1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $413.00
    اعلان ختم کریں

شاتم رسول کی سزا اور اسکی معافی؟

ایم اسلم اوڈ نے 'اسلام اور عصر حاضر' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 3, 2010

  1. ابو ثمامہ

    ابو ثمامہ محفلین

    مراسلے:
    249
    موڈ:
    Amazed
    ملا حضرات كا ہاضمہ ہضم کرنے کے معاملے میں ویسے بھی ضرب المثل ہے، لیکن آپ کے ہاضمہ میں شاید یہ صلاحیت نہ ہو۔ لہذا گذارش ہے کہ تصویر کا دوسرا رخ بھی دکھائیے اور بتائیے کہ پچھلے کچھ عرصے سے یہ سب وشتم کے واقعات ایک مخصوص وقفے سے کیوں اس تسلسل سے وقوع پذیر ہو رہے ہیں؟؟؟؟!!!
    امید ہے، آپ اس سؤال کے جواب کو "ہضم" نہیں کریں گی۔
     
  2. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    24,999
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    بحث کو کج روی اور ذاتیات سے دور ہی رکھیں پلیز، اگر آپ سب خواتین و حضرات اس بحث کو چلانا چاہ رہے ہیں تو۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  3. سویدا

    سویدا محفلین

    مراسلے:
    1,842
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Question
    یہ سوال واقعی قابل غور ہے ، مجھے ملاوں سے جانبدارانہ ہمدردی ہرگز نہیں ہے لیکن توہین واہانت رسول کے واقعات مشرق ومغرب میں کیوں پے در پے پیش آرہے ہیں ؟
    جبکہ دنیا کے کسی بھی شدت پسند ملا سے کبھی کسی پیغمبر کی اہانت یا گستاخی کا پہلوا سرزد نہیں ہوا۔
    اس بات پر بھی ذرا غور کیجیے کہ کیوں آسیہ بی بی کے لیے مغرب کے بہت سے ممالک نے فورا دروازے کھول دیے دوسری طرف پوپ نے بھی رحم کی اپیل کردی !
    میری اس بات کا یہ مطلب بھی نہیں ہے کہ اس کے ردعمل میں آسیہ کو بلا تحقیق مجرم قرار دے کر سزا دی جائے
    لیکن یہ سوچنے کی بات ضرور ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. اظفر

    اظفر محفلین

    مراسلے:
    782
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    بنت حوا اور دہلوی کے جوابات کے بعد مزید مباحثہ صرف تنقید کیلیے ہو سکتا ہے اصلاح کیلیے نہیں۔ اسلیے اس سے زیادہ اس موضوع کو کھینچنا شاید مناسب نہ ہو۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. مہوش علی

    مہوش علی لائبریرین

    مراسلے:
    3,003
    اچھی نصیحت کا شکریہ بنت حوا بہن۔
    بہرحال ایک درخواست پھر بھی ہے کہ دوسری طرف کا بھی انداز بھی آپ نظر میں رکھئیے جہاں وہ اس مسئلے پر اتنے پُرجوش اور پُر تشدد ہیں کہ اس توہین آرڈیننس کے خلاف کچھ سننے کے لیے تیار نہیں، کوئی سچا جھوٹا الزام لگائے تو فوراً مرنے مارنے پر تُل جاتے ہیں، "فتنہ غامدیت" اور "فتنہ مودودیت" جیسے اصطلاحات اختلاف رائے پر انہیں علمائے کرام نے استعمال کی ہیں (خاص طور پر غامدی صاحب پر اس آرڈیننس کی مخالفت پر انکے خلاف آپ کو بہت شور نظر آ جائے گا)۔
    آپ اطمنان سے اپنا وقت لیں اور آپ کو جو کچھ کہنا ہے وہ تفصیل سے بیان فرمائیں۔ اللہ نے چاہا تو اسی طرح اس مسئلے پر پائے جانے والے شکوک و شبہات دونوں طرف سے ختم ہو سکیں گے۔ انشاء اللہ۔
    بنت حوا بہن،
    پہلی بات یہ ہے کہ یہ میرا ترجمہ نہیں تھا، بلکہ جامعہ اشرفیہ کے طلباء نے کتب حدیث کو ڈیجیٹلائز کیا تھا اور یہ اُن کے علماء کی طرف سے کیا ہوا ترجمہ تھا۔ (امید ہے کہ آپ کے پاس بھی وہ سی ڈی ہو گی اور آپ اُس میں یہ ترجمہ دیکھ سکتی ہیں)۔ اور لگتا ہے کہ انہوں نے مشکوۃ مصابیح عربی (لنک) موجود اسکی شرح کو دیکھتے ہوئے بات کو واضح کرنے کے لیے یہ ترجمہ کیا ہے۔

    دوسری بات یہ ہے کہ لفظ بہ لفظ ترجمے کے اعتبار سے آپ کا ترجمہ بالکل صحیح ہے اور اس سے مجھے کوئی اختلاف نہیں ہے۔

    تیسرا یہ کہ گستاخیِ رسول کے ضمن میں صرف "سب و شتم (گالیاں دینا) ہی نہیں آتا۔ بلکہ نقلیں اتارنا (جیسا حکم بن العاص کرتا تھا) یا پھر ایسی گستاخی کرنا جیسا کہ عبداللہ ابن ابی نے رسول ﷺ کی شان میں کی تھی، یا پھر ہجو کرنے جیسے افعال بھی گستاخی رسول میں آتے ہیں۔ آج کے علمائے کرام کے موجودہ آرڈیننس میں اسکی سزا "فورا" اور "بغیر کسی توبہ کے" سزائے موت ہے۔ اس مرحلے سے آگے بڑھنے سے قبل آپ کو یا تو اس آرڈیننس کو سنت نبوی کے خلاف ماننا پڑے گا، یا پھر ان چیزوں کا انکار کرنا پڑے گا۔

    چوتھا کہ یہ کوئی پکا ثبوت Hard Evidence نہیں ہے کہ سب و شتم نہیں کیا ہو گا کیونکہ آپکی پیش کردہ روایت کے مقابلے میں سنن ابو داؤد کی اندھے صحابی والی روایت بھی موجود ہے جس میں انکی کنیز "عادتا" اور "مستقلاً" رسول اللہ ﷺ پر (معاذ اللہ) سب و شتم کرتی تھی اور صحابہ شاید اسکو پہلے اس لیے برداشت کرتے رہے کیونکہ یہ غیر مسلم کفار و یہود کی عام پریکٹس تھی اور اس پر انہیں "فوراً" پہلی دفعہ میں ہی قتل کر دینے کا کوئی براہ راست حکم رسول اللہ ﷺ سے موجود نہیں تھا۔ یہاں بھی آپ کو آگے بڑھنے سے پہلے یا تو اس اندھے صحابی والی روایت کا انکار کرنا پڑے گا، ورنہ آپ کا حضرت ابو ہریرہ کی والدہ کے متعلق آپ نے جو استدلال پیش کیا ہے، اُس کی نفی کرنا پڑے گی۔

    خلاصہ یہ ہے کہ کان کو سیدھی طرح پکڑیں یا پھر ہاتھ گھما کر پکڑیں، مگر یہ بات ثابت شدہ ہے کہ حضرت ابو ہریرہ کی والدہ نے ایسی بات کہی تھی جو کہ توہین رسالت کے ضمن میں آتی تھی اور اسی کی کراہت اور ناگواری کی وجہ سے حضرت ابو ہریرہ روتے ہوئے رسول ﷺ کی خدمت میں حاضر ہوئے اور اس بات کو دہرانے سے انکار کر دیا۔

    حکم بن العاص کے واقعہ کی تفصیل
    حکم بن العاص کا شمار اُن لوگوں میں ہوتا ہے جو فتح مکہ کے بعد اسلام لائے اور انہیں طلقاء کہا جاتا ہے۔
    جب رسول اللہ ﷺ اپنی کسی صحابی سے رازداری سے کوئی بات کرتے تھے تو یہ شخص انہیں چھپ کر سن لیتا تھا اور پھر آگے جا کر پھیلا دیتا تھا جس سے منافقین کو پہلے سے بہت سی باتوں کا علم ہو جاتا تھا۔
    حکم بن العاص رسول اللہ ﷺ کے پیچھے چلتے ہوئے انکی چال ڈھال کی اور چہرہ مبارک کی نقلیں اتارا کرتا تھا۔ اور نماز کے دوران بھی ہاتھ اور انگلیوں سے بُرے بُرے انداز بناتا تھا۔ جب رسول اللہ ﷺ نے اس کو یہ حرکتیں ہوئے پکڑا تو آپ ﷺ نے فرمایا کہ ایسے ہی رہو۔ اس لعنت کے نتیجے میں وہ اُسی حالت میں ویسا کا ویسا ہی رہ گیا اور تامرگ ایسا ہی رہا کہ اسکا منہ، چہرہ اور ہاتھ ہر وقت اس بری حالت میں ہلتے ہی رہتے تھے۔

    رسول اللہ ﷺ کی اس لعنت کے متعلق ایک اور صحیح روایت مسند احمد بن حنبل ان الفاظ میں موجود ہے۔
    حدثنا عبد الله حدثني أبي حدثنا ابن نمير حدثنا عثمان بن حكيم عن أبي أمامة بن سهل بن حنيف عن عبد الله بن عمرو قال
    -كنا جلوسا عند النبي صلى الله عليه وسلم وقد ذهب عمرو بن العاص يلبس ثيابه ليلحقني فقال ونحن عنده ليدخلن عليكم رجل لعين فوالله ما زلت وجلا أتشوف داخلا وخارجا حتى دخل فلان يعني الحكم

    بہرحال، حکم بن العاص اس لعنت کے باوجود اپنی حرکتوں سے باز نہیں آیا۔ ایک دن رسول اللہ ﷺ اپنی ایک زوجہ کے گھر میں تھے کہ یہ خاموشی سے آ کر دروازے کے سوراخ سے جھانکنے لگا۔ رسول اللہ ﷺ نے اسکو پہچان لیا ۔ آپ ﷺ باہر تشریف لائے اور فرمایا کہ کون ہے جو مجھے اس گندے شخص سے بچائے گا؟ پھر آپ ﷺ نے مزید فرمایا کہ یہ شخص اور اسکی آل اولاد ہرگز اس شہر میں نہیں رہ سکتی جس میں میں موجود ہوں، اور اسکے بعد آپ نے اسکو بمع اسکے بیٹے مروان بن الحکم کے طائف شہر بدر کر دیا۔

    اتنا کچھ ہونے کے باوجود بھی رسول اللہ ﷺ نے اس شخص کو قتل نہیں کروایا بلکہ اسے طائف کی طرف شہر بدر کر دیا۔ اور صرف یہ ہی نہیں بلکہ بستر مرگ پر اسے معاف بھی کر دیا (چنانچہ جو لوگ سورۃ توبہ کی آیت 12 سے استدلال کرتے ہیں، وہ صحیح نہیں بلکہ فقط ایسی رائے ہے جو غلط ثابت ہو رہی ہے)۔

    فتح مکہ پر قتل کرنے کے واقعہ سے احتجاج کرنا درست نہیں
    علمائے کرام جو فتح مکہ کے وقت 5 افراد کے قتل کے واقعہ کو گستاخی رسول آرڈیننس کے لیے استعمال کرتے ہیں، تو یہ غلط ہے۔
    اہل مکہ کے معاملہ میں بنیادی مسئلہ یہ تھا کہ اگر کوئی قبیلہ یا شہر والے اپنا معاہدہ توڑ دیتے اور مخالفین کی مدد کرتے تھے، تو پھر انکی شرارت کے بعد جب وہ مفتوح ہوتے تھے تو اس بدعہدی اور شرارت کے نتیجے میں حق بن جاتا تھا کہ انہیں تہہ تیغ کیا جائے۔
    بنو قینقاع کا قتل
    انہوں نے ایک مسلمان کو قتل کر دیا تھا اور معاہدہ شکنی کی۔ جواب میں ان پر حملہ کیا گیا اور انکی ابتدائی سزا قتل پائی، مگر انکے چونکہ انصار کے قبیلے خزرج سے بہترین تعلقات تھے لہذا حالات کے تحت انہیں انکے علاقے سے علاقہ بدر کر دیا گیا۔
    بنو قریظۃ کو شہر بدر کرنا
    پہلے انہوں نے رسول اللہ ﷺ کے ساتھ معاہدہ کیا۔ مگر جب جنگ خندق جاری تھی تو انہوں نے کفار مکہ سے بات چیت شروع کر دی اور یوں معاہدہ شکنی کی۔ جواب میں جنگ خندق کے بعد انکو عہد شکنی کی سزا دینے کے لیے رسول اللہ ﷺ نے فوج کشی کی اور انہوں نے محاصرے کے بعد ہتھیار ڈال دیے۔ انکی سزا قتل پائی۔
    اہل مکہ کی بدعہدی
    اہل مکہ سے صلح حدیبیہ ہوئی تھی۔ مگر انہوں نے بدعہدی کی۔
    ابن کثیر الدمشقی سورۃ توبہ کی آیت 7 کی تفسیر میں لکھتے ہیں:"صلح حدیبیہ دس سال کے لیے ہوئی تھی۔ ماہ ذی القعدہ سنہ ٦ ہجری سے حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے اس معاہدہ کو نبھایا یہاں تک کے قریشیوں کی طرف سے معاہدہ توڑا گیا ان کے حلیف بنو بکر نے رسول اللہ صلی للہ علیہ وسلم کے حلیف خزاعہ پر چڑھائی کی بلکہ حرم میں بھی انہیں قتل کیا"

    چنانچہ مکہ کو فتح کرنے کے بعد وہاں کے واقعات سے توہین رسالت آرڈیننس کے واقعات تلاش کرنا ہرگز درست نہیں کیونکہ وہاں صرف ان 5 افراد ہی نہیں بلکہ پوری آبادی کا قتل حلال ہو چکا تھا کیونکہ یہ قصاص تھا خزاعہ کے بہائے جانے والے خون کا۔ اگر توہین رسالت کے جرم میں ہی قتل کرنا ہوتا تو مکہ، طائف و خیبر وغیرہ میں ان 5 افراد سے کہیں زیادہ لوگ توہینِ رسالت کرتے تھے، آپ ﷺ کو ایذا دیتے رہے تھے اور آپ ﷺ کو خون تک میں لہولہان کر چکے تھے۔

    رسول اللہ ﷺ نے اپنی ریاست میں کتنے لوگوں کو توہین رسالت کے جرم میں قتل کیا گیا؟
    کعب بن اشرف، ابو رافع یہودی اور اہل مکہ کے 5 افراد کے قتل کی وجوہات صرف توہینِ رسالت ہی نہ تھی بلکہ اس سے بڑھ کر کچھ اور تھیں۔
    اب باقی رہ جاتے ہیں صرف دو واقعات جہاں اسلامی ریاست میں توہین رسالت پر سزا دی گئی۔
    پہلا: نابینا صحابی کی باندی کا واقعہ
    مگر اس سے بھی موجودہ توہین رسالت آرڈیننس ثابت نہیں ہوتا کیونکہ اس میں صاف طور پر موجود ہے کہ اُس باندی نے عادت ہی بنا لی تھی کہ وہ مستقل رسول ﷺ کو بُرا بھلا کہتی تھی، اور وہ صحابی پہلی ہی مرتبہ میں فوراً قتل کر دینے کی بجائے مستقل اُسے ہدایت کی نصیحت کرتے رہے، اور آخر میں جا کر انہوں نے اسے قتل کیا۔
    سند کے حوالے سے شاید اختلاف ہے اور کوئی شاید اسے صحیح روایت قرار بھی دے دے۔ مگر بہرحال دو چیزیں پھر بھی ہیں۔
    پہلی یہ کہ یہ روایت "خبر واحد" ہے۔
    دوسرا یہ کہ درایت کے اصول پر یہ روایت پوری نہیں اترتی۔ اسلام کوئی بے لگام ضابطہ حیات نہیں، بلکہ ایک مکمل صابطہ حیات ہے۔ اس میں "گواہوں" اور "شہادتوں" کا ایک مکمل نظام موجود ہے جسے نظر انداز نہیں کیا جا سکتا۔
    اگر ان نابینا صحابی کے واقعے پر ایمان لے آیا جائے تو پھر یہاں سے اس فتنے کی راہ کھل جائے گی کہ جس کا جی چاہے گا وہ قتل کر کے بعد میں کہہ دے گا کہ مقتول نے رسول ﷺ کی شان میں گستاخی کی تھی اس لیے میں نے اِسے قتل کر دیا۔
    شہادتوں کے نظام کے تحت واقعہ افک پر ایک نظر
    شہادتوں کا یہ نظام کتنا اہم ہے، اسکا اندازہ ہمیں واقعہ افک سے بہت بہترین طور پر ہو سکتا ہے۔ یہ واقعہ ہمارے لیے بہترین سبق ہے کہ "غلط گواہیاں" فقط دشمنی یا جہالت کی وجہ سے ہی نہیں سامنے آتیں، بلکہ کبھی کبھار اچھے اچھے انسانوں کے دماغوں میں ایسے فتور پیدا ہو جاتے ہیں کہ وہ بلاجواز اور بلا وجہ ہی دوسروں پر غلط الزام لگا جاتے ہیں۔ چنانچہ اسی لیے نہ صرف گواہ ضروری ہیں، بلکہ انکی گواہیوں میں بھی کوئی تضاد نہیں ہونا چاہیے۔
    واقعہ افک میں حضرت عائشہ پر الزام لگانے والے کوئی کفارِ مکہ نہیں تھے بلکہ رسول اللہ ﷺ کےشاعر صحابی حسان بن ثابت، صحابی مسطح اور صحابیہ حمنہ بنت جحش (جو ام المومنین حضرت زینب کی بہن تھیں) شامل تھے۔
    آج تک یہ معمعہ حل نہیں ہو سکا کہ انہوں نے حضرت عائشہ پر جھوٹا الزام کیوں لگایا۔۔۔ واحد وجہ یہ ہی نظر آتی ہے کہ اچھے اچھے انسانوں میں کبھی کبھار کچھ ذہنی بیماری پیدا ہو جاتی ہے جس کی وجہ سے دوسروں پر غلط الزام لگا جاتے ہیں۔ اسکے علاوہ اس واقعہ کی کوئی اور توجیہ سامنے نہیں آئی ہے۔
    چنانچہ جب ان دو صحابہ اور ایک صحابیہ کی گواہی کافی نہیں تو ایک اکیلے نابینا صحابی کی گواہی کیسے کافی ہو سکتی ہے جبکہ اس قصے میں کسی منصف کی عدالت میں مقدمہ پیش ہوا اور نہ ملزمہ کو اپنی صفائی میں کچھ بولنے کا موقع دیا گیا؟ (واقعہ افک میں مقدمہ رسول ﷺ کے پاس آیا، حضرت عائشہ نے اپنے بے گناہی کا دعوی کیا اور پھر گواہ بھی سامنے آئے، مگر نابینا صحابی کے کیس میں یہ سب کچھ نہیں ہو رہا)۔
    دوسرا اور آخری: یہودی عورت کا قصہ
    سنن ابو داؤد میں ہی ایک اور واقعہ علی ابن ابی طالب سے منسوب کیا گیا ہے:
    Sunnan Abu Dawud, Book 38, Number 4349:
    Narrated Ali ibn AbuTalib:
    A Jewess used to abuse the Prophet (peace_be_upon_him) and disparage him. A man strangled her till she died. The Apostle of Allah (peace_be_upon_him) declared that no recompense was payable for her blood.
    اس دوسری اور آخری روایت ہے، مگر اس سے بھی علماء کا بنایا ہوا موجودہ توہین رسالت آرڈیننس ثابت نہیں ہوتا۔
    پہلا یہ کہ یہ بھی خبر واحد ہے جو اور کسی طریقے نقل نہیں ہوئی۔ اس لحاظ سے یہ غریب حدیث ہے۔ اوپر والی روایت میں اُس نابینا صحابی کا نام نامعلوم تھا۔ اس روایت میں اس یہودیہ عورت کو قتل کرنے والے صحابی کا نام نامعلوم ہے۔
    دوسرا اس روایت سے بھی موجودہ توہین رسالت آرڈیننس ثابت نہیں ہوتا کیونکہ اس سے بھی پتا چلتا ہے کہ اُس یہودیہ عورت نے "عادت" بنا لی تھی اور وہ مستقل رسول اللہ ﷺ پر سب و شتم کرتی تھی اور ایسا نہیں ہوا کہ پہلی مرتبہ میں ہی فورا اسے قتل کر دیا گیا ہو۔
    تیسرا یہ کہ یہ روایت بھی درایت کے اصولوں پر پوری نہیں اتر پا رہی ہے۔ اس میں بھی منصف ہے، نہ عدالت ہے، نہ مجرمہ کو اپنی صفائی پیش کرنے کا موقع، نہ گواہان اور نہ انکی شہادتیں۔ کچھ علم نہیں کہ کسی شخص نے ذاتی عناد میں آ کر اُسے قتل کر دیا ہو اور بعد میں الزام لگا دیا ہو کہ وہ رسول اللہ ﷺ پر سب و شتم کرتی تھی۔ واقعہ افک ہمارے سامنے ہے کہ ایسے غلط الزامات کا لگایا جانا کچھ بعید نہیں ہوتا۔

    خلاصہ:
    1۔ سینیٹر پروفیسر ساجد میر صاحب نے بس یہی دو روایات پیش کی ہیں۔ اگر ان دو روایات کے علاوہ اگر کوئی تیسری روایت صحیح اسناد کے ساتھ موجود ہے تو پیش فرمائیے۔
    2۔ ان دو روایات کو مان بھی لیا جائے تب بھی اس سے علمائے کرام کا بنایا ہوا موجودہ آرڈیننس ثابت نہیں ہوتا بلکہ یہ ثابت ہوتا ہے کہ اگر کوئی رسول اللہ ﷺ کی شان میں گستاخی کرے تو اسے ہدایت کی جائے، نصیحت کی جائے اور اللہ سے دعا کی جائے۔ لیکن اگر ان تمام باتوں کے باوجود وہ اپنی اس عادت سے باز نہ آئے تو پھر اس پر سزا جاری کی جائے۔
    3۔ حکم بن العاص کے واقعے سےثابت ہوتا ہے کہ یہ شریعت میں یہ کوئی فکس سزا نہیں ہے اور اسلامی حکومت وقت اور حالات کے تحت سزا تجویز کر سکتی ہے۔

    فقہائے احناف کا فتوی: صرف "عادی" گستاخی کرنے والے کو سزا دی جائے
    ابن عابدین، رسائل ابن عابدین ١/٣٥٤
    فقہاے احناف کے نزدیک اس جرم کے مرتکب کو قتل کرنا لازم نہیں اور عام حالات میں کسی کم تر تعزیری سزا پر ہی اکتفا کی جائے گی، البتہ اگر کوئی غیر مسلم اس عمل کو ایک عادت اور معمول کے طور پر اختیار کر لے تو اسے موت کی سزا بھی دی جا سکتی ہے۔

    اگر اوپر کی دو روایات کی درست تسلیم کیا جائے تو فقہائے احناف کا یہ فتوی کچھ سمجھ آتا ہے کہ صرف "عادی" اور معمول کے طور پر اس قبیح فعل کو اختیار کرنے والے کو سزا دی جائے۔

    مگر جو بات بالکل سمجھ میں نہیں آتی وہ یہ ہے کہ آج ہمارے پاکستان کے فقہائے احناف اس کو مکمل طور پر نظر انداز کر کے انتہائی رویے کو کیوں اپنائے ہوئے ہے اور آج جو توہین رسالت کے نام پر اقلیتیوں کو ہراساں کیا جاتا ہے اور ذاتی دشمنیاں نکالنے کے لیے اس آرڈیننس کا غلط استعمال کیا جاتا ہے، اس پر انہیں اتنا سکون کیوں ہے؟
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. مہوش علی

    مہوش علی لائبریرین

    مراسلے:
    3,003
    بہتر ہو گا کہ پہلے ہم ان ثانوی بحوث میں پڑنے سے قبل بنیادی چیزوں پر بات کر لیں۔ اگر آپ مجھے ان ثانوی سوالات میں الجھانا چاہتے ہیں تو یہ الگ مسئلہ ہے۔ ایک دفعہ بنت حوا بہن، دہلوی بھائی صاحب اور دیگر اصحاب اور میں اس بات پر متفق ہو جائیں کہ بنیادی مسئلے پر ہم نے سیر حاصل بحث مکمل کر لی ہے، تو پھر ان ثانوی سوالات پر بالکل بات چیت شروع کی جا سکتی ہے، اور میرے پاس بھی آج کے حالات کے حوالے سے آپ سے بہت سے اہم سوالات ہیں۔ مگر یہ سب کچھ وقت آنے پر انشاء اللہ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  7. طالوت

    طالوت محفلین

    مراسلے:
    8,357
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Bashful
    راج پال کے قتل اور اس کی تفصیل ڈاکٹر کمال عمر کی تاریخ اسلام سے متعلق کتاب جو غالبا جامعہ کراچی کے تعاون سے شائع ہوئی ہے میں تفصیل ضرور پڑھئیے گا۔
    وسلام
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. مہوش علی

    مہوش علی لائبریرین

    مراسلے:
    3,003
    مضمون: موجودہ توہینِ رسالت قانون ہرگز شریعت کے اصولوں کے مطابق نہیں

    طویل گفتگو بیکار ہے۔ اگر پاکستان میں موجودہ توہین رسالت آرڈیننس کے نتیجے میں اٹھنے والے فتن کو ختم کرنا ہے تو اس بنیاد پر توجہ دینی پڑے گی۔

    ان تمام لوگوں کا شکریہ کہ جنکے علم کے توسل سے آرٹیکل مکمل ہوا۔ پہلے ایک حدیث ملی حضرت ابو ہریرہ کی والدہ کے متعلق جو ایک بھائی نے پیش کی۔ یہاں سے سفر شروع ہوا اور پھر شمع سے شمع جلتی گئی اور میں ان سب شمعوں کو جمع کرتی چلی گئی۔ باقی میری امیدوں کا پورا سہارا اللہ کی ذات ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. احمد مصطفیٰ

