داغ عشق تاثیر کرے اور وہ تسخیر بھی ہو ۔ داغ دہلوی

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 11, 2017

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,653
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    عشق تاثیر کرے اور وہ تسخیر بھی ہو
    یہ تو سب کچھ ہو مگر خواہشِ تقدیر بھی ہو

    کاش تجھ سے ہی مقابل تری تصویر بھی ہو
    دعویِٰ ناز بھی ہو شوخیِ تحریر بھی ہو

    جعل سازوں نے بنایا ہے شکایت نامہ
    کیوں خفا آپ ہوئے یہ مری تحریر بھی ہو

    طمعِ زر ہی سے انسان کی مٹی ہے خراب
    خاک میں ہم تو ملا دیں اگر اکسیر بھی ہو

    جب مقابل ہی نہ ہوں کس کو بتاؤں اچھا
    سامنے آپ بھی ہوں آپ کی تصویر بھی ہو

    پہلے یہ شرط مصور سے وہ کر لیتے ہیں
    بانکی صورت بھی کھنچے ہاتھ میں شمشیر بھی ہو

    کوئی نادان ہوں یاروں کے کہے میں آؤں ؟
    جس کو تدبیر بتاتے ہیں وہ تدبیر بھی ہو

    کاش وہ محفل ِاغیار میں اے جذبۂ دل
    میری تعظیم بھی دے ، مجھ سے بغل گیر بھی ہو

    لڑ پڑے غیر سے کیا خیر ہے کیسا ہے مزاج
    تم جو چُپ چُپ بھی ہو ، مضطر بھی ہو، دلگیر بھی ہو

    گو ہے شوخی وہ اثر دیدۂ نرگس میں کہاں
    اُس کی آنکھوں کی طرح سرمۂ تسخیر بھی ہو

    تم نمک خوار ہوئے شاہِ دکن کے اے داغؔ
    اب خدا چاہے تو منصب بھی ہو ، جاگیر بھی ہو

    (داغؔ دہلوی)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3

اس صفحے کی تشہیر