دیوان غالب

نبیل نے 'غالبیات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 13, 2006

  1. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    ہر قدم دوریِ منزل ہے نمایاں مجھ سے
    میری رفتار سے بھاگے ہے ، بیاباں مجھ سے

    درسِ عنوانِ تماشا ، بہ تغافلِ خُوشتر
    ہے نگہ رشتۂ شیرازۂ مژگاں مجھ سے

    وحشتِ آتشِ دل سے ، شبِ تنہائی میں
    صورتِ دُود ، رہا سایہ گُریزاں مجھ سے

    غمِ عشاق نہ ہو ، سادگی آموزِ بُتاں
    کِس قدر خانۂ آئینہ ہے ویراں مجھ سے

    اثرِ آبلہ سے ، جادۂ صحرا اے جُنوں
    صُورتِ رشتۂ گوہر ہے چراغاں مجھ سے

    بیخودی بسترِ تمہیدِ فراغت ہو جو !
    پُر ہے سایے کی طرح ، میرا شبستاں مجھ سے

    شوقِ دیدار میں ، گر تُو مجھے گردن مارے
    ہو نگہ ، مثلِ گُلِ شمع ، پریشاں مجھ سے

    بیکسی ہاے شبِ ہجر کی وحشت ، ہے ہے !
    سایہ خُرشیدِ قیامت میں ہے پنہاں مجھ سے

    گردشِ ساغرِ صد جلوۂ رنگیں ، تجھ سے
    آئینہ داریِ یک دیدۂ حیراں ، مُجھ سے

    نگہِ گرم سے ایک آگ ٹپکتی ہے ، اسد !
    ہے چراغاں ، خس و خاشاکِ گُلستاں مجھ سے

    ----××----

     
  2. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    نکتہ چیں ہے ، غمِ دل اُس کو سُنائے نہ بنے
    کیا بنے بات ، جہاں بات بنائے نہ بنے

    میں بُلاتا تو ہوں اُس کو ، مگر اے جذبۂ دل
    اُس پہ بن جائے کُچھ ایسی کہ بِن آئے نہ بنے

    کھیل سمجھا ہے ، کہیں چھوڑ نہ دے ، بھول نہ جائے
    کاش ! یُوں بھی ہو کہ بِن میرے ستائے نہ بنے

    غیر پھرتا ہے لیے یوں ترے خط کو کہ ، اگر
    کوئی پُوچھے کہ یہ کیا ہے ، تو چُھپائے نہ بنے

    اِس نزاکت کا بُرا ہو ، وہ بھلے ہیں ، تو کیا
    ہاتھ آئیں ، تو اُنھیں ہاتھ لگائے نہ بنے

    کہہ سکے کون کہ یہ جلوہ گری کس کی ہے
    پردہ چھوڑا ہے وہ اُس نے کہ اُٹھائے نہ بنے

    موت کی راہ نہ دیکھوں ؟ کہ بِن آئے نہ رہے
    تم کو چاہوں ؟ کہ نہ آؤ ، تو بُلائے نہ بنے

    بوجھ وہ سر سے گرا ہے کہ اُٹھائے نہ اُٹھے
    کام وہ آن پڑا ہے کہ بنائے نہ بنے

    عشق پر زور نہیں ، ہے یہ وہ آتش غالب !
    کہ لگائے نہ لگے ، اور بُجھائے نہ بنے


    ----××----

     
  3. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    چاک کی خواہش ، اگر وحشت بہ عُریانی کرے
    صبح کے مانند ، زخمِ دل گریبانی کرے

    جلوے کا تیرے وہ عالم ہے کہ ، گر کیجے خیال
    دیدۂ دل کو زیارت گاہِ حیرانی کرے

    ہے شکستن سے بھی دل نومید ، یارب ! کب تلک
    آبگینہ کوہ پر عرضِ گِرانجانی کرے

    میکدہ گر چشمِ مستِ ناز سے پاوے شکست
    مُوے شیشہ دیدۂ ساغر کی مژگانی کرے

    خط عارض سے ، لکھا ہے زُلف کو الفت نے عہد
    یک قلم منظور ہے ، جو کچھ پریشانی کرے

    ----××----




    وہ آ کے ، خواب میں ، تسکینِ اضطراب تو دے
    ولے مجھے تپشِ دل ، مجالِ خواب تو دے

    کرے ہے قتل ، لگاوٹ میں تیرا رو دینا
    تری طرح کوئی تیغِ نگہ کو آب تو دے

    دِکھا کے جنبشِ لب ہی ، تمام کر ہم کو
    نہ دے جو بوسہ ، تو منہ سے کہیں جواب تو دے

    پلا دے اوک سے ساقی ، جو ہم سے نفرت ہے
    پیالہ گر نہیں دیتا ، نہ دے شراب تو دے

    اسد ! خوشی سے مرے ہاتھ پانو پُھول گئے
    کہا جو اُس نے ، ”ذرا میرا پانو داب تو دے “

    ----××----

     
  4. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    تپِش سے میری ، وقفِ کش مکش ، ہر تارِ بستر ہے
    مِرا سر رنجِ بالیں ہے ، مِرا تَن بارِ بستر ہے

    سرشکِ سر بہ صحرا دادہ ، نورالعینِ دامن ہے
    دلِ بے دست و پا اُفتادہ بر خوردارِ بستر ہے

    خوشا اقبالِ رنجوری ! عیادت کو تم آئے ہو
    فروغِ شمع بالیں ، طالعِ بیدارِ بستر ہے

    بہ طوفاں گاہِ جوشِ اضطرابِ شامِ تنہائی
    شعاعِ آفتابِ صبحِ محشر تارِ بستر ہے

    ابھی آتی ہے بُو ، بالش سے ، اُس کی زلفِ مشکیں کی
    ہماری دید کو ، خوابِ زلیخا ، عارِ بستر ہے

    کہوں کیا ، دل کی کیا حالت ہے ہجرِ یار میں ، غالب !
    کہ بے تابی سے ہر یک تارِ بستر ، خارِ بستر ہے

    ----××----





    خطر ہے رشتۂ اُلفت رگِ گردن نہ ہو جائے
    غرورِ دوستی آفت ہے ، تُو دُشمن نہ ہو جائے

    سمجھ اس فصل میں کوتاہی نشوونما ، غالب!
    اگر گُل سَرو کے قامت پہ ، پیراہن نہ ہو جائے

    ----××----





    فریاد کی کوئی لَے نہیں ہے
    نالہ پابندِ نَے نہیں ہے

    کیوں بوتے ہیں باغباں تونبے ؟
    گر باغ گدائے مَے نہیں ہے

    ہر چند ہر ایک شے میں تُو ہے
    پَر تُجھ سی کوئی شے نہیں ہے

    ہاں ، کھائیو مت فریبِ ہستی !
    ہر چند کہیں کہ ہے ، نہیں ہے

    شادی سے گُذر کہ ، غم نہ ہووے
    اُردی جو نہ ہو ، تو دَے نہیں ہے

    کیوں ردِ قدح کرے ہے زاہد !
    مَے ہے یہ مگس کی قَے نہیں ہے

    ہستی ہے ، نہ کچھ عَدم ہے ، غالب !
    آخر تو کیا ہے ، ”اَے نہیں ہے؟“


    ----××----



     
  5. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    نہ پُوچھ نسخۂ مرہم جراحتِ دل کا
    کہ اِس میں ریزۂ الماس جزوِ اعظم ہے

    بہت دنوں میں تغافل نے تیرے پیدا کی
    وہ اِک نگہ کہ ، بظاہر نگاہ سے کم ہے

    ----××----



    ہم رشک کو اپنے بھی گوارا نہیں کرتے
    مرتے ہیں ، ولے ، اُن کی تمنا نہیں کرتے

    در پردہ اُنھیں غیر سے ہے ربطِ نہانی
    ظاہر کا یہ پردہ ہے کہ پردہ نہیں کرتے

    یہ باعثِ نومیدیِ اربابِ ہوس ہے
    غالب کو بُرا کہتے ہو ، اچھا نہیں کرتے

    ----××----





    کرے ہے بادہ ، ترے لب سے ، کسبِ رنگِ فروغ
    خطِ پیالہ ، سراسر نگاہِ گلچیں ہے

    کبھی تو اِس سرِ شوریدہ کی بھی داد ملے!
    کہ ایک عُمر سے حسرت پرستِ بالیں ہے

    بجا ہے ، گر نہ سُنے ، نالہ ہائے بُلبلِ زار
    کہ گوشِ گُل ، نمِ شبنم سے پنبہ آگیں ہے

    اسد ہے نزع میں ، چل بیوفا ! برائے خُدا !
    مقامِ ترکِ حجاب و وداعِ تمکیں ہے


    ----××----



     
  6. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    کیوں نہ ہو چشمِ بُتاں محوِ تغافل ، کیوں نہ ہو ؟
    یعنی اس بیمار کو نظارے سے پرہیز ہے

    مرتے مرتے ، دیکھنے کی آرزُو رہ جائے گی
    وائے ناکامی ! کہ اُس کافر کا خنجر تیز ہے

    عارضِ گُل دیکھ ، رُوئے یار یاد آیا ، اسد !
    جوششِ فصلِ بہاری اشتیاق انگیز ہے


    ----××----


    دیا ہے دل اگر اُس کو ، بشر ہے ، کیا کہیے
    ہوا رقیب ، تو ہو ، نامہ بر ہے ، کیا کہیے

    یہ ضد کہ آج نہ آوے ، اور آئے بِن نہ رہے
    قضا سے شکوہ ہمیں کِس قدر ہے ، کیا کہیے !

    رہے ہے یوں گِہ و بے گہِ ، کہ کُوئے دوست کو اب
    اگر نہ کہیے کہ دشمن کا گھر ہے ، کیا کہیے !

    سمجھ کے کرتے ہیں ، بازار میں وہ پُرسشِ حال
    کہ یہ کہے کہ ، سرِ رہگزر ہے ، کیا کہیے ؟

    تمہیں نہیں ہے سرِ رشتۂ وفا کا خیال
    ہمارے ہاتھ میں کچھ ہے ، مگر ہے ، کیا ، کہیے !

    اُنہیں سوال پہ زعمِ جنوں ہے ، کیوں لڑیئے
    ہمیں جواب سے قطعِ نظر ہے ، کیا کہیے ؟

    حَسد ، سزائے کمالِ سخن ہے ، کیا کیجے
    سِتم ، بہائے متاعِ ہُنر ہے ، کیا کہیے !

    کہا ہے کِس نے کہ غالب بُرا نہیں ، لیکن
    سوائے اس کے کہ آشفتہ سر ہے ، کیا کہیے

    ----××----

     
  7. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    دیکھ کر در پردہ گرمِ دامن افشانی مجھے
    کر گئی وابستۂ تن میری عُریانی مجھے

    بن گیا تیغِ نگاہِ یار کا سنگِ فَساں
    مرحبا مَیں ! کیا مبارک ہے گراں جانی مجھے

    کیوں نہ ہو بے التفاتی ، اُس کی خاطر جمع ہے
    جانتا ہے محوِ پُرسش ہائے پنہانی مجھے

    میرے غمخانے کی قسمت جب رقم ہونے لگی
    لِکھ دیا منجملۂ اسبابِ ویرانی ، مجھے

    بدگماں ہوتا ہے وہ کافر ، نہ ہوتا ، کاشکے !
    اِس قدر ذوقِ نوائے مُرغِ بُستانی مجھے

    وائے ! واں بھی شوِ محشر نے نہ دَم لینے دیا
    لے گیا تھا گور میں ذوقِ تن آسانی مجھے

    وعدہ آنے کا وفا کیجے ، یہ کیا انداز ہے ؟
    تم نے کیوں سونپی ہے میرے گھر کی دربانی مجھے ؟

    ہاں نشاطِ آمدِ فصلِ بہاری ، واہ واہ !
    پھر ہُوا ہے تازہ سودائے غزل خوانی مجھے

    دی مرے بھائی کو حق نے از سرِ نَو زندگی
    میرزا یوسف ہے ، غالب ! یوسفِِ ثانی مجھے



