مژگاں تو کھول ۔از ۔ محمد احمدؔ

محمداحمد نے 'آپ کی طنزیہ و مزاحیہ تحریریں' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 2, 2016

  1. نیرنگ خیال

    نیرنگ خیال لائبریرین

    مراسلے:
    18,068
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    آپ دونوں بھائیوں کے مزاج سے کچھ آشنائی ہے۔ اس لیے جانتا ہوں کہ اس کو ہرگز طنز محسوس نہ کریں گے۔ اس بات سے معراج فیض آبادی کا ایک شعر بےساختہ یاد آگیا ہے۔۔۔
    فرصت کہاں کہ ذہن مسائل سے لڑ سکیں
    اس نسل کو کتاب نہ دے اقتباس دے
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. رومانہ چوہدری

    رومانہ چوہدری محفلین

    مراسلے:
    740
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Sassy
    ٹویٹر کے 140 الفاظ والے زمانے میں یہ تحریر داستان الف لیلیٰ سے کم نہیں لگ رہی ہے:)
    بہت خوب۔ اچھا لکھا ہے:)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    22,411
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    واہ۔۔۔۔!

    یعنی ہم کتابیں کھنگالتے رہیں اور اقتباسات نئی نسل کو ارسال کرتے رہیں۔ :) :) :)

    لیکن یہ نئی نسل اپنے سے اگلی نسل کو پھر کیا دے گی؟ کیا ہمارے دیے گئے اقتباسات سے مزید اقتباسات اخذ کیے جائیں گے؟ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    22,411
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    :)

    دراصل غفلت اور بیداری کی تاریخ اتنی وسیع و بسیط ہے کہ محض اجمالی جائزہ لینے پر بھی تحریر شیطان کی آنت کی مانند ہوگئی۔ :) شکر ہے کہ ہم تفصیل میں نہیں گئے۔ :) :) :)

    بہت شکریہ! آپ کے تبصرے اور وقت کا۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  5. نیرنگ خیال

    نیرنگ خیال لائبریرین

    مراسلے:
    18,068
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    اس نسل کے پاس جو کچھ دینے کو ہے۔۔۔ جس کی ترسیل دن رات بذریعہ فیس بک و ٹوئٹر ہو رہی ہے۔۔۔ اقبالی شاعری و جون کے اصلاحی اقوال کی صورت میں۔۔۔ بہتر ہے یہ کچھ دیے بغیر ہی نکل جائے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  6. نمرہ

    نمرہ محفلین

    مراسلے:
    602
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Paranoid
    آپ اتنے قدیم تو نہیں ہوئے کہ اس نسل کا اس طرح ذکر کریں :p
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  7. نمرہ

    نمرہ محفلین

    مراسلے:
    602
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Paranoid
    بہت اچھی تحریر ہے مگر اس کے اختتام میں لکھا ہونا چاہیے کہ اب سونے کی اجازت ہے۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  8. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    22,411
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    بقول شاعر:

    بڑھا دیتی ہیں عمروں کو نہ جانے یہ کتابیں کیوں
    میں چھوٹا تھا مگر سر پر کئی صدیوں کا سایہ تھا

    :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  9. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    22,411
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    اچھا!

    ہمارا تو خیال تھا کہ تحریر کے آخر تک آتے آتے اکثریت ویسے ہی سو گئی ہوگی۔ :) :) :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  10. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    22,411
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    بالکل بروقت پابندی لگائی ہے جناب نے۔ :) :) :)
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  11. نیرنگ خیال

    نیرنگ خیال لائبریرین

    مراسلے:
    18,068
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    ویسے میں نے اپنے آپ کو اسی طرح اس نسل سے نکالا تھاجیسے محمداحمد بھائی نے اس نسل سے بین السطور لاتعلقی کا اعلان کیا تھا۔۔۔ پکڑے جانے پر الفاظ واپس۔۔۔ مجھے بھی انہی میں شمار کیجیے۔ اگر نسل نو کو اعتراض نہ ہو۔۔ :p

    ثبوت بھی پیش خدمت ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  12. فاتح

    فاتح لائبریرین

    مراسلے:
    15,751
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    موضوع سے ہٹ کر: :)
    کن نیندوں اب تو سوتی ہے اے چشم گریہ ناک
    مژگاں تو کھول شہر کو سیلاب لے گیا
    میر​
    اصل شعر یہ ہے جس پر پروین شاکر نے گرہ لگائی اور گرہ بھی کیا لگائی ہے، چربہ کیا ہے۔
     
    • زبردست زبردست × 1
  13. توصیف یوسف مغل

    توصیف یوسف مغل محفلین

    مراسلے:
    413
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    اچھی باتیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  14. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    22,411
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    یہ شعر میر کا ہے اور اصلی ہے یہ تو کم و بیش سب ہی جانتے ہیں۔ :)

    تاہم پروین نے بھی سرقہ نہیں کیا ہے بلکہ اس مصرعِ طرح میں غزل کہی ہے اور اچھی غزل کہی ہے گرہ پر البتہ اُنہوں نے زیادہ محنت نہیں کی اور کم و بیش وہی معنی پہنا دیے بقول آپ کے چربہ کر دیا۔

    پروین نے میر کے شعر کے ساتھ وہی کیا جو غالب نے عبدالقادر بیدل کے درج ذیل شعر کے ساتھ کیا تھا۔

    بُوئے گُل، نالۂ دل، دودِ چراغِ محفل
    ہر کہ از بزمِ تو برخاست، پریشاں برخاست

    اب اگر کوئی اپنی تحریر میں غالب کا چربہ یا سرقہ شدہ شعر شامل کرے تو اُسے یہ یاد دلانا ضروری نہیں ہے کہ اصل شعر عبدالقادر بیدل کا ہے۔ :)
     
    آخری تدوین: ‏دسمبر 16, 2016
  15. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,564
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    دخل در معقولات کے لیے معذرت، کیا آپ کے پاس بیدل کا کوئی ایسا دیوان ہے جس میں یہ شعر مطبوعہ ہو۔ میں پچھلے آٹھ دس سال سے بیدل کے کلام میں یہ شعر ڈھونڈ رہا ہوں کہ جس کے سرقے کا الزام غالب کے سر دھرا جاتا ہے لیکن نہیں ملا۔ مزید برآں، اس سرقے کی بات بھی صرف (ایم بی بی ایس) ڈاکٹر تقی عابدی نے اپنی ایک کتاب میں کی ہے اور وہیں سے میں نے بھی اچکی تھی، جب بیدل کے کلیات ہاتھ لگے تو دنوں تک یہ شعر ڈھونڈتا رہا لیکن بیدل کے کلام میں نہیں ہے، ڈاکٹر صاحب کو ای میل کی کہ اپنے اس الزام کا ماخذ بتا دیں لیکن رسید بھی نہ ملی۔

    آخری بات یہ کہ گرہ والے مصرعے کو ہمیشہ واوین میں لکھا جاتا ہے ورنہ وہ کہنے والے کے کھاتے میں بطور سرقہ ہی چلا جاتا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  16. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    22,411
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    سچی بات تو یہ ہے کہ ہمارے پاس کوئی باقاعدہ حوالہ نہیں ہے۔ یہ بات ایک تنقید کی کتاب میں پڑھی تھی جس کا نام تھا بت خانہ شکستم من اس کے ایک مضمون میں غالب کے مختلف اشعار پر بات کی گئی تھی۔ مزید یہ کہ آپ کے بلاگ پر پڑھی تھی۔ :) بیدل کا دیوان تو ہم نے دیکھا بھی نہیں ہے۔ :)

    یہ بات ٹھیک ہے اس سلسلے میں احتیاط کی ضروررت ہے۔

    ویسے ہمارا قصور صرف اتنا ہے کہ اس تحریر سے کچھ عرصے پہلے پروین کی مذکورہ غزل پڑھی تھی۔ وہ غزل اچھی لگی سو دلچسپی کا باعث بھی بنی اور گرہ لگایا ہوا شعر بھی رواروی میں اس تحریر میں جگہ بنانے میں کامیاب ہو گیا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر