اقبال عظیم غزل: آنکھوں سے اور دل سے خوشی چھین لی گئی

محمد تابش صدیقی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 28, 2020

  1. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    25,124
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    آنکھوں سے اور دل سے خوشی چھین لی گئی
    ہم سے ہماری زندہ دلی، چھین لی گئی

    اک روز اتفاق سے ہم مسکرائے تھے
    اس کی سزا میں، ہم سے ہنسی چھین لی گئی

    اربابِ کم نظر بھی ہیں، جلووں سے فیض یاب
    دیدہ وروں سے، دیده وری چھین لی گئی

    کتنے چراغ نور سے محروم ہو گئے
    جب سے ہماری خوش نظری چھین لی گئی

    شکوه مرا مزاج، نہ ماتم مری سرشت
    ہر چند مجھ سے خنده لبی چھین لی گئی

    صد شکر بالخصوص نوازا گیا مجھے
    آنسو عطا ہوئے ہیں، خوشی چھین لی گئی

    اقبالؔ، اس خوشی کا بھروسہ بھی کچھ نہ تھا
    اچھا ہوا، یہ درد سری چھین لی گئی

    ٭٭٭
    اقبالؔ عظیم
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  2. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,833
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    کلام شاعر بہ زبان شاعر

     
    • زبردست زبردست × 1
  3. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    25,124
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    بہت عمدہ
    یہ مصرع انھوں نے یوں پڑھا
    جلووں سے فیض یاب ہیں اربابِ کم نظر
    جبکہ کتاب میں ویسے ہے جیسے میں نے لکھا۔
    اور پڑھا گیا مصرع زیادہ رواں ہے۔
    ایک شعر اور بھی پڑھا ہے انھوں نے جو لکھی ہوئی غزل میں نہیں۔
    ذوقِ نظر کے ساتھ پرستاریاں گئیں
    جلووں سے جیسے جلوہ گری چھین لی گئی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  4. ظہیراحمدظہیر

    ظہیراحمدظہیر محفلین

    مراسلے:
    2,904
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    بہت خوبصورت اشعار ہیں!

    جلووں سے فیض یاب ہیں اربابِ کم نظر
    دیدہ وروں سے دیده وری چھین لی گئی

    کتنے چراغ نور سے محروم ہو گئے
    جب سے ہماری خوش نظری چھین لی گئی

    شکوه مرا مزاج ، نہ ماتم مری سرشت
    ہر چند مجھ سے خنده لبی چھین لی گئی

    بہت اعلیٰ !! کیا بات ہے اقبال عظیم کی!
     
  5. ظہیراحمدظہیر

    ظہیراحمدظہیر محفلین

    مراسلے:
    2,904
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    تابش بھائی ، یہ صورتحال اتنی شاذ نہیں کہ جتنا عام طور پرسمجھا جاتا ہے ۔ شاعر اپنے کچھ اشعار میں معمولی ردوبدل کرتے رہتے ہیں ۔ اور بعض اوقات کسی پرانی غزل میں ایک آدھ اشعار کا اضافہ بھی کردیتے ہیں یا یوں کہئے کہ کبھی کسی پرانی غزل کو پڑھتے ہوئے اس زمین میں ایک آدھ شعر اور ہوجاتا ہے۔ سو اگر کسی کو تحقیق مطلوب ہو تو دیکھنا یہ چاہئے کہ کتاب پہلے چھپی ہے یا مشاعرہ کتاب چھپنے سے پہلے پڑھا گیا ہے ۔ (ویسے یہاں تو کسی تحقیق کی ضرورت نہیں۔ :))
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر