ڈوپامین فاسٹنگ : کیا آپ کو مشکل کاموں میں دل لگانے میں دشواری ہوتی ہے؟؟

محمداحمد

لائبریرین
تبھی تو ویڈیو اوپن کرنے سے پہلے ہی پوچھ لیا نا۔۔۔
ایک ایک لمحہ بہت قیمتی جو ہوتا ہے نا۔

ویڈیو دیکھ کر آپ اس کے بارے میں اپنی رائے دے سکتی ہیں۔

اور یہ بھی ہمیں سمجھا سکتی ہیں کہ عام لوگوں کے برعکس آپ کو مشکل کام کرنے میں دشواری کیوں نہیں محسوس ہوتی۔ :) :)
 

گُلِ یاسمیں

لائبریرین
ویڈیو دیکھ کر آپ اس کے بارے میں اپنی رائے دے سکتی ہیں۔

اور یہ بھی ہمیں سمجھا سکتی ہیں کہ عام لوگوں کے برعکس آپ کو مشکل کام کرنے میں دشواری کیوں نہیں محسوس ہوتی۔ :) :)
وہ تو ہم ویڈیو دیکھے بغیر بھی بتا سکتے ہیں ۔۔ لیکن اپنا نظریہ۔ دوسروں کا متفق ہونا بالکل بھی ضروری نہیں ۔

کوئی مشکل کام شروع کرنے میں سب سے زیادہ جو بات رکاوٹ بنتی ہے وہ یہ کہ کام مکمل نہ ہونے یا کسی بھی طرح کی ناکامی کا سامنا کرنے کا خدشہ ایک ڈر سا پیدا کر دیتا ہے۔ نفسیاتی طور پر بندہ کام شروع کرنے سے پہلے ہی اس میں دلچسپی کھو دیتا ہے۔ اگر مکمل طور پر نہیں بھی کھوتا تو کافی حد تک کم ہو جاتی ہے۔
دوسری وجہ یہ بھی ہے کہ مشکل کام بہ نسبت آسان کام کے زیادہ توجہ اور وقت چاہتا ہے۔ اس کے لئے بہتر یہ ہوتا ہے کام کرنا کیا ہے یا آپ کا پروجیکٹ ہے کیا۔۔۔ تو اس کو اچھے سے سمجھ کر مناسب منصوبہ بندی کر لی جائے۔ اور مرحلہ وار اسے انجام دیا جائے۔
ملا کی دوڑ مسجد تک۔۔۔۔ ہمارے کام تو ہمارے گھر اور باغیچہ تک محدود ہیں۔ لیکن انھیں بھی مناسب طور پر انجام دینا خالہ جی کا گھر نہیں۔
مثال دیں؟
 

محمداحمد

لائبریرین
کوئی مشکل کام شروع کرنے میں سب سے زیادہ جو بات رکاوٹ بنتی ہے وہ یہ کہ کام مکمل نہ ہونے یا کسی بھی طرح کی ناکامی کا سامنا کرنے کا خدشہ ایک ڈر سا پیدا کر دیتا ہے۔ نفسیاتی طور پر بندہ کام شروع کرنے سے پہلے ہی اس میں دلچسپی کھو دیتا ہے۔ اگر مکمل طور پر نہیں بھی کھوتا تو کافی حد تک کم ہو جاتی ہے۔
دوسری وجہ یہ بھی ہے کہ مشکل کام بہ نسبت آسان کام کے زیادہ توجہ اور وقت چاہتا ہے۔ اس کے لئے بہتر یہ ہوتا ہے کام کرنا کیا ہے یا آپ کا پروجیکٹ ہے کیا۔۔۔ تو اس کو اچھے سے سمجھ کر مناسب منصوبہ بندی کر لی جائے۔ اور مرحلہ وار اسے انجام دیا جائے۔

بہت خوب! اچھی باتیں بیان کی آپ نے۔

ویڈیو میں جو پیغام ہے وہ اُن لوگوں کے لئے ہے جو عموماً procrastination کا شکار ہو جاتے ہیں۔ یعنی کاموں کو ٹال کر تفریحات میں لگ جاتے ہیں۔
پروکرسٹینشن کا اردو متبادل ایک لفظ پڑھا تھا جو کہ غالباً عربی سے لیا گیا تھا لیکن اس وقت یاد نہیں آ رہا۔
 

گُلِ یاسمیں

لائبریرین
بہت خوب! اچھی باتیں بیان کی آپ نے۔

ویڈیو میں جو پیغام ہے وہ اُن لوگوں کے لئے ہے جو عموماً procrastination کا شکار ہو جاتے ہیں۔ یعنی کاموں کو ٹال کر تفریحات میں لگ جاتے ہیں۔
پروکرسٹینشن کا اردو متبادل ایک لفظ پڑھا تھا جو کہ غالباً عربی سے لیا گیا تھا لیکن اس وقت یاد نہیں آ رہا۔
باتیں اچھی ہیں یا نہیں لیکن تجربے کی باتیں کی ہیں۔
مناسب پلاننگ سے بڑے سے بڑے اور مشکل کام آسانی سے سر انجام دئیے جا سکتے ہیں۔

procrastination ۔۔۔ آپ کا مطلب ہے کہ کام کرنے میں تاخیر کئے جاتے ہیں؟
کام کو ٹال کر تفریح میں لگ جانا مشکل کو اور بڑھا دیتا ہے اور ذہنی دباؤ بھی بڑھ جاتا ہے۔ ایسا ہم نے حال ہی میں بلکہ اسی ویک میں تجربہ کیا۔
ہوا یہ کہ بازو میں درد کی وجہ سے بہت ہفتوں سے گارڈن سے گھاس وغیرہ نہ کاٹی تھی۔ وہ تو خیر بھائی نے کاٹ دی ویک اینڈ میں۔ لیکن اب ایک سائیڈ پہ ڈھیر لگ گیا گھاس کا ۔ اور اس کو ہٹانے کے لئے ایک دو ویک مزید انتظار کرنا پڑتا۔ پھر ہم نے یوں کیا کہ بڑے بڑے شاپر بیگز (کم و بیش بیس لٹر گنجائش والے) میں بھر کر ، گاڑی کی سیٹیں فولڈ کر کے ( اس گاڑی کے پیچھے ٹریلر لگانے والی ہُک نہیں ہے) 10 پھیروں میں چار چار بیگز کو لے جا کر ٹھکانے لگایا۔
نہ صرف یہ بلکہ راجو اور انار کلی کے جانے کے بعد ان کا بڑا والا پنجرہ جو کہ تین دن کی لگاتار محنت سے بنایا تھا، وہ بھی تقریباً سارے سکریو وغیرہ کھول کر تمام لکڑیاں الگ کیں اور انھیں بھی ٹھکانے لگایا لے جا کر۔ بتانے کا مقصد یہ کہ کام مشکل تھا بہت لیکن ہمیں زیادہ مشکل یہ بات لگی کہ اسے کروانے کے انتظار کی کوفت۔ سو ٹھنڈے دل و دماغ سے سوچا سمجھا اور کر ڈالا۔ اور خود پر فخر بھی محسوس ہوا کہ الحمد للہ ہمت کرے انسان تو سب کر سکتا ہے۔

بہت بولتے نا ہم؟
 

محمداحمد

لائبریرین
کام کو ٹال کر تفریح میں لگ جانا مشکل کو اور بڑھا دیتا ہے اور ذہنی دباؤ بھی بڑھ جاتا ہے۔
یہ ہے اصل کام کی بات ! (y)
ایسا ہم نے حال ہی میں بلکہ اسی ویک میں تجربہ کیا۔
ہوا یہ کہ بازو میں درد کی وجہ سے بہت ہفتوں سے گارڈن سے گھاس وغیرہ نہ کاٹی تھی۔ وہ تو خیر بھائی نے کاٹ دی ویک اینڈ میں۔ لیکن اب ایک سائیڈ پہ ڈھیر لگ گیا گھاس کا ۔ اور اس کو ہٹانے کے لئے ایک دو ویک مزید انتظار کرنا پڑتا۔ پھر ہم نے یوں کیا کہ بڑے بڑے شاپر بیگز (کم و بیش بیس لٹر گنجائش والے) میں بھر کر ، گاڑی کی سیٹیں فولڈ کر کے ( اس گاڑی کے پیچھے ٹریلر لگانے والی ہُک نہیں ہے) 10 پھیروں میں چار چار بیگز کو لے جا کر ٹھکانے لگایا۔
نہ صرف یہ بلکہ راجو اور انار کلی کے جانے کے بعد ان کا بڑا والا پنجرہ جو کہ تین دن کی لگاتار محنت سے بنایا تھا، وہ بھی تقریباً سارے سکریو وغیرہ کھول کر تمام لکڑیاں الگ کیں اور انھیں بھی ٹھکانے لگایا لے جا کر۔ بتانے کا مقصد یہ کہ کام مشکل تھا بہت لیکن ہمیں زیادہ مشکل یہ بات لگی کہ اسے کروانے کے انتظار کی کوفت۔ سو ٹھنڈے دل و دماغ سے سوچا سمجھا اور کر ڈالا۔ اور خود پر فخر بھی محسوس ہوا کہ الحمد للہ ہمت کرے انسان تو سب کر سکتا ہے۔
آپ کے جیسے لوگوں کو انگریزی میں workaholic کہتے ہیں، اردو میں بھی شاید کچھ کہتے ہوں۔ پاکستان میں ایسے لوگ بہت کم پائے جاتے ہیں۔ :)
 

گُلِ یاسمیں

لائبریرین
اتنا بولنے کے باوجود کچھ بولنے سے رہ گیا

وہ یہ کہ اگر ایک بار انسان اس مرحلے کو پار کر لے تو آگے بڑھنے کی ہمت و حوصلہ بڑھتا جاتا ہے۔ اور جب پیچھے مُڑ کر دیکھے تو خود پر ہی ہنستا ہے کہ ہم ایسے بھی تھے۔
ہنسئیے گا نہیں لیکن ہم بتانا چاہتے ہیں کہ ہم شروع میں گاڑی میں پٹرول ڈالنا ایک مشکل مرحلہ سمجھتے تھے۔ معلوم نہیں کس بات کا خوف تھا دماغ میں۔ پھر ہوا یوں کہ ہم نے اس سمجھ میں نہ آنے والے خوف کو ہرا دیا اور اب ماشاء اللہ سے کوئی مسئلہ نہیں۔
ضروری نہیں کہ کوئی بڑا کام ہی سامنے ہو تو مشکل یا رکاوٹ کا سامنا ہوتا ہے۔ کبھی کبھی بہت چھوٹا سا کام ہی پہاڑ جیسا محسوس ہوتا ہے۔ لیکن اگر ہماری قوتِ ارادی اس خوف یا سوچ پر غالب آ جائے تو ناممکن کو ممکن بنایا جا سکتا ہے۔

کچھ یاد آنے پر پھر سے آتے ہیں واپس۔ :rollingonthefloor:
 

گُلِ یاسمیں

لائبریرین
یہ ہے اصل کام کی بات ! (y)

آپ کے جیسے لوگوں کو انگریزی میں workaholic کہتے ہیں، اردو میں بھی شاید کچھ کہتے ہوں۔ پاکستان میں ایسے لوگ بہت کم پائے جاتے ہیں۔ :)
کام کرتے رہنے کے عادی؟ جیسے کام کرتے رہنے کا نشہ لگ گیا ہو۔
نشہ جیسا بھی ہو اس کا عادی ہونا disorder ہی کہلائے گا۔ لیکن ہمیشہ سے ایسا نہیں رہا۔ کام کرتے رہنے کی عادت شروع سے ہی رہی لیکن جنون تب بنا جب لگاتار ڈپریشن رہا اور ہوش و حواس متاثر ہوئے۔ تب ہم نے ہسپتال میں قید رہتے ہوئے سورت رحمٰن ترجمہ کے ساتھ سنتے سنتے اتنی ہمت حاصل کر لی کہ اپنی قوت ارادی کو بروئے کار لاتے ہوئے خود اپنے لئے ایک ہیلتھ پلان بنایا کہ اپنے ہاتھوں کو کسی کام میں مصروف رکھنا ہے جیسے نٹنگ یا کروشیا وغیرہ میں۔ اکثر یہ ہوتا تھا کہ ہم اپنی تلاش میں زمین اور آسمان کے بیچ لٹکے رہتے تھے۔ پھر متواتر اس ہیلتھ پلان پر عمل کرتے کرتے ہم ہوش کی دنیا میں لوٹ آئے۔ اس کامیابی کے بعد ایک ایکٹیویٹی سینٹر سے منسلک ہو کر وہاں بھی کچھ لوگوں سے اپنے تجربات شئیر کئے اور اب ذاتی طور پر یہی کام کر رہے ہیں۔
شاید بات موضوع سے ہٹ گئی ہو لیکن کہیں نہ کہیں اس کا سلسلہ بھی مشکلات سے نکلنے میں ہی جا ملتا ہے۔ اب کام ہوں یا اپنی صحت۔۔ مشکل تو مشکل ہوتی ہے۔ سو ہم نے بیان کر دیا اپنا اس مشکل سے نکلنا۔
یہ الگ بات کہ اب یہ جنون بڑھ کر دن اور رات پر محیط ہو گیا ہے۔ اور ہم اس مشکل سے نکلنے کے لئے ہاتھ پاؤں مارنے کے ساتھ ساتھ دماغ کا بھی استعمال کر رہے ہیں ۔ کامیابی ہوتی ہے تو واپس آتے ہیں آپ کی لڑی میں۔ لیکن اس دوران کچھ اور یاد آیا تو ہمیں روکئیے گا مت اس لڑی میں آنے سے۔ :rollingonthefloor:
اور ہاں اس مراسلہ کی اصل بات یہ کہ
"ثابت قدمی اور قوتِ ارادی انسان کی بہت بڑی دولت ہیں۔ان کے سہارے آگے بڑھنے میں آسانی رہتی ہے۔"
 

محمد عبدالرؤوف

لائبریرین
میرے ساتھ غیر مستقل مزاجی کا بہت مسئلہ ہے مشکل کاموں سے بھی جی چراتا ہے، ہر مرتبہ منصوبہ سازی کرتا ہوں لیکن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپ کے جیسے لوگوں کو انگریزی میں workaholic کہتے ہیں، اردو میں بھی شاید کچھ کہتے ہوں۔ پاکستان میں ایسے لوگ بہت کم پائے جاتے ہیں
میرے دو ماموں ایسے ہیں جن کے کام گھڑیوں کی سویوں کے ساتھ چلتے، یقین مانیے مجھے تو کبھی کبھی کوفت ہوتی ہے :)
 

اے خان

محفلین
احمد بھائی بہت ہی مفید ویڈیو ہے میں کچھ ہفتوں سے لگا ہوں اپنے آپ میں بدلاؤ لانے خود کو مستقل مزاج بنانے میں کیونکہ آج تک کوئی کام ڈھنگ سے نہ کرسکا یہ ویڈیو میرے لئے بہت مفید ثابت ہوگی۔
 
احمد بھائی بہت ہی مفید ویڈیو ہے میں کچھ ہفتوں سے لگا ہوں اپنے آپ میں بدلاؤ لانے خود کو مستقل مزاج بنانے میں کیونکہ آج تک کوئی کام ڈھنگ سے نہ کرسکا یہ ویڈیو میرے لئے بہت مفید ثابت ہوگی۔
آپ کے ڈوپامین کا ذخیرہ بس ایک ہی گودام میں محصور ہے ۔
 
Top