برائے اصلاح: مانگوں میں یہ دُعا جو جنت ملے مجھے

مقبول نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 14, 2020

  1. مقبول

    مقبول محفلین

    مراسلے:
    170
    اس غزل کی بحر
    مضارع مثمن اخرب محذوف (مفعول فاعِلاتن مفعول فاعِلن) ہے جس کے مستعمل یا غیر مستعمل ہونے کے بارے میں مجھے متضاد آراء ملی ہیں۔ اگر یہ مستعمل بحر ہے تو آپ سے اصلاح کی درخواست کرتا ہوں۔

    محترم الف عین صاحب
    محترم محمّد احسن سمیع :راحل: صاحب

    اور دیگر اساتذہ کرام​

    مانگوں میں یہ دُعا جو جنت ملے مُجھے
    پر ایسا کیاہے کیا جو جنت ملے مُجھے

    دُنیا میں آیا ہوں تو دُنیا ہے مُجھ سے تنگ
    ہے حوروں کو سزا جو جنت ملے مُجھے

    شاہِ بہشت کے احسانات کا میں نے
    کیاحق کوئی ادا جو جنت ملے مُجھے

    جنت کے دعوے والے رکھتے ہیں سب حساب
    میں نے نہیں گنا جو جنت ملے مُجھے

    ہو جائیں گے یقیناً مقبول مُجھ سے قبل
    سب دوزخی رہا جو جنت ملے مُجھے​
     
  2. مقبول

    مقبول محفلین

    مراسلے:
    170
    محترم الف عین صاحب

    سر، میری مندرجہ بالا غزل آپ کی توجہ کی طالب ہے اگر ممکن ہو ۔ شکریہ
     
  3. یاسر علی

    یاسر علی محفلین

    مراسلے:
    261
    ماشاءاللہ اچھے خیال ہیں مگر ۔

    جو جننت پر آکر روانی مخدوش ہو جاتی ہے۔

    مانگوں میں یہ دُعا جو جنت ملے مُجھے
    پر ایسا کیاہے کیا جو جنت ملے مُجھے

    مانگوں یہی دعا میں۔ ۔
    پر ایسا کیا کیا ہے۔
    کیا کے درمیاں ہے کا آنا اچھا نہیں ہے۔۔
    باقی اساتذہ بہتر جانتے ہیں۔
     
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غیر مستعمل بحور میں روانی محسوس نہیں ہوتی، خاص طور پر ایسی بحروں میں جو ایک آدھ لفظ تبدیل کرنے سے مستعمل اور رواں بحروں میں آ سکتی ہے۔
    جو جنت... کا تنافر بھی برا لگتا ہے کہ جنت ملے مجھے بہتر ردیف ہو گی
     
  5. مقبول

    مقبول محفلین

    مراسلے:
    170
    شُکریہ، یاسر صاحب
     
  6. مقبول

    مقبول محفلین

    مراسلے:
    170
    شُکریہ، سر

    “کہ جنت” کر دیتا ہوں
     
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    میرا مشورہ صرف ردیف کا تھا، محض اسی غزل میں جو کی جگہ 'کہ' کر دینے سے نہیں
    معروف بحر میں اس طرح ڈھالنے کی کوشش کریں
    کرتا ہوں یہ دعائیں کہ جنت ملے مجھے
     
  8. مقبول

    مقبول محفلین

    مراسلے:
    170
    محترم الف عین صاحب

    سر، بحر (مفعول فاعلات مفاعیل فاعلن) تبدیل کر کے آ پ کے جائزے کے لیے دوبارہ پیش کر رہا ہوں ۔

    ردیف “ ۔۔۔۔جنت مجھے عطا” ٹھیک رہے گی یا “۔۔۔ جنت عطا مجھے”؟ ۔ اپنے مشورہ سے نوازیے

    مانگوں میں یہ دُعا کہ ہو جنت مجھے عطا
    پر کیا ہے ایسا کیا کہ ہو جنت مجھے عطا
    یا
    پلّے نہیں ذرا کہ ہو جنت مجھے عطا

    دُنیا میں آ گیا ہوں تو دُنیا ہے مُجھ سے تنگ
    ہے حوروں کو سزا کہ ہو جنت مجھے عطا

    شاہِ بہشت کے کسی احسان کا میں نے
    کیا حق کوئی ادا کہ ہو جنت مجھے عطا

    جنت کے دعوے دار تو رکھتے ہیں سب حساب
    میں نے نہیں گنا کہ ہو جنت مجھے عطا

    کرنے پڑیں گے ربّ کو تو مقبول مُجھ سے قبل
    سب دوزخی رہا کہ ہو جنت مجھے عطا​
     
  9. مقبول

    مقبول محفلین

    مراسلے:
    170
    سر، معذرت چاہتا ہوں ۔ میرا خیال ہے کہ میں بھی اسی وقت
    یہاں لکھ رہا تھا جب آپ اپنا مشورہ تحریر کر رہے تھے ۔ اس لیے بعد میں نظر پڑی
     
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    مطلع تو درست لگتا ہے، دوسرے متبادل کے ساتھ، پہلا متبادل تو سمجھ نہیں سکا
    باقی کسی شعر میں 'کہ' ردیف میں درست فٹ نہیں ہوتا۔ دوسرا تیسرا شعر تو سمجھ نہیں سکا کہ کءا کہنا چاہتے ہیں!
    مقطع میں رب کے ساتھ بد تمیزی نہیں؟
    ہاں، عطا مجھے... بہتر ردیف ہو گی
     
  11. مقبول

    مقبول محفلین

    مراسلے:
    170
    جی، میں دوبارہ دیکھتا ہوں

    میں یہ کہنا چاہتا تھا کہ میرے گناہ سب سے زیادہ ہونے کی وجہ سے میں سب سے آخر میں دوزخ سے نکلوں گا ۔ اگر الّلہ تعالیٰ مجھے پہلے نکالنا چاہیں تو باقیوں کو مجھ سے پہلے نکالیں گے کیونکہ الّلہ تعالیٰ نا انصافی تو نہیں کرتے ۔
    یہ مصرع تبدیل کر دیتا ہوں
     
    آخری تدوین: ‏ستمبر 18, 2020
  12. مقبول

    مقبول محفلین

    مراسلے:
    170
    محترم الف عین صاحب

    سر، اگر میں قافیہ بدلوں گا تو ان خیالات کو شاید بیان نہ کو سکوں۔ اس لیے کم سے کم تبدیلی کر کے اس غزل کو معروف بحر میں لانا چاہتا ہوں ۔ ایک اور کوشش کی ہے ۔ پراہِ مہربانی اپنی رائے سے سرفراز فرمائیے

    میری جو یہ دُعا ہے کہ جنت ملے مجھے
    ایسا بھی کیا کیا ہے کہ جنت ملے مجھے

    خوش رکھ نہیں سکا ہوں کسی شخص کو بھی میں
    یہ حوروں کو سزا ہے کہ جنت ملے مجھے

    ربِّ کریم کے کسی احسان کا میں نے
    کیا حق کوئی ادا ہے کہ جنت ملے مجھے

    جنت کے دعوے دار تو رکھتے ہیں سب حساب
    میں نے نہیں گنا ہے کہ جنت ملے مجھے

    سب دوزخی رہا ہوں گے مقبول مجھ سے قبل
    گر فیصلہ ہوا ہے کہ جنت ملے مجھے
     
  13. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    میری جو یہ دُعا ہے کہ جنت ملے مجھے
    ایسا بھی کیا کیا ہے کہ جنت ملے مجھے
    ... درست

    خوش رکھ نہیں سکا ہوں کسی شخص کو بھی میں
    یہ حوروں کو سزا ہے کہ جنت ملے مجھے
    ... حوروں کو سزا کیوں در رہے ہیں، یہ سمجھ نہیں سکا اب بھی!

    ربِّ کریم کے کسی احسان کا میں نے
    کیا حق کوئی ادا ہے کہ جنت ملے مجھے
    ... یہاں مجھے یہ احساس ہو رہا ہے کہ یہ 'کیا' Did کے معنی میں ہے، میں سوالیہ what سمجھ رہا تھا، دونوں کے تلفظ میں فرق ہے، سوالیہ محض 'کا' باندھا جاتا ہے، اور کِیا، فعو کے وزن پر، یہاں 'کا' ، فع کے وزن پر ہے جو سوالیہ ہونے سے درست ہے، لیکن مفہوم کے اعتبار سے شاید did کے معنوں میں ہے

    جنت کے دعوے دار تو رکھتے ہیں سب حساب
    میں نے نہیں گنا ہے کہ جنت ملے مجھے
    .. کیا گنا ہے، اس کا جواب کہیں ہے شعر میں؟

    سب دوزخی رہا ہوں گے مقبول مجھ سے قبل
    گر فیصلہ ہوا ہے کہ جنت ملے مجھے
    .. 'ہوں گے' محض ہَ گَ تقطیع ہو رہا ہے، یہ اسقاط غلط ہے
    میرے خیال میں اسے مقطع نہ بناؤ تو شاید وزن میں درست آ سکے
     
  14. مقبول

    مقبول محفلین

    مراسلے:
    170
    سر، بہت شُکریہ ۔

    ایک وضاحت اور کچھ درستگی کے ساتھ پھر پیش کر رہا ہوں

    کیونکہ میں کس کو خوش نہیں رکھ سکتا اس لیے میں حوروں کو بھی خوش نہیں رکھ سکوں گا تو میرا جنت میں جانا حوروں کو سزا دینے کے مترادف ہو گا

    یہ دیکھیے

    حوروں کو کیا سزا ہے کہ جنت ملے مجھے

    اگر آپ اس خیال کو مزید واضح کرنے کے لیے کوئی بہتری تجویز کریں گے تو مجھے خوشی ہوُگی

    بالکل یہ سقم موجود تھا ۔ اب دیکھیے

    ربِّ کریم کے کسی احسان کا میں نے
    کیا حق کِیا ادا ہے کہ جنت ملے مجھے؟

    اب دیکھیے

    جنت کے دعوے دار تو گنتے ہیں سب ثواب
    میں نے کبھی گنا( یا لیا) ہے کہ جنت مجھے ملے
    یا
    مجھ کو کبھی ملا ہے کہ جنت ملے مجھے

    اب دیکھیے

    مقبول پہلے ہوں گے سبھی دوزخی رہا
    گر فیصلہ ہوا ہے کہ جنت ملے مجھے
     
    آخری تدوین: ‏ستمبر 19, 2020
  15. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    حوریں تو مجھ کو خوش نہیں کر سکیں اور نہ مجھ میں مصرع تجویز کرنے کا دماغ ہے
    ربِّ کریم کے کسی احسان کا میں نے
    کیا حق کِیا ادا ہے کہ جنت ملے مجھے؟
    پہلے مصرع کی ترتیب بدلو، 'میں نے' صرف 'منے' تقطیع ہونا غلط ہے
    دوسرا مصرع بھی کیا حق ادا کیا ہے.... بہتر اور سادہ نہیں,؟

    جنت کے دعوے دار تو گنتے ہیں سب ثواب
    میں نے کبھی گنا ہے کہ جنت مجھے ملے
    درست ہے
    مقبول پہلے ہوں گے سبھی دوزخی رہا
    گر فیصلہ ہوا ہے کہ جنت ملے مجھے
    یہ اچھا رواں ہو گیا
     
  16. مقبول

    مقبول محفلین

    مراسلے:
    170
    سر، میں آپ کے تبصرے سے بہت محظوظ ہوا ہوں ۔ دنیا والی حوروں سے تو صرف خوش نصیب ہی خوش ہو سکتے ہیں

    سر، میں پھروضاحت پیش کرتا ہوں۔ میں یہ کہہ رہا ہوں کہ میں حوروں کو خوش نہیں کر سکتا اس لیے میرا جنت میں جانا حوروں کے لیے اچھا نہیں ہو گا ۔ آپ کو دوبارہ شعر دیکھنے کی زحمت دے رہا ہوں

    خوش رکھ نہیں سکا ہوں کسی شخص کو بھی میں
    حوروں کو کیا سزا ہے کہ جنت ملے مجھے؟

    بالکل دوسرا مصرع اس طرح سادہ اور بہتر ہو گا۔ “کیا” مطلع میں قافیہ ہونے کی وجہ سے یہاں میں نے “ادا” کو قافیہ بنایا تھا

    مکمل شعر شاید کچھ یوں ہو سکے

    ربِّ کریم کے کسی احسان کا کبھی
    کیا حق ادا کیا ہے کہ جنت ملے مجھے
    یا
    ربِّ کریم کی کسی نعمت کا مجھ سے بھی
    ہو حق ادا سکا ہے کہ جنت ملے مجھے

    سر، آپ فرمائیے ان میں سے کون سا شعر نسبتاً قابلِ قبول ہے ۔ شُکریہ
     
    آخری تدوین: ‏ستمبر 20, 2020
  17. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ربِّ کریم کے کسی احسان کا کبھی
    کیا حق ادا کیا ہے کہ جنت ملے مجھے
    بہتر ہے
     
  18. مقبول

    مقبول محفلین

    مراسلے:
    170
    بہت شُکریہ، سر
     

اس صفحے کی تشہیر