عقیدت اور عقیدہ - تبرکات نبوی صلی اللہ علیہ وسلم

مہوش علی نے 'اسلام اور عصر حاضر' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 11, 2008

لڑی کی کیفیت:
مزید جوابات کے لیے دستیاب نہیں
  1. باذوق

    باذوق محفلین

    مراسلے:
    1,093
    معذرت کہ میں یہاں دخل در معقولات نہ کرتا۔ مگر محترمہ آپ کبھی نہ کبھی کچھ ایسی بات کر دیتی ہیں کہ مجھے وضاحت طلب کرنے پر مجبور ہونا پڑتا ہے۔ معاف کیجئے گا۔
    کوئی ایک آیت اپنی بات کی دلیل میں بیان کیجئے گا اور پھر اس مفسر کا حوالہ ضرور دیجئے جس نے آپ جیسا خیال/قیاس بیان کیا ہو۔
    ونیز ۔۔۔۔ کسی شارح حدیث کا وہ حوالہ بھی ضرور دیجئے جس میں اس نے کسی حدیث کی شرح کرتے ہوئے ایسا لکھا ہو کہ : رسول ص جس جگہ بھی کھڑے ہو جاتے تھے، وہاں پر برکت کا نزول شروع ہو جاتا تھا

    امید کہ وضاحت ضرور کریں گی۔
    اور یہ وضاحت مانگنے کی ضرورت اس لیے بھی پیش آ رہی ہے کہ ۔۔۔۔
    نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم ۔۔۔۔ اُس بستر کے قریب صرف ٹھہرے ہی نہیں بلکہ کافی دیر تک بستر پر بیٹھے اپنے عزیز از جان چچا سے منت کرتے رہے کہ وہ صرف ایک مرتبہ کلمہ طیبہ پڑھ ڈالیں ۔۔۔۔۔
    مگر کیا ابوطالب نے کلمہ پڑھا ؟
    آخر برکت کا نزول وہاں کیوں نہیں ہوا؟؟
    حالانکہ وہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے محبوب چچا تھے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اُن کے لیے یہ تک فرمایا تھا کہ : میں تب تک مغفرت کی دعا کرتا رہوں گا تاوقتیکہ روک نہ دیا جاؤں!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  2. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    یہاں بات`آب زم زم سے آب بحث و مباحثے تک کیسے چلی گئی؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. باذوق

    باذوق محفلین

    مراسلے:
    1,093
    ایک بار پھر معذرت !
    خاور صاحب کے بجائے آپ کے اس سوال (پتا نہیں خاور اب اس لعاب دہن چھڑکنے کو کس کھاتے میں ڈالیں گے) کا جواب میں‌ دینے کی کوشش کرتا ہوں :

    اس کو ہم معجزہ سے تعبیر کرتے ہیں !
    اور معجزہ اللہ کے حکم سے رونما ہوتا ہے اس میں نبی یا ولی کا اپنا کوئی ذاتی اختیار نہیں ہوتا۔

    ورنہ اگر اختیار والی بات ہوتی تو ۔۔۔۔
    جس دہنِ مبارک میں یہ لعاب تھا ، ہونا تو یہ چاہئے کہ اس دہن مبارک میں موجود دانت کبھی شہید نہ ہوتے۔ مگر ۔۔۔۔۔

    قرآن سے بھی دلیل پڑھ لیجئے کہ اللہ سبحانہ و تعالیٰ اپنے محبوب نبی (صلی اللہ علیہ وسلم) کی زبانی کہلوا رہا ہے :

    کہہ دو کہ میں تمھارے لیے نفع و نقصان کا اختیار نہیں رکھتا۔
    ( سورة الجن : 72 ، آیت : 21 )

    کہہ دو میں تو اپنے لیے نفع و نقصان کا کچھ بھی اختیار نہیں رکھتا مگر جتنا اللہ چاہے۔
    ( سورة يون۔س : 10 ، آیت : 49 )
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  4. طالوت

