غزل: اُس پریشاں زلف سے جب سامنا ہوجائے گا (منہاجؔ علی)

منہاج علی نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 24, 2021

ٹیگ:
  1. منہاج علی

    منہاج علی محفلین

    مراسلے:
    127
    اُس پریشاں زلف سے جب سامنا ہو جائے گا
    پیچِ بادِ صبح اک دم میں ہَوا ہوجائے گا

    اُس گلی میں منتشر کردے ہماری خاک کو
    کچھ تو عرضِ مدّعا بادِ صبا ہوجائے گا

    پھر جگر کو لطفِ یک تیرِ مژہ درکار ہے
    ’کارِ غمخواری، نگاہِ آشنا ہوجائے گا‘ (مصرعۂ مدنیؔ)

    وصل میں بندِ قبا کو منّتِ انگشت کیا
    گرمیٔ انفاس کی اک رَو سے وا ہوجائے گا

    ہے لبِ لعلیں دمِ گفتار ابھی گُل کی طرح
    دیکھنا خاموش ہو تو غنچہ سا ہوجائے گا

    منہاجؔ علی (کراچی)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 9
    • زبردست زبردست × 3
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    واہ عزیزم بڑی استادانہ عزل ہے
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. عاطف ملک

    عاطف ملک محفلین

    مراسلے:
    1,351
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Innocent
    کمال است۔۔۔۔۔۔:notworthy::notworthy::notworthy:
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  4. محمّد احسن سمیع :راحل:

    محمّد احسن سمیع :راحل: محفلین

    مراسلے:
    1,938
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    واقعی، بڑی مرصع غزل کہی ہے بھئی ۔۔۔ بہت خوب
     
  5. منہاج علی

    منہاج علی محفلین

    مراسلے:
    127
    آداب جناب۔۔۔شکریہ
     
  6. منہاج علی

    منہاج علی محفلین

    مراسلے:
    127
    شکریہ برادر۔
     
  7. منہاج علی

    منہاج علی محفلین

    مراسلے:
    127
    آداب۔۔۔ شکریہ حضور۔۔
     
  8. فاخر رضا

    فاخر رضا محفلین

    مراسلے:
    3,443
    اس شعر میں شاعر کیا کہنا چاہ رہا ہے. کیا وہی جو میں سوچ رہا ہوں
     
    • پر مزاح پر مزاح × 6
  9. منہاج علی

    منہاج علی محفلین

    مراسلے:
    127
    جی
     
  10. فاخر رضا

    فاخر رضا محفلین

    مراسلے:
    3,443
    میں بھی وہی سوچوں کہ قدیم شعراء کی روش بدل تو نہیں سکتی
    اب اگر جنس کا تعین بھی ہوجائے تو تصورات مزید واضح ہوجائیں گے
     
    • پر مزاح پر مزاح × 3
  11. منہاج علی

    منہاج علی محفلین

    مراسلے:
    127
    ہاہاہاہا۔ حضورِ والا یہ شعر ہے۔ کسی اخبار کی رپورٹ نہیں ہے کہ ساری تفصیلات لکھ دی جائیں۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  12. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    11,198
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    خوبصورت خوبصورت!!!
     
  13. فاخر رضا

    فاخر رضا محفلین

    مراسلے:
    3,443
    آپ وضاحت فرمائیے کہ آپ کو کیا کیا خوبصورت لگا. کیا آپ بھی بندقبا میں رکے ہوئے ہیں
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  14. فاخر رضا

    فاخر رضا محفلین

    مراسلے:
    3,443
    مشاعروں کے لئے اس طرح کے شعر چاہیے ہوتے ہیں
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  15. یاسر شاہ

    یاسر شاہ محفلین

    مراسلے:
    960
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    منہاج بھائی کیسے ہیں ؟


    اُس پریشاں زلف سے جب سامنا ہو جائے گا
    پیچِ بادِ صبح اک دم میں ہَوا ہوجائے گا

    پیچ کھلنا محاورہ ہے لہٰذا بجائے "ہوا ہونا" کہ "وا ہونا" زیادہ جچتا ہے -یوں ایک صورت دیکھیے :
    دیکھنا ہر پیچِ بادِ صبح وا ہوجائے گا
    یا
    ایک دم ہر پیچ ..........

    اُس گلی میں منتشر کردے ہماری خاک کو
    کچھ تو عرضِ مدّعا بادِ صبا ہوجائے گا

    واہ -

    پھر جگر کو لطفِ یک تیرِ مژہ درکار ہے
    ’کارِ غمخواری، نگاہِ آشنا ہوجائے گا‘ (مصرعۂ مدنیؔ)

    مجھے تو گرہ ڈھیلی لگی --مدنی کا پورا شعر کیا ہے ؟

    وصل میں بندِ قبا کو منّتِ انگشت کیا
    گرمیٔ انفاس کی اک رَو سے وا ہوجائے گا

    ایسے شعروں کا واحد علاج شادی ہے -ابّا سے کہیں شادی کرا دیں ،وہ اگر کہیں کہ بیٹا ابھی تمھاری عمر ہی کیا ہے،تو یہ شعر پیش کر دیں ان شاء الله وصال کی صورت نکلے گی - :)

    ہے لبِ لعلیں دمِ گفتار ابھی گُل کی طرح
    دیکھنا خاموش ہو تو غنچہ سا ہوجائے گا

    "دم گفتار " سے آپ کی مراد "گفتار کے وقت" ہے تو "ابھی" زائد از ضرورت ہے -یوں دیکھیں :


    ہے لبِ لعلیں دمِ گفتار جو گُل کی طرح


    ویسے آپ کی مشق سخن زبردست ہے-:)
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 26, 2021
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • متفق متفق × 1
  16. منہاج علی

    منہاج علی محفلین

    مراسلے:
    127
    آپ نے اچھی اصلاحیں دی ہیں۔ شکر گزار ہوں۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  17. منہاج علی

    منہاج علی محفلین

    مراسلے:
    127
    یہ کہیے کہ اس شعر کا مضمون آپ کے ذوق سے میل نہیں کھا رہا۔ اس شعر کی شعریت پر غور کرنے کے بجائے آپ شعر کے مضمون کا مذاق اڑانے میں مصروف ہیں۔ یہ شاعری ہے مذہب نہیں ہے۔اس طرح کے خیالات کے تمام شعروں کو ’’مشاعرے والے شعر‘‘ کہیں گے؟ غالب کے اس شعر کے متعلق کیا خیال ہے؟
    وا کرسکے یاں کون بجز کاوش شوخی
    جوں برق ہے پیچیدگیٔ بندِ قبا گرم

    یا میر تقی میر کا یہ شعر:
    تھے چاک گریبان گلستاں میں گلوں کے
    نکلا ہے مگر کھولے ہوئے بندِ قبا تو

    میں اپنے شعر کا موازنہ اساتذہ کے شعروں سے نہیں کر رہا۔ بلکہ بتانے کا مقصد یہ ہے کہ ادب میں خیالات کی آزادی ہوتی ہے۔ اچھے شعر کا پیمانہ خیال نہیں بلکہ زبان و بیان ہے۔ میر کی شاعری گرافک خیالات کے شعروں سے بھری پڑی ہے۔ آپ کا ان کے بارے میں کیا خیال ہے؟
    اس طرح کے ولگر اور گرافک خیالات کے شعروں سے خائف رہنے والے لوگوں کے لیے سلیم احمد نے ’’آدھے دھڑ کے آدمی‘‘ کی اصطلاح وضع کی تھی۔ ان کا مضمون ’’نئی نظم اور پورا آدمی‘‘ پڑھیے اگر فرصت ملے۔
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 27, 2021
    • زبردست زبردست × 1
  18. فاخر رضا

    فاخر رضا محفلین

    مراسلے:
    3,443
    آپ کی مفصل تشریح کا تہ دل سے مشکور و ممنون ہوں
    آپ کی گفتگو نے میرے ذہن کے کئے دریچے کھول دیئے.
    میں نہ تو شاعر ہوں نہ میں نے غالب و میر کی شاعری پڑھی اور نہ ہی ارادہ ہے. کچھ مرثیے پڑھے ہیں بڑے لوگوں کے، اس کے علاوہ اردو ادب بس محفل پر پڑھتا ہوں. جوانی میں کبھی کبھی کسی کسی کو پڑھتا تھا مگر ولگر اشعار کی کبھی ضرورت نہیں پڑی
    محفل فورم میں میں بس دل بہلانے کو آتا ہوں یعنی ٹائم پاس اور کہیں کہیں کمینٹ کرکے لوگوں کو چرکانے کی کوشش کرتا ہوں. زیادہ تر کامیابی حاصل ہوتی ہے.
    آئندہ بھی اگر ایسا کچھ پڑھا تو ہلکے پھلکے تبصروں کے لئے تیار رہیے گا. سب اصلاح نہیں کرتے، مگر مجھے اچھا لگا آپ نے اتنا لمبا چوڑا جواب دیا. ولگر شعر پھر بھی شعر میں موجود ہے. خیر رہنے دیجیے آپ نے اساتذہ کے حوالے دے دیئے اب کیا لکھا جائے. وہ اساتذہ تو ویسے بھی فارغ لوگ تھے مشاعروں کے لئے لکھنا پڑتا تھا. وہ تو بادشاہ کی تعریفیں بھی لکھتے تھے. جیسے آجکل صحافی لکھتے ہیں کالم
    آپ استادانہ اسٹائل میں لکھتے ہیں آپ لکھتے رہئیے مگر ولگر اشعار آپ کی مرضی ہے لکھنے ہیں تو لکھیے کس نے منع کیا ہے. میں نے تو سب کی طرح بس کمینٹ کیا تھا. آپ کو شاید آگ لگ گئی. جبکہ میں نے بس ہلکے پھلکے انداز میں بات کی تھی.
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  19. منہاج علی

    منہاج علی محفلین

    مراسلے:
    127
    آپ نے اپنا عجز بیان کِیا یہ آپ کا بڑا پن ہے۔
    سلامت رہے یہ خاکساری و انکسار۔
    میں بھی مرثیے پڑھتا ہوں۔ آپ کے لیے ایک بات عرض کردوں جو نصیر ترابی صاحب نے مجھ سے کی تھی جسے میں نے گرہ میں باندھا۔ ان سے میں اکثر انیس کے کسی مصرعے کی تفہیم کے بارے میں پوچھتا تو آخر میں وہ یہ کہتے کہ آپ سب شاعروں کو پڑھیے صرف مرثیے نہیں پڑھیے۔
    اور حقیقت بھی یہ ہے کہ انیس کے مرثیوں میں جتنا تغزل ملتا ہے وہ ان کے وسعتِ مطالعہ کی خبر دیتا ہے۔ ایک واقعہ سن لیجیے لگے ہاتھ۔ نیر مسعود کی کتاب ’انیس‘ میں ایک باب ہے جس میں انیس کے شعروں سے لطف اندوز ہونے کے واقعات ہیں۔ مومن کا ایک شعر کسی نے سنایا،
    ’’نہ کچھ شوخی چلی بادِ صبا کی
    بگڑنے میں بھی زلف اُس کی بنا کی‘‘
    یہ شعر سننا تھا کہ انیس (جو لیٹے ہوئے تھے) اٹھ کھڑے ہوئے اور بہت تعریف کی۔ اور پھر اپنے دونوں ہاتھوں کچھ اس طرح جنبش دی کہ زلفوں کے بگڑنے اور بننے کی صورت آنکھوں میں پھر گئی۔
    تو جناب جب مرثیہ گو شاعر لطف لے رہا ہے ایسے شعروں سے تو ہم کیوں نہیں لیں؟
    بات کہنے کی یہ ہے کہ میں نے یہ مشاہدہ کِیا ہے کہ ہم مرثیے والے لوگوں (جن کو مرثیے سے قلبی لگاؤ ہے) نے خود کو بہت محدود کر رکھا ہے۔ سب اصناف کا مطالعہ بغیر کسی تعصب کے کرنا چاہیے۔
    اور آخر میں ایک بات یہ بھی سنتے جائیے کہ میرے اس شعر (وصل میں بندِ قبا۔۔) کو جوش صاحب اور نسیم امروہوی کے شاگرد اور مرثیہ گو شاعر ڈاکٹر ہلال نقوی نے بہت پسند فرمایا ہے اور کہا کہ بڑا شعر ہے۔ اسے کہتے ہیں وسعتِ نظری۔
     
  20. شکیب

    شکیب محفلین

    مراسلے:
    1,834
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Breezy
    بہت ہی اچھی غزل ہے۔ میں تو تصوف کے رنگوں میں ڈوب کر پڑھ رہا تھا کہ وہ شعر آ گیا تو ارتکاز ٹوٹا۔
    بہرحال بہت مبارکباد۔ لکھتے رہیے۔ اللہ قبول فرمائے اور برکت دے۔

    آپ کی تعارف کی لڑی ڈھونڈتا ہوں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر