1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $453.00
    اعلان ختم کریں

سودا جو چلن چلتے ہو تم کیا اُس سے حاصل ہوئے گا ۔ سودا

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 8, 2012

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,632
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    جو چلن چلتے ہو تم کیا اُس سے حاصل ہوئے گا
    خوں سے بہتوں کے غبار اس راہ کا گُل ہوئے گا

    کیوں نہ کہتے تھے دلا شیریں لبوں کے منہ نہ لگ
    ایک دن تجھ کو یہ شربت زہرِ قاتل ہوئے گا

    چاک پر تیرے جو اب پھرتا ہے کوزہ اے کلال
    یہ کبھو ہم سے کسی سرگشتہ کا دل ہوئے گا

    شرح اپنی بے قراری کی لکھیں گے ہم اگر
    نامہ بر اپنا پرِ پروازِ بسمل ہوئے گا

    یاں وفا و جور کا ہم تم نہ سمجھیں گے حساب
    دفترِ محشر میں سب باقی و فاضل ہوئے گا

    صبر ہو کوہِ گراں جس کا تو وہ عزمِ سفر
    کر کے تجھ در سے سبک پہلی ہی منزل ہوئے گا

    سہج میں دنیا تو ہم چھوڑیں گے لیکن زاہدا
    چھوڑنا تیری طرح داڑھی کا مشکل ہوئے گا

    کَر ہے گوشِ فہم عالم ورنہ کہتی ہے بہار
    جو گُل آیا اس چمن میں ایک دل گُل ہوئے گا

    زیادہ اس شب سے نہیں بے قدر حیرانی مری
    آئنہ تو صبح دم تیرے مقابل ہوئے گا

    تجھ پہ گر خونِ دو عالم کا ہو دعویٰ بے گواہ
    بول اٹھے قاضی "نہیں" دعویٰ یہ باطل ہوئے گا

    قطعہ
    شیخ کو لائے تھے سودا اس لیے ہم یار پاس
    طبع کو اس کے تفنّن اس سے حاصل ہوئے گا

    سو وہ اب ہم چشم ٹھہرا ہے ہمارا یا نصیب!
    تھا لکھا اپنا کہ ہم میں وہ بھی شامل ہوئے گا

    ہم تو وہ سمجھے تھے دل میں پر خبر اس کی نہ تھی
    یہ لگا لوہو شہیدوں بیچ داخل ہوئے گا

    (مرزا رفیع سودا)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3

اس صفحے کی تشہیر