1. اردو محفل سالگرہ شانزدہم

    اردو محفل کی سولہویں سالگرہ کے موقع پر تمام اردو طبقہ و محفلین کو دلی مبارکباد!

    اعلان ختم کریں

آپ کیا پڑھ رہے ہیں؟

نبیل نے 'مطالعہ کتب' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 24, 2007

  1. حسرت جاوید

    حسرت جاوید محفلین

    مراسلے:
    703
    زندگی ہر حال میں چلتی رہتی ہے، انسان اسے روکنے کی چاہے لاکھ کوشش کرے۔
     
    • زبردست زبردست × 1
    • متفق متفق × 1
  2. گُلِ یاسمیں

    گُلِ یاسمیں لائبریرین

    مراسلے:
    12,374
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Question
    زندگی چلنے سے ہمارا مطلب یہ کہ کسی بات کو روگ بنا کر ہمت نہ ہار دی جائے۔ مردوں پر تو ویسے بھی بہت ذمہ داریاں ہوتی ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. اے خان

    اے خان محفلین

    مراسلے:
    5,855
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    آمین شکریہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  4. حسرت جاوید

    حسرت جاوید محفلین

    مراسلے:
    703
    ذمہ داریاں شاید ہر انسان پہ ہوتی ہیں لیکن ہمارے معاشرے میں غالباً مردوں سے منسوب ہیں۔ اوائل میں تو تعلق ٹوٹنے پر انسان واقعی ہمت ہار جاتا ہے لیکن جیسے ہی متبادل ملنا شروع ہوتے ہیں انسان زندگی کی طرف پلٹ آتا ہے۔
     
    • متفق متفق × 2
  5. گُلِ یاسمیں

    گُلِ یاسمیں لائبریرین

    مراسلے:
    12,374
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Question
    درست فرمایا۔
    ذمہ داریاں بٹی ہوتی ہیں لیکن مردوں کا بالخصوص اس لئے ذکر کیا کہ خاندان کی کفالت یقیناً گھرداری سے زیادہ ذمہ داری کا کام ہے۔
    بالکل۔۔۔ زندگی کی طرف لوٹنا یا سمجھوتہ تو کرنا ہی پڑتا ہے زندگی سے۔ منحصر ہے اس بات پر کہ کون کن حالات سے گزرا۔ کبھی تو موت کو بھی بہت قریب سے دیکھ آتا ہے انسان ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • غمناک غمناک × 1
  6. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    40,995
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Aggressive
    • زبردست زبردست × 2
  7. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    27,164
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    مشہور قانون دان حامد خان صاحب کی ایک اور معرکۃ الآرا کتاب:
    A History of the Judiciary in Pakistan

    یہ کتاب 2016ء میں پہلی بار چھپی تھی اور 1947ء سے لیکر 2009ء یعنی چیف جسٹس افتخار چوہدری بحالی تک پاکستان عدالتی نظام کی تاریخ پر مشتمل ہے جس میں قریب ہر مشہور فیصلے کا بھی احاطہ کیا گیا ہے۔ لیکن میرے خیال میں اس کتاب کو جسٹس چوہدری کی ریٹائرمنٹ یعنی 2013ء تک کا احاطہ کیا جانا چاہیئے تھا کیونکہ جسٹس افتخار محمد چوہدری نے اپنی بحالی کے بعد چار، ساڑھے چار سال تک جس طرح سپریم کورٹ اور ماتحت عدالتوں کو چلایا وہ بھی خاصے کی چیز ہے۔ بس یہی تھوڑی سی کمی اس کتاب میں محسوس ہو رہی ہے بصورتِ دیگر عمدہ کتاب ہے اور میرے اگلے کچھ ہفتے اس کتاب کی معیت میں خوشی خوشی گزریں گے!

    [​IMG]
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 2
  8. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    40,995
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Aggressive
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  9. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    40,995
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Aggressive
  10. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    40,995
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Aggressive
  11. حسرت جاوید

    حسرت جاوید محفلین

    مراسلے:
    703
    • زبردست زبردست × 1
  12. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    30,988
  13. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    30,988
    کلاسک!!!
     
  14. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    30,988
    اسی عدالتی انقلاب کا خمیازہ آج پوری قوم بھگت رہی ہے۔ لوہار ہائی کورٹ نے تو کینگرو کورٹ کی اصطلاح کو بھی پیچھے چھوڑ دیا ہے۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
    • غمناک غمناک × 1
  15. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    30,988
    • پر مزاح پر مزاح × 1
    • غیر متفق غیر متفق × 1
  16. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    40,995
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Aggressive
    کتنے محفلین معطل کرانے ہیں؟
     
  17. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    40,995
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Aggressive
  18. حسرت جاوید

    حسرت جاوید محفلین

    مراسلے:
    703
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  19. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    40,995
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Aggressive
  20. سید فہد ترمذی

    سید فہد ترمذی محفلین

    مراسلے:
    4
    اگر اس جھول کی چند جھلکیاں بتا دیں تو معلومات میں اضافہ ہو گا۔ ہر مصنف کے ناول میں جھول نکل سکتی ہے۔ ابن صفی صاحب نے ایک مقصد کے تحت لکھنا شروع کیا تھا۔ برصغیر پاک و ہند کی تقسیم کے بعد اردو جن خطرات سے دو چار تھی اس سے اردو کو نکالنے کے لیے کئی شخصیات کی خدمات ہیں مگر اردو کی جو خدمت ابن صفی صاحب نے کی کوئی اور نہ کر پایا۔ اسی لیے تو بابائے اردو مولوی عبدالحق نے کہا تھا کہ اس شخص ابن صفی کا اردو پر بہت بڑا احسان ہے۔۔۔۔ تو اردو پر ابن صفی صاحب کے بہت سارے احسانات ہیں۔ لاتعداد لوگوں نے ابن صفی صاحب کی محبت میں، ابن صفی صاحب کے کرداروں کرنل فریدی، کیپٹن حمید اور علی عمران وغیرہ کی چاہت میں اردو سیکھی۔ اگر آپ سارے 250 کے قریب ابن صفی صاحب کے ناول پڑھیں تو آپ کو بہت سارے سوالات کے جوابات مل جائیں گے۔
     

اس صفحے کی تشہیر