شاذ تمکنت شاذ تمکنت ::::: میں تو چُپ تھا مگر اُس نے بھی سُنانے نہ دِیا ::::: Shaz Tamkanat

طارق شاہ نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 27, 2015

  1. طارق شاہ

    طارق شاہ محفلین

    مراسلے:
    10,631
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    غزل
    [​IMG]

    میں تو چُپ تھا مگر اُس نے بھی سُنانے نہ دِیا
    غمِ دُنیا کا کوئی ذکر تک آنے نہ دِیا

    اُس کا زہرآبۂ پَیکر ہے مِری رگ رگ میں
    اُس کی یادوں نے مگر ہاتھ لگانے نہ دِیا

    اُس نے دُوری کی بھی حد کھینچ رکھی ہے گویا
    کُچھ خیالات سے آگے مجھے جانے نہ دِیا

    بادبان اپنے سفِینے کا ذرا سی لیتے
    وقت اِتنا بھی زمانے کی ہَوا نے نہ دِیا

    وہی انعام! زمانہ سے جسے مِلنا تھا
    لوگ معصُوم ہیں، کہتے ہیں خدا نے نہ دِیا

    کوئی فریاد کرے گوُنج مِرے دِل سے اُٹھے
    موقعِ درد کبھی ہاتھ سے جانے نہ دِیا

    شاذ! اِک درد سے سو درد کے رشتے نِکلے
    کِن مصائب نے اُسے جی سے بُھلانے نہ دِیا

    شاذ تمکنت
     

اس صفحے کی تشہیر