1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $453.00
    اعلان ختم کریں

اصلاحِ سخن : لہجے کو تیرے دیکھا یہ حاجت نہیں رہی

خورشید نیر نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 5, 2019

  1. خورشید نیر

    خورشید نیر محفلین

    مراسلے:
    13
    موڈ:
    Brooding
    استاتذۂ اکرم سے اصلاح کی گزارش ہے

    مفعول فاعلاتُ مفاعیل فاعلن

    لہجے کو تیرے دیکھا تو حاجت نہیں رہی
    کہدے تو یہ کہ تیری ضرورت نہیں رہی
    اب خال خال ہی ہیں محبت سناش لوگ
    ظاہر ہے ایسے کاموں سے رغبت نہیں رہی
    مردہ سا ہو گیا ہے یہ تہذیب کا بدن
    اس کے لہو میں اب وہ حرارت نہیں رہی
    اب تو بہار آئے نہ آئے یہ غم نہیں
    کیونکہ ہمیں بہار کی عادت نہیں رہی
    اب میکدے میں باقی نہیں رسمِ مے کشی
    زندہ وہ بادہ خواروں کی صحبت نہیں رہی
    اب بھی محبتوں کا تو قائم ہے سلسلہ
    لیکن وہ سوزِ رفتہ وہ شدت نہیں رہی
     
    آخری تدوین: ‏ستمبر 5, 2019
  2. عظیم

    عظیم محفلین

    مراسلے:
    6,557
    لہجے کو تیرے دیکھا تو حاجت نہیں رہی
    کہدے تو یہ کہ تیری ضرورت نہیں رہی
    ۔۔۔دیکھا کے الف کا اسقاط اچھا نہیں لگ رہا۔
    لہجے کو تیرے دیکھ کے حاجت نہیں رہی
    کیا جا سکتا ہے

    اب خال خال ہی ہیں محبت سناش لوگ
    ظاہر ہے ایسے کاموں سے رغبت نہیں رہی
    ۔۔۔درست اور اچھا لگ رہا ہے یہ شعر

    مردہ سا ہو گیا ہے یہ تہذیب کا بدن
    اس کے لہو میں اب وہ حرارت نہیں رہی
    ۔۔۔'یہ' بھرتی کا لگ رہا ہے۔

    اب تو بہار آئے نہ آئے یہ غم نہیں
    کیونکہ ہمیں بہار کی عادت نہیں رہی
    ۔۔۔'تو' کا طویل کھینچا جانا روانی متاثر کرتا ہے۔ اسے یک حرفی ہی استعمال کرنا چاہیے۔

    اب میکدے میں باقی نہیں رسمِ مے کشی
    زندہ وہ بادہ خواروں کی صحبت نہیں رہی
    ۔۔۔باقی میں ی کا گرنا اچھا نہیں لگ رہا۔
    الفاظ کی نشست بدل کر دیکھیں

    اب بھی محبتوں کا تو قائم ہے سلسلہ
    لیکن وہ سوزِ رفتہ وہ شدت نہیں رہی
    ۔۔۔شعر بھی پچھلے سبھی اشعار کی طرح اچھا ہے۔ اور درست بھی ہے ماشاء اللہ
     
  3. خورشید نیر

    خورشید نیر محفلین

    مراسلے:
    13
    موڈ:
    Brooding
    جی سر شکریہ میں تبدیلیاں کرتا ہوں
     
  4. خورشید نیر

    خورشید نیر محفلین

    مراسلے:
    13
    موڈ:
    Brooding
    تبدیلیوں کے بعد دوبارہ پیشِ خدمت ہے

    لہجے کو تیرے دیکھ کے حاجت نہیں رہی
    کہدے تو یہ کہ تیری ضرورت نہیں رہی
    اب خال خال ہی ہیں محبت سناش لوگ
    ظاہر ہے ایسے کاموں سے رغبت نہیں رہی
    آئے بہار اب ،یا نہ آئے یہ غم نہیں
    کیونکہ ہمیں بہار کی عادت نہیں رہی
    باقی نہیں ہے میکدے میں رسمِ مے کشی
    زندہ وہ بادہ خواروں کی صحبت نہیں رہی
    اب بھی محبتوں کا تو قائم ہے سلسلہ
    لیکن وہ سوزِ رفتہ وہ شدت نہیں رہی
     
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    33,523
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    محبت سناش؟ غالباً شناس کہنا چاہ رہے ہیں
    مطلع میں کس بات کی حاجت نہیں رہنے کی بات ہے؟ واضح نہیں
    آئے بہار اب ،یا نہ آئے یہ غم نہیں
    کیونکہ ہمیں بہار کی عادت نہیں رہی
    'یا نہ آئے' میں یا کے الف کا اسقاط اچھا نہیں، اسے 'کہ نہ آئے' کیا جا سکتا ہے
    کیونکہ میں کہ کا 'کے' کی طرح تقطیع ہونا بھی اچھا نہیں لگتا
    اب مے کدے سے آٹھ بھی چکی رسمِ مے کشی
    کیسا مصرع رہے گا؟
    دوسرے مصرع میں بھی 'زندہ' کی نشست بدل دیں، یہ َسوال بھی اٹھتا ہے کہ پھر مے کدے میں کیا ہونے لگا ہے؟
     
  6. خورشید نیر

    خورشید نیر محفلین

    مراسلے:
    13
    موڈ:
    Brooding
    جی سر بہت شکریہ میں دوبارہ کوشش کرتا ہوں
     
  7. خورشید نیر

    خورشید نیر محفلین

    مراسلے:
    13
    موڈ:
    Brooding
    اصلاح کے بعد دوبارہ پیشِ خدمت ہے

    پہلا سا درد پہلی سی وحشت نہیں رہی
    لگتا ہے جیسے تجھ سے محبت نہیں رہی
    اب خال خال ہی ہیں محبت سناش لوگ
    ظاہر ہے ایسے کاموں سے رغبت نہیں رہی
    آئے بہار اب ، کہ نہ آئے یہ غم نہیں
    یوں بھی ہمیں بہار کی عادت نہیں رہی
    اب بھی محبتوں کا تو قائم ہے سلسلہ
    لیکن وہ سوزِ رفتہ وہ شدت نہیں رہی
    بدلا ہے اس مزاج سے عالم کا یہ نظام
    عہدِ کہن کی کوئی روایت نہیں رہی
     
  8. عظیم

    عظیم محفلین

    مراسلے:
    6,557
    شناس ابھی بھی درست نہیں ہوا۔

    آئے بہار اب ، کہ نہ آئے یہ غم نہیں
    یوں بھی ہمیں بہار کی عادت نہیں رہی
    ۔۔دوسرے مصرع میں 'بھی' کو طویل کھینچنا مجھے یہاں اچھا نہیں لگ رہا۔ اس کے علاوہ پہلے مصرع میں 'غم نہیں' ہے تو دوسرے میں 'یوں بھی' بے معنی ہوتا محسوس ہو رہا ہے۔
    یوں ہے کہ اب بہار کی عادت نہیں رہی
    'اب بہار' میں تنافر ہے صرف مثال کے لیے لکھ رہا ہوں ۔ آپ خود الفاظ بدل۔کر کوشش کریں
    نیا شعر بھی مجھے درست لگ رہا ہے۔ باقی سب پر تو بات ہو چکی ہے۔
     

اس صفحے کی تشہیر