جون ایلیا کبھی کبھی تو بہت یاد آنے لگتے ہو

محمد اظہرالدین مظفرالدین نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 25, 2018

  1. کبھی کبھی تو بہت یاد آنے لگتے ہو

    کہ رُوٹھے ہو کبھی اور منانے لگتے ہو

    گِلہ تو یہ ہے تم آتے نہیں کبھی لیکن

    جب آتے بھی ہو تو فوراً ہی جانے لگتے ہو

    یہ بات جونؔ تمہاری مذاق ہے کہ نہیں

    کہ جو بھی ہو اسے تم آزمانے لگتے ہو

    تمہاری شاعری کیا ہے بھلا، بھلا کیا ہے

    تم اپنے دل کی اُداسی کو گانے لگتے ہو

    سرودِ آتشِ زرین صحنِ خاموشی

    وہ داغ ہے جسے ہر شب جلانے لگتے ہو

    سنا ہے کاہکشاؤں میں روز و شب ہی نہیں

    تو پھر تم اپنی زباں کیوں جلانے لگتے ہو

    جون ایلیا
     

اس صفحے کی تشہیر