کلیات اسمعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

عمران خان نے 'ورکنگ زون' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 27, 2009

  1. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool

    صفحہ - 291

    بچنا کہ وبائے صحبت ِبد
    اس دور میں عام ہوگئی ہے

    حلقہ میں قلندروں کے آکر
    تحقیق تمام ہوگئی ہے

    جرگہ میں تضدروں کے جاکر
    حکمت بدنام ہوگئی ہے

    شیریں دہنوں کی طرز ِگفتار
    مقبول ِانام ہوگئی ہے

    بیجا بھی نکل گئی ہے جو بات
    تحسین ِکلام ہوگئی ہے

    نامرد کے ہاتھ میں پہنچ کر
    شمشیر نیام ہوگئی ہے

    تکفیر ِبرادراں ِدیں بھی
    شرط ِاسلام ہوگئی ہے

    کیا شعر کہیں کہ شاعری کی
    ترکی ہی تمام ہوگئی ہے


    26

    شب ِزندگانی سحر ہوگئی
    بہرکیف اچھی بسر ہوگئی

    نہ سمجھے کہ شب کیوں سحر ہوگئی
    ادھر کی زمیں سب ادھر ہوگئی

    زمانے کی بگڑی کچھ ایسی ہوا
    کہ بےغیرتی بھی ہنر ہوگئی

    عمائد نے کی وضع جو اختیار
    وہی سب کو مد ِنظر ہوگئی

    گئے جو نکل دام ِتزویر سے
    ہزیمت ہی ان کی ظفر ہوگئی

    زمیں منقلب آسماں چرخ زن
    اقامت بھی ہم کو سفر ہوگئی

    مٹاڈالئے لوح دل سے غبار
    کسی سے خطا بھی اگر ہوگئی

    براہ کرم اس کو طے کیجیئے
    جو اَن بَن کسی بات پر ہوگئی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  2. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    صفحہ - 292

    نہ کرنا تھا بالضد مداوائے غم
    بڑی چوک اے چارہ گر ہوگئی

    یہ ہنگامہ آرا ہیں سب بےخبر
    وہ چپ ہیں جنھیں کچھ خبر ہوگئی

    27

    میں اگر وہ ہوں جو ہونا چاہیئے
    میں ہی میں ہوں پھر مجھے کیا چاہیئے

    غرق ِخم ہونا میسر ہو تو بس
    چاہیئے ساغر نہ مینا چاہیئے

    منحصر مرنے پہ ہے فتح و شکست
    کھیل مردانہ ہے کھیلا چاہیئے

    بے تکلف پھر تو کِھیوا پار ہے
    موج زن قطرہ میں دریا چاہیئے

    تیز غیروں پر نہ کر تیغ و تبر
    آپ اپنے سے تبٌرا چاہیئے

    ہودم ِعرض ِتجلی پاش پاش
    سینہ مثل ِطور ِسینا چاہیئے

    حسن کی کیا ابتدا کیا انتہا
    شیفتہ بھی بےسروپا چاہیئے

    پارسا بن اگر نہیں رندوں میں بار
    کچھ تو بےکاری میں کرنا چاہیئے

    کفر ہے ساقی پہ خِسٌت کا گماں
    تشنہ سرگرم ِتقاضا چاہیئے

    28

    عیش کے جلسے ہجوم آلام کے
    شعبدے ہیں گردش ۔ایام کے

    ہمت ِمردانہ تجھکو آفریں
    کرکے چھوڑا سِر ہوئی جس کام کے

    صبح کے بھولے تو آئے شام کو
    دیکھیئے کب آئیں بھولے شام کے

    تو ہی کر تکلیف او نپیک ِصبا
    منتظِر ہیں وہ مرے پیغام کے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  3. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    صفحہ - 293

    ھانشا للہ میکدہ کے کاسہ لیس
    معتقد ہوں زاہد ِعلام کے

    مٹ گئی ہے دل سے آزادی کی یاد
    کتنے خوگر ہوگئے ہم دام کے

    اب تو چرچے جا بجا ہونے لگے
    واعظوں کی بانگ ِبے ہنگام کے

    29

    درد سے لبریز سینہ چاہیئے
    چشم ِپرخوں جائے مینا چاہیئے

    ایسے بد افعال پر لاحول پڑھ
    آدمی کو بغض و کینہ چاہیئے؟

    گھٹ کے مرجانا بھی ہے دوں ہمتی
    چار و ناچار اور جینا چاہیئے

    بحر ہو تو بحر ِطوفاں خیز ہو
    اور بے لنگر سفینہ چاہیئے

    ہے رگ ِہر برگ میں رنگ بہار
    دیکھنے کو چشم ِبینا چاہیئے

    30

    مہربانی بھی ہے عتاب بھی ہے
    کچھ تسلی کچھ اضطراب بھی ہے

    ہے تو اغیار سے خطاب مگر
    میری ہر بات کا جواب بھی ہے

    واں برابر ہے خلوت وجلوت
    اس کی بے پردگی حجاب بھی ہے

    ہو قناعت تو ہے جہاں دریا
    حرص غالب ہو تو سراب بھی ہے

    وہ تبختر کہاں ؟تپاک کہاں؟
    گرم و روشن تو آفتاب بھی ہے

    31

    بنتی نہیں بات گفتگو کی
    چلتی نہیں چال جستجو کی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  4. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    کلیات اسمٰعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

    صفحہ - 294

    تھی چھیڑ اسی طرف سے ورنہ
    میں اور مجال آرزو کی

    اس کی طلب اور مقام و منزل
    احباب کی ہائے بدسلوکی

    32
    واں زیر کی پسند نہ ادراک چاہیئے
    عجزونیاز و دیدہء نمناک چاہیئے

    آیئنہ بن کے شاہد و مشہود ایک ہے
    اس روئے پاک کو نظر ِپاک چاہیئے

    سیر و سلوک جاں نہیں بے جذبہء نہاں
    اس راہ میں یہ توسِن چالاک چاہیئے

    گزرے امید و بیم سے یہ حوصلہ کسے؟
    رند ِخراب و عارف ِبےباک چاہیئے

    ہر چشمہ آئنہ ہے رخ ِآفتاب کا
    ہاں سطح ِآب بے خس و خاشاک چاہیئے

    نشو و نمائے سبزہ و گل میں نہیں درنگ
    ابر ِکرم کو تشنگی ِخاک چاہیئے

    اصلاح ِحال ِعاشق دل خستہ ہے ضرور
    معشوق جور پیشہ و سفاک چاہیئے

    جو عین نائے و نوش ہو اس بادہ نوش کو
    جام و سبو نہ خُمکدہ و تاک چاہیئے

    صیاد کے اثر پہ رواں ہو تو صید ہے
    وہ صید ہی نہیں جسے فتراک چاہیئے

    متفرقات

    دیدوادید کی رخصت ہی سہی
    میرے حصٌہ کی قیامت ہی سہی

    مہربانی بھی تو کچھ عیب نہیں
    دشمنی شرط ِمحبت ہی سہی

    نعمت ِخلد تھی بشر کےلئے
    خاک چاٹی نظر گزر کے لئے

    جب غنچہ کو واشد ہوئی تحریک صبا سے
    بلبل سے عجب کیا جو کرئے نغمہ سرائی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    کلیات اسمٰعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

    صفحہ - 295

    عجب شورش دل ِغمناک میں ہے
    مگر درپردہ وہ بھی تاک میں ہے

    رباعیات

    1-توحید

    چکھی بھی ہے تو نے درودجام ِتوحید
    یا سُن ہی لیا ہے صرف نام ِتوحید

    ہے کفر ِحقیقی کا نتیجہ ایماں
    ترک ِتوحید ہے مقنام ِتوحید

    2- طلب

    گر جورو جفا کرئے تو انعام سمجھ
    جس کام سے وہ خوش ہو اسے کام سمجھ

    گر کفر کی راہ سے رسائی ہو وہاں
    اس کفر کو تو جادہء اسلام سمجھ

    3- قرب

    مکشوف ہوا کہ دید حیرانی ہے
    معلوم ہوا کہ علم نادانی ہے

    ڈالا ہے تلاش ِقرب نے دوری میں
    مشکل ہے بڑی یہی کہ آسانی ہے

    4- بےنشانی

    بندہ ہوں تو اک خدا بناؤں اپنا
    خالق ہوں تو اک جہاں دکھاؤں اپنا

    ہے بندگی وہم اور خدائی پندار
    میں وہ ہوں کہ خود پتا نہ پاؤں اپنا

    5- آزادگی

    کافر کو ہے بندگی بتوں کی غم خوار
    مومن کےلئے بھی ہے خدا ئے غفار

    سب سہل ہے یہ ولیک ہونا دشوار
    آزادہ و بےنیاز و بیکس بےکار
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    کلیات اسمٰعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

    صفحہ - 296

    6- یقین

    آیا ہوں میں جانب ِعدم ِہستی سے
    پیدا ہے بلند پائگی پستی سے

    عجز اپنا بزور کررہا ہوں ثابت
    مجبور ہوں میں زبردستی سے

    7- عبودیت حجاب ِربوبیت

    ڈھونڈا کرئے کوئی لاکھ کیا ملتا ہے؟
    دن کا کہیں رات کو پتا ملتا ہے؟

    جب تک کہ ہے بندگی خدائی کا حجاب
    بندہ کو بھلا کہیں خدا ملتا ہے؟

    8- توحید

    توحید کی راہ میں ہے ویرانہ سخت
    آزادی و بے تعلقی ہے یک لخت

    دنیا ہے نہ دین ہے نہ دوزخ نہ بہشت
    تکیہ نہ سرائے ہے نہ چشمہ نہ درخت

    9- اسلاف پر فخر بیجا

    اسلاف کا حصٌہ تھا اگر نام و نمود
    پڑھتے پھرو اب ان کے مزاروں پہ درود

    کچھ ہات میں نقد ِرائج الوقت بھی ہے
    یا اتنی ہی پونجی۔"پدرم سلطا بود"

    10- تقریض

    حقا کہ بلند ہے مقام ِاکبر
    توقیع سخن ہے اب بنام ِاکبر

    دیوان ہے لطائف و حکم سے معمور
    اکبر کا کلام ہے کلام ِاکبر

    11- تنزیہ

    تقریر سے وہ فزوں بیان سے باہر
    ادراک سے وہ بری گمان سے باہر
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    کلیات اسمٰعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

    صفحہ - 297

    اندر باہر ہے وہ نہ پیدا پنہاں
    سرحد ۔مکان و لامکاں سے باہر

    12- غیر حق نہیں

    حق ہے تو کہاں ہے پھر مجال ِباطل
    حق ہے تو عبث ہے احتمال ِباطل

    ناحق نہیں کوئی چیز راہ حق میں
    باطل کا خیال ،ہے خیال ِباطل

    13- لاموجود الا اللہ

    ساقی و شراب و جام و پیمانہ کیا
    شمع و گل و عندلیب و پروانہ کیا

    نیک و بد و خانقاہ و مے خانہ کیا
    ہے راہ یگانگی میں بیگانہ کیا

    14- مظاہر

    مجموعہء خار و گل ہے زیب ِگلزار
    نیکی و بدی ہے جلوہ گاہ ِاظہار

    ہے مخمصہ اختیار حق و باطل
    ہے وسوسہ اعتبار یار و اغَیار

    15- عجز ادراک

    ہر خواہش و عرض و التجا سے توبہ
    ہر فکر سے ذکر سے دعا سے توبہ

    از بس کہ محال ہے سمجھنا اس کا
    جو آئے سمجھ میں اس خدا سے توبہ

    16- ترک فضولی

    دیکھا تو کہیں نظر نہ آیا ہرگز
    ڈھونڈا تو کہیں پتا نہ پایا ہرگز

    کھونا پانا ہے سب فضولی اپنی
    یہ خبط نہ ہو مجھے خدایا ہرگز

    17- اختلاف خیالی ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    کلیات اسمٰعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

    صفحہ - 298

    دراصل کہاں ہے اختلاف ِاحوال
    کچھ رنج نہ راحت نہ مسرت نہ ملال

    قربت ہے نہ بُعد ہے نہ فرقت نہ وصال
    یہ بھی ہے خیال اور وہ بھی ہے خیال

    18- فاعل ِحقیقی حق ہے

    شیطان کرتا ہے کب کسی گمراہ
    اس راز سے ہے خدائے غالب آگاہ

    ہے کام کسی کا اور کسی پر الزام
    لاحول ولا قوہ الا باللہ

    19- ذات کو تغٌیر نہیں

    پرشور الست کی ندا ہے اب بھی
    جو تھی وہی آن اور ادا ہے اب بھی

    ہوتی نہیں سنت ِالہی تبدیل
    جس شان میں ہے وہی خدا ہے اب بھی

    20- تٌجلیات حجاب میں

    اِخفا کےلئے ہے اس قدر جوش و خروش
    یاں ہوش کا مقتضا ہے بننا مدہوش

    حسن ِازلی تو ہے ازل سے ظاہر
    یعنی ہے تجٌلیوں میں اپنی روپوش

    21- مشاہدہ

    اے بار ِخدا یہ شور و غوغا کیا ہے؟
    کیا چیز طلب ہے اور تنہا کیا ہے؟

    ہے کم نظری سے اشتیاق ِدیدار
    جو کچھ ہے نظر میں یہ تماشا کیا ہے؟

    22- کسی خاص کیف کی پابندی غلط ہے

    افسردگی اور گرم جوشی بھی غلط
    گم گشتگی اور خود فروشی بھی غلط

    کچھ کہیئے اگر تو گفتگو ہے بےجا
    چپ رہیئے اگر تو ہے خموشی بھی غلط
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    کلیات اسمٰعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

    صفحہ - 299

    23- شہود ِحق میں غیر معدوم

    الحق کی نہیں ہے غیر ہرگز موجود
    جب تک کہ ہے وہم غیر ِحق ہے مفقود

    حق یہ ہے کہ وہم کا بھی ہونا حق ہے
    حق ہے تو ہر طرح سے حق ہے مشہود

    24- فُقر

    کیفیت و ذوق اور ذکر و اوراد
    دین و اسلام اور کفرو الحاد

    ہر رنگ ہے محو،ہر تعلق برباد
    ہے فُقر تمام عِلتوں سے آزاد

    25- وحدت

    نقاش سے ممکن ہے کہ ہو نقش خلاف
    ہیں نقش میں جلوہ گر اسی کے اوصاف

    ہر شے میں عیاں ہے آفتاب ِوحدت
    گر وہم دوئی نہ ہو تو ہے مطلع صاف

    26- غفلت

    اک عالم ِخواب خلق پر طاری ہے
    یہ خواب میں کارخانہ سب جاری ہے

    یہ خواب نہیں یہی سمجھنا ہے خواب
    گر خواب کا علم ہے تو بیداری ہے

    27- راہ ِخدا کی انتہا نہیں

    جو تیز قدم تھے وہ گئے دور نکل
    دکھے بھالے بہت مقامات و محل

    اس راہ کا پر کہیں نہ پایا انجام
    یعنی ہے وہی ہنوز روز ِاول

    28- خود شناسی

    اکثر نے ہے آخرت کی کھیتی بوئی
    اکثر نے ہے عمر جستجو میں کھوئی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    کلیات اسمٰعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

    صفحہ - 300

    آخر کو اگر پتا ملا تو یہ ملا
    ملنے کا نہیں سوائے اپنے کوئی

    29- مظہر

    بدلا نہیں کوئی بھیس ناچاری سے
    ہر رنگ ہے اختیار ِسرکاری سے

    بندہ شاہد ہے اور طاعت زیور
    یہ سانگ بھرا گیا ہے عیاری سے

    30- کثرت لازم ِوحدت ہے

    ہے عشق سے حسن کی صفائی ظاہر
    رندی سے ہوئی ہے پارسائی ظاہر

    وحدت کا ثبوت ہے ظہور ِکثرت
    بندہ ہی کے دم سے ہے خدائی ظاہر

    31- طلب بے نشانی

    یارب کوئی نقش مدعا بھی نہ رہے
    اور دل میں خیال ماسوا بھی نہ رہے

    رہ جائے تو صرف بےنشانی باقی
    جو وہم میں ہے سو وہ خدا بھی نہ رہے

    32- ہستی واحد ہے

    ہم عالم ِخواب میں ہیں یا ہم میں خواب
    ہم خود سائل ہیں خود سوال اور جواب

    آئی نہیں کوئی شے کہیں باہر سے
    ہم خود ہیں مسبٌب اور خود ہیں اسباب

    33- ہر شان میں حق ء تجلی ہے

    ہے شکر درست اور شکایت زیبا
    ہے کفر درست اور ہدایت زیبا

    گیسوئے سیاہ اور جبین ِروشن
    دونوں کی بہار ہے نہایت زیبا

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔*۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    کلیات اسمٰعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

    صفحہ - 301

    32- تنزبھ

    مقصود ہے قید ِجستجو سے باہر
    وہ گل ہے دلیل ِرنگ و بو سے باہر

    اندر باہر کا سب تعیٌن ہے غلط
    مطلب ہے کلام و گفتگو سے باہر

    33- توحید

    معلوم کا نام ہے نشان ہے نہ اثر
    گنجائش ِعلم ہے بیان یے نہ خبر

    علم اور معلوم میں دوئی کی بو ہے
    اس واسطے علم ہے حجاب الاکبر

    34- ترک ِذکر و فکر

    ہوتی نہیں فکر سے کوئی افزائش
    چپکے رہنے میں ہے بڑی آسائش

    کہنا سننا تو ہے نہایت آساں
    کہنے سننے کی ہو اگر گنجائش

    34- ترک ۔خودی

    برہان و دلیل عین گمراہی ہے
    نفی و اثبات محض جاں کاہی ہے

    اس رہ میں عبادت و اشارت ہے گم
    یاں ترک ۔خودی اصول ِآگاہی ہے

    35- دین و دنیا

    دین اور دنیا کا تفرقہ ہے مہمل
    نیت ہی پہ موقوف ہے تنقیح ِعمل

    دنیا داری بھی عین دیں داری ہے
    مرکوز ہو گر رضائے حق عزو جل

    36- وحدت

    خاک ِنمناک اور تابندہ نجوم
    ہیں ایک ہی قانون کے یکسر محکوم
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  12. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    کلیات اسمٰعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

    صفحہ - 302

    یکسانی ِقانون کہے دیتی ہے
    لاریب کہ ہے ایک ہی رب ِقیٌوم

    37- استقلال

    تیزی نہیں منجملہءاوصاف کمال
    کچھ عیب نہیں اگر چلو دھیمی چال

    خرگوش سے لےگیا ہے کھچوا بازی
    ہاں راہ ِطلب میں شرط ہے استقلال

    38- ایک واقعہ

    کیا کہتے ہیں اس میں مفتیان ِاسلام
    جب بیع ِمساجد سے نہیں چلتا کام

    تو وجہ ِکفاف کےلئے مومن کو
    جائز بھی ہے یا نہیں خدا کا نیلام

    39- اصلاح ِقوم دشوار ہے

    پانی میں ہے آگ کا لگانا دشوار
    بہتے دریا کو پھی لانا دشوار

    دشوار سہی،مگر نہ اتنا جتنا
    بگڑی ہوئی قوم کو بنانا دشوار

    40- ہر کام کا نتیجہ اپنے لئے ہے

    گر نیک دلی سے کچھ بھلائی کی ہے
    یا بد منشی سے کچھ برائی کی ہے

    اپنے ہی لئے ہےسب نہ اوروں کے لئے
    اپنے ہاتھوں نے جو کمائی کی ہے

    41- مراسم میں فضولی

    اب قوم کی جو رسم ہے سو اوُل جلُول
    فاسد ہوئے قاعدے تو بگڑے معمول

    ہے عید مہذب، نہ محرم معقول
    ہنسنا محمود ہے نہ رونا مقبول
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔*۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  13. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    کلیات اسمٰعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

    صفحہ - 303

    42- نیچر انسان کی محکوم ہے

    فطرت کے مطابق اگر انساں لے کام
    حیوان تو حیوان ،جمادات ہوں رام

    مٹی، پانی،ہوا، حرارت،بجلی
    دانشمندوں کے ہیں مطیع احکام

    43- وقت رائیگاں نہیں کرنا چاہیئے

    بے کار نہ وقت کو گزارو یارو
    یوں سست پڑے پڑے نہ ہمت ہارو

    برسات کی فصل میں ہے ورزش لازم
    کچھ بھی نہ کرو تو مکھیاں ہی مارو

    44- اتفاق میں کامیابی ہے اور نااتفاقی میں تباہی

    جب تک کہ سبق ملاپ کا یاد رہا
    بستی میں ہر ایک شخص دل شاد رہا

    جب رشک وحسد نے پھوٹ ان میں ڈالی
    دونوں میں سے ایک بھی نہ آباد رہا

    45- ہمت

    جس درجہ ہو مشکلات کی طغیانی
    ہو اہل ہمم کو اور بھی آسانی

    تیراک اپنا ہنر دکھاتا ہے خوب
    ہوتا ہے جب اس کے سر سے اونچا پانی

    46- فنا عینِ وصال ہے

    کس طور سے کس طرح سے کیونکر پایا
    دل نذر کیا سراغ دلبر پایا

    باقی رہا مدعا نہ دعوٰٰی نہ دلیل
    کھوئے گئے آپ ہی تو سب بھر پایا

    47- دنیا پرست دین دار

    دنیا کےلئے ہیں سب ہمارے دھندے
    ظاہر طاہر ہیں اور باطن گندے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  14. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    کلیات اسمٰعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

    صفحہ - 304

    ہیں صرف زبان سے خدا کے قائل
    دل کی پوچھو تو خواہشوں کے بندے

    48- محب ِدنیا نشان ِخامی ہے

    یہ قول کسی بزرگ کا سچا ہے
    ڈالی سے جدا نہ ہو تو پھل کچا ہے

    چھوڑی نہیں جس نے حب ِدنیا دل سے
    گوریش سفید ہو مگر بچہ ہے

    ابیات

    1- اچھی بات

    جو بات کہو صاف ہو،ستھری ہو بھلی ہو
    کڑوی نہ ہو،کھٹی نہ ہو،مصری کی ڈلی نہ ہو

    2- وقت سے کام لو

    وقت میں تنگی فراخی دونوں ہیں جیسے ربڑ
    کھینچنے سے بڑھتی ہے چھوڑے سے جاتی ہے سکڑ

    3- بری صحبت سے بچو

    بد کی صحبت میں مت بیٹھو،اس کا ہے انجام برا
    بد نہ بنے تو بد کہلائے،بد اچھا بدنام برا

    4- خیال ِمحال

    کیا کیا خیال باندھے ناداں نے اپنے دل میں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  15. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    کلیات اسمٰعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

    صفحہ - 305

    پر اونٹ کی سمائی کب ہو چوہے کے بل میں

    5-

    بگڑتی ہے جس وقت ظالم کی نیت
    نہیں کام آتی دلیل اور حٌجت

    6- اعتدالِ خیال

    نہ حلوہ بن،کہ چٹ کرجائیں بھوکے
    نہ کڑوا بن،کہ جو چکھے سو تھوکے

    7- اعتدال ِغذا

    نہ کھاؤ اتنا زیادہ کہ ڈال دے بیمار
    نہ اتنا کم ہو کہ ناطاقتی ہی ڈالے مار

    8- راستی

    راستی سیدھے سڑک ہے جس میں کچھ کھٹکا نہیں
    کوئی رہرو آج تک اس راہ میں بھٹکا نہیں

    9-

    گلستان ِجہاں میں پھول بھی ہیں اور کانٹے بھی
    مگر جو گل کے جویا ہیں انہیں کیا خار کا کھٹکا

    10- اپنی حفاظت

    جب کہ دو موذیوں میں ہو کھٹ پٹ
    اپنے بچنے کی فکر کر جھٹ پٹ

    11-

    تاسحر وہ بھی نہ چھوڑی تونے اے باد صبا
    یادگار ِرونق ِمحفل تھی پروانہ کی خاک
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  16. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    کلیات اسمٰعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

    صفحہ - 306

    12

    تم نہ چوکو کبھی نکوئی سے
    کرنے دو گر خطا کرئے کوئی

    13

    ہر چند اس کے مال سے کوئی واسطی نہ ہو
    پھر بھی برا ہی کہتی ہے خلقت بخیل کو

    14

    ساغر ِزریں ہو یا مٹی کا ہو ایک ٹھیکرا
    تو نظر کر اس پے جو کچھ اس کے اندر ہے بھرا


    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔*۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  17. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    کلیات اسمٰعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

    صفحہ - 307

    منظومات فارسی

    آفتاب عالم تاب

    صبح شد خواہد برآمد آفتاب
    دیدہ می مال و ہیفگن رخت ِخواب

    خیزو درجائے بندے کُن قیام
    برفراز ِکوہکے یا طرف ِبام

    کن نگہ در گنبد ِنیلو فری
    تا تماشائے غریبے بنگری

    رو مشرق ساعتے استادہ باش
    جلوہء خورشید را آمادہ باش

    اوٌلاآ یک گوئے زریں سرزند
    بعد ازاں خطٌ ِشعاعی ِدرزند

    اندک اندک پرضیا گردو جہاں
    بٌروبحر و کوہ و دشت و آسماں

    لطفہا برخاک ِظلمانی کند
    روشنی و گرمی ارزانی کند

    گلبن و زرع و نخیل و مرغزار
    ہر یکے از فیض ِاوُپر برگ و بار

    گرنتا بد آفتاب ِپُرضیا
    نے پرِکاہے بیابی نے گیا

    بسکہ افتادہ ست ازمادور تر
    قرص ِخور کوچک نماید در نظر

    چوں زمیں طوفے کند برگردآں
    عرصہ ء سالے ہمیگردد عیاں

    چرخ ِدیگر میز ندبر خود زمیں
    تا پدید آید شعب و روزے چنیں

    توہمی بینی کہ پوید آفتاب
    فہم کن خود و اژ گونست ایں حساب
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  18. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    کلیات اسمٰعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

    صفحہ - 308

    2- مناظرہء میدان باکوہ


    شنیدم کہ میدان سخن ساز کرد
    بکوہے در ِگفتگو باز کرد

    کہ اے کوہ ِبارفعت و فرٌوجاہ
    توئی از بزرگان ِایں کارگاہ

    سرت برفراز ِہوا بردہء
    بہ زیر ِزمیں پائے افشردہء

    نہیب آورد سرفرازی ِتو
    بہ حیرت درم از درازی ِتو

    ترا قُلٌہ از ابر بالا ترست
    مد امت کلاہ ِمہی برسرست

    ولے فکر تم درتو حیرانی ست
    کہ آخرچہ سود از تو ارزانی ست

    یکے تودہء سنگ بالائے سنگ
    شدست ازوجود ِتوبس عرصہ تنگ

    بدیں پیکر ِسخت و پہن و گراں
    چہ نفعے رسد از تو بادیگراں

    چہ داری جُز ایں درہ و سنگلاخ
    نشیب و فراز و بلند و فراخ

    صدا باز گر دید از کوہسار
    نخست انچہ سرمایہ داری بیار

    بگو پیش ِمن از ہنر ہائے خویش
    کہ دانندہ ترہست دانائے خویش

    بگفتانہ بینی کہ تقدیر ِپاک
    ودیعت نہاد ست در زیر ِخاک

    گل و سبزہ و غلہ ہاو شکر
    غذا ہائے مرعوب ِہر جانور

    بسا خوردینہا و پوشیدنی
    شراب و عرقہائے نوشیدنی

    کشاورزیا بدزمن دست رنج
    وہم مایہء زندگی گنج گنج
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  19. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    کلیات اسمٰعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

    صفحہ - 309

    صلاد ادہ امازپےء خاص و عام
    زخوانم رُبایند آب و طعام

    خرد اسپ وگاوان وآہوومیش
    کنند از گیاہم پُرانبان ِخویش

    چرد گلہ گوسفند وبرہ
    علفائےشیرین وبرگ ِترہ

    اگر بلبل وطوطی وفاختہست
    ہم ازدانہ ام طمعہء ساختہ ست

    سپہرم بسر سائباں می تند
    ہوا بارد وبرق نوبت زند

    زبحر ِمحیط ابر آید دواں
    کندرودوجوہا برویم رواں

    بسے چشمہ سارو بسے آبگیر
    کشادہ بسرابیم جوئے شیر

    ہمی نفع خیزدزآب و گلم
    ذخیرہ نہدہر کسے حاصلم

    برند آدمی غلہ خروارہا
    کشدکشتی از خرمننم بارہا

    چہ می پُرسی اے کوہ از سود ِمن
    جہانیست پرمایہ از جود ِمن

    اگر دیدہ سبتیدہ بودے ترا
    چوخورشید سودم نمودےترا

    جبل دادپاسخ بہ حلم ووقار
    جدل مہتراں رابو دننگ و عار

    کہ اے سادہ میداں براہ ستیز
    سمند ِتفاخر مران تُندو تیز

    متاعے کہ اینک بدامان ِتست
    الاٌتانگوئی کہ از آن ِتست

    رسدارمغانم زدریائے ژرف
    کنم اندک اندک ازاں برتوصرف

    نہ بینی کہ برگرد ِمن سال وماہ
    زند خیمہ یا رندہ ابر ِسیاہ

    زہر جانبے روکند سوئے من
    ہجوم آورد پشت و پہلوئے من
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  20. عمران خان

    عمران خان محفلین

    مراسلے:
    108
    موڈ:
    Cool
    کلیات اسمٰعیل میرٹھی۔۔صفحہ- 291 تا 330

    صفحہ - 310

    گہے ژالہ بارد گہے آب ِپاک
    گہے برف ریزد بغاردمغاک

    زندازدردن ِدلم چشمہ جوش
    زدیبائے خضرم کند سبزہ پوش

    برسم ِکریمانہ پیش از سوال
    بہ پستی کنم نفقہ آب ِزلال

    نم جود و لطفم بہ ہر جا رسد
    بسے سیلہاتا بصحرا رسد

    بسے رود خانہ بسے آبداں
    زرشحات ِفیضم شودتردہاں

    ہر آں نہروجدال کہ سقائے تست
    ہر آں حوض وچاہے کہ درپائے تست

    دہد آبت از آبیاری ِمن
    بیاد ببیں خیر ِجاری ِمن

    مراکارہموارہ بخشندگی ست
    وجودم ترا مایہء زندگی ست

    گراز من نہ بذل ونوالت رسد
    زیان ِعظیمے بحالت رسد

    بمانی یکے دشت ویرانہ
    نہ یک پٌرکا ہے نہ یک دانہ

    اگر من نمان بمانی خراب
    نہ یک شاخ ِسبزے نہ یک بےخواب

    نہ خنددبہ امان تویک ِگلُے
    نہ خواند بہ بستان ِتو بُلبُلے

    نہ یک قرص ِناں خیز داز کشت ِتو
    نہ بیند کسے طلعت ِزشت تو

    نہ دیار بینی تو از بحرداں
    مگر بینی آوارہ خلیل وداں

    تودر کنہ قدرت مبیں سرسری
    کند ذرٌہ با ذرٌہ یار یگری
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر