تجلیات از حافظ مظہر الدین مظہر

الف نظامی نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 15, 2006

  1. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,139
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    عطائے خاص ہے یہ لذتِ گداز تری
    بلائیں کیوں نہ لُوں عشقِ شہِ حجاز تری

    عجیب شان ہے محبوبِ دل نواز تری
    تمام خلقِ خدا ہے شہیدِ ناز تری

    ہزار شکر غمِ دوجہاں ہوا معدوم
    ہزار شکر ملی بارگاہِ ناز تری

    زہے کہ نام بھی ہے تیرا انبساط آور
    خوشا کہ یاد بھی ہے زمزمہ طراز تری

    مدام محوِ درود و سلام رہ اے دل
    یہی رکوع ترا ہے یہی نماز تری

    اسی لئے تو گذرتی ہے بے نیازانہ
    سنا ہے ہم نے کہ رحمت ہے کارساز تری

    مقامِ عشق میں تفریقِ قرب و بعد کہاں
    سرِ نیاز ہے اور جلوہ گاہِ ناز تری

    حضور کا بھی کرم بے حساب ہے مظہر
    حکایتِ غمِ دل ہے اگر دراز تری
     
  2. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,139
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    وفورِ شوق میں ہر جذبہء دل میرے کام آیا
    کبھی لب پہ درود آیا کبھی لب پر سلام آیا

    جہاں بھی منزلِ غم میں کوئی مشکل مقام آیا
    وہیں تسکین دینے میرے لب پر اُن کا نام آیا

    ہوئی تقسیم جب صبحِ ازل کونین کی نعمت
    میرے حصےمیں حبِ ساقیِ کوثر کا جام آیا

    خرد اب بھی اسیرِ ظلمتِ اوہامِ باطل ہے
    نظر ہم اہلِ دل کو جلوہ ء حسنِ تمام آیا

    زہے طالع کہ یادِ مصطفےٰ میں آنکھ بھر آئے
    خوشا قسمت کہ آنسو بن کے رحمت کا پیام آیا

    تھم اے بے تابی ء شوقِ فراواں کچھ سنبھلنے دے
    ٹھہر اے دل کہ وقتِ مدحتِ خیر الانام آیا

    مدینے جا کے میری روحِ مضطر نے اماں پائی
    جنوں کی راہ میں یوں تو حرم بھی اِک مقام آیا

    مئے حبِ نبی سے مست جب میں حشر میں پہنچا
    ہوا اک شور برپا! سرورِ دیں کا غلام آیا
     
  3. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,139
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    مشہور شد بہ نعتِ محمد کلام ما
    “ثبت است بر جریدہ عالم دوام ما“

    در خادمانِ سرورِ دین است نامِ ما
    فرض است بر شہانِ زماں احترامِ ما

    ائے نورِ حق ، تجلی ماہِ تمامِ ما
    بنگر ہجومِ تیرگی صبح و شامِ ما

    باد صباست قاصدِ رنگیں خرامِ ما
    ہر لحظہ می برد بہ مدینہ سلامِ ما

    ما زیں مقامِ عشق و محبت بہ حالتیم
    شد در سگانِ آلِ محمد مقامِ ما

    یک جلوہ زیبت تو بیت الحرام ہست
    یک پر توِ تو ہستی ما و قیامِ ما

    جز عشقِ نورِ ذات کسے نیست در جہاں
    مقصودِ ما و منزلِ ما و امامِ ما

    امروز روح حافظِ شیراز مست شد
    امروز لذتے است عجب در کلامِ ما

    مظہر سکوں طلب ز درِ سید الوجود
    ایں است بابِ رحمت و باب السلامِ ما
     
  4. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,139
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    دو جہاں فدا ترے نام پر ہے سکوں فزا ترا نام بھی
    تری ذات پر ہو درود بھی تری ذات پر ہو سلام بھی

    مجھے اپنی تابشیں کر عطا تو ہے میرا ماہِ تمام بھی
    ہے لٹی لٹی مری صبح بھی ہے بجھی بجھی مری شام بھی

    ہیں وہی فروغِ رخِ حرم ، ہے انہی کی ضو سے عرب و عجم
    وہ عرب کے بدرِ منیر بھی ہیں عجم کے ماہِ تمام بھی

    جہاں درد حد سے گذر گیا تری یاد وجہِ سکوں ہوئی
    یہ کھلا کہ جانِ عزیز سے ہے قریب تیرا مقام بھی

    ترا راز کیا کوئی پا سکے ترا جلوہ کیا نظر آسکے
    کہ حریم ناز کی خلوتوں میں ہے تجھ کو اذنِ خرام بھی

    ترا نُور، صبحِ ازل کی ضَو ، ترا نُور ، شامِ ابد کی لَو
    ترا نُور ، جلوہء صبح بھی ، ترا نُور ، جلوہ شام بھی

    جہاں عشق بھی ہے سجود میں ، جہاں حُسن بھی ہے نیاز میں
    اُسی بارگاہِ جمال کا میں ہوں ایک ادنی غلام بھی
     
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,213
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اپنے آپ کو شاباش، اس بھولی ہوئی کتاب کو یاد دلا دیا۔ مکمل ہو جانے پر اطلاع ضرور دیں۔
     
    • متفق متفق × 1
  6. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,139
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    زندگی کا لطف جینے کا مزا بھی آگیا
    دل جو ڈوبا لب پہ نامِ مصطفیٰ بھی آگیا

    بے نوا بھی آگیا بے آسرا بھی آگیا
    شہرِ یثرب میں مدینے کا گدا بھی آگیا

    دل پریشاں تھا کہ میں پڑھنے لگا صلو علیہ
    میری مشکل میں مرا مشکل کشا بھی آگیا

    اے دلِ مضطر ٹھہر! اے حسرتِ دل سجدہ کر
    لو مبارک ہو درِ خیر الوری بھی آگیا

    جلوہء حق نے کیا آکر اجالا چار سو
    جب بڑھی ظلمت تو پھر نورِ خدا بھی آگیا

    شکرِ ایزد ہوگئی میری محبت بھی قبول
    کام میرے تو دلِ درد آشنا بھی آگیا

    رحمتِ کونین! اب تو ہے مرا آنکھوں میں دم
    اب تو آجا اب تو پیغامِ قضا بھی آگیا

    روح پرتسکین بن کر جب محمدﷺ چھا گئے
    میری نصرت کے لیے میرا خدا بھی آگیا

    اہلِ دل کی انجمن بے سوز رہ سکتی نہیں
    نعت لے کرمظہرِ شعلہ نوا بھی آگیا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,139
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    طلب بھی ان کے ہے انعام ، چاہ بھی ہے بہت
    یہ اشک بھی ہیں غنیمت ، یہ آہ بھی ہے بہت

    مقربین کا حصہ ہے منزلِ محبوب
    مرے لیے تو مدینے کی راہ بھی ہے بہت

    حضور ایک نظر ، اِک نگاہِ بندہ نواز
    حضور ایک نظر ، اِک نگاہ بھی ہے بہت

    یہ آرزوئے دیارِ حبیب صلِ علٰے
    یہ آرزو ، یہ تمنا ، یہ چاہ بھی ہے بہت

    بہت قریب تری ذات ہے رگِ جاں سے
    قریب دل کے تری جلوہ گاہ بھی ہے بہت

    جو اُن کی یاد میں ہو ، ہے قبول وہ نالہ
    جو سوزِ دل کی امیں ہو وہ آہ بھی ہے بہت

    ہے مقبلانِ مدینہ سے مجھ کو نسبتِ خاص
    سگانِ در سے مری رسم و راہ بھی ہے بہت

    فروغِ جلوہء رخ سے ہے مہر شرمندہ
    خجل ضیائے محمد سے ماہ بھی ہے بہت

    حضور آپ کا دیوانہ ، آپ کا مظہر
    خراب حال بہت ہے ، تباہ بھی ہے بہت
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,139
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    بہ ناز آمدہ ، با نیاز آمدہ
    محمد ہمہ دل نواز آمدہ


    پئی بے کساں چارہ ساز آمدہ
    شہنشاہِ بندہ نواز آمدہ


    بہ باغِ جہاں سروِ ناز آمدہ
    بہ موزوں قداں سرفراز آمدہ


    عجب ساعتے جاں نوازے رسید
    عجب ساعتِ جاں نواز آمدہ


    تجلی بر ایوانِ کسریٰ فتاد
    تجلی ءآہن گداز آمدہ


    جنوں نعرہ زد ، عشق جامہ درید
    نگارے بہ زلفِ دراز آمدہ


    بہ شکلِ بشر صورتِ حق نمود
    حقیقت بہ رنگِ مجاز آمدہ


    کرم بیں! کہ در بزمِ شاہِ حجاز
    غزل خوانِ شاہِ حجاز آمدہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,139
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    رخِ حیات کی تابندگی حضورﷺ سے ہے
    حیات جلوہ در آغوش اُن کے نور سے ہے

    یہ مہر و ماہ کی تابانیاں حضور سے ہیں
    یہ مہر و ماہ کی تنویر اُن کے نُور سے ہے

    ترے ظہور سے پھیلے ہیں سرمدی جلوے
    تجلیات کا عالم ترے ظہور سے ہے

    انہی کا لطف ، انہی کی نظر کا صدقہ ہے
    یہ دل کی موج کہ موجِ مئے طہور سے ہے

    ہمیں شہرِ مدینہ سے رنگ و نور ملے
    ہمیں بھی نسبتِ یک ذرہ اُن کی طُور سے ہے

    جہانِ عشق کی سرمستیاں اُسی کی ہیں
    وہ بے نوا جسے وابستگی حضور ﷺ سے ہے

    مرے خیال کا موضوع ہے جمالِ رسولﷺ
    مری نوا کا اثر عالمِ سُرور سے ہے

    نصیب ہوں مجھے انوار سبز گنبد کے
    دُعا یہ نکلی مرے قلبِ ناصبور سے ہے

    جہانِ آب و گِل و باد سے نہیں مظہر
    یہ نغمہ سنج تو فردوس کے طیور سے ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,139
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    ہے گنہگاروں پہ رحمت اُن کی
    میرا حصہ ہے شفاعت اُن کی

    جن لبوں پر ہے حکایت اُن کی
    لذت اُن کی ہے، حلاوت اُن کی

    جن کے مشتاق ہے نوح و آدم
    شکرِ ایزد کہ ہوں اُمت اُن کی

    بے خبر! عشق کی دنیا میں بھی آ
    سُن کبھی مجھ سے حکایت اُن کی

    قریہ قریہ ہے فسانہ اُن کا
    عالم عالم ہے حکایت اُن کی

    حق کا مفہوم ہے معنٰی اُن کا
    حق کی تصویر ہے صورت اُن کی

    وحی کیا چیز ہے ، قرآن کیا ہے؟
    ذکر اُن کا ہے ، حکایت اُن کی

    شہرِ محبوبؐ ہے جن کا مسکن
    طاعت اُن کی ہے ، عبادت اُن کی

    عرصہ ء حشر ہے کتنا رعنا
    فوج در فوج ہے اُمت اُن کی

    جن کی نظروں میں ہے روضے کا جمال
    حجِ اکبر ہے زیارت اُن کی

    جو ترے عشق میں جاں سے گذرے
    کون سمجھے گا حقیقت اُن کی؟

    تھا فقط ٹاٹ بچھونا اُن کا
    اللہ اللہ یہ قناعت اُن کی

    کیف ہی کیف ہے اُن کا جلوہ
    نور ہی نور ہے طلعت اُن کی

    مرحبا سیرت آلِ اطہار
    پاک اوصاف ہے عترت اُن کی

    لللہ الحمد کہ لحظہ لحظہ
    یاد آتی ہے عنایت اُن کی

    میں ہوں اور نعت کی رنگین فضا
    لے اُڑی مجھ کو محبت اُن کی

    جیسے رخشاں ہو ستاروں میں قمر
    یوں ہے نبیوں میں نبوت اُن کی

    صحنِ گلشن میں ہے اُن کی خوشبو
    باغِ عالم میں ہے نکہت اُن کی

    ہائے گلزاروں میں اُن کے انوار
    ہائے پھولوں میں لطافت اُن کی

    عالمِ قدس ہے اُن کا پردہ
    بزمِ کونین ہے جلوت اُن کی

    جو مرے شاہ کے در کے ہیں غلام
    قاف تا قاف ہے شہرت اُن کی

    نور برسے گا مری تربت پر
    رنگ لائے گی محبت اُن کی

    ایک مظہر پہ نہیں چشمِ کرم
    دونوں عالم پہ ہے رحمت اُن کی
     
  11. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,139
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    مدینے کی فضا ہے اور میں ہوں
    جمالِ حق نما ہے اور میں ہوں

    شہ دیں کی ثنا ہے اور میں ہوں
    حقیقت جلوہ زا ہے اور میں ہوں

    ہمہ نغمہ ، ہمہ مستی ، ہمہ سوز
    مری رنگیں نوا ہے اور میں ہوں

    برستے ہیں مری دنیا پہ انوار
    عطائے مصطفٰے ہے اور میں ہوں

    ہر اک مشکل ہوئی جاتی ہے آساں
    مرا مشکل کُشا ہے اور میں ہوں

    ہے دل مضطر ، نظر سوئے مدینہ
    لبوں پر اک دعا ہے اور میں ہوں

    شہنشاہِ دوعالم کی گلی میں
    فقیرانہ صدا ہے اور میں ہوں

    ہُوا ہوں باریابِ منزلِ شوق
    کرم کی انتہا ہے اور میں ہوں

    زباں خاموش ہے ، آنکھوں میں آنسو
    محبت کی ادا ہے اور میں ہوں

    مرا عالم ہے جذب و کیف و مستی
    یہ نعتوں کا صلا ہے اور میں ہوں
     
  12. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,139
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    تری نگاہ سے ذرے بھی مہر و ماہ بنے
    گدائے بے سروساماں جہاں پناہ بنے

    رہ مدینہ میں‌قدسی بھی ہیں جبیں فرسا
    یہ آرزو ہے مری جاں بھی خاکِ راہ بنے

    زمانہ وجد کُناں اب بھی اُن کے طوف میں ہے
    جو کوہ و دشت کبھی تیری جلوہ گاہ بنے

    حضور ہی کے کرم نے مجھے تسلی دی
    حضور ہی مرے غم میں مری پناہ بنے

    ترا غریب بھی شایانِ یک نوازش ہو
    ترا فقیر بھی اک روز کجکلاہ بنے

    جہاں جہاں سے وہ گذرے ، جہاں جہاں ٹھہرے
    وہی مقام محبت کی جلوہ گاہ بنے

    کریم! یہ بھی تری شانِ دلنوازی ہے
    کہ ہجر میں مرے جذبات اشک و آہ بنے

    وہ حسن دے جو تری طلعتوں کا مظہر ہو
    وہ نور دے جو فروغِ دل و نگاہ بنے
     
  13. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,139
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    مصحفِ روئے تو قرآنِ من است
    ایں صحیفہ دین و ایمانِ من است

    حجتے بر دین و ایمانِ من است
    شکرِ حق در نعت دیوانِ من است

    آتشِ عشقِ تو در جانِ من است
    شعلہ در دامن نیستانِ من است

    ایں عجب در عاشقی شانِ من است
    پارہ پارہ جیب و دامانِ من است

    قبلہ ء دل ، کعبہ ء جانِ من است
    شہرِ محبوبی کہ ایمانِ من است

    فقر تو سرمایہ ء جانِ من است
    عظمتِ کونین قربانِ من است

    اے سحابِ لطف! اے ابرِ کرم
    بیں کہ تشنہ کِشتِ ویرانِ من است

    کارواں در راہ و من در منزلے
    ہر نشانِ جادہ اش جانِ من است

    می نوازد ہر زمان با جلوہ
    بندہ پرور شانِ سلطانِ من است

    از فیوضِ نعتِ ختم المرسلیں
    آسماں گرداں بر ایوانِ من است
     

اس صفحے کی تشہیر