    طالوت محفلین

    مراسلے:
    8,353
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Bashful
    پتا نہیں کیا کیا کہانیاں جمع کر رکھی ہیں ؟
    جب رسول بھی بشر ہیں تو ان کے لعاب دہن (تھوک) سے کوئی شفاء کیسے ممکن ہے ؟ چہ جائیکہ کہ شفاعت !
    وسلام
     
  5. باذوق

    باذوق محفلین

    مراسلے:
    1,093
    بےشک رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم بشر تھے مگر ۔۔۔
    میرا خیال ہے آپ شائد یہ بات فراموش کر رہے ہیں کہ حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وسلم کو اللہ تعالیٰ نے نبوت (خاتم النبیین) کے درجے پر بھی فائز کیا تھا۔
    اور یہ بات تو بچہ بچہ جانتا ہے کہ ہر نبی کو اللہ تعالیٰ نے معجزوں سے سرفراز کیا تھا۔
    لہذا اگر ہم نبی کے لعاب دہن (تھوک) سے شفاء کو ، اللہ کا معجزہ سمجھ لیں تو ان شاءاللہ ہر قسم کا اشکال دور ہو جائے گا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  6. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    طالوت بھائی اگرآپ غیب اور معجزات پر یقین نہیں رکھتے تو ہم کیا کر سکتے ہیں؟ یہ تو خدا کی دین ہے، جسکو چاہے ایمان بخشے جسکو چاہے نہ دے۔
    ہاں ہر رسول بشر ہوتا ہے، مگر وہ تمام انسانوں کیلئے نمونہ کے طور پر ہوتا ہے۔ اسکی صداقت ظاہر کرنے کیلئے خدا اس پیغمبر اپنے نشانات یعنی معجزات سے بخشتا ہے۔ جیسے موسی علیہ السلام ی کا معجزہ عصا اور ہاتھ،حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کا معجزہ قرآن حکیم، اسی طرح باقی انبیاء کو قسم و قسم کے فضائل اور کمالات بخشے گئے- لیکن چونکہ آجکل کا انسان سائنس کے دھوکے میں‌اتنا اندھا ہو گیا ہے سوائے مادیت کے کچھ نظر ہی نہیں آتا!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. طالوت

    طالوت محفلین

    مراسلے:
    8,353
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Bashful
    اور اگر نہ سمجھوں تو ؟ کیا اس سے میرے ایمان پر کوئی فرق پڑے گا ؟
    جبکہ یہ ایک طے شدہ حقیقت ہے کہ اللہ رب العزت نے بار بار قران میں وضاحت فرمائی ہے کہ رسول اللہ کے اختیار میں کچھ نہیں ،آپ ایک بشر ہو ، رسول اگر کوئی بات برخلاف اللہ کے حکم کہہ دیتے تو اللہ ان کی شہہ رگ کاٹ ڈالتے وغیرہ وغیرہ تو اس طرح کی وضاحتوں کے بعد اس قسم کی باتیں عقل سے ماوراء اور حقیقت سے دور معلوم ہوتی ہیں ۔۔ بلکہ بعض کے یہاں تو یہ بھی سنا ہے کہ رسول اللہ کا پیشاب اور پاخانہ صحابہ بیماری کے لیے استمعال کرتے تھے (معاذ اللہ)، کوئی ثبوت نہیں اس لیے اسے سنی سنائی ہی سمجھیے شاید کوئی وضاحت کر سکے۔۔
    وسلام
     
  8. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    ایک شخص نبوت کے مقام کو پا ہی نہیں سکتا جب تک اسکا دل مکمل خدا کی محبت سے سرشار نہ ہو۔ صرف اس شخص کورب تعالی کی طرف سے نبوت عطا ہوتی ہے، جو اس مقام کا لائق ہو۔ اس میں کیا شک ہے کہ اس کائنات کا ذرہ ذرہ اسکے بنانے والے خدا کا تابع ہے۔ لیکن اس بات کو بھولنا نہیں چاہیے کہ جب خدا خود اپنی مرضی سے اپنے نیک بندوں پر کرم کرتا ہے تو اپنی بنائی ہوئی چیزوں، زمین، مٹی ، دریا، بادل وہوا کو اس نبی کے تابع کر دیتا ہے۔ اور اسکے دل سے نکلی ہوئی ہر دعا کو قبول فرماتا ہے۔ یہ وہ باریک روحانی نقطے ہیں جنہیں دنیا دار لوگ نہ پہلے کبھی سمجھ سکے تھے اور نہ آئیندہ سمجھ پائیں گے۔
     
  9. طالوت

    طالوت محفلین

    مراسلے:
    8,353
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Bashful
    حضور ذرا دھیرج رکھیے ۔۔ آپ نے تو فورا مجھے ایمان سے خارج کر دیا ۔۔:rolleyes: کیا ضروری ہے کہ جسے آپ معجزہ تسلیم کرتے ہوں اسے میں بھی تسلیم کروں ؟ آپ کا ایمان معجزوں کے بل پر ہو سکتا ہے لیکن میرا ایمان و یقین حقائق پر مبنی ہے ۔۔:) اور مجھے اس میں کوئی خوف یا شرمندگی نہیں اور یقیننا میں آپ سے زیادہ عاشق رسول ہوں کبھی موڈ ہوا تو ثابت بھی کر دوں گا ، مگر بحث کا رخ اب مزید تبدیل ہو رہا ہے لحاظہ میری طرف سے بس ۔۔۔۔۔۔!:)
    وسلام
     
  10. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    بھائی میں نے خارج نہیں کیا ہے بلکہ آپنے خود ہی غیب کا انکار کیا ہے کہ معجزات نعوذ باللہ وجود میں نہیں آسکتے- سورہ البقرہ کی شروع کی آیا ت میں ہی ایمان والوں‌ کیلئے غیب پر ایمان لانا لازم قرار دیا گیا ہے۔ اور معجزات غیب سے ہی وقوع پزید ہوتے ہیں۔ کوئی آپ کے سامنے ریموٹ کا بٹن دبا کر معجزہ نہیں کر سکتا!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  11. فاروقی

    فاروقی معطل

    مراسلے:
    1,748
    معذرت چاہوں گا کہ میں پھر دخل انداز ہوا ۔۔۔۔۔لیکن یہ پیچھلے سلسلے کی کڑی نہیں بلکہ علیحدہ مسئلہ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    نوٹ فرما لیجیئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی شخص نبوت کے مقام کو نہیں پاسکتا۔۔۔۔۔۔۔۔خواہ وہ کتنا بھی نیک کیوں نہ ہو جائے ۔۔۔۔۔۔۔۔خواہ وہ کائنات کے زرے زرے پر اپنے سجدوں کا نشان ہی کیوں نا ثبت کر دے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نبی ہمیشہ اللہ کی طرف سے ہوتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔اپنی محنت و مجاہدے یا عبادت کرنے سے کوئی نبی نہیں بن سکتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  12. طالوت

    طالوت محفلین

    مراسلے:
    8,353
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Bashful
    آپ نے پھر مجبور کر دیا ۔۔ حضور فتوٰی تو آپ ہی کی طرف سے آیا ہے نا :) اور آپ اگر غیب کو معجزات سمجھتے ہیں تو میرا کیا قصور ؟ جبکہ معجزات اور غیب پر ایمان دو الگ الگ چیزیں ہیں ۔۔
    دیکھیے آپ حضرات سے میں اکثر معاملات میں اتفاق نہیں رکھتا لیکن کیا میں نے کبھی کوئی فتوٰی صادر کیا ہے ؟
    اسلییے مجھے ذرا اس سے دور رکھیے پلیزززززززززززز !
    اور اس موضوع کو بند کیجیے کہ پہلی ہی ایک موضوع غلط پوسٹ میں چل رہا ہے :)
    وسلام
     
