لہو میں تر۔۔۔ شکیب جلالی

الف عین نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 12, 2007

  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    مانندِ صبا جدھر گئے ہم
    کلیوں کو نہال کر گئے ہم
    زنجر بپا اگر گئے ہم
    نغموں کی طرح بکھر گئےہم
    سورج کی کرن تھے جانے کیا تھے
    ظلمت میں اُتر اُتر گئے ہم
    جب بھی کوئی سنگِ راہ دیکھا
    طوفاں کی طرح بپھر گئے ہم
    چلنا تھا جہاں محال یارو
    اس راہ سے بھی گزر گئے ہم
    بن جائیں گی منزلیں وہیں پر
    بھولے سے جہاں ٹھہر گئے ہم
    ہنس ہنس کے گلے ملے قضا سے
    تکمیلِ حیات کر گئے ہم
     
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ہم ہیں آج پھر ملول یارو
    مرجھا گئے کھِل کے پھول یارو
    گزرے ہیں خزاں نصیب ادھر سے
    پیڑوں پہ جمی ہے دھول یارو
    تا حدِّ خیال لالہ و گُل
    تا حدِّ نظر ببول یارو
    جب تک کہ ہوس رہی گُلوں کی
    کانٹے بھی رہے قبول یارو
    ہاں کوئی خطا نہیں تمھاری
    ہاں ہم سے ہوئی ہے بھول یارو
     
  3. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    کوئی دیکھے تو سہی یار طر حدا رکا شہر
    میری آنکھوں میں سجا ہے لب و رخسار کا شہر
    دشت احساس میں شعلہ سا کوئی لپکا تھا
    اسی بنیاد پہ تعمیر ہوا پیار کا شہر
    اس کی ہر بات میں ہوتا ہے کسی بھید کا رنگ
    وہ طلسمات کا پیکر ہے کہ اسرار کا شہر
    میری نظروں میں چراغاں کا سماں رہتا ہے
    میں کہیں جاؤں مرے ساتھ ہے دلدار کا شہر
    یوں تری گرم نگاہی سے پگھلتے دیکھا
    جس طرح کا نچ کا گھر ہو مرے پندار کا شہر
    دل کا آفاق سمٹتا ہی چلا جاتا ہے
    اور پھیلے گا کہاں تک در و دیوار کا شہر
    مسکراتے رہیں سینے کے دہکتے ہوئے داغ
    دائم آباد رہے درد کی سرکار کا شہر
     
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    خموشی بول اٹھے، ہر نظر پیغام ہوجائے
    یہ سناٹا اگر حد سے بڑھے کہرام ہوجائے
    ستارے مشعلیں لے کر مجھ بھی ڈھونڈنے نکلیں
    میں رستہ بھول جاؤں، جنگلوں میں شام ہوجائے
    میں وہ آدم گزیدہ ہوں جو تنہائی کے صحرا میں
    خود اپنی چاپ سن کر لرز براندام ہوجائے
    مثال ایسی ہے اس دور ِخرد کے ہوش مندوں کی
    نہ ہو دامن میں ذرّہ اور صحرا نام ہوجائے
    شکیبؔ اپنے تعارف کیلئے یہ بات کافی ہے
    ہم اس سے بچ کے چلتے ہیں جو رستہ عام ہوجائے
     
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    [FONT=&quot]دیکھتی رہ گئی محرابِ حرم[/FONT]
    [FONT=&quot]ہائے انسان کی انگڑائی کا خم[/FONT]
    [FONT=&quot]جب بھی اوہام مقابل آئے[/FONT]
    [FONT=&quot]مثلِ شمشیر چلی نوکِ قلم[/FONT]
    [FONT=&quot]پرِ پرواز پہ یہ راز کھُلا[/FONT]
    [FONT=&quot]پستیوں سے تھا بلندی کا بھرم[/FONT]
    [FONT=&quot]غم کی دیوار گری تھی جن پر[/FONT]
    [FONT=&quot]ہم وہ لوگ ہیں اے قصرِ اِرم[/FONT]
    [FONT=&quot]چاندنی غارۂ پائے جولاں[/FONT]
    [FONT=&quot]کہکشاں جادۂ ابنِ آدم[/FONT]
    [FONT=&quot]ایک تارہ بھی نہ پامال ہوا[/FONT]
    [FONT=&quot]ایسے گزرے رہِ افلاک سے ہم [/FONT]
     
  6. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    [FONT=&quot]باقی ہے یہی ایک نشاں موسمِ گل کا[/FONT]
    [FONT=&quot]جاری رہے گلشن میں بیاں موسمِ گل کا[/FONT]
    [FONT=&quot]جب پھول مرے چاکِ گریباں پہ ہنسے تھے[/FONT]
    [FONT=&quot]لمحہ وہی گزرا ہے گراں موسمِ گل کا[/FONT]
    [FONT=&quot]نادان گھٹاؤں کے طلب گار ہوئے ہیں[/FONT]
    [FONT=&quot]شعلوں کو بنا کر نگَراں موسمِ گل کا[/FONT]
    [FONT=&quot]سوکھے ہوئے پتّوں کے جہاں ڈھیر ملے ہیں[/FONT]
    [FONT=&quot]دیکھا تھا وہیں سیلِ رواں موسمِ گل کا[/FONT]
     
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    دنیا والوں نے چاہت کا مجھ کو صلا انمول دیا
    پیروں میں زنجیریں دالیں ہاتھوں میں کشکول دیا
    اتنا گہرا رنگ کہاں تھا رات کے میلے آنچل کا
    یہ کس نے رو رو کے گگن میں اپنا کاجل گھول دیا
    یہ کیا کم ہے اس نے بخشا ایک مہکتا درد مجھے
    وہ بھی ہیں جن کو بس رنگوں کا اک چمکیلا خول دیا
    مجھ سا بے مایہ اپنوں کی اور تو کیا خاطر کرتا
    جب بھی ستم کا پیکاں آیا، میں نے سینہ کھول دیا
    بیتے لمحے دھیان میں آ کر مجھ سے سوالی ہوتے ہیں
    تو نے کس بنجر مٹّی میں من کا امرت ڈول دیا
    اشکوں کی اُجلی کلیاں ہوں یا سپنوں کے کندن پھول
    الفت کی میزان میں میں نے جو تھا سب کچھ تول دیا
     
  8. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    برگِ دل کی طرح ہے زرد ہَوا
    پھانکتی ہے کہاں کی گرد ہَوا
    دل میں یادوں کا زہر گھول دیا
    کتنی قاتل ہے بن کی سرد ہَوا
    روز لاتی ہے ان کہے پیغام
    شہرِ خوباں سے کوچہ گرد ہَوا
    ۔۔۔ق۔۔۔۔
    دَم نہ مارے مری طرح جو سہے
    اس زمانے کے گرم و سرد ہَوا
    میں ہوں شعلہ بجاں، چراغ بدست
    کس خلا کی ہے رہ نورد ہَوا
     
  9. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    جلتے صحراؤں میں پھیلا ہوتا
    کاش میں پیڑٖوں کا سایہ ہوتا
    تو جو اس راہ سے گزرا ہوتا
    تیرا ملبوس بھی کالا ہوتا
    میں گھٹا ہوں، نہ پَون ہوں، نہ چراغ
    ہم نشیں میرا کوئی کیا ہوتا
    زخم عریاں تو نہ دیکھے کوئی
    میں نے کچھ بھیس ہی بدلا ہوتا
    کیوں سفینے میں چھپاتا دریا
    گر تجھے پار اترنا ہوتا
    بن میں بھی ساتھ گئے ہیں سائے
    میں کسی جا تو اکیلا ہوتا
    مجھ سے شفّاف ہے سینہ کس کا
    چاند اس جھیل میں اترا ہوتا
    اور بھی ٹوٹ کے آتی تری یاد
    میں جو کچھ دن تجھے بھولا ہوتا
    راکھ کر دیتے جلا کر شعلے
    یہ دھواں دل میں نہ پھیلا ہوتا
    کچھ تو آتا مری باتوں کا جواب
    یہ کنواں اور جو گہرا ہوتا
    نہ بکھرتا جو فضا میں نغمہ
    سینۂ نَے میں تڑپتا ہوتا
    اور کچھ دور تو چلتے مرے ساتھ
    اور اک موڑ تو کاٹا ہوتا
    تھی مقدّر میں خزاں ہی تو شکیبؔ
    میں کسی دشت میں مہکا ہوتا
     
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    یادیں ہیں اپنے شہر کی اہل سفر کے ساتھ
    صحرا میں لوگ آئےہیں دیوار و در کے ساتھ
    منظر کو دیکھ کر پس منظر بھی دیکھئے
    بستی نئی بسی ہے پرانے کھنڈر کے ساتھ
    سائے میں جان پڑ گئی دیکھا جو غور سے
    مخصوص یہ کمال ہے اہلِ نظر کے ساتھ
    اک دن ملا تھا بام پہ سورج کہیں جسے
    الجھے ہیں اب بھی دھوپ کے ڈورے کگر کےساتھ
    اک یاد ہے کہ دامنِ دل چھوڑتی نہیں
    اک بیل ہے کہ لپٹی ہوئی ہے شجر کے ساتھ
    اس مرحلے کو موت بھی کہتے ہیں دوستو
    اک پل میں ٹوٹ جائیں جہاں عمر بھر کے ساتھ
    میری طرح یہ صبح بھی فنکار ہے شکیبؔ
    لکھتی ہے آسماں پہ غزل آب زر کے ساتھ
     
  11. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    دستکیں دیتی ہیں شب کو درِ دل پر یادیں
    کچھ نہیں ہے مگر اس گھر کا مقدّر یادیں
    ڈھونڈھتی ہیں تری مہکی ہوئی زلفوں کی بہار
    چاندنی رات کے زینے سے اتر کر یادیں
    عشرتِ رفتہ کو آواز دیا کرتی ہیں
    ہر نئے لمحے کی دہلیز پہ جا کر یادیں
    رنگ بھرتی ہیں خلاؤں میں ہیولے کیا کیا
    پیش کرتی ہیں عجب خواب کا منظر یادیں
    نہ کسی زلف کا عنبر، نہ گلوں کی خوشبو
    کر گئی ہیں مری سانسوں کو معطّر یادیں
    کم نہیں رات کے صحرا سے مرے دل کی فضا
    اور آکاش کے تاروں سے فزوں تر یادیں
    مشعلِ غم نہ بجھاؤ کہ شکیبؔ اس کے بغیر
    راستہ گھر کا بھلا دیتی ہیں اکثر یادیں
     
  12. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    تیز آندھیوں میں اڑتے پر وبال کی طرح
    ہر شے گزشتنی ہے مہ و سال کی طرح
    کیو ں کر کہوں کہ درپئے آزار ہے وہی
    جو آسماں ہے سر پہ مرے ڈھال کی طرح
    یوں بے سبب تو کوئی انہیں پوجتا نہیں
    کچھ تو ہے پتھروں میں خدوخال کی طرح
    کیا کچھ کیا نہ خود کو چھپانے کے واسطے
    عریانیوں کو اوڑھ لیا شال کی طرح
    اب تک مرا زمین سے رشتہ ہے استوار
    رہنِ ستم ہوں سبزۂ پامال کی طرح
    میں خود ہی جلوہ ریز ہوں، خود ہی نگاہِ شوق
    شفاف پانیوں پہ جھکی ڈال کی طرح
    ہر موڑ پر ملیں گے کئی راہ زن شکیبؔ
    چلئیے چھپا کے غم بھی زر و مال کی طرح
     
  13. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    شاخوں بھری بہار میں رقص برہنگی
    مہکی ہوئی وہ چادرِ گل بار کیا ہوئی
    بے نغمہ و صدا ہے وہ بت خانۂ خیال
    کرتے تھے گفتگو جہاں پتھر کے ہونٹ بھی
    وہ پھر رہے ہیں زخم بہ پا آج دشت دشت
    قدموں میں جن کے شاخِ گلِ تر جھکی رہی
    یوں بھی بڑھی ہے وسعت ایوانِ رنگ و بو
    دیوارِ گلستان درِ زنداں سے جا ملی
    رعنائیان چمن کی تو پہلے بھی کم نہ تھیں
    اب کے مگر سجائی گئی شاخِ دار بھی
     
  14. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    سمجھ سکو تو یہ تشنہ لبی سمندر ہے
    بقدرِ ظرف ہر اک آدمی سمندر ہے
    ابھر کے ڈوب گئی کشتیِ خیال کہیں
    یہ چاند ایک بھنور، چاندنی سمندر ہے
    جو داستاں نہ بنے دردِ بیکراں ہے وہی
    جو آنکھ ہی میں رہے وہ نمی سمندر ہے
    نہ سوچیے تو بہت مختصر ہے سیلِ حیات
    جو سوچئے تو یہی زندگی سمندر ہے
    تو اس میں ڈوب کے شاید ابھر سکے نہ کبھی
    مرے حبیب مری خامشی سمندر ہے
     
  15. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    حسنِ فردا غمِ امروز سے ضَو پائے گا
    چاند ڈوبا ہے تو سورج بھی اُبھر آئےگا
    آندھیوں میں بھی فروزاں ہے چراغِ امّید
    خاک ڈالے سے یہ شعلہ کہیں بجھ جائے گا
    کو بہ کو دام بچھے ہوں کہ کڑکتی ہو کماں
    طائرِ دل پرِ پرواز تو پھیلائے گا
    توڑ کے حلقۂ شب، ڈال کے تاروں پہ کمند
    آدمی عرصۂ آفاق پہ چھا جائے گا
    ہم بھی دو چار قدم چل کے اگر بیٹھ گئے
    کون پھر وقت کی رفتار کو ٹھہرائے گا
    راہ میں جس کی دیا خونِ دل و جاں ہم نے
    وہ حسیں دور بھی آئے گا، ضرور آئے گا
     
  16. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اب یہ ویران دن کیسے ہوگا بسر
    رات تو کٹ گئی درد کی سیج پر
    بس یہیں ختم ہے پیار کی رہگزر
    دوست اگلا قدم کچھ سمجھ سوچ کر
    اس کی آوازِ پا تو بڑی نات ہے
    ایک پتّہ بھی کھڑکا نہیں رات بھر
    گھر میں طوفان آئے زمانہ ہوا
    اب بھی کانوں میں بجتی ہے زنجیرِ در
    اپنا دامن بھی اب تو میسّر نہیں
    کتنے ارزاں ہوئے آنسوؤں کے گہر
    یہ شکستہ قدم بھی ترے ساتھ تھے
    اے زمانے ٹھہر، اے زمانے ٹھہر
    اپنے غم پر تبسّم کا پردہ نہ ڈال
    دوست، ہم ہیں سوار ایک ہی ناؤ پر
     
  17. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    روشن ہیں دل کے داغ نہ آنکھوں کے شب چراغ
    کیوں شام ہی سے بجھ گئے محفل کے سب چراغ
    وہ دن نہیں کرن سے کرن میں لگے جو آگ
    وہ شب کہاں چراغ سے جلتے تھے جب چراغ
    تیرہ ہے خاکداں، تو فلک بے نجوم ہے
    لائے کہاں سے مانگ کے دست طلب چراغ
    روشن ضمیر آج بھی ظلمت نصیب ہیں
    تم نے دیے ہیں پوچھ کے نام و نسب چراغ
    وہ تیرگی ہے دشتِ وفا میں کہ الاماں
    چمکے جو موجِ ریگ تو پائے لقب چراغ
    دن ہو اگر تو رات سےتعبیر کیوں کریں
    سورج کو اہلِ ہوش دکھاتے ہیں کب چراغ
    اے بادِ تند وضع کے پابند ہم بھی ہیں
    پتھر کی اوٹ لے کے جلائیں گے اب چراغ
     
