داغ سبب کھلا یہ ہمیں اُن کے منہ چھپانے کا

عاطف ملک نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 2, 2018

  1. عاطف ملک

    عاطف ملک محفلین

    مراسلے:
    1,351
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Innocent
    سبب کھلا یہ ہمیں اُن کے منہ چھپانے کا
    اڑا نہ لے کوئی انداز مسکرانے کا

    طریق خوب ہے یہ عمر کے بڑھانے کا
    کہ منتظر رہوں‌ تا حشر اُن کے آنے کا

    چڑھاؤ پھول میری قبر پر جو آئے ہو
    کہ اب زمانہ گیا تیوری چڑھانے کا

    وہ عذرِ جرم کو بدتر گناہ سے سمجھے
    کوئی محل نہ رہا اب قسم کے کھانے کا

    بہ تنگ آکے جو کی میں نے ترک رسمِ وفا
    ہر اک سے کہتے ہیں یہ حال ہے زمانے کا

    جفائیں کرتے ہیں تھم تھم کے اس خیال سے وہ
    گیا تو پھر یہ نہیں میرے ہاتھ آنے کا

    نہ سوچے ہم کہ تہ تیغ ہوگی خلق اللہ
    گھٹا نہ حوصلہ قاتل کے دل بڑھانے کا

    اثر ہے اب کے مئے تند میں وہ اے زاہد
    کہ نقشہ تک بھی نہ اترے شراب خانے کا

    سمائیں اپنی نگاہوں میں ایسے ویسے کیا
    رقیب ہی سہی ہو آدمی ٹھکانے کا

    لگی ہے چاٹ مجھے تلخیِ محبت کی
    علاج زہر سے مشکل ہے زہر کھانے کا

    تمہیں رقیب نے بھیجا کھلا ہوا پرچہ
    نہ تھا نصیب لفافہ بھی آدھ آنے کا

    لگی ٹھکانے سے بلبل کی خانہ بربادی
    چراغِ گل میں بھی تنکا ہے آشیانے کا

    خطا معاف، تم اے داغؔ اور خواہشِ وصل
    قصور ہے یہ فقط ان کے منہ لگانے کا

    داغؔ دہلوی
    (کلیاتِ داغ)
    ٹیگ نامہ:
    الف عین
    محمد وارث
    ظہیراحمدظہیر
    محمد تابش صدیقی

    (نوٹ:میرے پاس ای بک میں جو غزل موجود ہے، اس میں اپنے اندازے سے کچھ ردو بدل کیا ہے۔اس لیے آپ حضرات کو ٹیگ کیا ہے کہ تصیح کی جا سکے۔)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 2

اس صفحے کی تشہیر