  13. وجی

    وجی لائبریرین

    مراسلے:
    24,693
    موڈ:
    Daring

    کیا آپ کو یقین ہے کہ ایسی کوئی آیات نازل نہیں ہوئیں تھی اس وقت
    حالانکہ سورہ توبہ میں آپکو حکم ہوا تھا کہ آپ ان لوگوں کے لئے دعا نہیں کرئیں گے جنہوں‌نے اللہ اور اسکے رسول سے کفر کیا اور سورہ توبہ آخری وقتوں کی سورہ ہے اور اس سورہ میں کافی منافقین کا کافی ذکر موجود ہے اور عبداللہ بن ابئی کا 9 ہجری میں انتقال ہوا تھا


    تو کیا صرف ایک سے ڈیرھ سال میں منافقین کے بارے میں آیات نازل ہوئیں
    ^^^^اس بارے میں بھی تسلی سے غور کیجیئے گا
     
  14. مہوش علی

    مہوش علی لائبریرین

    مراسلے:
    3,003
    وجی برادر،
    میں نے درخواست کی تھی کہ اگر اصل روایات تک دسترس ہے تو ان اصل روایات کو مکمل طور پر پیش کیجئیے کیونکہ اس سے بہت فائدہ ہو گا اور ایسے سوالات شاید نہ اٹھیں۔
    صحیح بخاری میں اس روایت کی کئی ورژنز ہیں، ان میں سے ایک یہ ہے کہ اس واقعے سے قبل آیت اتری تھی کہ اے رسول اگر آپ ستر مرتبہ بھی ان کفار کے لیے استغفار کریں گے تو اللہ انہیں معاف کرنے والا نہیں، اس پر رسول ص نے کہا کہ وہ ستر سے زائد مرتبہ استغفار کر لیں گے، اس پر ایک اور آیت اس موقع پر نازل ہوئی جس میں مکمل کی مکمل حرمت کا اللہ نے ذکر کر دیا [دیکھئیے سورۃ توبہ آیت 84، جس میں استغفار کے ساتھ ساتھ رسول ص کو حکم ہوا کہ انکی قبروں پر نہ کھڑے ہوں]
    والسلام۔

    Volume 6, Book 60, Number 192:
    Narrated Ibn Abbas:
    When 'Abdullah bin 'Ubai died, his son 'Abdullah bin 'Abdullah came to Allah's Apostle and asked him to give him his shirt in order to shroud his father in it. He gave it to him and then 'Abdullah asked the Prophet to offer the funeral prayer for him (his father). Allah's Apostle got up to offer the funeral prayer for him, but Umar got up too and got hold of the garment of Allah's Apostle and said, "O Allah's Apostle Will you offer the funeral prayer for him though your Lord has forbidden you to offer the prayer for him" Allah's Apostle said, "But Allah has given me the choice by saying:
    '(Whether you) ask forgiveness for them, or do not ask forgiveness for them; even if you ask forgiveness for them seventy times..' (9.80) so I will ask more than seventy times." 'Umar said, "But he ('Abdullah bin 'Ubai) is a hypocrite!" However, Allah's Apostle did offer the funeral prayer for him whereupon Allah revealed:
    'And never (O Muhammad) pray for anyone of them that dies, nor stand at his grave.' (9.84)



     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  15. وجی

    وجی لائبریرین

    مراسلے:
    24,693
    موڈ:
    Daring
    کیا آپ کے نزدیک قرآن کی اہمیت زیادہ ہے کیا احادیث کی ؟؟

    احادیث کیا غلط نہیں ہوسکتیں ؟؟
     
  16. مہوش علی

    مہوش علی لائبریرین

    مراسلے:
    3,003
    وقت کا دامن میرے لیے تنگ ہو رہا ہے [مجھے ایک اور پراجیکٹ کے لیے گرین سگنل دے دیا گیا ہے اور انشاء اللہ کل سے میں وہاں مصروف ہوں گی، مگر آپ لوگ اس گفتگو کو یہاں اچھے طریقے سے آگے بڑھاتے رہیے گا]

