مرے دل مرے مسافر (کتاب) از فیض احمد فیض

فرخ منظور نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 5, 2012

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    دلِ من مسافرِ من

    مرے دل، مرے مسافر
    ہوا پھر سے حکم صادر
    کہ وطن بدر ہوں ہم تم
    دیں گلی گلی صدائیں
    کریں رُخ نگر نگر کا
    کہ سراغ کوئی پائیں
    کسی یارِ نامہ بر کا
    ہر اک اجنبی سے پوچھیں
    جو پتا تھا اپنے گھر کا
    سرِ کوئے ناشنایاں
    ہمیں دن سے رات کرنا
    کبھی اِس سے بات کرنا
    کبھی اُس سے بات کرنا
    تمھیں کیا کہوں کہ کیا ہے
    شبِ غم بُری بلا ہے
    ہمیں یہ بھی تھا غنیمت
    جو کوئی شمار ہوتا
    ہمیں کیا برا تھا مرنا
    اگر ایک بار ہوتا

    لندن 1978ء
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 1
  2. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    پھول مرجھا گئے سارے

    پھول مرجھا گئے ہیں سارے
    تھمتے نہیں ہیں آسماں کے آنسو
    شمعیں بے نور ہو گئی ہیں
    آئینے چور ہو گئے ہیں
    ساز سب بج کے کھو گئے ہیں
    پایلیں بُجھ کے سو گئی ہیں
    اور اُن بادلوں کے پیچھے
    دور اِس رات کا دلارا
    درد کا ستارا
    ٹمٹما رہا ہے
    جھنجھنا رہا ہے
    مسکرا رہا ہے

    لندن 1978ء
     
  3. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    کوئ عاشق کسی محبوبہ سے!

    گلشنِ یاد میں گر آج دمِ بادِ صبا
    پھر سے چاہے کہ گل افشاں ہو، تو ہو جانے دو
    عمرِ رفتہ کے کسی طاق پہ بسرا ہوا درد
    پھر سے چاہے کہ فروزاں ہو، تو ہو جانے دو
    جیسے بیگانے سے اب ملتے ہو، ویسے ہی سہی
    آؤ دو چار گھڑی میرے مقابل بیٹھو
    گر چہ مل بیٹھیں گے ہم تم، تو ملاقات کے بعد
    اپنا احساسِ زیاں اور زیادہ ہوگا
    ہم سخن ہوں گے جو ہم دونوں، تو ہر بات کے بیچ
    ان کہی بات کا موہوم سا پردہ ہوگا
    کوئی اقرار نہ میں یاد دلاؤں گا، نہ تم
    کوئ مضموں وفا کا ، نہ جفا کا ہوگا
    گرد ِایّام کی تحریر کو دھونے کے لیے
    تم سے گویا ہوں دمِ دید جو میری پلکیں
    تم جو چاہو تو سنو، اور جو نہ چاہو، نہ سنو
    اور جو حرف کریں مجھ سے گریزاں آنکھیں
    تم جو چاہو تو کہو اور جو نہ چاہو نہ کہو

    لندن 1978ء
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    دو غزلیں

    مخدوم کی یاد میں

    (1)
    "آپ کی یاد آتی رہی رات بھر"
    چاندنی دل دکھاتی رہی رات بھر

    گاہ جلتی ہوئی، گاہ بجھتی ہوئی
    شمعِ غم جھلملاتی رہی رات بھر

    کوئی خوشبو بدلتی رہی پیرہن
    کوئی تصویر گاتی رہی رات بھر

    پھر صبا سایہء شاخِ گُل کے تلے
    کوئی قِصہ سناتی رہی رات بھر

    جو نہ آیا اسے کوئی زنجیرِ در
    ہر صدا پربلاتی رہی رات بھر

    ایک امید سے دل بہلتا رہا
    اک تمنا ستاتی رہی رات بھر


    ماسکو، ستمبر 1978ء
     
    • زبردست زبردست × 1
  5. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    (2)

    "اسی انداز سے چل بادِ صبا آخرِ شب"

    یاد کا پھر کوئی دروازہ کھُلا آخرِ شب
    دل میں بکھری کوئی خوشبوئے قبا آخرِ شب

    صبح پھوٹی تو وہ پہلو سے اُٹھا آخرِ شب
    وہ جو اِک عمر سے آیا نہ گیا آخرِ شب

    چاند سے ماند ستاروں نے کہا آخرِ شب
    کون کرتا ہے وفا، عہدِ وفا آخرِ شب

    لمسِ جانانہ لیے، مستیِ پیمانہ لیے
    حمدِ باری کو اٹھے دستِ دعا آخرِ شب

    گھر جو ویراں تھا سرِ شام وہ کیسے کیسے
    فرقتِ یاد نے آباد کیا آخرِ شب

    جس ادا سے کوئی آیا تھا کبھی اوؐلِ شب
    "اسی انداز سے چل بادِ صبا آخرِ شب"

    ماسکو اکتوبر، 1978ء
     
    • زبردست زبردست × 1
  6. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    ایک دکؐنی غزل

    کچھ پہلے اِن آنکھوں آگے کیا کیا نہ نظارا گزرے تھا
    کیا روشن ہو جاتی تھی گلی جب یار ہمارا گزرے تھا

    تھے کتنے اچھے لوگ کہ جن کو اپنے غم سے فرصت تھی
    سب پو چھیں تھے احوال جو کوئی درد کا مارا گزرے تھا

    اب کے خزاں ایسی ٹھہری وہ سارے زمانے بھول گئے
    جب موسمِ گُل ہر پھیرے میں آ آ کے دوبارا گزرے تھا

    تھی یاروں کی بہتات تو ہم اغیار سے بھی بیزار نہ تھے
    جب مل بیٹھے تو دشمن کا بھی ساتھ گوارا گزرے تھا

    اب تو ہاتھ سجھائی نہ دیوے، لیکن اب سے پہلے تو
    آنکھ اٹھتے ہی ایک نظر میں عالمَ سارا گزرے تھا



    ماسکو اکتوبر 1978ء
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,209
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ابھی دیکھا تو معلوم ہوا کہ یہ کتاب مکمل نہیں ہوئی ہے۔ اس کو مکمل کرنے کی کوئی سبیل؟ کیا اجتماعی کام کیا جا سکتا ہے؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. عائشہ عزیز

    عائشہ عزیز لائبریرین

    مراسلے:
    33,860
    موڈ:
    Twisted
    کیوں نہیں بابا جانی
    آپ اس کے اسکین پیجز بتائیے تاکہ ہم لوگ کام شروع کریں۔
     
    • متفق متفق × 1
  9. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,209
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
  10. عائشہ عزیز

    عائشہ عزیز لائبریرین

    مراسلے:
    33,860
    موڈ:
    Twisted
  11. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    منظر

    آسماں آج اِک بحرِ پُر شور ہے
    جس میں ہر سُو رواں بادلوں کے جہاز
    ان کے عر شے پہ کرنوں کے مستول ہیں
    بادبانوں کی پہنے ہوئے فرغلیں
    نیل میں گنبدوں کے جزیرے کئی
    ایک بازی میں مصروف ہے ہر کوئی
    ابابیل کوئی نہاتی ہوئی
    کوئی چیل غوطے میں جاتی ہوئی
    کوئی طاقت نہیں اس میں زور آزما
    کوئی بیڑا نہیں ہے کسی ملک کا
    اِس کی تہ میں کوئی آبدوزیں نہیں
    کوئی راکٹ نہیں، کوئی توپیں نہیں
    یوں تو سارے عناصر ہیں یاں زور میں
    امن کتنا ہے اِس بحرِ پُرشور میں

    سمرقند، مارچ 78
     
  12. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    دو نظمیں
    قفقار کے شاعر قاسن علی سے ماخوذ

    (۱)
    ہر اک دور میں ہر زمانے میں ہم
    زہر پیتے رہے، گیت گاتے رہے
    جان دیتے رہے زندگی کے لیے
    ساعتِ وصل کی سرخوشی کے لیے
    فقر و فاقہ کا توشہ سنبھالے ہوئے
    جو بھی رستہ چنا اس پہ چلتے رہے
    مال والے حقارت سے تکتے رہے
    طعن کرتے رہے ہاتھ ملتے رہے
    ہم نے اُن پر کیا حرفِ حق سنگ زن
    جن کی ہبیت سے دنیا لرزتی رہی
    جن پہ آنسو بہانے کو کوئی نہ تھا
    اپنی آنکھ ان کے غم میں برستی رہی
    سب سے اوجھل ہوئے حکمِ حاکم پہ ہم
    قید خانے سہے، تازیانے سہے
    لوگ سنتے رہے سازِ دل کی صدا
    اپنے نغمے سلاخوں سے چھَنتے رہے
    خونچکاں دہر کا خونچکاں آئینہ
    دکھ بھری خلق کا دکھ بھرا دل ہیں ہم
    طبعِ شاعر ہے جنگاہِ عدل و ستم
    منصفِ خیر و شر، حق و باطل ہیں ہم​
     
