تبسم تمھی کہو کہاں لے جائے کوئی جنسِ ہنر ۔ صوفی تبسم

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 22, 2017

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,832
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    تمھی کہو کہاں لے جائے کوئی جنسِ ہنر
    نہ تجھ میں ذوقِ نظر ہے نہ مجھ میں ذوقِ نظر

    بھٹک کے رہ گئی منزل پلٹ گئے راہی
    نہ جانے ختم کہاں ہو گا رہبروں کا سفر

    ہوا کا ہلکا سا جھونکا ہو، کانپ جاتے ہیں
    یہ سوکھے پتے ہیں، ان کھنکھناہٹوں سے نہ ڈر

    کبھی تو آ کے زمیں کے نشیب زار بھی دیکھ
    کبھی تو اپنے فلک کی بلندیوں سے اُتر

    تہی خدائی خرابوں کے کیوں نہ ہوں کشکول
    کہ اب تراوش سلویٰ رہی نہ بارشِ زر

    میّسر آئے اسے کیسے جستجوئے خُدا
    ابھی تلاشِ بشر ہی میں گھومتا ہے بشر

    یہ کس جہاں کی خبریں سنا رہا ہے تُو
    نہ تجھ کو میری خبر ہے نہ مجھ کو تیری خبر

    ہمارے حال سے یہ بے نیازیاں یارب
    کہ ایک ذرّہ بھی ہوتا نہیں اِدھر سے اُدھر

    ہمارے حالِ شب و روز پر تبسّمؔ آج
    نہ جانے کس لیے خندہ زناں ہیں شمس و قمر

    (صوفی تبسمؔ)
     

اس صفحے کی تشہیر