    ----××----​


    یاد ہے شادی میں بھی ، ہنگامۂ یارب ، مجھے
    سُبحۂ زاہد ہوا ہے ، خندہ زیرِ لب مجھے

    ہے کُشادِ خاطرِ وابستہ دَر ، رہنِ سخن
    تھا طلسمِ قُفلِ ابجد ، خانۂ مکتب مجھے

    یارب ! اِس آشفتگی کی داد کس سے چاہیے !
    رشک ، آسائش پہ ہے زندانیوں کی اب مجھے

    طبع ہے مشتاقِ لذت ہائے حسرت کیا کروں !
    آرزو سے ، ہے شکستِ آرزو مطلب مجھے

    دل لگا کر آپ بھی غالب مُجھی سے ہوگئے
    عشق سے آتے تھے مانِع ، میرزا صاحب مجھے





     
  8. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    حضورِ شاہ میں اہلِ سخن کی آزمایش ہے
    چمن میں خوش نوایانِ چمن کی آزمایش ہے

    قد و گیسو میں ، قیس و کوہکن کی آزمایش ہے
    جہاں ہم ہیں ، وہاں دار و رسن کی آزمایش ہے

    کرینگے کوہکن کے حوصلے کا امتحاں آخر
    ہنوز اُس خستہ کے نیروے تن کی آزمایش ہے

    نسیمِ مصر کو کیا پیرِ کنعاں کی ہوا خواہی !
    اُسے یوسف کی بُوئے پیرہن کی آزمایش ہے

    وہ آیا بزم میں ، دیکھو ، نہ کہیو پھر کہ ” غافل تھے “
    شکیب و صبرِ اہلِ انجمن کی آزمایش ہے

    رہے دل ہی میں تیر ، اچھا ، جگر کے پار ہو ، بہتر
    غرض شِستِ بُتِ ناوک فگن کی آزمایش ہے

    نہیں کچھ سُبحۂ و زُنّار کے پھندے میں گیرائی
    وفاداری میں شیخ و برہمن کی آزمایش ہے

    پڑا رہ ، اے دلِ وابستہ ! بیتابی سے کیا حاصل ؟
    مگر پھر تابِ زُلفِ پُرشکن کی آزمایش ہے

    رگ و پَے میں جب اُترے زہرِ غم ، تب دیکھیے کیا ہو !
    ابھی تو تلخیِ کام و دہن کی آزمایش ہے

    وہ آوینگے مِرے گھر ، وعدہ کیسا ، دیکھنا ، غالب !
    نئے فتنوں میں اب چرخِ کُہن کی آزمایش ہے



    ----××----


    کبھی نیکی بھی اُس کے جی میں ، گر آجائے ہے ، مُجھ سے
    جفائیں کر کے اپنی یاد ، شرما جائے ہے ، مُجھ سے

    خُدایا ! جذبۂ دل کی مگر تاثیر اُلٹی ہے !
    کہ جتنا کھینچتا ہوں ، اور کِھنچتا جائے ہے مُجھ سے

    وہ بَد خُو ، اور میری داستانِ عشق طُولانی
    عبارت مُختصر ، قاصد بھی گھبرا جائے ہے ، مُجھ سے

    اُدھر وہ بدگمانی ہے ، اِدھر یہ ناتوانی ہے
    نہ پُوچھا جائے ہے اُس سے ، نہ بولا جائے ہے مجھ سے

    سنبھلنے دے مجھے اے نا اُمیدی ! کیا قیامت ہے !
    کہ دامانِ خیالِ یار ، چُھوٹا جائے ہے مُجھ سے

    تکلف بر طرف ، نظارگی میں بھی سہی ، لیکن
    وہ دیکھا جائے ، کب یہ ظُلم دیکھا جائے ہے ، مُجھ سے

    ہوئے ہیں پانو ہی پہلے ، نبردِ عشق میں زخمی
    نہ بھاگا جائے ہے مجھ سے ، نہ ٹھہرا جائے ہے مجھ سے

    قیامت ہے کہ ہووے مُدعی کا ہمسفر غالب !
    وہ کافر ، جو خُدا کو بھی نہ سونپا جائے ہے مُجھ سے



     
  9. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    زبسکہ مشقِ تماشا جنوں علامت ہے
    کشاد و بست مژہ ، سیلی ندامت ہے

    نہ جانوں ، کیونکہ مٹے داغِ طعنِ بد عہدی
    تجھے کہ آئینہ بھی ورطۂ ملامت ہے

    بہ پیچ و تابِ ہوس ، سلکِ عافیت مت توڑ
    نگاہِ عجز سرِ رشتۂ سلامت ہے

    وفا مقابل و دعواے عشق بے بُنیاد
    جنونِ ساختہ و فصلِ گُل ، قیامت ہے !



    ---××---


     
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,667
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    رونے سے اور عرشق میں بےباک ہو گئے
    دھوئے گئےہم ایسے کہ بس پاک ہو گئے
    صرفِ بہائے مے ہوئے آلاتِ میکشی
    تھے یہ ہی دو حساب سو یوں پاک ہو گئے
    رسوائے دہر گو ہوئے آوارگی سے تم
    بارے طبیعتوں کے تو چالاک ہو گئے
    کہتا ہے کون نالۂ بلبل کو بے اثر
    پردے میں گُل کے لاکھ جگر چاک ہو گئے
    پوچھے ہے کیا وجود و عدم اہلِ شوق کا
    آپ اپنی آھ کے خس و خاشاک ہو گئے
    کرنے گئے تھے اس سے تغافُل کا ہم گِلہ
    کی ایک ہی نگاہ کہ بس خاک ہو گئے
    اس رنگ سے اٹھائی کل اس نے اسد کی نعش
    دشمن بھی جس کو دیکھ کے غمناک ہو گئے
     
  11. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,667
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    [align=justify:0ebdf22ca5]نشّہ ہا شادابِ رنگ و ساز ہا مستِ طرب
    شیشۂ مے سروِ سبزِ جوئبارِ نغمہ ہے
    ہم نشیں مت کہہ کہ برہم کرنہ بزمِ عیشِ دوست
    واں تو میرے نالے کو بھی اعتبارِ نغمہ ہے[/align:0ebdf22ca5]
     
  12. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,667
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    عرضِ نازِ شوخئِ دنداں برائے خندہ ہے
    دعوئ جمعیّتِ احباب جائے خندہ ہے
    ہے عدم میں غنچہ محوِ عبرتِ انجامِ گُل
    یل جہاں زانو تامّل در قفائے خندہ ہے
    کلفتِ افسردگی کو عیشِ بے تابی حرام
    ورنہ دنداں در دل افشردن بِنائے خندہ ہے
    سوزشِ باطن کے ہیں احباب منکر ورنہ یاں
    دل محیطِ گریۂ و لب آشنائے خندہ ہے
     
  13. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,667
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    حسنِ بے پروا خریدارِ متاعِ جلوہ ہے
    آئنہ زانوئے فکرِ اختراعِ جلوہ ہے
    تا کُجا اے آگہی رنگِ تماشا باختن؟
    چشمِ وا گر دیدہ آغوشِ وداعِ جلوہ ہے
     
  14. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,667
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    [align=justify:9624a53994]جب تک دہانِ زخم نہ پیدا کرے کوئی
    مشکل کہ تجھ سے راہِ سخن وا کرے کوئی
    عالم غُبارِ وحشتِ مجنوں ہے سر بسر
    کب تک خیالِ طرّۂ لیلیٰ کرے کوئی
    افسردگی نہیں طرب انشائے التفات
    ہاں درد بن کے دل میں مگر جا کرے کوئی
    رونے سے اے ندیم ملامت نہ کر مجھے
    آخر کبھی تو عُقدۂ دل وا کرے کوئی
    چاکِ جگر سے جب رہِ پرسش نہ وا ہوئی
    کیا فائدہ کہ جَیب کو رسوا کرے کوئی
    لختِ جگر سے ہے رگِ ہر خار شاخِ گل
    تا چند باغبانئِ صحرا کرے کوئی
    ناکامئِ نگاہ ہے برقِ نظارہ سوز
    تو وہ نہیں کہ تجھ کو تماشا کرے کوئی
    ہر سنگ و خشت ہے صدفِ گوہرِ شکست
    نقصاں نہیں جنوں سے جو سودا کرے کوئی
    سَر بَر ہوئی نہ وعدۂ صبر آزما سے عُمر
    فُرصت کہاں کہ تیری تمنّا کرے کوئی
    ہے وحشتِ طبیعتِ ایجاز یاس خیز
    یہ درد وہ نہیں کہ نہ پیدا کرے کوئی
    بیکارئ جنوں کو ہے سر پیٹنے کا شغل
    جب ہاتھ ٹوٹ جائیں تو پھر کیا کرے کوئی
    حسنِ فروغِ شمعِ سُخن دور ہے اسد
    پہلے دلِ گداختہ پیدا کرے کوئی[/align:9624a53994]
     
  15. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,667
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    عشرتِ قطرہ ہے دریا میں فنا ہو جانا
    درد کا حد سے گزرنا ہے دوا ہو جانا
    تجھ سے، قسمت میں مری، صورتِ قفلِ ابجد
    تھا لکھا بات کے بنتے ہی جدا ہو جانا
    دل ہوا کشمکشِ چارۂ زحمت میں تمام
    مِٹ گیا گھِسنے میں اُس عُقدے کا وا ہو جانا
    اب جفا سے بھی ہیں محروم ہم اللہ اللہ
    اس قدر دشمنِ اربابِ وفا ہو جانا
    ضعف سے گریہ مبدّل بہ دمِ سرد ہوا
    باور آیا ہمیں پانی کا ہوا ہو جانا
    دِل سے مِٹنا تری انگشتِ حنائی کا خیال
    ہو گیا گوشت سے ناخن کا جُدا ہو جانا
    ہے مجھے ابرِ بہاری کا برس کر کھُلنا
    روتے روتے غمِ فُرقت میں فنا ہو جانا
    گر نہیں نکہتِ گل کو ترے کوچے کی ہوس
    کیوں ہے گردِ رہِ جَولانِ صبا ہو جانا
    تاکہ تجھ پر کھُلے اعجازِ ہوائے صَیقل
    دیکھ برسات میں سبز آئنے کا ہو جانا
    بخشے ہے جلوۂ گُل، ذوقِ تماشا غالب
    چشم کو چاہئے ہر رنگ میں وا ہو جانا
     
  16. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,667
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    دیکھنے میں ہیں گرچہ دو، پر ہیں یہ دونوں یار ایک
    وضع میں گو ہوئی دو سر، تیغ ہے ذوالفقار ایک
    ہم سخن اور ہم زباں، حضرتِ قاسسم و طباں
    ایک تپش کا جانشین، درد کی یادگار ایک
    نقدِ سخن کے واسطے ایک عیارِ آگہی
    شعر کے فن کے واسطے، مایۂ اعتبار ایک
    ایک وفا و مہر میں تازگئِ بساطِ دہر
    لطبف و کرمکے باب میں زینتِ روزگار ایک
    گُلکدۂ تلاش کو، ایک ہے رنگ، اک ہے بو
    ریختہ کے قماش کو، پود ہے ایک، تار ایک
    مملکتِ کمال میں ایک امیرِ نامور
    عرصۂ قیل و قال میں، خسروِ نامدار ایک
    گلشنِ اتّفاق میں ایک بہارِ بے خزاں
    مے کدۂ وفاق میں بادۂ بے خمار ایک
    زندۂ شوقِ شعر کو ایک چراغِ انجمن
    کُشتۂ ذوقِ شعر کو شمعِ سرِ مزار ایک
    دونوں کے دل حق آشنا، دونوں رسول (ص) پر فِدا
    ایک مُحبِّ چار یار، عاشقِ ہشت و چار ایک
    جانِ وفا پرست کو ایک شمیمِ نو بہار
    فرقِ ستیزہ مست کو، ابرِ تگرگِ بار ایک
    لایا ہے کہہ کے یہ غزل، سائبۂ رِیا سے دور
    کر کے دل و زبان کو غالبِ خاکسار ایک

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    نسخے میں اگرچہ 'طپش' ہے لیکن صحیح تپش ہی درست ہونا چاہئے
     
  17. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,667
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غم نہیں ہوتا ہے آزادوں کو بیش از یک نفس
    برق سے کرتے ہیں روشن شمعِ ماتم خانہ ہم
    محفلیں برہم کرے ہے گنجفۂ بازِ خیال
    ہیں ورق گردائِ نیرنگِ یک بت خانہ ہم
    باوجودِ یک جہاں ہنگامہ پیرا ہی نہیں
    ہیں چراغانِ شبستانِ دلِ پروانہ ہم
    ضعف سے ہے، نے قناعت سے یہ ترکِ جستجو
    ہیں وبالِ تکیہ گاہِ ہِمّتِ مردانہ ہم
    دائم الحبس اس میں ہیں لاکھوں تمنّائیں اسد
    جانتے ہیں سینۂ پُر خوں کو زنداں خانہ ہم
     
  18. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,667
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    نِکوہِش ہے سزا فریادئِ بیدادِ دِلبر کی
    مبادا خندۂ دنداں نما ہو صبح محشر کی
    رگَ لیلیٰ کو خاکِ دشتِ مجنوں ریشگی بخشے
    اگر بو دے بجائے دانہ دہقاں نوک نشتر کی
    پرِ پروانہ شاید بادبانِ کشتئِ مے تھا
    ہوئی مجلس کی گرمی سے روانی دَورِ ساغر کی
    کروں بیدادِ ذوقِ پَر فشانی عرض کیا قدرت
    کہ طاقت اُڑ گئی، اڑنے سے پہلے، میرے شہپر کی
    کہاں تک روؤں اُس کے خیمے کے پیچھے، قیامت ہے!
    مری قسمت میں یا رب کیا نہ تھی دیوار پتھّر کی؟
     
  19. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,667
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    آپ نے مَسَّنی الضُّرُّ کہا ہے تو سہی
    یہ بھی یا حضرتِ ایّوب! گِلا ہے تو سہی
    رنج طاقت سے سوا ہو تو نہ کیوں پیٹوں سر
    ذہن میں خوبئِ تسلیم و رضا ہے تو سہی
    ہے غنیمت کہ باُمّید گزر جائے گی عُمر
    نہ ملے داد، مگر روزِ جزا ہے تو سہی
    دوست گر کوئی نہیں ہے، جو کرے چارہ گری
    نہ سہی، ایک تمنّائے دوا ہے تو سہی
    غیر سے دیکھیے کیا خوب نبھائی اُس نے
    نہ سہی ہم سے، پر اُس بُت میں وفا ہے تو سہی
    نقل کرتا ہوں اسے نامۂ اعمال میں مَیں
    کچھ نہ کچھ روزِ ازل تم نے لکھا ہے تو سہی
    کبھی آ جائے گی کیوں کرتے ہو جلدی غالب
    شہرۂ تیزئِ شمشیرِ قضا ہے تو سہی
     
  20. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,667
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    لطفِ نظّارۂ قاتِل دمِ بسمل آئے
    جان جائے تو بلا سے، پہ کہیں دِل آئے
    ان کو کیا علم کہ کشتی پہ مری کیا گزری
    دوست جو ساتھ مرے تا لبِ ساحل آئے
    وہ نہیں ہم، کہ چلے جائیں حرم کو، اے شیخ!
    ساتھ حُجّاج کے اکثر کئی منزِل آئے
    آئیں جس بزم میں وہ، لوگ پکار اٹھتے ہیں
    "لو وہ برہم زنِ ہنگامۂ محفل آئے"
    دیدہ خوں بار ہے مدّت سے، ولے آج ندیم
    دل کے ٹکڑے بھی کئی خون میں شامل آئے
    سامنا حور و پری نے نی کیا ہے، نہ کریں
    عکس تیرا ہی مگر، تیرے مقابِل آئے
    اب ہے دِلّی کی طرف کوچ ہمارا غالب!
    آج ہم حضرتِ نوّاب سے بھی مِل آئے
     

اس صفحے کی تشہیر