1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $418.00
    اعلان ختم کریں

احسان دانش جشنِ بےچارگی

محمد تابش صدیقی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 27, 2016

  1. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    23,758
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    جشنِ بےچارگی

    ہے داغِ دل اک شام سیہ پوش کا منظر
    تھا ظلمتِ خاموش میں شہزادۂ خاور

    عالم میں مچلنے ہی کو تھے رات کے گیسو
    انوار کے شانوں پہ تھے انوار کے گیسو

    یہ وقت اور اک دخترِ مزدور کی رخصت
    واللہ قیامت تھی قیامت تھی قیامت

    نوشاہ کہ جو سر پہ تھا باندھے ہوئے سہرا
    بھرپور جوانی میں تھا اترا ہوا چہرا

    اندوہ ٹپکتا تھا بشاشت کی نظر سے
    مرجھائے سے رخسار تھے فاقوں کے اثر سے

    کرتا بھی پرانا سا تھا پگڑی بھی پرانی
    مجبور تھی قسمت کے شکنجوں میں جوانی

    نوشاہ کے جو ساتھ آئے تھے دو چار براتی
    ہر اک کی جبیں سے تھی عیاں نیک صفاتی

    توقیر کے، الفت کے، شرافت کے مرقعے
    ایثار کے، ایمان کے، غیرت کے مرقعے

    ہمراہ نفیری تھی نہ باجا تھا نہ تاشا
    آنکھوں میں تھا بے مہریِ عالم کا تماشا

    مجمع تھا یہ جس خستہ و افسردہ مکاں پر
    تھا بھیس میں شادی کے وہاں عالمِ محشر

    دالان تھا گونجا ہوا رونے کی صدا سے
    اک درد ٹپکتا تھا عرقناک ہوا سے

    اماں کی تھی بیٹی کی جدائی سے یہ حالت
    چیخوں میں ڈھلے جاتے تھے جذباتِ محبت

    تھا باپ کا یہ حال کہ اندوہ کا مارا
    اٹھتا تھا تو دیوار کا لیتا تھا سہارا

    وہ آپ کہیں اور تھا اور جان کہیں تھی
    سینے میں کوئی شے تھی جو قابو میں نہیں تھی

    افلاس کے آرے جو جگر کاٹ رہے تھے
    ارمان سب اپنا ہی لہو چاٹ رہے تھے

    لڑکی کا یہ عالم تھا کہ آپے کو سمیٹے
    گڑیا سی بنی بیٹھی تھی چادر کو سمیٹے

    تھی پاؤں میں پازیب نہ پیشانی میں ٹیکا
    اس خاکۂ افلاس کا ہر رنگ تھا پھیکا

    انصافِ زمانہ تھا یا تقدیر کا چکر
    ماں باپ کو آیا نہ تھا جوڑا بھی میسر

    یوں کہنے کو دلہن تھی یہ مزدور کی دختر
    اماں کا دوپٹہ تھا تو ابا کی تھی چادر

    آخر نہ رہا باپ کو جذبات پہ قابو
    تھرانے لگے ہونٹ ٹپکنے لگے آنسو

    کہنے لگا نوشاہ سے اے جانِ پدر سن
    اے وجہِ سکوں، لختِ جگر، نورِ نظر سن

    گرچہ مری نظروں میں ہے تاریک خدائی
    حاضر ہے مری عمر کی معصوم کمائی

    کی لاکھ مگر ایک بھی کام آئی نہ تدبیر
    مجبور ہوں مجبور یہ تقدیر ہے تقدیر

    اس سانولے چہرے میں تقدس کی ضیا ہے
    یہ پیکرِ عفت ہے یہ فانوسِ حیا ہے

    اس کے لئے چکی بھی نئی چیز نہیں ہے
    بیٹی ہے مری دخترِ پرویز نہیں ہے

    غربت میں یہ پیدا ہوئی غربت میں پلی ہے
    خود داری و تہذیب کے سانچے میں ڈھلی ہے

    زنہار یہ زیور کی تمنا نہ کرے گی
    ایسا نہ کرے گی کبھی ایسا نہ کرے گی

    شکوہ اسے تقدیر کا کرنا نہیں آتا
    ادراک کی سرحد سے گزرنا نہیں آتا

    ہے صبر کی خوگر اسے فاقوں کی ہے عادت
    ماں باپ سے پائی ہے وراثت میں قناعت

    اسکی بھی خوشی ہو گی تمہاری جو رضا ہو
    تم اس کے لئے دوسرے درجے پہ خدا ہو

    پھر آ کے کہا بیٹی سے یہ نرم زباں سے
    بچی مری رخصت ہے تو اب باپ سے ماں سے

    اے جانِ پدر دیکھ وفادار ہی رہنا
    آئے جو قیامت بھی تو ہنس کھیل کے سہنا

    دل توڑ نہ دینا کہ خدا ساتھ ہے بیٹی
    لاج اس مری داڑھی کی ترے ہاتھ ہے بیٹی

    آیا جو نظر مجھ کو یہ جانکاہ نظارہ
    احسان نہ آنکھوں کو رہا ضبط کا یارا

    تپنے لگی ہر سانس مری سوزِ نہاں سے
    اتنا ہے مجھے یاد کہ نکلا یہ زباں سے

    اے خالقِ کونین یہ تو نے بھی سنا ہے
    دنیا کا گماں ہے کہ غریبوں کا خدا ہے

    تو جن کا خدا ان کا ہو گردش میں ستارہ
    کیا تیرے کرم کو یہ ستم بھی ہے گوارا؟

    کس طرح نہ ہو دل کو بھلا رنج و محن دیکھ
    مزدور کے اس زندہ جنازے کا کفن دیکھ

    احساس کبھی دل سے جدا ہو نہیں سکتا
    انسان ہے انسان، خدا ہو نہیں سکتا​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
    • زبردست زبردست × 4
  2. ثاقب الرحمن

    ثاقب الرحمن محفلین

    مراسلے:
    20
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Question
    بچپن میں ایک اخبار کے ٹکڑے پر پکوڑے خریدے تھے اس نظم کے چند اشعار وہاں سے یاد ہو گئے تھے ، پھر پچھلے سال فیس بک پر ایک پوسٹ میں احباب سے پوری نظم کی درخواست کی تو چند مزید اشعارمعلوم ہوئے ۔ آج یہ لڑی دیکھی تو دل باغ باغ ہو گیا۔۔
    عمدہ شئیرنگ
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    23,758
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    بہت شکریہ جناب۔
    میرے دادا مرحوم کو یہ نظم بہت پسند تھی۔ انہوں نے اپنی ڈائری میں لکھی ہوئی تھی، اور فرمائش پر سنایا بھی کرتے تھے۔
    نیٹ پر کافی تلاش کرنے کے باوجود نہ ملی تو پھر خود ہی ٹائپ کر کے یہاں پوسٹ کی۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  4. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,371
    شیئر کرنے کے لیئے شکریہ۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  5. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    23,758
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    شکریہ پسند فرمانے کا۔ :)
     
  6. اَبُو مدین

    اَبُو مدین معطل

    مراسلے:
    695
    :cry::cry::cry::cry::cry:
    لا جواب شیئرنگ۔ ہر شعر میں کوٹ کوٹ کر جذبات بھرے ہیں۔ بہت شکریہ محترم تابش صدیقی صاحب شیئر کرنے کے لیے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  7. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    23,758
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    جزاک اللہ۔ بہت شکریہ پسند فرمانے کا۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  8. حمیرا عدنان

    حمیرا عدنان مدیر

    مراسلے:
    6,676
    جھنڈا:
    Kuwait
    موڈ:
    Angelic
    زبردست واہہہہ تابش بھائی
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  9. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    23,758
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    شکریہ حمیرا بہن
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر