تخمیس بازیچۂ اطفال ہے دنیا مرے آگے

مکی نے 'غالبیات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 26, 2009

ٹیگ:
  1. مکی

    مکی معطل

    مراسلے:
    939
    غالب کی مشہور غزل[FONT=Times New Roman, serif]:

    [/FONT]​
    [FONT=Times New Roman, serif]“[/FONT]بازیچۂ اطفال ہے دنیا مرے آگے[FONT=Times New Roman, serif]”

    [/FONT]​
    کی نہایت استادانہ تضمین کی ہے جس کا عنوان مع تضمین اس طرح ہے[FONT=Times New Roman, serif]:

    [/FONT]​
    [FONT=Times New Roman, serif]“[/FONT]مخمس غزل فخرِ شعرائے مشہورِ امصار ودیار جناب نواب اسد اللہ خاں غالب[FONT=Times New Roman, serif]”

    [/FONT]​
    بے اصل ہے نیرنگ جہاں کا مرے آگے​
    دھوکا ہے طلسمِ تہ وبالا مرے آگے​
    اک شعبدہ ہے دہر کا نقشا مرے آگے​
    بازیچۂ اطفال ہے دنیا مرے آگے​
    ہوتا ہے شب و روز تماشا مرے آگے​
    [FONT=Times New Roman, serif]————— [/FONT]​
    رہتا ہے مجھے بخت سے شکوا ترے پیچھے​
    دیتا ہے مزا موت کا جینا ترے پیچھے​
    وحشت سے نہیں آپ میں آتا ترے پیچھے​
    مت پوچھ کہ کیا حال ہے میرا ترے پیچھے​
    تو دیکھ کہ کیا رنگ ہے تیرا مرے آگے​
    [FONT=Times New Roman, serif]————— [/FONT]​
    ہوں خاک نہیں خاک کو رتبا مرے ہوتے​
    سب کچھ ہے مگر کچھ نہیں چشما مرے ہوتے​
    کوئی ہو کبھی رخ نہیں کرتا مرے ہوتے​
    ہوتا ہے نہاں گرد میں صحرا مرے ہوتے​
    گھستا ہے جبیں خاک پہ دریا مرے آگے​
    [FONT=Times New Roman, serif]————— [/FONT]​
    ہوں شام سے میں فکرِ صبوحی میں گرفتار​
    کس کو سرِ معنی ہے کہاں لذتِ اشعار​
    منگوائیے شیشے مے خوش رنگ کے دو چار​
    پھر دیکھیے اندازِ گل افشانیِ گفتار​
    رکھ دو کوئی پیمانۂ صہبا مرے آگے​
    [FONT=Times New Roman, serif]————— [/FONT]​
    جز نامِ عدو اس لیے کہتا ہوں کہ اچھا​
    منظور ہے جو چاہیں کریں ذکرِ احبا​
    کچھ اور سمجھتا ہے بگڑنا مرے دل کا​
    نفرت کا گماں ہوتا ہے میں رشک سے گزرا​
    کیوں کر کہوں لو نام نہ ان کا مرے آگے​
    [FONT=Times New Roman, serif]————— [/FONT]​
    اک تو ہے کہ اپنا نہیں ہوتا بتِ خود کام​
    ورنہ مرے قائل ہیں زمانے کے دل آرام​
    اعجاز کی باتیں ہیں کرامات کے پیغام​
    عاشق ہوں پہ معشوق فریبی ہے مرا کام​
    مجنوں کو برا کہتی ہے لیلی مرے آگے​
    [FONT=Times New Roman, serif]————— [/FONT]​
    مرتا تو ہوں اب کیوں دمِ آخر یہ ستم ہے​
    کس واسطے یارو یہ غضب جائے کرم ہے​
    تسکیں تو کوئی دمِ عوضِ یاس والم ہے​
    گو ہاتھ کو جنبش نہیں آنکھوں میں تو دم ہے​
    رہنے دو ابھی ساغر و مینا مرے آگے​
    [FONT=Times New Roman, serif]————— [/FONT]​
    ہذیاں ہے سخندانیِ سحباں مرے نزدیک​
    سب ہیچ ہیں خاقانی و خاقاں مرے نزدیک​
    ہر مشکل دشوار ہے آساں مرے نزدیک​
    اک کھیل ہے اورنگِ سلیماں مرے نزدیک​
    اک بات ہے اعجازِ مسیحا مرے آگے​
    [FONT=Times New Roman, serif]————— [/FONT]​
    اے زاہدو آئے نہ کہاں تک مجھے غصا​
    کب تک میں کروں صبر کہاں تک رہوں چپکا​
    مشہور ہے تسلیم کی مانند ہمیشا​
    ہم پیشہ و ہم مشرب و ہمراز ہے میرا​
    غالب کو برا کیوں کہو اچھا مرے آگے​
    [FONT=Times New Roman, serif]—————
    [/FONT]

    “کلیاتِ امیر اللہ تسلیم” میں غالبیات کی جھلک
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 9
  2. فاتح

    فاتح لائبریرین

    مراسلے:
    15,751
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    سبحان اللہ! بہت شکریہ جناب۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  3. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,636
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    شکریہ۔۔ مکی یہاں آ کر ہی اطلاع دیں کہ کالی داس گپتا کی کس کتاب سے لیا ہے۔ یا کلیات تسلیم کا دیباچہ ہے؟ میں نے ان کا بلاگ بھی دیکھا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  4. مکی

    مکی معطل

    مراسلے:
    939
    انجمن ترقی اردو ایک میگزین شائع کرتا ہے، غالب کے دو صد سالہ جشن ولادت پر غالب نمبر شائع ہوا تھا یہ اسی سے لیا ہے، مجھے یہ تخمیس بہت پسند آئی تھی..
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,867
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    واہ بہت خوب مکی صاحب!
     
  6. شاہ حسین

    شاہ حسین محفلین

    مراسلے:
    2,900
    بہت خوب جناب
    نہایت عمدہ اور خوبصورت تضمین پیش کی
    ہیں اور بھی دنیا میں سخنور بہت اچھے
    کہتے ہیں کے سخنور کا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     

اس صفحے کی تشہیر