ہوں یہ مادہ صورت ہیں
    خوب سے خوب تر؟ ارے توبہ
    جون اور جستجو کرے! توبہ
    جو خود آ جائے وہ لیلی ہے
    ہو، اگر اس کا رنگ میلا ہے
    نشے میں کاہلی کے مست ہوں میں
    کہیے،ذوق نظر میں پست ہوں میں
    ویسے میں بھی تو دیدہ زیب نہیں
    جسم میرا بھی دلفریب نہیں
    ہے مرا عکس ،زنگ آئینہ
    ہوں سراپا میں ننگ آئینہ
    پھر بھی اک مسئلہ تو رہتا ہے
    نہ کہوں میں پہ دل تو کہتا ہے
    جو بھی ہے اپنا دل ربا دلبر
    ایک بھی تو نہیں ہے خوش منظر
    جمع خاطر ہو کس طرح صاحب
    سب کے پستان تثنیہ غائب
    لوح تن کا ہے ان کی ناف بھی قاف
    ناف،تڑخا ہوا پیالہ ناف
    ہم کو پرچے لکھیں تو پرچوں میں
    دوسرے شاعروں کے شعر لکھیں
    کوئی تمیز ان کو ہے نہ شعور
    پاس آداب سے ہیں کوسوں دور
    ہم تو بس دل لگی کے کام کے ہیں
    یعنی شاعر تو صرف نام کے ہیں
    جن کے شعروں کی ہم سے داد اینٹھو
    جا کے ان کے ہی کوچے میں بیٹھو
    دل کی تعزیز ہے تمہارا شوق
    ہم بھی اب اس قدر نہیں بدذوق
    جون ایلیا
     
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر