مثلِ آئینہ باصفا ہیں ہم ۔ جرأت

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 3, 2012

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,661
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    مثلِ آئینہ باصفا ہیں ہم
    دیکھنے ہی کے آشنا ہیں ہم

    نہیں دونوں جہاں سے کام ہمیں
    اِک فقط تیرے مبتلا ہیں ہم

    دیکھ سائے کی طرح اے پیارے!
    ساتھ تیرے ہیں اور جدا ہیں ہم

    ٹک تو کر رحم اے بتِ بے رحم
    آخرش بندۂ خدا ہیں ہم

    ظلم پر اور ظلم کرتے ہو
    اس قدر قابلِ جفا ہیں ہم؟

    جوں صبا نام کو تو ہیں ہم لوگ
    لیک دیکھا تو جا بہ جا ہیں ہم

    زلفیں کہتی ہیں اُس کی، عاشق کے
    مار لینے کو تو بلا ہیں ہم

    جب سے پیدا ہوئے ہیں جوں افلاک
    آہ! گردش ہی میں سدا ہیں ہم

    ہم بھی کچھ چیز ہیں میاں لیکن
    یہ نہیں جانتے کہ کیا ہیں ہم

    قطعہ
    شعلۂ ناتوان کی مانند
    ہاتھ میں تیرے اے صبا ہیں ہم

    گر یہی ہے ہوا یہاں کی تو آہ!
    اب کوئی آن میں ہوا ہیں ہم

    قطعۂ ثانی
    تُو جو کہتا ہے ہر گھڑی تیرے
    دیکھنے سے بہت خفا ہیں ہم

    کیا کریں یار تو ہی کر انصاف
    تجھ پہ مائل نہیں ہیں یا ہیں ہم

    دل کے ہاتھوں سے اے میاں جرأت
    زندگانی سے بھی خفا ہیں ہم

    (شیخ قلندر بخش جرأت)
     
    • زبردست زبردست × 1
  2. طارق شاہ

    طارق شاہ محفلین

    مراسلے:
    10,618
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    تُو جو کہتا ہے ہر گھڑی تیرے
    دیکھنے سے بہت خفا ہیں ہم

    کیا کریں یار تو ہی کر انصاف
    تجھ پہ مائل نہیں ہیں یا ہیں ہم

    بہت عمدہ جناب!
    تشکّر شریکِ لطف کرنے پر
    بہت شاد رہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,661
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    بہت نوازش طارق صاحب!
     
  4. امیداورمحبت

    امیداورمحبت محفلین

    مراسلے:
    3,058
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    بہت خوب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,661
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    بہت شکریہ!
     

اس صفحے کی تشہیر