بہادر شاہ ظفر یہ بزم میں نہیں ساقی شراب اڑتی ہے ۔ بہادر شاہ ظفر

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 18, 2016

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    یہ بزم میں نہیں ساقی شراب اڑتی ہے
    ہماری دولتِ عمرِ شباب اڑتی ہے

    عرق فشاں گلِ رخسار آج ہیں کس کے
    صبا، چمن میں جو بوئے گلاب اڑتی ہے

    کرے ہے قتل ہزاروں کو تیری تیغِ نگاہ
    نہ اس کا مٹتا ہے جوہر، نہ آب اڑتی ہے

    تجھے سناتا ہوں میں اپنا گر فسانۂ غم
    تو نیند بھی تری اے مستِ خواب، اڑتی ہے

    جلایا تُو نے جگر کس کا شوخِ آتش خُو
    تری جو بزم میں بوئے کباب اڑتی ہے


    رہے ہے شدتِ گریہ میں بھی مکدر دل
    عجب ہے گرد یہاں تو، پر آب اڑتی ہے

    پڑے نہ دامنِ قاتل پہ دیکھ اے بسمل
    لہو کی چھینٹ دمِ اضطراب اڑتی ہے

    اوڑا پھرے ہے تنِ زار یوں ظفرؔ میرا
    ہوا پہ جوں کوئی تکّل خراب اڑتی ہے

    (بہادر شاہ ظفرؔ)
     

اس صفحے کی تشہیر