    قبل اسکے کہ میں باذوق بھائی کے سوالات کا جواب دوں، میں چاہتی ہوں کہ میں قارئین کو اس مسئلے کے پس منظر سے آگاہ کر دوں، تاکہ وہ چیزوں کو اچھی طرح سے سمجھ سکیں۔

    مسئلے کا بیک گراونڈ [اور بحث کس طرف جا رہی ہے]
    ایک وقت آتا ہے جب انسان کو اندازہ ہوتا ہے کہ گفتگو کہاں سے شروع ہوئی ہے، کون کون سے فریقین کس کس طرح سے گفتگو میں آگے بڑھیں گے۔۔۔۔ وغیرہ وغیرہ۔
    جب خاور بلال برادر سے گفتگو ہو رہی تھی تو مجھے بار بار مولانا مودودی یاد آ رہے تھے۔ میں مودودی صاحب کے قلم کی بہت فین ہوں، بہرحال انسان کی فطرت میں اختلاف رائے ہے، اس لیے کچھ مقامات پر مجھے بھی ان سے اختلاف ہے۔
    1۔ ان میں سے ایک جگہ ہے کہ کچھ مقامات پر مجھے وہ نص کے مقابلے میں عقل سے ایسے ہی دلائل دیتے نظر آئے [اس بیان کو صرف میری ذاتی رائے سمجھا جائے اور ہو سکتا ہے کہ میں غلط ہوں]۔ جب خاور بھائی سے بات ہو رہی تھی ان میں مجھے مولانا صاحب کی شبیہ ان میں نظر آ رہی تھی]
    2۔ اور دوسرا یہ کہ مولانا صاحب تبرکات نبوی، شفاعت اور وسیلے کا انکار کرنے میں سعودی علماء سے زیادہ سخت ہیں۔ تو جن مقامات پر سعودی علماء ان چیزوں کا اقرار کر جاتے ہیں، وہاں پر میں نے مولانا صاحب کو عقل لڑاتے ہوئے انکا انکار کرتے دیکھا ہے۔

    /////////////////////////////////////////////////

    سعودی علماء کا تبرکات نبوی کا آدھا اقرار آدھا انکار
    سعودی علماء نے تبرکات نبوی کا اقرار تو کیا ہے [کہ رسول ص کے بال، آپ ص سے مس شدہ کرتہ اور دیگر اشیاء یہ متبرک ہیں، مگر ایک جگہ پر آ کر وہ اسکا انکار کر رہے ہیں۔ اور وہ یہ کہ یہ چیز نہیں مانتے کہ جس جگہ رسول ص قیام کر لیں وہ بھی متبرک ہے۔

    چنانچہ وہ جگہیں جہاں رسول ص کا قیام ہوا، پچھلی صدی کے مسلمانوں نے ان آثار کی حفاظت کی اور انہیں مقدس جانا، مگر سعودی حکومت نے ان جگہوں کو مسمار کر دیا۔ اور ایسا سعودی علماء کے فتاوی کی روشنی میں کیا گیا۔ مثلا http://www.islam-qa.com/ پر آپ شیخ صالح اور دیگر سعودی علماء کے اس معاملے میں فتاوی پڑھ سکتے ہیں [انگلش زبان] جہاں وہ بیان کر رہے ہیں کہ یہ جن جگہوں پر رسول ص کھڑے ہوئے یا جس گھروں میں قیام کیا وہاں کوئی برکت نہیں۔
    //////////////////////////////////////////////
    پس منظر سمجھ لینے کے بعد اب آسان ہو گا کہ ہم باذوق برادر کے سوالات پر گفتگو کو آگے بڑھا سکیں:
    باذوق برادر، پہلی بات تو یہ کہ مفسر قران یا شارح حدیث [اور وہ بھی ایسا مفسر اور ایسا شارح جسے آپ مانتے ہوں] کی شرط آپ کی اپنی ہے۔ مجھ پر جب کوئی معاملہ اس حد تک واضح ہو چکا ہو کہ جس کے بعد کم از کم اس معاملے میں تمام کے تمام نصوص سامنے آ چکے ہوں، تو پھر میرے لیے ممکن نہیں کہ میں کسی کی تقلید کروں، بلکہ یہاں اللہ تعالی مجھ سے کہہ رہا ہے کہ میں خود نصوص پر غور و فکر اور تدبر کروں۔