  13. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    (۲)

    شوپیں* کا نغمہ بجتا ہے

    چھلنی ہے اندھیرے کا سینہ، برکھا کے بھالے برسے ہیں
    دیواروں کے آنسو ہیں رواں، گھر خاموشی میں ڈوبے ہیں
    پانی میں نہائے ہیں بوٹے
    گلیوں میں ہُو کا پھیرا ہے
    شوپیں کا نغمہ بجتا ہے

    اِک غمگیں لڑکی کے چہرے پر چاند کی زردی چھائی ہے
    جو برف گری تھی اِس پہ لہو کے چھینٹوں کی رُشنائی ہے
    خوں کا ہر داغ دمکتا ہے
    شوپیں کا نغمہ بجتا ہے

    کچھ آزادی کے متوالے ، جاں کف پہ لیے میداں میں گئے
    ہر سُو دشمن کا نرغہ تھا، کچھ بچ نکلے، کچھ کھیت رہے
    عالم میں اُن کا شہرہ ہے
    شوپیں کا نغمہ بجتا ہے

    اِک کونج کو سکھیاں چھوڑ گئیں آکاش کی نیلی راہوں میں
    وہ یاد میں تنہا روتی تھی، لپٹائے اپنی باہوں میں
    اِک شاہیں اس پر جھپٹا ہے
    شوپیں کا نغمہ بجتا ہے

    غم نے سانچے میں ڈھالا ہے
    اِک باپ کے پتھر چہرے کو
    مردہ بیٹے کے ماتھے کو
    اِک ماں نے رو کر چوما ہے
    شوپیں کا نغمہ بجتا ہے

    پھر پھولوں کی رُت لوٹ آئی
    اور چاہنے والوں کی گردن میں جھولے ڈالے باہوں نے
    پھر جھرنے ناچے چھن چھن چھن
    اب بادل ہے نہ برکھا ہے
    شوپیں کا نغمہ بجتا ہے

    ماسکو 79ء
    -------------------------
    * شوپیں Chopin پولینڈ کا ممتاز نغمہ ساز
     
  14. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    ہم دیکھیں گے
    لازم ہے کہ ہم بھی دیکھیں گے
    وہ دن کہ جس کا وعدہ ہے
    جو لوحِ ازل میں لکھا ہے
    جب ظلم و ستم کے کوہ گراں
    روئی کی طرح اڑ جائیں گے
    ہم محکوموں کے پاؤں تلے
    یہ دھرتی دھڑدھڑدھڑکے گی
    اور اہلِ حکم کے سر اوپر
    جب بجلی کڑ کڑ کڑکے گی
    جب ارضِ خدا کے کعبے سے
    سب بت اٹھوائے جائیں گے
    ہم اہلِ صفا، مردودِ حرم
    مسند پہ بٹھائے جائیں گے
    سب تاج اچھالے جائیں گے
    سب تخت گرائے جائیں گے
    بس نام رہے گا اللہ کا
    جو غائب بھی ہے حاضر بھی
    جو منظر بھی ہے ناظر بھی
    اٹھے گا انا الحق کا نعرہ
    جو میں بھی ہوں اور تم بھی ہو
    اور راج کرے گی خلقِ خدا
    جو میں بھی ہوں اور تم بھی ہو

    امریکہ، جنوری 1979ء
     
    آخری تدوین: ‏جولائی 20, 2017
  15. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    لاؤ تو قتل نامہ مرا

    سننے کو بھیڑ ہے سرِ محشر لگی ہوئی
    تہمت تمہارے عشق کی ہم پر لگی ہوئی
    رندوں کے دم سے آتشِ مے کے بغیر بھی
    ہے مے کدے میں آگ برابر لگی ہوئی
    آباد کرکے شہرِ خموشاں ہر ایک سو
    کس کھوج میں ہے تیغِ ستمگر لگی ہوئی
    آخر کو آج اپنے لہو پر ہوئی تمام
    بازی میانِ قاتل و خنجر لگی ہوئی
    لاؤ تو قتل نامہ مرا میں بھی دیکھ لوں
    کس کس کی مہر ہے سرِ محضر لگی ہوئی

     
  16. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    غزل

    سہل یوں راہِ زندگی کی ہے
    ہر قدم ہم نے عاشقی کی ہے

    ہم نے دل میں سجا لیے گلشن
    جب بہاروں نے بے رُخی کی ہے

    زہر سے دھو لیے ہیں ہونٹ اپنے
    لطفِ ساقی نے جب کمی کی ہے

    تیرے کوچے میں بادشاہی کی
    جب سے نکلے گداگری کی ہے

    بس وہی سرخرو ہوا جس نے
    بحرِ خوں میں شناوری کی ہے

    "جو گزرتے تھے داغ پر صدمے"
    اب وہی کیفیت سبھی کی ہے

    لندن 79ء
     
  17. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    تین آوازیں

    ظالم

    جشن ہے ماتمِ امّید کا آؤ لوگو
    مرگِ انبوہ کا تہوار مناؤ لوگو
    عدم آباد کو آباد کیا ہے میں نے
    تم کو دن رات سے آزاد کیا ہے میں نے
    جلوۂ صبح سے کیا مانگتے ہو
    بسترِ خواب سے کیا چاہتے ہو
    ساری آنکھوں کو تہ تیغ کیا ہے میں نے
    سارے خوابوں کا گلا گھونٹ دیا ہے میں نے
    اب نہ لہکے گی کسی شاخ پہ پھولوں کی حنا
    فصلِ گُل آئے گی نمرود کے انگار لیے
    اب نہ برسات میں برسے گی گہر کی برکھا
    ابر آئے گا خس و خار کے انبار لیے
    میرا مسلک بھی نیا راہِ طریقت بھی نئی
    میرے قانوں بھی نئے میری شریعت بھی نئی
    اب فقیہانِ حرم دستِ صنم چومیں گے
    سرو قد مٹی کے بونوں کے قدم چومیں گے
    فرش پر آج درِ صدق و صفا بند ہوا
    عرش پر آج ہر اِک بابِ دعا بند ہوا
    ۔۔۔۔۔۔۔
    مظلوم

    رات چھائی تو ہر اک درد کے دھارے چھوٹے
    صبح پھوٹی تو ہر اک زخم کے ٹانکے ٹوٹے
    دوپہر آئی تو ہر رگ نے لہو برسایا
    دن ڈھلا، خوف کا عفریت مقابل آیا
    یا خدا یہ مری گردانِ شب و روز و سحر
    یہ مری عمر کا بے منزل و آرام سفر
    کیا یہی کچھ مری قسمت میں لکھا ہے تو نے
    ہر مسرت سے مجھے عاق کیا ہے تو نے
    وہ یہ کہتے ہیں تو خوشنود ہر اک ظلم سے ہے
    وہ یہ کہتے ہیں ہر اک ظلم ترے حکم سے ہے
    گر یہ سچ ہے تو ترے عدل سے انکار کروں؟
    ان کی مانوں کہ تری ذات کا اقرار کروں؟
    ۔۔۔۔۔۔
    ندائے غیب

    ہر اِک اُولیِ الامر کو صدا دو
    کہ اپنی فردِ عمل سنبھالے
    اُٹھے گا جب جَمِّ سرفروشاں
    پڑیں گے دارو رَسن کے لالے
    کوئی نہ ہوگا کہ جو بچا لے
    جزا سزا سب یہیں پہ ہوگی
    یہیں عذاب و ثواب ہوگا
    یہیں سے اُٹھے گا شورِ محشر
    یہیں پہ روزِ حساب ہوگا

    سمرقند، مئی 79
     
  18. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    یہ ماتمِ وقت کی گھڑی ہے

