لبرل ازم اور Paternalism

الف نظامی نے 'تاریخ کا مطالعہ' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 1, 2018

  1. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,902
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    ان تینوں ممالک میں ایک بھی مسلمان ملک نہیں ہے۔

    موضوع کا عنوان یہ نہیں جس پر آپ بحث فرما رہے ہیں۔ کیا میرے تھریڈ پر ہی آپ کو غیر متعلقہ گفتگو اچھی لگتی ہے
    مزید اپنے پروپگنڈا نیٹ ورک سے منسلک لوگوں کو بھی یہاں دعوت دے دیجیے کہ آئیے شوق پورا کریں۔ اگر آپ کو موضوع زیر بحث پر بات کرنا پسند نہیں تو اپنی پسند کا علیحدہ تھریڈ بنا لیجیے ہمیں معاف رکھیے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  2. احسن جاوید

    احسن جاوید محفلین

    مراسلے:
    208
    لکم دینکم ولی دین کا مفہوم صرف ایکسٹرنلی نہیں بلکہ انٹرنلی بھی اپلائی ہوتا ہے۔ ایک سٹیٹ کے اندر سٹیٹ کو غیر جانبدار ہونا چاہیے نہ کہ سٹیٹ کسی نقطہ نظر کو سب پہ انفورس کرے۔ سٹیٹ کو خود بھی لکم دینکم ولی دین والے اصول پہ چلنا چاہیے۔ مذہب پہ چلتے ہوئے بھی مذہبی لوگ اگر انصاف پہ قائم نہ رہ سکیں یا کم سے کم انصاف کی بات بھی نہ کر سکیں تو یہ مذہبیت نہیں منافقت ہے کیونکہ ان میں مذہب سے زیادہ اپنی خواہش کا عمل دخل ہے۔
     
    • زبردست زبردست × 1
  3. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,902
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    دلیل ختم ، الزام تراشی شروع۔
    فیکٹ چیک: گویا پاکستان میں آج تک تمام حکمران مذہبی تھے ، سوائے ذوالفقار علی بھٹو کے :sneaky::rolleyes:
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  4. احسن جاوید

    احسن جاوید محفلین

    مراسلے:
    208
    جی بالکل دلیل وہی ہے جسے آپ دلیل سمجھتے ہیں۔ :LOL::ROFLMAO:
    کیا ہونا چاہیے اور کیا ہے میں فرق ہوتا ہے۔ جو ہے اس پہ چاہے اکثریت بھی قائم ہو صحیح ہونے کی دلیل نہیں ہے۔
    یہ مراسلہ آپ کی ذات پہ نہیں ہے بلکہ اوور آل مذہبی معاشرے پر ہے۔ چور کی داڑھی میں تنکے والا معاملہ معلوم پڑتا ہے۔
     
    • متفق متفق × 1
  5. احسن جاوید

    احسن جاوید محفلین

    مراسلے:
    208
    اس پہ تو میں نے بات ہی نہیں کی کہ کون کیا رہا ہے اور نہ ہی یہ میرا کنسرن ہے۔ میرا کنسرن سٹیٹ ہے جس کا میں رہائشی ہوں اور وہ اگر جانبدار ہے تو میں اپنے تحفظات واضح طور پر ظاہر کرنے کا حق رکھتا ہوں۔
     
    • زبردست زبردست × 1
  6. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,902
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    paternalism کیا ہوتا ہے؟

    دعوی: دنیا میں کوئی سٹیٹ غیر جانبدار نہیں
    دلیل:
    ہر سٹیٹ اپنے آئین کے لیے جانبدار ہوتی ہے۔
    خواہ وہ رائٹ ونگ والی حکومت ہو یا لیفٹ ونگ والی۔
    اپنے اپنے ونگ کے لیے جانبدار ہی ہوتی ہے اور غیر ہمیشہ غیر جانبدار ہوتا ہے۔
     
    آخری تدوین: ‏دسمبر 27, 2020
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  7. احسن جاوید

    احسن جاوید محفلین

    مراسلے:
    208
    اگر آپ کو نہیں معلوم تو گوگل کر لیجیے، اگر آپ کو معلوم ہے تو پھر سوال کا مقصد فوت ہو جاتا ہے اور اگر آپ کا اشارہ کسی اور طرف ہے تو پھر کھل کر اپنا مدعا بیان کیجیے۔
    آپ پھر وہی بات دہرا رہے ہیں جس کا میں پہلے اظہار کر چکا ہوں۔ حکومت سٹیٹ نہیں ہے اس لیے چاہے وہ رائٹ ونگ ہو، لیفٹ ونگ ہو، پیپلز پارٹی ہو، نون لیگ ہو یا تحریک انصاف ہر کسی کا اپنا منشور ہے، اپنا نظریہ ہے جو خود سٹیٹ کو ڈیفائن نہیں کرتا۔ میں ذرا واضح الفاظ میں اس کی وضاحت پیش کرتا ہوں۔
    آئین بنیادی طور پر وہ پیس آف پیپر ہے جس نے بادشاہت/آمریت و رعیت کے تعلق کو سٹیٹ و شہریت کے تعلق سے ریپلیس کیا۔ پہلے بادشاہ خود آئین ہوتا تھا اور ورچوئلی ابسلوٹ اختیارات رکھتا تھا وہ اپنی رعایا کو جیسے مرضی ٹریٹ کرے یہ اس کا ذاتی اختیار ہوتا تھا، شہریوں کے بنیادی حقوق اس کے مرہون منت تھے، جو اس کا مذہب ہوتا تھا وہ اسی کی سپانسرشپ کرتا تھا۔ آئین نے اس بادشاہت اور اس کے ورچوئلی ابسلوٹ اختیارات کے تصور کو ختم کر کے سٹیٹ و شہریت کے تعلق کا تصور دیا۔ اس کے مطابق نہ کوئی بادشاہ ہے اور نہ کوئی رعایا۔ اب صرف سٹیٹ ہے اور تمام اس کے شہری جو بنیادی طور پر رنگ، نسل، مذہب، ذات، برادری سے ماوراء برابر ہیں اور ایک جیسے حقوق رکھتے ہیں اور سٹیٹ کا نمائندہ وہ حقوق دینے کا پابند ہے۔ اب سٹیٹ ورچوئلی غیر جانبدار ہے اور شہری بادشاہ کی بجائے آئین کی پابند ہے۔ سٹیٹ کے امور چلانے کے لیے شہری اپنا جو نمائندہ منتخب کرتے ہیں وہ خود اسی آئین کے تابع ہے۔ اب وہ سٹیٹ پریمئر خود چاہے رائٹ ونگ سے تعلق رکھتا ہو، لیفٹ ونگ سے تعلق رکھتا ہو، اس کا اپنا چاہے کوئی بھی نظریہ ہو وہ آئین سے ماوراء نہیں ہو سکتا اور وہ خود سٹیٹ نہیں ہے بلکہ سٹیٹ ریپریزنٹیٹیو ہے۔ آئین ہر حال میں غیر جانبدار رہے گا حکومتیں چاہے جتنی بدلتی رہیں۔ اب آئین خود اگر پارٹی بن جائے تو پھر شہریت کی برابری کا اصول ہی ختم ہو جاتا ہے۔
     
    آخری تدوین: ‏دسمبر 27, 2020
    • زبردست زبردست × 1
  8. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,902
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    سوال پوچھنے کا مطلب ان ڈائریکٹلی یہ بتانا تھا کہ جس موضوع پر آپ گفتگو فرما رہے ہیں وہ اس تھریڈ کا عنوان نہیں ہے اور یہ ایک پروپگنڈا ٹیکنیک ہوتی ہے کہ موضوع سے ہٹ کر کوئی دوسرا موضوع زیربحث لایا جائے اور اصل موضوع سے توجہ ہٹا دی جائے۔ مزید اس حوالے سے آپ گفتگو کرنا چاہیں تو علیحدہ تھریڈ کھول لیجیے۔ یہاں غیر متعلقہ مباحث کا اس مراسلے کے بعد جواب نہیں ملے گا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  9. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    26,420
    بھٹو کی حکومت میں قادیانیوں کو کافر قرار دیا گیا تھا۔ بھٹو نے اس کا کریڈٹ لیا تھا۔ اور آپ کہہ رہے ہیں وہ مذہبی نہیں تھے؟
     
  10. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,902
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    non muslim living in the country may observe such event as per their own practice and religious beliefs.
     

اس صفحے کی تشہیر