کلام حیرت انگیز بہ زمین حیرت انگیز

عظیم اللہ قریشی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 4, 2014

  1. عظیم اللہ قریشی

    عظیم اللہ قریشی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Tolerant
    نہ دئیے لب کہ جو تقریر تلے شیشہء مُل
    لے بہ اندازِ نگہہ تیر تلے شیشہء مُل

    آج شب اِتنی پلا مے کہ بہک کر ساقی
    لب پہ لوں شمع کو, گلگیر تلے شیشہء مُل

    مے مجھے ایسے نہ دے پیرِ مُغاں
    ھو مئے ناب کی تاثیر تلے شیشہء مُل

    تیرے دیوانے کو ھاں ھاں میں ھوں
    کہ مبادا ھلے زنجیر تلے شیشہء مُل

    تیری آنکھوں کو تو بیمارِ ادب سے ساقی
    وقتِ قارورہ نہ لیں کیر تلے شیشہء مُل

    طفلِ قاضی سے ھو ھم چشم تو غالب ھے کہ لے
    موجِ مے ذرّہء تاثیر تلے شیشہء مُل

    یوں مے اُس چشم سے بہکے ھے کہ جوں
    جیسے ھو اُس کی ھی تصویر تلے شیشہء مُل

    گردن و سینہ ھے یوں اُس کی نگاہ پوشیدہ
    جیسے ڈھانکے کوئی تصویر تلے شیشہء مُل

    میرے گھر چل تُو وھی تجھ کو پلاؤن زاھد
    نکلے حدّت سے جو مے چیر تلے شیشہء مُل

    بسکہ خونخوار ھے رکھتا ھے ملا کر صیّاد
    دھنِ زخم سے نخچیر تلے شیشہء مُل

    کُشتہ کرنے کو ھے مَس غم کی یہ آتش کے عوض
    جام کے بوتہء اکثیر تلے شیشہء مُل

    ھم بقا رند ھیں گر ھوویں مریدِ زاھد
    تو رکھیں توڑ کے اِس پیر تلے شیشہء مُل
    بقاخان بقا
     
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر