16دسمبر: ایک سانحہ عظیم

ایم اسلم اوڈ نے 'تاریخ کا مطالعہ' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 10, 2010

  1. ایم اسلم اوڈ

    ایم اسلم اوڈ محفلین

    مراسلے:
    643
    موڈ:
    Cool
    یہ ایک سوگوار شام تھی۔ ڈھاکہ کے ریس کورس میں آج عجیب ہی منظر تھا۔ سینہ پھلائے اور گردن کو غرور کا خم دے کر جنرل جگجیت سنگھ اروڑہ نے جنرل نیازی کے تمغے اور رینک سرعام نوچ ڈالے۔
    ذلت ورسوائی، بے بسی و بےچارگی کا یہ منظر چرخ نیلی فام نے شاید ہی کبھی دیکھا ہوگا۔ اس سانحہ عظیم پر ہزاروں آنکھیں اشکبار تھیں۔ دل غم سے معمور تھے، سینہ درد کی شدت سے پھٹ پھٹنے کو تھا۔ پاکستان کہلانے والے کرڑوں افراد چیخ چیخ کر رونے لگے۔ اسی دن طاقت کے نشے سے سرشار بھارتی وزیر اعظم اندرا گاندھی نے پارلیمنٹ سے خطاب کرتے ہوئے کہا: ”یہ فتح جو ہمیں حاصل ہوئی ہے یہ ہماری افواج کی فتح نہیں بلکہ ہمارے نظریے کی فتح ہے۔ ہم نے ان (پاکستانی مسلمانوں) سے کہا تھا کہ ان کا نظریہ باطل ہے اور ہمارا نظریہ برحق ہے لیکن وہ نہ مانے اور ہم نے ثابت کردیا کہ ان کا نظریہ باطل تھا۔ ہم نے ان کا نظریہ بحرہند میں غرق کردیا۔“
    16دسمبر کے دن ہر اس شخص کا دل.... جو پاکستان اور خصوصاً مسلمانوں کی سلامتی کے لیے دھڑکتا ہے۔ مضطرب رہتا ہے۔ خیالات کا سیل رواں کسی طوفانی دریا کے مانند بہہ رہا ہے۔ خیال کی لہریں دماغ کے ساحل پر اس زور سے سر پٹختی ہیں کہ دماغ کی چولیںہل جاتی ہیں۔ ہر صاحب علم شخص یہ سوچنے پر مجبور ہے کہ پاکستان کا ٹوٹ جانا بڑا المیہ تھا یا اندلس کا عیسائی بادشاہ فرڈی نینڈ اور اس کی ملکہ ازابیلا کے قبضے میں چلا جانا بڑا سانحہ تھا۔ کیوں کہ دونوں واقعات نے دنیا کی تاریخ میں تغیر پیدا کیا۔ سقوط ڈھاکہ کا سانحہ نہ صرف علیحدگی پسند تحریکوں کے لیے سنگ میل ثابت ہوئی بلکہ پاکستان میں بھی اٹھنے والی ہر علاقائی تحریک لاشعوری طور پر مشرقی پاکستان کے نقش قدم پر چلنے لگی۔
    مشرقی پاکستان کے المیے پر کالم نگاروں تجزیہ نگاروں، مصنفوں اور عسکری دانشوروں سمیت سبھی اس بات پر متفق ہیں کہ سقوط ڈھاکہ میں فوجی حکمرانوں کی بے حسی اور عوام کی بے بسی دونوں کا دخل تھا۔ ڈاکٹر صفدر محمود اپنی کتاب ”پاکستان کیوں ٹوٹا؟“ میں سیاست دانوں کو مورد الزام ٹہراتے ہوئے لکھتے ہیں: ”حزب اختلاف کے رہنماﺅں کے اندرونی اختلافات، مجیب الرحمن کے چھ نکات پر اصرار، بھاشانی اور بھٹو کے عدم تعاون کے رویے کے نتیجے میں گول میز کانفرنس کو ناکامی کاسامنا کرنا پڑا اور اس کے ساتھ ہی پر امن اقتدار کی آخری کوشش دم توڑ گئی۔ گول میز کانفرنس کی ناکامی گھمبیر سیاسی حالات کا پیش خیمہ ثابت ہوئی اور اس نے پاکستان کی تاریخ کا دھارا بدل کر رکھ دیا۔ اگر سیاست دان پرامن انتقال اقتدار کی راہ میں حائل نہ ہوتے اور ایوب خان کے پارلیمانی نظام براہ راست انتخابات کے مطالبے کو تسلیم کرتے، آئندہ انتخابات میں امیدوار نہ بننے کی پیش کش قبول کرلیتے تو شاید ہمیں 1971ءکے المیہ کا سامنا نہ کرنا پڑتا۔“
    زمانے کی نبض ہمارے ہاتھ میں تھی بیماری کا علم ہوتے ہوئے بھی ہم مرض کی تشخیص نہیں کرپارہے تھے۔ عقل کے دریچے اس وقت ”وا“ ہوئے جب ہم بہت کچھ کھوچکے تھے۔ خطرہ آہستہ آہستہ کسی عفریت کی مانندہمارا تعاقب شروع کرچکا تھا۔ گلی گلی اور قریہ قریہ اس نعرے کی گونج تھی۔
    خون دیا چھی....خون لے چھی
    آمارا بانگلا....تومارابانگلا
    بانگلادیش
    1965ءکی جنگ والا وہ جوش وجذبہ سرد پڑ چکا تھا۔ سب ایک بار پھر اس انتظار میں تھے کہ کب ہمارا کمانڈر کہے گاکہ” مکتی باہنی اور بھارت کو نہیں معلوم کہ انہوں نے کس قوم کے سپوتوں کو للکارا ہے۔ “مگر اب کی بار ایک نیا جملہ سننے کو ملا۔
    Gentalmen, Cease fire, we re Losers
    بھرم کا بت پاش پاش ہوگیا۔ مرد کازیور ہتھیاربے وقعتی کے احساس سے زمین میں سماگیا۔ سمجھ نہیں آتا اس وقت آسمان کیسے سلامت رہ گیا؟ زمین شق کیوں نہ ہوئی؟ پہاڑوں نے اپنی جگہ کیوں نہیں چھوڑی؟ سمندروں میں ہلچل کیوں نہیں مچی؟ صحراﺅں کی ریت بدمست ہواﺅں کے دوش پر اڑتے کیوں نہیں؟


    [​IMG][/URL] Uploaded with ImageShack.us[/IMG]

    آہ.... ایسا لگا جیسے کسی نے عین دل پر چرکہ مارا ہو۔ آنسوووں اور آہوں کاایک سیلاب تھا جورکنے میں نہیں آتا تھا۔ صدیق سالک کہتے ہیں کہ ”التوائے اجلاس کا جونہی اعلان ہوا ڈھاکہ میں اشتعال کی لہر دوڑ گئی۔ اعلان کے آدھ گھنٹے کے اندر عوام لاٹھیاں اور لوہے کی سلاخیں لے کر بازاروں میں نکل آئے، وہ مخالفانہ نعرے بلند کررہے تھے اور گالیاں دے رہے تھے۔ ویسے تو سینکڑوں وجوہات ایسی ہیں جو مشرقی پاکستان کی علیحدگی کا سبب بنے۔ چند کا ذکر یہاں ناگزیر ہے کیوں کہ اب پاکستان ایک بار پھر سازشوں کے دوراہے پر کھڑا ہے۔
    1:۔ مغربی پاکستان کی سیاست پر جاگیرداروں کا تسلط تھا جب کہ مشرقی پاکستان کے سیاست دانوںکی بڑی تعداد وکلائ، اساتذہ اور ریٹائرڈ سرکاری ملازمین پر مشتمل تھی۔ دونوں جانب کے عوامی نمائندوں کے نظریات و عزائم متضاد تھے اور ان کے لیے تیار نہیں تھی۔
    2:۔ سیاسی جماعتیں انتشار کا شکار تھیں جبکہ اکثریت صوبائیت سے بالاتر ہو کر سوچنے کے لیے تیار نہیں تھیں۔
    3:۔ صوبے کی معیشت اور تعلیم پر ہندوﺅں کا قبضہ تھا۔ یہی نہیں بلکہ قومی دولت پر اسی فیصد ہندو قابض تھے۔
    4:۔ مشرقی پاکستان میں موجود 1290 اسکول اور 47 کالجوں کے 95فیصد پر بھی ہندوﺅں کا کنٹرول تھا۔ جہاں ہندو اساتذہ نے بنگالی نوجوانوں کو مغربی پاکستان کے خلاف بھڑکانے میں اہم کردار ادا کیا۔ یہ اساتذہ طلبہ کے لیے جو کتب تجویز کرتے ان میں سے بیشتر نظریہ پاکستان کے خلاف مواد پر مشتمل ہوتیں۔
    5:۔ بھارت سے پاکستان دشمن لٹریچر اسمگل ہو کر مشرقی پاکستان آنا شروع ہوا۔ اس کے علاوہ مشرقی پاکستان کے دانشوروں میں ایک طبقہ ایسا تھا جس کی ہمدردیاں بھارت کے ساتھ تھیں۔
    6:۔ کئی خفیہ تنظیمیں راتوں رات پیدا ہوگئیں اور پاکستان اور پاکستانی فوج کے خلاف اشتہار بانٹنے لگیں۔ (اس کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ عوامی لیگ کی ایک ذیلی تنظیم ”پور بوبنگلہ شرامک اندولس“ نے یہ اشتہارہر جگہ تقسیم کیا: ”مشرقی بنگال کی قومی آزادی کی تحریک شروع ہوچکی ہے، اس کو جنگل کی آگ کی طرح گھر گھر پہنچادو، وطن پرست اور انقلاب پسند لوگو ہتھیار اٹھالو دشمن فوج کا مقابلہ کرو اور اسے ختم کردو۔“
    7:۔ ملک کے مختلف حصوں میں صوبائیت، رجحانات منظر عام پر آنے لگے جس کی وجہ سے مغربی اور مشرقی پاکستان کے درمیان خلیج بڑھتی گئی۔ بائیں بازو کے سیاست دانوں نے صوبائی خود مختاری سے فائدہ اٹھایا جس کا نتیجہ بنگال بنگالیوں کا پر منتج ہوا۔ عوامی جلوسوں میں مغربی پاکستان کے خلاف اشتعال انگیز نعرہ بازی کی گئی جس سے صوبائیت کی آگ مزید تیز ہوگی۔
    8:۔ بنگالی کو سرکاری زبان قرار دینے کے مطالبے لسانی تنازع کھڑا کردیا جو بالآخر تحریک کی شکل اختیار کرگیا۔
    9:۔ حکومت مخالف ریلیوں اور جلوسوںسے بھارت نے بھرپور فائدہ اٹھایا۔ سینکڑوں ہندوﺅں کو مشرقی پاکستان میں داخل کردیا گیا۔ جنہوں نے ان جلوسوں میں نہ صرف اشتعال انگیز نعرے بازی کی بلکہ بندے ماترم اور اکھنڈ بھارت کے نعرے بھی لگائے۔
    10:۔ کمیو نسٹوں نے تحریک کو ہوا دینے کے لیے خوب تعاون کیا۔ چین، برما اور بھارت سے درآمد کیا جانے والا سستاکمیونسٹ لٹریچر صوبے میں چائے خانوں، عام مقامات، ریستورانوں، اسکولوں، ریلوے بک اسٹالوں غرض ہر جگہ پایا جاتا تھا۔
    11:۔ یہ بات زبان زد عام تھی کہ یحییٰ خان نے مظاہرین اور ایوب خان کے خلاف عناصر کو یقین دہانی کرائی ہے کہ وہ جس طرح چاہیں کھیل کھیلیں، فوج مداخلت نہیں کرے گی۔ چنانچہ جب تک اقتدار یحییٰ خان کے حوالے نہ کر دیا گیا، فوج تماشائی کی طرح ملکی سالمیت کو داﺅ پر لگا دیکھتی رہی۔
    12:۔ عوامی لیگ کی خونریز بغاوت کو کچلنے اور پاکستان کا اقتدار اعلیٰ بحال کرنے کے لیے ”فوجی کارروائی کا آغاز 25 اور 26 مارچ 1971ءکی درمیانی شب کو ہوا۔ جب پہلا دھماکہ ریڈیو پاکستان ڈھاکہ میں ہوا تو شیخ مجیب نے بنگلہ دیش کے قیام کا اعلان کردیا۔
    یہ چند وہ چیدہ چیدہ نکات ہیں جنہوں نے پاکستان کی سالمیت کو داﺅ پر لگا دیا تھا۔ اس کے علاوہ اس وقت مغربی پاکستان کی سیاست پر ایسے مفاد پرست لیڈر چھائے ہوئے تھے جو مشرقی پاکستان کو اپنے عزائم کی راہ میں رکاوٹ سمجھتے تھے جن کا خیال تھا کہ اگر انہوں نے مشرقی پاکستان کو مغربی پاکستان سے علیحدہ کیا تو مشرقی پاکستان کے بھوکے ننگے لوگ مغربی پاکستان کے سرمایہ داروںکے لیے مشکلات کا باعث بنیں گے۔ چنانچہ ان لوگوں نے مشرقی پاکستان کے رہنماﺅں کو تاﺅ دلایا جس کے نتیجے میں بنگلہ دیش ہم سے ہمیشہ ہمیشہ کے لیے جدا ہوگیا۔
    بھارت نے اس وقت مکتی باہنی کو تربیت دے کر 1965ءکی ہزیمت بھی چکانی تھی، بھارت نے ہر قسم کے تعاون کے ساتھ پاکستان کو ٹکڑے ٹکڑے کرنے کی قسم کھارکھی تھی۔ بھارت 1965ءمیں اپنی ذلت آمیز شکست نہیں بھولاتھا۔ اسے یہ موقع جنرل نیازی کی بے تدبیریوں اور بزدلی نے فراہم کردیا تھا۔ تمام ثبوتوں کے باوجود ہم آج بھی مشرقی پاکستان کی تاریخ کھنگالتے ہیں تو اپنے لوگوں کی بزدلی کا ذکر ضرور کرتے ہیں مگر بھارت کی ریشہ دوانیوں سے صرف نظر کرجاتے ہیں۔ زمانے میں اگرچہ تغیر آچکا ہے مگر بھارت اپنی روش نہیں بدلا۔ امریکی طوطا چشموں سے اس دنیا کا بچہ بچہ واقف ہے۔ ان تمام باتوں کا علم ہوتے ہوئے بھی ہم مصلحت کے نام پر بے غیر تی کی چادر او ڑھ رکھی ہے۔
    نجانے کیوں تاریخ ایک بار پھر اپنے آپ کو دہرارہی ہے۔ 1971ءمیں بھارت دھیرے دھیرے مشرقی پاکستان کی طرف بڑھ رہا تھا اور اب 2010ءمیں بھارت دھیرے دھیرے کشمیر، سوات اور بلوچستان کی طرف بڑھ رہا ہے۔ ہمارا المیہ یہ ہے کہ ہم وہ بدقسمت قوم ہیں جو ایک غلطی کئی بار دہراتے ہیں۔
    حدیث شریف کا مفہوم ہے: ”مومن ایک سوراخ سے دوبارہ نہیں ڈسا جاتا۔“ دنیا کایہ اصول رہا ہے جنگوں میں ہار جیت ہوتی رہتی ہے۔ لیکن جو قومیں اپنی غلطیاں بار بار ہراتی ہیں وہ دنیا کے نقشے سے مٹ جاتی ہیں اور اکثر وبیشتر تاریخ کے صفحات میں جگہ بھی پانے میں ناکام ٹہرتی ہیں۔


    http://www.karachiupdates.com/v2/in...:16---&catid=99:2009-09-03-19-27-42&Itemid=15
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  2. ایم اے راجا

    ایم اے راجا محفلین

    مراسلے:
    3,230
    جھنڈا:
    Pakistan
    بہت شکریہ علی اوڈ، خدا ہمیں اور ہمارے حکمرانوں کو عقلِ صالح عطا کرے، کاش ہم جاگ جائیں۔
     
  3. عثمان

    عثمان محفلین

    مراسلے:
    9,792
    موڈ:
    Cheerful
    ہاہاہا۔۔۔
    صدیق سالک فراڈیے نے سب سے بڑی خرابی کا ذکر تو سرے سے کیا ہی نہیں۔ کرتا بھی کیسے!
    بنگالی بھائیوں کو جشن آزادی مبارک ہو!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. mfdarvesh

    mfdarvesh محفلین

    مراسلے:
    6,524
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    بہت شکریہ، بہت اچھی تحریر، مگر افسوس ہم نے اس ہار سے کچھ نہیں سیکھا، بلکہ ہم ایک بار پھر دوراہے پہ کھڑے ہیں
     
  5. ایم اسلم اوڈ

    ایم اسلم اوڈ محفلین

    مراسلے:
    643
    موڈ:
    Cool
    کیا؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟
     
  6. ابو ثمامہ

    ابو ثمامہ محفلین

    مراسلے:
    249
    موڈ:
    Amazed
    بہترین تحریر، بہت خوب۔۔۔۔
     
  7. ابو ثمامہ

    ابو ثمامہ محفلین

    مراسلے:
    249
    موڈ:
    Amazed
    یہ مبارکبادی ناقابل فہم ہے۔
     
  8. عثمان

    عثمان محفلین

    مراسلے:
    9,792
    موڈ:
    Cheerful
    آپ کے لیے بھلے ناقابل فہم ہو۔ کروڑوں بنگالیوں کے لئے نہیں۔ وہ تو اس دن کا جشن مناتے ہیں۔
     
  9. فرحان دانش

    فرحان دانش محفلین

    مراسلے:
    3,078
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    مشرقی محاذ پر اے اے کے نیازی ڈھاکہ کے ریس کورس میدان میں جنرل اروڑا کو اپنا پستول حوالے کرنے سے پہلے اس نے اس پستول کی ساری گولیاں جنرل اروڑا یا اپنے بھیجے میں کیوں پیوست نہیں کیں۔

    جنرل نیازی بھارتی جنرل کو اپنا پستول پیش کر رہا تھا تو ایک بنگالی نے اس کے سر پر جوتے مارتے ہوئے کہا اگر تم میں غیرت ہوتی تو مر جاتے، اپنے دشمن کے سامنے ہتھیار نہ پھینکتے۔ کاش یہ بنگالی جنرل نیازی کو گولی مار دیتا، جنرل نیازی ہتھیار پھینکنے کا جواز یہ پیش کیا کرتا تھا کہ حاکم وقت کا حکم تھا اسلام میں امیر کی اطاعت واجب ہے ۔ بعد میں جنرل نیازی کو بے آبرو کر کے فوج سے نکالا گیا۔ وہ جب تک زندہ رہا ہر دن جیتا تھا اور ہر دن مرتا تھا۔
     
  10. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,921
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    یہ کسی اعظم طارق سواتی کی تحریر ہے اور انکی "علمیت" کا اندازہ اس ایک اقتباس سے ہی ہو جاتا ہے۔ اندرا گاندھی کے الفاظ واوین میں اس طرح لکھے ہیں جیسا سیدھا انڈین پارلیمنٹ سے یہ الفاظ لیکر آئے ہیں، اندرا گاندھی نے دو قومی نظریہ کو "خلیجِ بنگال" میں ڈبونے کی بات کی تھی نہ کہ بحرِ ہند میں۔ زمین آسمان کا فرق ہے، خلیجِ بنگال سے جملہ انتہائی فصیح و بلیغ اورذو معنی ہو جاتا ہے اور یہی اندرا گاندھی کا مقصد تھا۔
     
  11. عین عین

    عین عین لائبریرین

    مراسلے:
    795
    موڈ:
    Depressed
    مضمون اچھا ہے۔ اسلوب اچھا ہے
    بنگلا دیش بننا ہی تھا۔ زبردستی کسی قوم پر حکومت نہیں کی جاسکتی۔ اب بھی ہم بلوچستان میں وہی کچھ کر رہے ہیں۔ کاش ہمارے حکم راں سبق سیکھیں اور حق داروں کو ان کا حق دے سکیں۔
    ہمیں آج تک بھارتی اور امریکی سازشوں کا شور ہی سنایا گیا ہے۔ ہر خراب کام بیرونی سازش کا نتیجہ، ہر برائی ہندوستان کے کھاتے میں۔ ہم کب اپنی روش بدلیں گے۔ ہم کب اپنے گریبان میں جھانکیں گے۔ کاش ہم اپنے مستقبل کے معماروں کو یہ بھی بتا سکیں کہ ہمارے والوں نے کیا کیا گل کھلائے ہیں۔تاکہ وہ اعلا ایوانوں اور فیصلہ کن عہدوں پر بیٹھ کر کم از کم ایسی غلطی نہ دہرائیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر