لہو میں تر۔۔۔ شکیب جلالی

الف عین نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 12, 2007

  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    گریز پا


    دھیرے دھیرے گر رہی تھیں نخلِ شب سے چاندنی کی پتّیاں
    بہتے بہتے ابر کا ٹکڑا کہیں سے آ گیا تھا درمیاں
    ملتے ملتے رہ گئی تھیں مخملیں سبزے پہ دو پرچھائیاں
    جس طرح پینے کے جھولے سے کوئی اندھے کنویں میں جا گِرے
    ناگہاں کجلا گئے تھے شرمگیں آنکھوں کے نورانی دئے
    جس طرح شورِ جرس سے کوئی واماندہ مسافر چونک اُٹھے
    یک بیک گھبرا کے وہ نکلی تھی میرے بازوؤں کی قید سے
    لب سلگتے رہ گئے تھے، چھن گیا تھا جام بھی
    اور میری بے بسی پر ہنس پڑی تھی چاندنی
    آج تک احساس کی چلمن سے الجھا ہے یہ مبہم سا سوال
    اس نے آخر کیوں بُنا تھا بہکی نظروں سے حسیں چاہت کا جال
     
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    دلاسہ

    ہم ملے کب تھے
    جدائی پر جو ہوں ویراں نگاہ و غم بجاں
    ہات میں ہو نرم ہات
    لب ہوں لب پر مہرباں
    اس پہ کیا موگوف ہے ربطِ بہم کی داستاں
     
  3. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    رہگزارِ خاک پر


    دور سے دو رویہ پیڑوں کی قطاریں
    لاکھ آتی ہوں نظر
    اپنے سر جوڑے ہوئے
    درمیاں ان کے مگر
    کب نہ حائل تھا غبارِ رہگزر
    ہم ملے کب تھے
    جدائی پر جو ہوں ویراں نگاہ و چشمِ تر
     
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    چھت کی تلاش

    یہاں درخت کے اوپر اُگا ہوا ہے درخت
    زمین تنگ ہے (جیسے کبھی فراخ نہ تھی)
    ہوا کا کال پڑا ہے (نمی بھی عام نہین)
    سمندروں کو بِلو کر، فضاؤں کو مَتھ کر
    جنم دئے ہیں اگر چند ابر کے ٹکڑے
    جھپٹ لیا ہے انھیں یوں دراز شاخوں نے
    کہ نیم جان تنے کو ذرا خبر نہ ہوئی
    جڑیں بھی خاک تلے ایک ہی لگن میں رواں
    نی تیرگی سے مفر ہے، نہ روشنی کا سوال
    زمیں میں پاؤں دھنسے ہیں، فضا میں ہات بلد
    نئی جہت کا لگے اب درخت میں پیوند
     
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    سفیر

    میں روشنی کا مُغنّی کرن کرن کا سفیر
    وہ سیلِ مہ سے کہ رودِ شرار سے آئے
    وہ جامِ مے سے کہ چشمِ نگار سے آئے
    وہ موجِ باد سے یا آبشار سے آئے
    وہ دستِ گل سے کہ پائے فگار سے آئے
    وہ لوحِ جاں سے کہ طاقِ مزار سے آئے
    وہ قصرِ خواب سے یا خاک زار سے آئے
    وہ برگِ سبز سے یا چوبِ دار سے آئے

    جہاں کہیں ہو دلِ داغ دار کی تنویر
    وہیں کھلیں مری بانہیں، وہیں کٹے زنجیر
     

اس صفحے کی تشہیر