    احادیث مبارکہ:
    باذوق برادر،
    اتنی صاف و واضح حدیث کے بعد مجھے تو کسی اور کی ضرورت نہیں کہ وہ مجھے بتائے کہ نابینا صحابی نے اس لیے اُس کونے میں نماز پڑھوائی تاکہ وہ بعد میں اس جگہ کی برکت سے فائدہ اٹھا سکیں۔
    لیکن آپ سے التماس ہے کہ آپ اس روایت پر فتح الباری میں جو علامہ ابن حجر العسقلانی نے اُس جگہ میں برکت ہونے کی دلیل پکڑی ہے کہ جہاں رسول ص قیام کر لیں وہ یہاں پر پیش کر دیں۔
    اور اردو میں جو صحیح بخاری علامہ راز کی 8 جلدوں میں پی ڈی ایف فائل میں آنلائن موجود ہے، اس میں اس حدیث کے ذیل میں پڑھ لیں کہ وہ کیسے اس سے دلیل پکڑ رہے ہیں کہ جس جگہ رسول ص قیام کر لیں وہ جگہ بابرکت ہو جاتی ہے۔
    مجھے پتا ہے آپ مجھ پر ہی یہ بار ڈال دیں گے کہ میں ہی پیش کروں۔ تو ٹھیک ہے اگر آپ نے پیش نہ کیا تو پھر میں ہی پیش کر دوں گی۔

    )

    دیکھ لیجئے نہ حضرت عائشہ کا صاف بیان ہے کہ رسول ص کے پہلو میں دفن ہونے کو صحابہ کی کمیونٹی میں بطور sanctified دیکھا جا رہا تھا۔


    ابھی فی الحال میں بس کرتی ہوں۔ جناب ابن عمر اور مدینہ شہر کا حرم ہونا اور دیگر روایات وغیرہ انشاء اللہ کچھ دنوں کے بعد۔

    ایک دعوت:
    ذرا سوچئیے۔ ذرا سوچئیے۔
    جب سعودی علماء مان لیتے ہیں کہ جو بھی چیز رسول ص سے مس ہو جائے وہ متبرک ہے [جیسے پیالہ، کرتہ، پانی وغیرہ]، تو پھر مجھے ذاتی حیثیت میں بہت حیرت ہے کہ وہ اس بات کا کیوں مسلسل انکار کر رہے ہیں کہ جہاں رسول ص نے قیام کیا اُس جگہ میں برکت نہیں؟ اصولی طور پر پہلی بات مان لینے کے بعد دوسری کا انکار کرنا ممکن نہیں رہتا۔
    ///////////////////////////////////////////////////////

    جناب ابو طالب کے متعلق میرا نظریہ یہ ہے کہ وہ مومن ہیں اور جو روایات سعید ابن مسیب سے نقل ہو رہی ہیں ان میں تضاد ہے اور بذات خود اس شخص کے متعلق صراحت ہے کہ یہ بنی امیہ کا حامی تھا۔
    بہرحال ایمان ابو طالب الگ مسئلہ رہا۔ ہم موضوع پر پلٹتے ہیں۔
    ہمارا عقیدہ یہ ہے کہ:
    1۔ انبیاء کو اور مخصوص اولیاء اللہ کو اللہ نے "علم من الکتاب" عطا کیا ہے۔ [دیکھئیے آصف بن برخیا کا واقعہ قران میں جہاں جب وہ ملکہ بلقیس کے تخت کو پلک جھپکنے سے قبل لا کر حاضر کر رہے ہیں تو اللہ اس چیز کو "علم من الکتاب" [یعنی کتاب کا تھوڑا سا علم} قرار دے رہا ہے۔
    2۔ اور کتاب کا یہ علم وہ علم اعظم ہے کہ جس کے ذریعے مانگی ہوئی دعائیں مستجاب ہوتی ہیں۔
    3۔ مگر یہ انبیاء اور خدا کے براہ راست منتخب اولیاء کبھی بھی خدا کی مرضی و مشیت کے خلاف نہیں جاتے اور اللہ کے بنائے ہوئے نظام میں دخل نہیں دیتے۔

    اور اگر آپ اب بھی بستر کے نزدیک کھڑے ہونے کی بات کر رہے ہیں تو پھر آپ پر کاونٹر سوال اٹھ جائے گا کہ وہ نبی جو اپنے لعاب دہن سے علی کی آنکھوں کا درد ٹھیک کر دے، جو پھونک مار کر زخم کو ایسا مٹا دے کہ اسکا نام و نشان مٹ جائے اور درد کی ایک ٹیس بھی نہ اٹھے۔۔۔۔۔ تو اس نبی کے جب اپنے منہ کے دانت پتھر لگنے سے ٹوٹ جائیں اور خون بہے اور درد ہو تو رسول ص یہاں پر لعاب دہن اور اپنی پھونک کو استعمال کیوں نہیں کرتا؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. مہوش علی

    مہوش علی لائبریرین

    مراسلے:
    3,003
    کیا آپ کے پاس کوئی دلیل ہے کہ رسول ص نے ان تبرکات نبوی سے شفا و نفع کو معجزہ کہا ہو؟ یا پھر یہ آپکا اپنا قیاس ہے؟

    علی ابن ابی طالب کا قول صاف ہے کہ حجر اسود ہماری شفاعت کرے گا۔ یعنی اللہ کے حضور ہمارے حق میں دعا کرے گا۔ دیگر شعائر اللہ اور تبرکات انبیاء کے متعلق بھی یہی عقیدہ ہے کہ ان میں خود اپنا کوئی نفع یا نقصان نہیں بلکہ وہ اللہ کے حضور ہمارے لیے دعا کرتے ہیں جس سے ہمیں شفا و نفع ملتے ہیں۔

    اور جو کچھ آصف بن برخیا نے کیا [ملکہ بلقیس کے تخت کو پلک جھپکنے سے قبل لانے کا] یہ معجزہ تھا یا پھر اُس علم من الکتاب کا کمال جو اللہ نے انہیں عطا کیا تھا [یہ عطائی علم الکتاب تھا، مگر اکثر لوگ عطائی علم و کمال و فضل کو نہیں مانتے]

    اور میں نے اپنا عقیدہ بیان کر دیا ہے کہ یہ اولیاء اللہ اللہ کی مرضی کے بغیر اس علم کو استعمال نہیں کرتے۔ یعنی اللہ کی مرضی ہی انکی مرضی ہے۔ ورنہ آصف بن برخیا ایسے آزاد ہوتے تو قارون کا خزانہ اپنے سامنے ڈھیر کر لیتے۔ اسی طرح رسول ص دوسروں کو لعاب دہن سے شفا دیتے رہے، مگر اپنا وقت آیا تو خدا کی مرضی نہ تھِی اس لیے دانت بھی شہید کروایا اور درد میں بھی مبتلا ہوئے، مگر اس سے اسکا انکار کر دینا کہ لعاب دہن میں شفا کی خاصیت نہ تھی، خلاف حقیقت بات ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  18. مہوش علی

    مہوش علی لائبریرین

    مراسلے:
    3,003
    وجی بھائی، بے شک قرآن قرآن ہے اور احادیث ہر قسم کی ہیں صحیح سے لیکر کم صحیح اور غلط تک۔اگر آپ کا دل اس روایت کو نہیں مان رہا اور آپ کو یہ قرآن کے خلاف لگ رہی ہے تو اسے چھوڑ دیتے ہیں اور آگے بڑھ جاتے ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  19. جہانزیب

    جہانزیب محفلین

    مراسلے:
    2,442
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Brooding
    یہاں‌ تو سب پرانی تحقیق اور تفتیش جاری ہے ۔:lol:
     
  20. باذوق

    باذوق محفلین

    مراسلے:
    1,093
    کچھ تمہیدی طور پر پہلے عرض کر دوں۔

    جہانزیب صاحب نے بالکل درست فرمایا کہ "یہاں‌ تو سب پرانی تحقیق اور تفتیش جاری ہے"۔
    سسٹر مہوش علی ! برا نہ مانیں۔ قریب 6 سال پہلے کی بات ہے جب اردوستان فورم پر اسی موضوع پر بالکل یہی تحقیق آپ نے پیش فرمائی تھی اور پھر گزرتے وقت کے دوران بہت سے فورمز ، ویب سائیٹ ، بلاگز وغیرہ پر یہی "تحقیق" امیجز ، یونیکوڈ تحریر اور پ۔ڈ۔ف فائلز کی شکل میں نظر نواز ہوئی اور کچھ جگہ اس پر آپ سے میرا اور چند احباب کا آپسی بحث مباحثہ بھی ہوا۔ مگر حیرت یہی کہ آپ کا پرانا مطالبہ ہمیشہ کی طرح آج بھی برقرار ہے کہ :
    دیکھئے۔ نبیل نے بالکل سچ کہا ہے کہ اس قسم کے بحث مباحثوں سے کچھ حاصل نہیں ہونے کا ، بلکہ الٹا ان پروگراموں کا حرج ہوگا جس کی خاطر اردو محفل کے ذمہ داران بلا کسی تعصب کے اردو کی ترویج اور اس کے فروغ کے لیے کمر باندھے ہوئے ہیں۔
    اختلاف رائے پیش کرنا ایک علیحدہ معاملہ ہے اور اس کی آڑ میں لاحاصل بحث و مباحثے کا دروازہ کھولنا ایک مختلف امر ہے۔
    جہانزیب صاحب جانتے ہیں ، میں جانتا ہوں ۔۔۔ اس کے علاوہ بھی مزید لوگ ہیں جو یہ بات جانتے ہیں کہ آپ کی یہ مخصوص "تحقیق" کہاں کہاں پھیلی ہوئی ہے اور کہاں کہاں سے دستیاب ہو سکتی ہے۔

    آپ خود غور فرما لیجئے کہ فاروق بھائی کے ساتھ جب مجھ سمیت دیگر احباب کی "بیٹھکیں" یہاں کم ہوئیں (بلکہ "ختم" ہوئیں) تو محفل کے کتنے اہم پراجکٹس کی طرف نظر ثانی ہوئی اور کتنے نئے پراجکٹس کی طرف سب کی نظریں اٹھیں؟ بلکہ خود آپ نے ہی تو جوملہ لائیبریری جیسے پراجکٹ کی طرف پیش قدمی کی۔

    کسی اوپن فورم پر ایک خاص انداز میں چند مخصوص نظریات کی پیشکشی کیا لایعنی بحث و مباحثے کا دروازہ نہیں کھولتی؟
    کیا یہ تحریریں آپ پہلی بار یہاں پیش کر رہی ہیں؟ کیا یہ مختلف جگہوں پر مختلف عنوانات کے سہارے ہر فارمیٹ میں برائے مفت مطالعہ موجود نہیں ہیں؟ کیا ان کا ربط دے دیا جانا کافی نہیں ہوگا؟

    امید کہ کبھی ان باتوں پر بھی ضرور غور فرمائیں گی۔ شکریہ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
لڑی کی کیفیت:
مزید جوابات کے لیے دستیاب نہیں

اس صفحے کی تشہیر