تبسم نرالا ہے فقیروں کا مقامِ کج کلاہی بھی ۔ صوفی تبسم

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 22, 2017

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,826
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    نرالا ہے فقیروں کا مقامِ کج کلاہی بھی
    کہ اس کی آبرو سے اوج پر ہے تاجِ شاہی بھی

    عجب کیا خودہی آنکھوں میں سمٹ آئیں ترے جلوے
    عجب کیا کام آجائے یہ میری کم نگاہی بھی

    یہ آئینہ حریفِ تابِ جلوہ ہو نہیں سکتا
    مجھی پر چھوڑ دو یہ شیوۂ حیرت نگاہی بھی

    وفاداری بشرطِ استواری کی کسے فرصت
    غنیمت ہے کسی کی یہ نگاہِ گاہ گاہی بھی

    چلا جو دو قدم اپنے کو منزل آشنا سمجھا
    اسی رہ میں بھٹکتے رہ گئے رہبر بھی راہی بھی

    زباں کو کس طرح ہو حوصلہ گستاخ گوئی کا
    ابھی سیکھا نہیں اُس نے طریقِ عذر خواہی بھی

    ہجومِ حشر میں صرفِ ندامت ہو گئی آخر
    مری کفر آزمائی بھی، تری ایماں پناہی بھی

    تبسمؔ کس لیے افسردہ ہیں لیل و نہار اپنے
    وہی ہے روشنی ان کی، وہی شب کی سیاہی بھی

    (صوفی تبسم)
     

اس صفحے کی تشہیر