اپنی برہنہ پائی پر۔۔ اعجاز عبید

الف عین نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 16, 2007

  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    وہ شخص جس کی یاد اب مرے گلے کا ہار ہے
    وہ رات کی سیاہیوں میں چاندنی کا تار ہے
    یہ کس کی بد دعا کی آگ اس چمن میں لگ گئی
    بجھا بجھا بلوط ہے جلا جلا چنار ہے
    یہ انجمن تو پہلے جھنجھناتی پائزیب تھی
    یہ کیا ہو ہر ایک ساز اب شکستہ تار ہے
    وہ مرے ساتھ ساتھ ہے، میں چاہے جس جگہ رہوں
    اس آب و ہادِ عشق میں4 جدائی تو بہار ہے
    یہ احمقانہ خواب ہے، عجیب بیوقوف ہو
    کہ خود سے وہ کہے گی تم سے ۔ مجھ کو تم سے پیار ہے

    1992ء
     
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    تھے چھپے ہوئے پسِ کوئے یار چلے گئے
    وہ مرے جنوں کے نگاہ دار چلے گئے
    ہمیں چاہے جیسی بھی نظر سے بھی تو نواز دے
    وہ ترے کرم کے امیدوار چلے گئے
    رہیں بے نتیجہ تمام خوں چکاں دستکیں
    نہ کھلا مگر در انتظار ۔۔ چلے گئے
    وہ جو چشمِ نم کبھی مسکرائی تھی اس طرح
    جو بسے تھے دل میں غم، اشک بار چلے گئے
    پڑے رہ گئے کئیٔ زخمی جسم نواح میں
    وہ جو کج کلاہ تھے شہ سوار، چلے گئے
    اسی رہ سے گزرے تھے اور لوگ بھی میرے بعد
    مرے نقشِ پا کو مٹا کے یار چلے گئے

    1993ء
     
  3. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    یہ بھی کم نہیں، اس کے نام سے رابطہ تو ہے
    خوش رہو میاں! اس کی یاد کا سلسلہ تو ہے
    اک گلی بھی ہے شہر میں کہیں ، ایک گھر بھی ہے
    کم سے کم یہاں تم کو ایک شخص جانتا تو ہے
    سوچو اس طرح بے حس آسمان ہے رحیم بھی
    رنگ بدلے جب، ہر نظارے میں کچھ نیا تو ہے
    اس کی دلبری کا ہے بھرم ، کہ اپنا شیشۂ انا
    اس سے جب ملیں ، چھن سے کچھ کہیں ٹوٹتا تو ہے
    جستجو کریں، جھپ کے دیکھ لیں، اس کے ہاتھ میں
    کچھ حنا کے رنگ ، درمیاں میں نام اک لکھا تو ہے
    ہے یزید کون، کون ہے حسین، ہے کہاں فرات
    کچھ پتہ نہیں، محشرِ خیال کربلا تو ہے
    اتنے دن کے بعد کچھ کبت لکھے، بن گئی خبر
    دل ٹھہر گیا، جاں کا چین بھی سانحہ تو ہے

    1996ء
     
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ان پلکوں تک بہہ آؤں
    قطرہ قطرہ گر جاؤں
    ربط ہے لفظ بھی چھوٹا سا
    کیوں بیکار میں پھیلاؤں
    خود بھی سمجھنا مشکل ہے
    تم کو کیسے سمجھاؤں
    پھر اس سے ملنے کے لئے
    پھر اک بار بچھڑ جاؤں
    مجھ کو اب آواز نہ دے
    واپس شاید ہی آؤں

    1998ء
     
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    کیسی آوارہ خو ہے
    دل کس رم کا آہو ہے
    اس کو نہ دیکھیں ۔ دیکھیں آج
    دل پر کتنا قابو ہے
    ہم بھی بس خاموش رہے
    اس کی چپ تو جادو ہے
    ابھی ابھی ہیں اشک تھمے
    جاں میں سوندھی خوشبو ہے
    کیا گلشن میں بہار آئی
    کیا اک گل کی خوشبو ہے
    اس کا کوئی نام نہ لے
    اپنا چرچا ہر سو ہے
    روٹھے تو مننا مشکل
    اس میں بھی اپنی خو بو ہے
    کیا مہکئ ہیں دشت و در
    اپنی غزل کا جادو ہے

    2000ء
     
  6. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    کیسا جادو سحر جگانے لگی
    بسترِ غم پہ نیند آنے لگی
    ذکر جب اس کا چھڑ گیا کل رات
    ساری محفل ہی گنگنانے لگی
    یاد نے آکے دل پہ دستک دی
    اور اسی پل میں نیند آنے لگی
    کوچۂ جاں عجیب صحرا ہے
    غم کی بارش بھی قہر ڈھانے لگی
    اب تو سیرِ چمن بھی مشکل ہے
    پھر کوئی یاد ہم کو آنے لگی
    روٹھ جانا بھی اس سے مشکل ہے
    وہ بھلا کیوں ہمیں منانے لگی

    2002ء
     
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    کاسۂ دل ہے عطرداں اپنا
    یاد ہے اس کی، زخمِ جاں اپنا
    اب کی ایسا ہے سائباں اپنا
    نہ زمیں ہے ، نہ آسماں اپنا
    عشق میں کس کو کچھ ہوا حاصل
    یہ تھا سودا ہی رائیگاں اپنا
    نام اس کا ہر اک زباں پر ہے
    ذکر پھیلا کہاں کہاں اپنا
    لاکھ منظر ہوں تھامتے دامن
    اب رکے گا نہ کارواں اپنا
    عالم رنگ و بو نواح میں ہے
    پیرہن اس کا، شہرِ جاں اپنا
    اب تو ہندی میں کام کیجیے عبیدؔ
    شاید اردو میں ہو زیاں اپنا

    2003ء
     
  8. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    چاندی سونا دیکھوں میں
    مئی میں کیا دیکھوں میں
    صبح سویرے اٹھتے ہی
    کس کا چہرا دیکھوں میں
    فرشِ خاک پہ سوؤں جب
    سچّا سپنا دیکھوں میں
    وہ تو میرے گھر میں ہے
    کس کا رستا دیکھوں میں
    یاہو1 کی ایک ’وِنڈو‘2 میں
    اس کا مکھڑا دیکھوں میں
    جب بھی، جہاں بھی چاہوں اسے
    سامنے بیٹھا دیکھوں میں
    آنکھوں میں رِم جھِم ہو جائے
    جب اسے ہنستا دیکھوں میں
    صبح اٹھنے کی جلدی میں
    خواب ادھورا دیکھوں میں
    بول یہ سندر سندر درشّیہ
    کب تک تنہا دیکھوں میں
    میرؔ تمہاری غزلوں میں
    اپنا دُکھڑا دیکھوں میں
    مانیٹر3 کے پردے پر
    ایک ہی چہرا دیکھوں میں
    اس کی یاد آئے جب بھی
    مونا لیزا دیکھوں میں
    تو ہی بتا تیرا ایسا روپ
    دیکھوں یا نا دیکھوں میں


    1. Yahoo 2. Window 3. Monitor
    2003ء
     
  9. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ہزار یادوں نے محفل یہاں سجائی۔ ۔۔ پر
    جو نیند آتی ہے سولی پہ بھی، سو آئی ۔۔ پر
    سلگتی ریت کو دو دن میں پھول جائیں نہ ہم
    یہ ایک شعر ہےاپنی برہنہ پائی پر
    میں فرشِ خاک پہ لیٹوں تو سوتا رہتا ہوں
    ہزار خواب اترتے ہیں چار پائی پر
    نہ جانے کب مری آنکھوں سے اشک چھن جائیں
    بھروسہ اب نہیں کرتا ہے بھائی بھائی پر
    عطا کرے مجھے اقلیمِ شعر کی شاہی
    یہ شک نہیں ہے مجھے تیری کبریائی پر

    2004ء
     
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    دعا کرو کہ دعا میں مری اثر ہو جائے
    میں اس کا نام نہ لوں، اور اسے خبر ہوجائے
    بس اب یہ آخری خواہش بچی ہے، اس کے حضور
    یہ صرف سادہ مرا حرف معتبر ہوجائے
    بس اک شرار خسِ خشک جاں کو کافی ہے
    چلو کہ آج تماشہ یہ رات پھر ہوجائے
    نہ کچھ گناہ میں لذت ، ثواب میں نہ مزا
    کروں نہ کچھ بھی ، مگر زندگی بسر ہوجائے
    بہار جذبوں پہ آئے، پھر آنکھیں خشک رہیں
    یہ برّ و بحر مرا پھر سے بحر و بر ہو جائے

    2004ء
     
  11. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    یہ کشتِ غم ہے خدایا ہری بھری رکھنا
    جہاں بھی جائے نظر، سبز ہی نظر آئے
    میں بہیگتا رہوں بارش میں جیسے ساری رات
    جو خواب میں بھی کبھی اس کی چشمِ تر آئے
    ہوائے تیز میں ، جیسے کچھ آنکھ میں گر جائے
    نہ کوئی بات ہو، بس یوں ہی آنکھ بھر آئے
    میں اس کو چھوڑنا چاہوں، تو چھوڑنے کو مجھے
    طویل فاصلے تک اس کی رہ گزر آئے
    پتہ تو تھا کہ ہمارا مقام کیا ہوگا
    ہم اس کی بزم میں سب جان بوجھ کر آئے

    2005ء
     
  12. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    میرا اس کا میل ہی کیا، کروں اس کا سوالی میں
    وہ ہے اک مصروف سی ساعت ، لمحۂ خالی نہیں
    دیکھیں کب تک دیکھا ۔ ان دیکھا کرتے ہیں لوگ
    شعر میں اب بھی عروج پہ مائل ، گو ہوں زوالی میں
    ہوا کا جھونکا اس کو مہکا دے مجھے بکھرا دے
    وہ آراستہ باغِ عدن ہے، ربعُ الخالی میں
    کِرنوں یا پانی کو ترسنا دونوں کا ہی نصیب
    وہ آمیزن بن کی دھرتی، قطب شمالی میں
    قصے طوطا مینا کے اب سب کو بھول گئے
    کس کا نام لئے یوں چہکوں ڈالی ڈالی میں


    2005ء
     
  13. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    تیرا روپ سنہرا ہوگا ، ہم کوئی تجھ سے ہیٹے ہیں
    اپنی وفا کی آگ میں تپ کر سونا بن کر نکھرے ہیں
    چاندی کے سکوں کی کھن کھن جیسی ہے اسکی آواز
    زنجیریں بجنے کی زباں میں ہم بھی باتیں کرتے ہیں
    اس کے ہاتھ میں چاند اور سورج، آنچل میں جھل مل تارے
    تم کہتے ہو رات اندھیری ، ہم کو بہت یہ اجالے ہیں
    کابکشاں کے زینے سے چھم چھم کوئی پری اتر آئے
    اس کی یاد کے پیروں چل کر یوں اشعار اترتے ہیں

    2005ء
     
  14. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    تم وہاں پہ تنہا ہو ، ہم یہاں اکیلے ہیں
    آؤ آکے مل جاؤ ، دونوں وقت ملتے ہیں
    وہ نہیں مقابل اب ورنہ اس چمن کے پھول
    پہلے بھی مہکتے تھے ، آج بھی مہکتے ہیں
    راستے نہیں تھکتے، دیکھے ہیں ہم بھی آج
    ساتھ اپنے کتنی دیر، کتنی دور چلتے ہیں
    ہے چمن تمام اس کا ، ہم کو اس کا بس اک پھول
    نیند اس کو بھاتی ہے۔ ہم کو خواب پیارے ہیں
    بس ابھی تو اس نے چائے لا کے دی مگر یہ کیا !!
    ہاتھ میں رسالہ ہے ، جاگتے کے سپنے ہیں

    2005ء
     
  15. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    کچھ صدا صبح تک تو آئے گی
    پیالیوں کی کھنک تو آئے گی
    ایک پل کو ہی وہ لگا تھا گلے
    اپنے تن سے مہک تو آئے گی
    لاکھ رستے بدل کے گھر جاؤں
    راہ میں وہ سڑک تو آئے گی
    رات بھر اس امید پر جاگے
    اک کرن صبح تک تو آئے گی
    خشک آنکھوں کے سوکھے جنگل میں
    آنسوؤں کی مہک تو آئے گی
    رات ہونے تو دو ، پھر اس کی آباد
    سرِ نوکِ پلک تو آئے گی
    آج صحرائے جان خشک سہی
    آنسوؤن کی کمک تو آئے گی
    اتنے دن بعد آج شعر کہے
    چہرے پر کچھ چمک تو آئے گی
    دکھ کے بادل برس چکیں تو عبیدؔ
    ایک رنگیں دھنک تو آئے گی

    2006ء
     
  16. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    وہ جسے سن سکے وہ صدا مانگ لوں
    جاگنے کی ہے شب کچھ دعا مانگ لوں
    اس مرض کی تو شاید دوا ہی ہیں
    دے رہا ہے وہ، دل کی شفا مانگ لوں
    عفو ہوتے ہیں آزار سے گر گناہ
    میں بھی رسوائیوں کی جزا مانگ لوں
    شاید اس بار اس سے ملاقات
    بارے اب سچّے دل سے دعا مانگ لوں
    یہ خزانہ لٹانے کو آیا بھی میں
    اس کو ڈر ہے کہ اب جانے کیا مانگ لوں
    اب کوئی تیر ترکش میں باقی نہیں
    اپنے رب سے صدائے رسا مانگ لوں
    جمع کرتا ہوں میں ظلم کی آیتیں
    کس کے سر سے گِری ہے ردا ۔ مانگ لوں

    2006ء
     
  17. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    سمجھو اسے شاعری ہماری
    یا دل کی کہو لگی ہماری
    کہا چِت بھی تھی، پَٹ بھی تھی تمہاری
    لو ۔۔ بات تو مان لی ہماری
    پہلے ہی پتنگ کٹ چکی تھی
    لو ڈور بھی لُٹ گئی ہماری
    اب کس کی امید ، کون آئے
    اب شام بھی بجھ چلی ہماری
    کچھ تھا کہ اٹھا رہا سر اپنا
    دیکھو تو کج کلہی ہماری
    افسانے سنے جو اس کی چُپ میں
    کہتی رہی خامشی ہماری

    2007ء
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ختم شد
    ختم شد
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1

اس صفحے کی تشہیر