    احمد مصطفیٰ محفلین

    مراسلے:
    1
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    جواب:
    اس اعتراض کا جواب دینے سے پہلے ایک مشہور قاعدہ بیان کرتا ہوں اور وہ یہ ہے کہ ایک آدمی نے کسی دوسرے آدمی کو بے گناہ قتل کردیا۔ اب قاتل کیلئے سزائے موت ہے، اور اسکا خون مباح ہے۔ قتل ثابت ہونے پر اسکو ضرور قتل کیا جائے گا۔ لیکن مقتول کےوارث کے پاس یہ حق ہے کہ وہ اس قاتل کو معاف کردے ،
    اور مقتول کے وارث کے معاف کرنے کے بعد اس قاتل کو سزائے موت دینا جائز نہیں ہے۔ لیکن یہ حق صرف مقتول کے وارث کے پاس ہے ، کسی اور کے پاس نہیں۔لھذا اگر مقتول کے وارث موجود نہ ہوں تو کوئی دوسرا آدمی اس قاتل کے سزاے موت کو نہیں بدل سکتا۔
    بالکل ایسے ہی چونکہ شاتم رسول نے نبی کی توہین کی ہوتی ہے تو یہ گستاخ سزاے موت کا حقدار بن گیا ہے۔لیکن اگر نبی کسی حکمت کے سبب اس گستاخ کی اس گستاخی کو معاف کردے تو ظاہر ہے کہ اس شاتم رسول کو سزاے موت نہیں ہوگی۔
    اور جس طرح صرف مقتول کے وارث کے پاس قاتل کو معاف کرنے کا حق ہوتا ہے۔بالکل ایسے ہی گستاخ رسول کو معافی کا حق صرف رسول کو ہی ہوتا ہے۔نبی کے علاوہ کسی کو بھی یہ حق حاصل نہیں کہ وہ اہانت رسول کے مرتکب شخص کو معاف کردے۔
    ظاہر ہے نبی کی عزت کو اس نے مجروح کیا ہوتا ہے تو معافی کا اختیار بھی صرف نبی کوحاصل ہوگا۔
    اور یہی امت مسلمہ کا معمول ہے کہ نبی پاک صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم کے وفات کے بعد صحابہ کرام رضی اللہ تعالیٰ عنھم سے لے کر آج کے دور تک امت کا اس مسئلے پر اجماع ہے کہ گستاخ رسول کو سزاے موت دی جاے گی۔ اور اسی قاعدے کی بنیاد پر ان علماء کا فیصلہ ہے جو کہ گستاخ رسول کی سزاے موت کو توبہ کے بعد بھی بحال رکھتے ہیں۔
    نیز نبی پاک صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم صاحب شریعت تھے اور صاحب حکمت تھے۔ انکو معلوم تھا کہ کس کے قتل کرنے میں حکمت ہے اور کس کے قتل نہ کرنے میں۔ لھذا ابن خطل اور اور حویرث کے سزاے موت کو نبی صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم نے بحال رکھااور سہل بن عمرو اور عکرمہ بن ابی جھل کو معاف کیا۔اور بعد میں یہ دونوں سچے دل سے اسلام لائے تھے۔
    رہا یہ سوال کہ عبد اللہ ابن ابی ابن سلول کا جنازہ نبی صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم نے خود پڑھایا تھا ، تو یہ بات درست ہے اور عبد اللہ ابن ابی ابن سلول کی منافقت کا علم نبی صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم کو بھی ہوا تھا۔لیکن عبد اللہ ابن ابی ابن سلول مدینہ میں ایک قبیلہ کا سردار تھا اور مدینہ میں اگر نبی صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم تشریف نہ لاتے تو اسکی سرداری یقینی تھی۔لیکن نبی پاک صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم کی تشریف آوری سے اسکو سرداری نہ مل سکی، اور حضور صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم اس کوشش میں ہوتے تھے کہ کسی طرح عبد اللہ ابن ابی ابن سلول سچے دل سے مسلمان ہوجاے، اور منافقت کی چادر اتار پھینکے۔
    اور اسکی گستاخیوں کو بھی صرف اسلئے معاف کیا کہ معافی کا اختیار نبی صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم کو حاصل تھا۔
    نیز حضور صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم امت پر مہربان تھے اور چاہتے تھے کہ یہ لوگ جہنم کی آگ سے بچ جائیں ،لھذا اسی لئےنبی پاک صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم نے عبد اللہ ابن ابی ابن سلول کا جنازہ پڑھا۔
    لیکن اس واقعے کے بعد اللہ تعالیٰ نے حضور صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم کو منافقین کے جنازے پڑھنے سے منع کردیا۔اور یہ حکم نازل ہوا کہ نہ تو ان منافقین کیلئے مغفرت کی دعاء کی جاے اور نہ ہی انکا جنازہ پڑھا جاے۔اور یہ حکم آج تک قائم ودائم ہے۔
     
  10. مہوش علی

    مہوش علی لائبریرین

    مراسلے:
    3,003
    محمد ﷺ نے خیبر، مکہ و طائف وغیرہ فتح ہو جانے کے باوجود ان تمام لوگوں کو قتل نہیں کیا جو آپ ﷺ کی شان میں گستاخی کیا کرتے تھے۔ نہ ہی ان یہودیوں کو قتل کیا جو راعنا اور السام علیکم جیسے الفاظ کا استعمال کر کے آپ ﷺ کی توہین کیا کرتے تھے۔ اس پر موجودہ توہین رسالت قانون کے حامی حضرات[30] کا دعویٰ ہے کہ محمد ﷺ کو حق حاصل تھا کہ جو انکی شان میں گستاخی کرے اُسے معاف کر دیں، مگر آج کسی کے پاس یہ حق نہیں ، چنانچہ آج ہر صورت میں گستاخ کو قتل کیا جائے گا۔
    معترضین حضرات[56] کے نزدیک یہ دعویٰ قابل قبول نہیں کیونکہ:
    1. محمدﷺ سے براہ راست کوئی ایسی بات بیان نہیں ہوئی ہے کہ وہ توہین رسالت کرنے والوں کو اس لیے معاف کر رہے ہیں کیونکہ یہ انکا حق ہے۔ بلکہ یہ ایک نیا عذر ہے جو لوگوں کی اپنی طرف سے پیش کیا جا رہا ہے۔
    2. اہل مکہ فقط محمد ﷺ کی ہی توہین نہیں کرتے تھے، بلکہ وہ اپنے بتوں کے مقابلے میں اللہ کی بھی توہین کرتے تھے، وہ اپنے دین کے مقابلے میں دینِ اسلام کی بھی توہین کیا کرتے تھے، مگر اسکے باوجود محمد ﷺ نے انہیں معاف کیا۔
    3. اور جب حضرت ابوہریرہ کی والدہ نے محمد ﷺ کی شان میں گستاخی کی تو حضرت ابو ہریرہ اس پر شدید رنجیدہ ہوئے، مگر آپ نے انکی اس گستاخی پر عفو و درگذر سے کام لیا، نہ کہ فوراً انکو قتل کر ڈالا۔معاف کرنے کا حق فقط محمد ﷺ کا تھا اور ابو ہریرہ کے پاس یہ حق نہیں تھا تو پھر تو جناب ابو ہریرہ کو فی الفور اپنی والدہ کو توہین کرنے پر قتل کر دینا چاہیے تھا۔ مگر وہ اپنی والدہ کو قتل نہیں کرتے، اور پھر محمد ﷺ کے پاس حاضر ہو کر بھی قتل کی بات نہیں کر رہے، بلکہ محمد ﷺ سے اپنی والدہ کی ہدایت کی دعا کرنے کی بات کر رہے ہیں۔
    4. بلکہ موجودہ قانون کے حامی حضرات کی اپنی پیش کردہ نابینا صحابی اور یہودیہ عورت والی روایات کو بھی صحیح مان لیا جائے تب بھی ان سب سے یہ بات پتا چلتی ہے کہ پہلا قدم عفو و درگذر اور صبر و تحمل اور نیک نصیحت کا ہے، اور یہ عفو و درگذر فقط محمد ﷺ تک محدود نہیں بلکہ وہ نابینا صحابی پہلے قدم میں عفو و درگذر کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔ اس روایت میں بہت صاف طور پر موجود ہے کہ وہ کنیز باندی مسلسل اور بار بار محمد ﷺ کی توہین کیا کرتی تھی، مگر وہ صحابی معاف کرنے کا حق نہ ہونے کے باوجود اس کنیز باندی کو قتل نہیں کرتے تھے، بلکہ صبر و تحمل کے ساتھ فقط نیک نصیحت کرتے تھے۔
    5. محمد ﷺ کے سامنے براہ راست جتنی مرتبہ بھی گستاخی کی گئی (چاہے وہ جناب ابو ہریرہ کی والدہ ہوں، یا عبداللہ ابن ابی، یا پھر یہودی وغیرہ) اس پر آپ (ص) نے اپنے صحابہ کو فقط اور فقط صبر و تحمل، اچھی نصیحت کرنے اور دعائے خیر کا حکم دیا۔ کہیں دور دور تک آپ (ص) نے یہ اشارہ نہیں دیا کہ صحابہ یہ اچھی نصیحت، یہ دعائے فقط محمد ﷺ کی زندگی تک کریں، اور آپ (ص) کی وفات کے بعد اچھی نصیحت اور دعائے خیر کی بجائے ہر ہر صورت لوگوں کو فوراً قتل کرنا شروع کر دیں۔
    6. اور محمد (ص) کی یہ روایت اس معاملے میں تمام شبہات کو دور کر رہی ہے۔
    صحیح بخاری، کتاب كتاب استتابة المرتدين والمعاندين وقتالهم، حدیث 6929 [15] :
    ہم سے ابو نعیم نے بیان کیا انہوں نے سفیان بن عیینہ سے انہوں نے زہری سے انہوں نے عروہ سے انہوں نے حضرت عائشہؓ سے انہوں نے کہا یہود میں سے چند لوگوں نے نبی ﷺ کے پاس آنے کی اجازت چاہی (جب آئے تو) کہنے لگے السام علیک میں نے جواب میں یوں کہا علیکم السام واللعنۃ آپ ﷺ نے فرمایا اے عائشہ اللہ تعالیٰ نرمی کرتا ہے اور ہر کام میں نرمی کو پسند کرتا ہے میں نے کہا یا رسول اللہ ﷺ کیا آپ نے ان کا کہنا نہیں سنا آپ نے فرمایا میں نے بھی تو جواب دے دیا وعلیکم۔
    چنانچہ دلیل یہ ہے کہ محمد (ص) نے جناب عائشہ کو یہ نہیں کہا کہ انہیں معاف کرنا میرا حق تھا اس لیے تم انہیں قتل نہ کرو اور نہ ہی ان پر لعنت کرو۔ نہیں، بلکہ محمد (ص) نے اسکی واضح وجہ یہ فرمائی کہ "اللہ تعالی نرمی کرتا ہے اور ہر کام میں نرمی پسند کرتا ہے"۔ پس توہین رسالت کے معاملے میں جو نرمی ہے وہ محمد ﷺ کے حق کی وجہ سے نہیں بلکہ اللہ تعالی کی نرمی کی وجہ سے ہے جو کہ محمد ﷺ کی وفات کے بعد ختم نہیں ہو گئی، بلکہ قیامت تک یوں ہی جاری رہنے والی ہے۔
     
    • نا پسندیدہ نا پسندیدہ × 1
  11. طلحةخالد

    طلحةخالد محفلین

    مراسلے:
    1
    محمد ﷺ کے سامنے براہ راست جتنی مرتبہ بھی گستاخی کی گئی (چاہے وہ جناب ابو ہریرہ کی والدہ ہوں، یا عبداللہ ابن ابی، یا پھر یہودی وغیرہ) اس پر آپ (ص) نے اپنے صحابہ کو فقط اور فقط صبر و تحمل، اچھی نصیحت کرنے اور دعائے خیر کا حکم دیا۔
     

اس صفحے کی تشہیر