    ٹھہر گئی آسماں کی ندیا
    وہ جا لگی افق کنارے
    اداس رنگوں کی چاندنیّا
    اتر گئے ساحلِ زمیں پر
    سبھی کھویّا
    تمام تارے
    اکھڑ گئی سانس پتیوں کی
    چلی گئیں اونگھ میں ہوائیں
    گجر بچا حکمِ خامشی کا
    تو چپ میں گم ہوگئی صدائیں
    سحر کی گوری کی چھاتیوں سے
    ڈھلک گئی تیرگی کی چادر
    اور اس بجائے
    بکھر گئے اس کے تن بدن پر
    نراس تنہائیوں کے سائے
    اور اس کو کچھ بھی خبر نہیں ہے
    کسی کو کچھ بھی خبر نہیں ہے
    کہ دن ڈھلے شہر سے نکل کر
    کدھر کو جانے کا رخ کیا تھا
    نہ کوئی جادہ، نہ کوئی منزل
    کسی مسافر کو اب دماغِ سفر نہیں ہے
    یہ وقت زنجیرِ روز و شب کی
    کہیں سے ٹوٹی ہوئی کڑی ہے
    یہ ماتمِ وقت کی گھڑی ہے

    یہ وقت آئے تو بے ارادہ
    کبھی کبھی میں بھی دیکھتا ہوں
    اتار کر ذات کا لبادہ
    کہیں سیاہی ملامتوں کی
    کہیں پہ گل بوٹے الفتوں کے
    کہیں لکیریں ہیں آنسوؤں کی
    کہیں پہ خونِ جگر کے دھبّے
    یہ چاک ہے پنجۂ عدو کا
    یہ مہر ہے یارِ مہرباں کی
    یہ لعل لب ہائے مہوشاں کے
    یہ مرحمت شیخِ بد زباں کی

    یہ جامۂ روز و شب گزیدہ
    مجھے یہ پیراہن دریدہ
    عزیز بھی، ناپسند بھی ہے
    کبھی یہ فرمانِ جوشِ وحشت
    کہ نوچ کر اس کو پھینک ڈالو
    کبھی یہ اصرارِحرفِ الفت
    کہ چوم کر پھر گلے لگا لو

    تاشقند، 79ء
     
    آخری تدوین: ‏جنوری 25, 2018
  19. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    ہم تو مجبورِ وفا ہیں

    تجھ کو کتنوں کا لہو چاہیے اے ارضِ وطن
    جو ترے عارضِ بے رنگ کو گلنار کرے
    کتنی آہوں سے کلیجہ ترا ٹھنڈا ہو گا
    کتنے آنسو ترے صحراؤں کو گلزار کریں

    تیرے ایوانوں میں پرزے ہوے پیماں کتنے
    کتنے وعدے جو نہ آسودۂ اقرار ہوے
    کتنی آنکھوں کو نظر کھا گئی بدخواہوں کی
    خواب کتنے تری شاہراہوں میں سنگسار ہوے

    "بلاکشانِ محبت پہ جو ہوا سو ہوا
    جو مجھ پہ گزری مت اس سے کہو، ہوا سو ہوا
    مبادا ہو کوئی ظالم ترا گریباں گیر
    لہو کے داغ تو دامن سے دھو، ہوا سو ہوا" ٭

    ہم تو مجبورِ وفا ہیں مگر اے جانِ جہاں
    اپنے عشّاق سے ایسے بھی کوئی کرتا ہے
    تیری محفل کو خدا رکھے ابد تک قائم
    ہم تو مہماں ہیں گھڑی بھر کے، ہمارا کیا ہے
     
  20. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    سبھی کچھ ہے تیرا دیا ہوا، سبھی راحتیں سبھی کلفتیں
    کبھی صحبتیں کبھی فرقتیں، کبھی دوریاں کبھی قربتیں

    یہ سخن جو ہم نے رقم کیے، یہ ہیں سب ورق تری یاد کے
    کوئی لمحہ صبحِ وصال کا کئی شامِ ہجر کی مدتیں

    جو تمہاری مان لیں ناصحا، تو رہے گا دامنِ دل میں کیا
    نہ کسی عدو کی عداوتیں، نہ کسی صنم کی مروّتیں

    چلو آؤ تم کو دکھائیں ہم، جو بچا ہے مقتلِ شہر میں
    یہ مزار اہلِ صفا کے ہیں، یہ ہیں اہلِ صدق کی تربتیں

    مری جان، آج کا غم نہ کر، کہ نہ جانے کاتبِ وقت نے
    کسی اپنے کل میں بھی بھول کر کہیں لکھ رکھی ہوں مسرتیں

    بیروت، 79 ؁
     

اس صفحے کی تشہیر