تجلیات از حافظ مظہر الدین مظہر

الف نظامی

لائبریرین
حسنِ مستور ہوا جلوہ نما آج کی رات
چار سو پھیلے ہیں انوار و ضیا آج کی رات

مستیء کیف میں ڈوبی ہے صبا آج کی رات
سارے عالم پہ ہے اک رنگ نیا آج کی رات

نور کے جلووں میں لپٹی ہے فضا آج کی رات
سیر کو نکلا ہے اک ماہ لقا آج کی رات

حور و غلماں کی زباں پر ہیں خوشی کے نغمے
لبِ جبریل پہ ہے صلِ علی آج کی رات

انبیا ، منتظرِ دید کھڑے ہیں خاموش
چشم بر راہِ محمد ہے خدا آج کی رات

حسن نے رخ سے الٹ دی ہے نقابِ رنگیں
فائزِ جلوہ ہے خود جلوہ نما آج کی رات

حسن کیا ؟ عشق کو بھی آج ہی معراج ہوئی
حسن سے عشق ہم آغوش ہوا آج کی رات

شبِ معراج! ترے کشفِ حقائق کے نثار
کھل گیا عقدہ "لولاک لما" آج کی رات

تیرہ بختوں کے مقدر کو بدلنے والے!
مجھ سیہ بخت پہ بھی چشمِ عطا آج کی رات​
 

الف نظامی

لائبریرین
ہے کھڑا در پر تمنائی و شیدا نور کا
خیر تیرے نور کی دے ڈال صدقہ نور کا

یہ بھی فیضان کرم ہے یہ بھی صدقہ نور کا
دامن دل میں لئے بیٹھا ہوں جلوہ نور کا

ہے کلامُ اللہ میں ایک ایک سورہ نور کا
نُور کے پیکر پہ اترا ہے صحیفہ نور کا

اُن کی صورت نور کی ہے ، اُن کا معنی نور کا
وہ مجسم نور ہیں اُن کا سراپا نور کا

"اُدنُ منی" سے کھلا ہم پر یہ عقدہ نور کا
بے محابا تھا شب معراج جلوہ نور کا

تھا حریم ناز میں بے پردہ جلوہ نور کا
نُور سے مل کر ہوا ٹھنڈا کلیجہ نور کا

میرے آقا ، میرے مولا ﷺ کا ہے روضہ نور کا
حشر میں سایہ فگن ہوگا یہ قبہ نور کا

جب رُخ سرکار ﷺسے ٹپکا پسینہ نور کا
بن گیا رخسار شہ کے گرد ہالہ نور کا

اُن کی بزم ناز ہے یا ایک حلقہ نور کا
رشک صد خورشید ہے اک اک ستارہ نور کا

ساقی ء تسنیم ﷺ! دے مجھ کو بھی جُرعہ نور کا
میری محفل بھی بنے اک دن نگینہ نور کا

مصحف روئے محمد ﷺ ہے صحیفہ نور کا
محو ، قرآن کی تلاوت میں ہے شیدا نور کا

ہیں مضامیں نعت کے یا ایک دریا نور کا
یم بہ یم ، طوفاں بہ طوفاں ہے سفینہ نور کا

ہے قبول شاہ دیں ﷺ ، ہر اک قرینہ نور کا
درد مندوں کی صدائیں ہوں کہ نغمہ نور کا

ہے درود سرور ﷺ عالم وظیفہ نور کا
میں تو کیا اللہ بھی پڑھتا ہے کلمہ نور کا

میں وہیں سے مانگتا ہوں ایک جلوہ نور کا
ماہ جس در پر کھڑا ہے لے کے کاسہ نور کا

میری شب کو بھی فروزاں کر بوصیری کی طرح
میں بھی لکھ کر لایا ہوں آقا ! قصیدہ نور کا​
 

الف نظامی

لائبریرین
والشمس نگر عارضِ تابانِ محمد ﷺ
والیل ببیں کاکلِ پیچان محمد ﷺ

بردند مرا سوئے جناں حوروملائک
گفتند کہ این است ثنا خوان محمد ﷺ

من جانب شاہانِ زماں روئے نیارم
دریوزہ گرستم ز گدایاں محمد ﷺ

در وصفِ گلِ قدس کنم نغمہ سرائی
من بلبلِ خوش لہجہ بستانِ محمد ﷺ

ترساں نشود از الم نار جہنم
آنکس کہ زند دست ، بدامانِ محمد ﷺ

ایں حجتِ دعوائی مسلمانی ء ما بیں
داریم بدِل اُلفتِ یارانِ محمد ﷺ

مظہر چہ تواں کرد بیاں وصفِ جمالش
شد خالقِ کونین ثنا خوانِ محمد ﷺ

 

الف نظامی

لائبریرین
نغمہ ء نُور

شوق کو سرمدی لذتیں ہیں عطا ، مجھ کو حاصل ہے کیفِ دوام آجکل
ہے وظیفہ محمد ﷺ محمد ﷺ مرا ، حرزِ جاں ہے محمد ﷺ کا نام آجکل

ظُلمتِ شامِ غم کے سائے گھنے ، تیرگی نے بچھائے ہیں دام آجکل
میری دنیا میں پھر بھی سکوں ریز ہے جلوہ ء حسنِ ماہِ تمام آجکل

میرے خواجہ ! حوادث کے طوفان میں دے رہا ہے مزا تیرا نام آجکل
دل میں بھی ہے درود و سلام ان دنوں لب پہ بھی ہے درود و سلام آجکل

خستگی اُن سے دادِ وفا پائے گی میرے خواجہ کا ہے فیضِ عام آجکل
حُسن کو بھی ملیں گی نئی طلعتیں ، عشق کو بھی ملے گا مقام آجکل

منزلوں شوق کے کارواں گائیں گے میرا رنگین و تازہ کلام آجکل
میرے نغموں میں تاثیر ہے درد کی ، میری لے میں ہے سوزِ تمام آجکل

عشقِ خیر الوریٰ ہے میری زندگی ، عشقِ خیر الوریٰ ہے امام آجکل
عشق و مستی سے سرشار ہیں جان و دل ، عشق و مستی ہے میرا پیام آجکل

مٹ گئے مرحلے قرب اور بُعد کے ، ہے حضوری میں اُن کا غلام آجکل
جسم گو حجلہ ء نور سے دور ہے ، روح کا ہے مدینہ مقام آجکل

ہیں خیالوں میں رنگین جلوے بھرے ، ہیں فروزاں مرے صحن و بام آجکل
ہے نگہ میں کوئی مہ لقا ان دنوں ، ہے نظر میں کوئی خوش خرام آجکل

میرے ساقی کے فیضانِ رحمت سے ہے میکدے میں مجھے اذنِ عام آجکل
شیشہ لبریز ہے بادہ ء نور سے یثربی مے سے رنگیں ہے جام آجکل

عشق کے معجزے عقل سمجھے گی کیا ؟ معجزانہ ہے سارا نظام آجکل
اُن سے بے صوت ہوتی ہے اب گفتگو ، اُن سے بے واسطہ ہے کلام آجکل
 

الف نظامی

لائبریرین
جلوہ فروزِ محفلِ امکاں صلی اللہ علیک و سلم
نیرِ اعظم ، نیرِ تاباں صلی اللہ علیک و سلم

نقشِ جمیلِ صانعِ قدرت جلوہ نمائے نُورِ حقیقت
نورِ مجسم ، حُسنِ فروزاں صلی اللہ علیک و سلم

مرکزِ وحدت ، آیہ ء رحمت ، صدر نشینِ بزمِ قیامت
ساقی ء کوثر ، شافعِ عصیاں صلی اللہ علیک و سلم

اُمتِ عاصی کے رکھوالے ! کشتی ء دل کے کھیون ہارے
دل ہیں زخمی آنکھیں گِریاں صلی اللہ علیک و سلم

لاج ہے تیرے ہاتھ ہماری آن پڑی ہے ساعت بھاری
ہم ہیں اور باطل کے طوفاں صلی اللہ علیک و سلم

چشم کرم اے رحمتِ کامل ! ایک توجہ رہبرِ کامل
تیری اُمت ہے سرگرداں صلی اللہ علیک و سلم
 

الف نظامی

لائبریرین
آ اور کرم فرما اے جلوہ ء رعنائی
اب تو مری آنکھوں کی ڈھلنے لگی بینائی

سرکار ﷺ جب آئیں گے باشانِ دلآرائی
دیکھی نہیں جائے گی وہ حشر کی زیبائی

دل پر بھی عنایت کر جاں پر بھی عنایت کر
دل بھی ہے تمنائی جاں بھی ہے تمنائی

اب تیرے سوا کوئی مقصود نہیں میرا
اب تیری تجلی ہے اور عالمِ تنہائی

ممکن نہیں دنیا میں ہو کوئی حسیں ایسا
آئینہ ء وحدت ہے محبوب ﷺ کی یکتائی

اے وحشتِ دل لے چل صحرائے مدینہ میں
صحرائے مدینہ سے کیوں دور ہے سودائی ؟

قرباں ترے کوچے کی رخشندہ بہاروں پر
کونین کی رنگینی ، فردوس کی رعنائی

" کُن برسر تابوتم یک جلوہ بہ رعنائی
اے در لبِ لعلِ تو اعجازِ مسیحائی "
 

الف نظامی

لائبریرین
آرزو ہے کہ جب جاں ہو تن سے جدا سامنے روئے زیبائے سرکار ہو
میرا ہر لمحہ ہو مستیوں کا امیں میرا ظلمت کدہ نُور الانوار ہو

رحمتِ دوجہاں کے سوا کون ہے جو مصیبت میں یار و مددگار ہو
جو مصائب میں تسکینِ دل بخش دے جو غریبی میں ابرِ گہر بار ہو

سیدِ ذی حشم ﷺ ! اک نگاہِ کرم بحرِ عصیاں میں تا فرق ڈوبے ہیں ہم
میرا مولا بھی ستار و غفار ہے آپ بھی شانِ ستار و غفار ہو

میں تصدق ہے اب تو تمنا یہی ایک حسرت ہے دل میں یہی آخری
میری فریاد ہو اور گلی آپ کی آپ کا شہر ہو اور دلِ زار ہو

عکس روئے محمد ﷺ گر آئے نظر دیکھ لُوں گر مدینے کے دیوار و در
دیدہ و دل کو تسکیں کی دولت ملے رُوح گنبد کے جلووں سے سرشار ہو

 

الف نظامی

لائبریرین
جو پسندِ دلِ خواجہ ء دیں ﷺ نہ ہو وہ عبادت بھی ہے سر بہ سر معصیت
جنسِ عصیاں بھی اک جنسِ نایاب ہے رحمتِ شاہِ دیں ﷺ گر خریدار ہو

کاش ایسے بھی ایام آئیں کبھی، ہو کے حاضر پڑھوں نعت پاک نبی
نغمہ نور مقبولِ مخدوم ﷺ ہو نالہ ء شوق مقبولِ دربار ہو

جن کے فیضِ کرم پر مجھے ناز ہے تا ابد جن کی رحمت کا در باز ہے
کیا عجب اُن کے در سے مجھے بھی عطا سوزِ رومی و سعدی و عطار ہو

آفتابِ نبوت کی گر اک کرن زندگی کے اُفق پر ہو جلوہ فگن
میری ہر صبح ، صبحِ دلآویز ہو میری ہر شام شامِ ضیا بار ہو

میں نے سمجھا ہے جو مظہرِ ذات کو حق کے محبوب ﷺ کی شانِ لولاک کو
کیسے محدود الفاظ میں ہو بیاں ، دل کے جذبات کا کیسے اظہار ہو
 

الف نظامی

لائبریرین
اے خوشا کہ مجھ کو عشقِ شہِ ﷺ دوسرا ملا ہے
یہ تپش بھی اِک کرم ہے یہ تڑپ بھی اِک عطا ہے

یہ ہے غایتِ نوازش ، یہ کرم کی انتہا ہے
مجھے اپنی یاد بخشی ، مجھے اپنا غم دیا ہے

یہاں شان ہے خدا کی ، یہاں شان مصطفے ﷺ ہے
یہ مدینۃُ النبی ﷺ ہے کہ حریم کبریا ہے؟

ترا عشق دل کی خلوت میں جو زمزمہ سرا ہے
میری رُوح وجد میں ہے ، مرا ذوق جھومتا ہے

کوئی کیا سمجھ سکے گا کہ یہ آہ و نالہ کیا ہے
شہِ ﷺ دوجہاں کے کوچے میں فقیر کی صدا ہے

نظرِ کرم کہ آقا ﷺ ! تو رحیمی و کریمی
نہ کوئی انیسِ غربت ہے نہ کوئی آشنا ہے

مرے رنگِ نعت میں ہے مرے دل کا سوز شامل
بہ زبانِ شعر و نغمہ مرا عشق بولتا ہے
 

الف نظامی

لائبریرین
رُوح میں سوز ہو ، دل مائلِ فریاد رہے
اِک نظر خواجہ ﷺ کہ دنیا مری آباد رہے

درد وہ دے کہ مزا جس نہ ہرگز بھولوں
وہ تڑپ بخش کہ تا حشر مجھے یاد رہے

جس نے بخشی ہے مرے دل کو یہ سوز آگینی
یاالہی وہ جہاں عشق کا آباد رہے

جانے کس وقت مجھے اِذنِ حضوری مل جائے
نالہ مضطر نہ بنے ،ہوش میں فریاد رہے

کہیں ایسا نہ ہو مر جاوں زیارت کےبغیر
کہیں ایسا نہ ہو تشنہ مری روداد رہے

درد بخشا ہے تو تسکیں بھی عنایت ہوگی
اتنا بے تاب نہ میرا دلِ ناشاد رہے

عظمتوں والے بُلالے مجھے در پر اک دن
رحمتوں والے نہ مٹی مری برباد رہے

کوئی سرکار کو دیکھے تو خدا یاد آجائے
وہ اگر حق کا پتہ دیں تو خدا یاد رہے
 
آخری تدوین:

الف نظامی

لائبریرین
رحمتِ دوعالم ہیں رحمتِ خدا یہ ہیں
زخم کا ہیں یہ مرہم درد کی دوا یہ ہیں

سایہ ء خدا یہ ہیں ، ظلِ کبریا یہ ہیں
حق کو ڈھونڈنے والو ! حق کے رہنما یہ ہیں

انبیا میں یاد اِن کی مرسلیں میں ذِکر اِن کا
شاہِ مرسلیں یہ ہیں ، جانِ انبیا یہ ہیں

صبحِ اولیں اِن کے نور سے ہوئی روشن
ابتدا ہوئی اِن سے اور انتہا یہ ہیں

جو ہے لاکھ پردوں میں اُس کی ہے خبر اِن کو
جو نظر نہیں آتا اُس سے آشنا یہ ہیں

عشق کو طلب اِن کی حُسن نغمہ خواں اِن کا
حسن و عشق کے محور اور مدعا یہ ہیں

مشکلوں میں گھر کر بھی کوئی غم نہیں مجھ کو
مشکلوں کے طوفاں میں میرے ناخدا یہ ہیں

عقل کو تو عرفان ذاتِ پاک کیا ہوتا؟
عشق باخبر بولا ، نورِ کبریا یہ ہیں

بے سبب نہیں عالم میرے ذوق و مستی کا
دل میں ہے جگہ اِن کی دل میں کیف زا یہ ہیں

غارِ ثور میں بھی ہیں اِن کے نور کے جلوے
خلوتِ حرا میں بھی زینتِ حرا یہ ہیں

آئینہ بھی ہوتا ہے حُسنِ ذات کا مظہر
آئینہ خدائے لم یزل کی ذات کا یہ ہیں​
 

الف نظامی

لائبریرین
اُن کی صورت ، اُن کی سیرت پر سلام
مصطفے ﷺ جانِ محبت پر سلام

جلو ہ حق ، نورِ وحدت پر سلام
شاہکارِ دستِ قدرت پر سلام

آمنہ کے لال پر لاکھوں درود
خاتمِ دورِ رسالت پر سلام

سیدہ کے باپ ﷺ پر بے حد درود
اُن کی رافت ، اُن کی رحمت پر سلام

معصیت کاروں کے والی پر درود
شافعِ ﷺ روزِ قیامت پر سلام

جن کا دردِ ہجر بھی ہے کیف زا
اُن سے ملنے والی لذت پر سلام

جن سے حق کی ذات پہچانی گئی
اُن کی محبوبانہ عظمت پر سلام

فقر ہے جن کا مغیث ِہر دو کون
اُن کی غربت ، اُن کی عُسرت پر سلام

یاد سے جن کی ہے لذت گیر ، دِل
اُن کی جاں پرور عنایت پر سلام

جلوہ زیبائے اول پر درود
آخری برہان و حجت پر سلام

اُن کے یاروں پر درودِ بے حساب
اُن کی آل اور اُن کی عترت پر سلام

شہرِ طیبہ کے مکینوں کو نوید
ساکنانِ کوئے جنت پر سلام

جلوہ مستانِ نبی ﷺ کو تہنیت
اُن کی مستی ، اُن کی لذت پر سلام

زائرانِ روضہ پر ظلِ خُدا
اُن کے جذباتِ عقیدت پر سلام

ہجر کے مارے ہیں جو میری طرح
اُن کی محرومی ء قسمت پر سلام

جن کا خون ہے سرخی ء روئے حیات
اُن شہیدانِ محبت پر سلام

غازیانِ شاہ ﷺ پر چشمِ کرم
اُن کی باطل سوز فطرت پر سلام

جو مسافر ہیں ابھی تک راہ میں
اُن کے عزم اور اُن کی ہمت پر سلام

جن کے دل میں ہے مدینے کی لگن
پے بہ پے اُن کی محبت پر سلام

جن کا سینہ عشق سے معمور ہے
اُن محبانِ رسالت پر سلام

جس زبان پر ہے مرے آقاﷺ کا نام
اُس کی شیرینی و لذت پر سلام

واصلانِ بابِ عالی پر درود
مقبلانِ بزم حضرت ﷺ پر سلام

عارفانِ راہ پر فضلِ نبی ﷺ
صادقانِ پاک طینت پر سلام

جس میں خواجہ ﷺنے چرائیں بکریاں
اُس جبل ، اُس دشتِ رحمت پر سلام

جس فضا نے اُن کو دیکھا بار بار
اُس کے انوارِ مسرت پر سلام

جو ہوا کھیلی ہے اُن کی زلف سے
اُس کی خوشبو اُس کی نکہت پر سلام

جن درختوں نے انہیں سایہ دیا
اُن کے سائے کی لطافت پر سلام

جن بیابانوں سے گذرے بے حجاب
اُن بیابانوں کی وسعت پر سلام

چُومے جن ذرات نے اُن کے قدم
اُن کی قسمت اُن کی عظمت پر سلام

اُن سے جن غاروں کے دل روشن ہوئے
اُن کی جلوہ بار خلوت پر سلام

الغرض جس کو بھی نسبت اُن سے ہے
ہو اُسی اندازِ نسبت پر سلام

 

الف نظامی

لائبریرین
نعت پڑھ کیف اور سُرور میں آ
آ مری بزمِ رنگ و نُور میں آ

غم کی بے کیفیوں سے کیا حاصل
حلقہ ء صاحبِ سُرور میں آ

عقل کی قیل و قال میں نہ اُلجھ
غیب کو چھوڑ اور حضور میں آ

دیکھ انوارِ بارگاہِ نبی
رشکِ صد جلوہ گاہِ طور میں آ

دامِ بوجہل و بولہب سے نکل
شاہِ کونین کے حضور میں آ

عشقِ صدیق و سوزِ رُوحِ بلال
پردہ ء غیب سے ظہور میں آ

اے مدینے کے جلوہ ء رنگیں
آ مرے قلبِ ناصبور میں آ

میری شام و سحر کا نُور ہے تو
میری شام و سحر کے نُور میں آ
 

الف نظامی

لائبریرین
دیدنی ہے یہ تری شان رسولِ عربی
ہیں ملائک ترے دربان رسولِ عربی

تری عظمت کی ہے پہچان رسولِ عربی
حق نے بھیجا ہے جو قرآن رسولِ عربی

یہ بھی ہے آپ کا فیضان رسولِ عربی
نعت میں ہے مرا دیوان رسولِ عربی

لامکاں اُن کا ہے خلوت گہہِ حق بھی اُن کی
اپنے گھر آپ ہیں مہمان رسولِ عربی

نورِ وحدت ہے ضیا ریز برنگِ کثرت
انبیاء جسم ہیں اور جان رسولِ عربی

حق کا عرفان کسی کو بھی نہیں ہو سکتا
ہو نہ جب تک ترا عرفان رسولِ عربی

دونوں عالم کے ہیں سرکار رسولِ عربی
دونوں عالم کے ہیں سلطان رسولِ عربی

جو ترے عشق و محبت کا نہ ہو آئینہ
نامکمل ہے وہ ایمان رسولِ عربی

ایک میرا دلِ آشفتہ و شیدا کیا ہے ؟
دو جہاں آپ پہ قربان رسولِ عربی

خود بخود مشکلیں آسان ہوئی جاتی ہیں
اللہ اللہ ترا فیضان رسولِ عربی

ایک دن روضہ ء اقدس پر بلا لو مجھ کو
پورا ہو جائے یہ ارمان رسولِ عربی

ترے دربار سے جو زمزمہ خوانوں کو ملی
ہو عطا مجھ کو بھی وہ شان رسولِ عربی

نعت لکھتا ہوں تو ہوتا ہے نزولِ رحمت
جُھومتا ہے مرا وجدان رسولِ عربی

ربِ کعبہ کی اطاعت ہے اطاعت تیری
حکمِ داور ترا فرمان رسولِ عربی

آپ کا ذکر ہے عنوانِ کتابِ کونین
آپ ہیں مطلعِ دیوان رسولِ عربی

مجھ کو بھی دولتِ عرفانِ محبت سے نواز
ہر طرف ہے ترا فیضان رسولِ عربی
 

الف نظامی

لائبریرین
شبِ اسری

شبِ اسری تھا وہ اِک نقطہ ء آغازِ سفر
جس جگہ جلتے ہیں انوار سے جبریل کے پر

فرش سے تا بہ سرا پردہ ء اسرارِ قدیم
اک تجلی کدہ ء نور تھا عالم یکسر

غیرتِ جلوہ ء صد ماہِ درخشاں تھی یہ رات
جس کے جلووں پہ فدا سینکڑوں خورشید و قمر

پرتوِ نورِ محمد تھا ، جمالِ حق تھا
عالمِ قدس کا یہ دلکش و رعنا منظر

رازِ سربستہ ء قدرت تھی ملاقاتِ حبیب
خلوتِ خاص میں ممکن نہیں غیروں کا گزر

دیدہ ء شوق میں تھا حسن و جمالِ عربی
آئینہ دیکھ کے حیران تھا خود آئینہ گر

"اُدنُ مِنی" کی صدائیں تھیں حریمِ حق میں
عشق کے دل پہ بھی تھا حُسن کے جلووں کا اثر

"سرِ قوسین" کو کیا سمجھے گی عقلِ محدود ؟
رازِ معراج کو کیا پائے گا ادراکِ بشر ؟
 
Top