  18. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ساحل تمام اشکِ ندامت سے اٹ گیا
    دریا سے کوئی شخص تو پیاسا پلٹ گیا
    لگتا تھا بے کراں مجھے صحرا میں آسماں
    پہونچا جو بستیوں میں تو خانوں میں بٹ گیا
    یا اتنا سخت جان کہ تلوار بے اثر
    یا اتنا نرم دل کہ رگِ گل سے کٹ گیا
    بانہوں میں آ سکا نہ حویلی کا اک ستون
    پُتلی میں میری آنکھ کی صحرا سمٹ گیا
    اب کون جائے کوئے ملامت کو چھوڑ کر
    قدموں سے آکے اپنا ہی سایہ لپٹ گیا
    گنبد کا کیا قصور اسے کیوں کہوں بُرا
    آیا جدھر سے تیر، اُدھر ہی پلٹ غیا
    رکھتا ہے خود سے کون حریفانہ کشمکش
    میں تھا کہ رات اپنے مقابل ہی ڈٹ گیا
    جس کی اماں میں ہوں وہ ہی اکتا گیا نہ ہو
    بوندیں یہ کیوں برستی ہیں، بادل تو چھٹ گیا
    وہ لمحۂ شعور جسے جانکنی کہیں
    چہرے سے زندگی کے نقابیں الٹ گیا
    ٹھوکر سے میرا پاؤں تو زخمی ہوا ضرور
    رستے میں جو کھڑا تھا وہ کہسار ہٹ گیا
    اک حشر سا بپا تھا مرے دل میں اے شکیبؔ
    کھولیں جو کھڑکیاں تو ذرا شور گھٹ گیا
     
  19. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    آتا ہے ہر چڑھائی کے بعد اک اُتار بھی؟
    پستی سے ہم کنار ملے کوہسار بھی؟
    دل کیوں دھڑکنے لگتا ہے اُبھرے جو کوئی چاپ
    اب تو نہیں کسی کا مجھے انتظار بھی!
    جب بھی سکوتِ شام میں آیا ترا خیال
    کچھ دیر کو ٹھہر سا گیا آبشار بھی
    کچھ ہو گیا ہے دھوپ سے خاکستری بدن
    کچھ جم گیا ہے راہ کا مجھ پر غبار بھی
    اس فاصلوں کے دشت میں رہبر وہی بنے
    جس کی نگاہ دیکھ لے صدیوں کے پار بھی
    اے دوست، پہلے قرب کا نشّہ عجیب تھا
    میں سُن سکا نہ اپنے بدن کی پُکار بھی
    رستہ بھی واپسی کا کہیں بن میںکھو گیا
    اوجھل ہوئی نگاہ سے ہرنوں کی ڈار بھی
    کچھ عقل بھی ہے باعثٕ توقیر اے شکیبؔ
    کچھ آ گئے ہیں بالوں میں چاندی کے تار بھی
     
  20. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,192
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    پردۂ شب کی اوٹ میں زہرہ جمال کھو گئے
    دل کا کنول بجھا تو شہر تیرہ و تار ہوگئے
    ایک ہمیں ہی اے سحر نیند نہ آئی رات بھر
    زانوئے شب پہ رکھ کر سر، سارے چراغ سو گئے
    راہ میں تھے ببول بھی رودِ شرر بھی دھول بھی
    جانا ہمیں ضرور تھا گل کے طواف کو گئے
    دیدہ ورو بتائیں کیا تم کویقیں نہ آئے گا
    چہرے تھے جن کے چاند سے سینے میں داغ بوگئے
    داغِ شکست دوستو دیکھو کسے نصیب ہو
    بیٹھے ہوئے ہیں تیز رو سست خرام تو گئے
    اہلِ جنوں کے دل شکیبؔ نرم تھے موم کی طرح
    تیشۂ یاس جب چلا تودۂ سنگ ہوگئے
     

اس صفحے کی تشہیر