تبسم کچھ اور گمرہیِ دل کا راز کیا ہو گا ۔ صوفی تبسم

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 22, 2017

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,826
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    کچھ اور گمرہیِ دل کا راز کیا ہو گا
    اِک اجنبی تھا کہیں رہ میں کھو گیا ہو گا

    وہ جن کی رات تمھارے ہی دم سے روشن تھی
    جو تم وہاں سے گئے ہو گے کیا ہوا ہو گا

    اسی خیال میں راتیں اجڑ گئیں اپنی
    کوئی ہماری بھی حالت کو دیکھتا ہو گا

    تمھارے دل میں کہاں میری یاد کا پرتو
    وہ ایک ہلکا سا بادل تھا چھٹ گیا ہو گا

    وفا نہ کی نہ سہی، یہ بھی یاد ہے تجھ کو
    کوئی جفا کو بھی تیرے ترس رہا ہو گا

    غمِ جدائی میں ایسی کہاں تھی لذّتِ درد
    انھیں بھی مجھ سے بچھڑنے کا دکھ ہوا ہوگا

    (صوفی تبسمؔ)

    یہی غزل فریدہ خانم کی آواز میں سنیے۔

     

اس صفحے کی تشہیر