گُلاب اور کوئی۔

رشید حسرت نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 9, 2021

  1. رشید حسرت

    رشید حسرت محفلین

    مراسلے:
    181
    جھنڈا:
    Pakistan
    بات کُچھ اور تھی پر لُبّ لُباب اور کوئی
    پائی تعبِیر کوئی اور، تھا خواب اور کوئی

    سخت موسم تو گُلستاں کے سبھی ہم نے سہے
    لے گیا چُن کے مگر سارے گُلاب اور کوئی

    ایرے غیرے کے لیئے دل میں لچک کیا رکھنا
    تھا جو اِک شخص مگر اُس کا حساب اور کوئی

    کیا نِکالے گا بھلا حل وہ مُعمّوں کا حُضور
    ہم نے پُوچھا ہے سوال اور، جواب اور کوئی

    راس آئی نہ تُمہیں بات جو شائستہ کہی
    پِھر تو کرنا ہی پڑا ہم کو خِطاب اور کوئی

    دِل میں اعادہ کیا اور ہی مشقوں کا مگر
    کُھل گئے ہم پہ مُحبّت میں ہی باب اور کوئی

    ہم کہاں اور کہاں ساقئِ محفِل کی نظر؟؟
    تم نے دیکھا ہے جِسے ہو گا جناب! اور کوئی

    کر کے اعمال بھی ہاتھ اپنے رہے ہیں خالی
    ڈھوئے جاتا ہے گُنہ اور ثواب اور کوئی

    ہم نے وہ فصل بھی کاٹی ہے جو بوئی ہی نہ تھی
    آئے حِصّے میں رشِیدؔ اپنے عذاب اور کوئی۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 1
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,482
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اچھی غزل ہے ماشاء اللہ
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    11,682
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    ویسے پوچھنا یہ تھا کہ کیا رشید حسرت بھائی کی غزلوں کو ہم "معنن غزلیں" کہہ سکتے ہیں یعنی "عنوان دار غزلیں"؟

    جیسے اس معنن غزل کا عنوان ہے "گلاب اور کوئی ڈیش"
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. محمد شکیل خورشید

    محمد شکیل خورشید محفلین

    مراسلے:
    699
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Tolerant
  5. محمّد احسن سمیع :راحل:

    محمّد احسن سمیع :راحل: محفلین

    مراسلے:
    2,805
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    ماشاء اللہ ۔۔۔ اچھی غزل ہے رشیدؔ بھائی
    مطلعے سے انور مقصود کا ایک پرانا لانگ پلے یاد آگیا ۔۔۔ ’’ہاف پلیٹ‘‘ ۔۔۔ جس میں معین اختر مرحوم نے ایک مفلوک الحال ادیب کا کردار نبھایا تھا اور جمشید انصاری مرحوم نے ان کے شاعر بیٹے کا۔
    جمشید انصاری معین اختر کو اپنی ایک غزل سناتے ہیں (جو میر تقی میرؔ کی غزل ’’ہستی اپنی حباب کی سی ہے‘‘ کی پیروڈی تھی)، جس میں ایک شعر ہوتا ہے
    پوچھتے کیوں ہو میری تنہائی
    تیرے لبِ لباب کی سی ہے
    اس پر معین اختر بگڑ کر پوچھتے ہیں ’’ابے یہ لبِ لباب کیا ہے!‘‘ ۔۔۔ جمشید انصاری جواب دیتے ہیں ’’دراصل یہاں شاعر لبِ لباب لانا چاہتا تھا اور وہ صرف اسی طرح فٹ ہو سکتا تھا!‘‘ :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 3
  6. رشید حسرت

    رشید حسرت محفلین

    مراسلے:
    181
    جھنڈا:
    Pakistan
    مجھے پتہ ہے کہ غزل کا نظم کی طرح عنوان نہیں ہوتا۔ لیکن موبائل میں سیو رکھنے کے لئے عنوان مجبورأ لکھنا پڑتے ہیں۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  7. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    11,682
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    ہمیں اجازت دیجیے کہ آپ کی غزلوں کو ہر غزل کے پہلے مصرع کا عنوان دے دیں۔
     

اس صفحے کی تشہیر