ڈارون کا نظریہ ارتقا کیوں درست ہے؟

جاسم محمد نے 'سائنس اور ٹیکنالوجی' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 10, 2019

  1. محمد سعد

    محمد سعد محفلین

    مراسلے:
    2,189
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bored
    بائیس۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  2. آصف اثر

    آصف اثر معطل

    مراسلے:
    3,060
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    اس کو دیکھ لیں کہیں آپ کے نظرِ کرم سے چوک نہ جائے۔
    مراسلہ #76
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  3. محمد سعد

    محمد سعد محفلین

    مراسلے:
    2,189
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bored
    آپ کو اتنا یقین ہے تو آپ اس کی غلطیاں بیان کر سکتے ہیں۔ میدان کھلا ہے۔
    ورنہ
    تئیس۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  4. محمد سعد

    محمد سعد محفلین

    مراسلے:
    2,189
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bored
    چوبیس۔
    چوبیس مراسلوں کے بعد بھی آپ کوئی ایک ایسی حقیقی مشاہدے پر مبنی دلیل دینے سے قاصر رہے ہیں جس سے آپ ارتقاء کو غلط یا چلو کمزور ہی ثابت کر دیں۔ ایک طرف اصرار کہ ارتقاء "کمزور ترین انسانی خیالات" پر مبنی ہے، اور دوسری طرف ان کمزوریوں پر روشنی ڈالنے سے اس حد تک گریز۔ کیا یہ کھلا تضاد نہیں ہے؟
     
    • زبردست زبردست × 2
  5. آصف اثر

    آصف اثر معطل

    مراسلے:
    3,060
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    حضرت جس ارتقا کا قرآن وحدیث میں ذکر ہی نہیں اس کے لیے آپ کا ڈیٹا کیوں کر استعمال ہوسکتاہے؟
    کیا آپ مجھے یہ عجیب منطق سمجھا سکتے ہیں؟
     
    • متفق متفق × 1
  6. محمد سعد

    محمد سعد محفلین

    مراسلے:
    2,189
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bored
    یہی تو میں بھی کہہ رہا ہوں کہ جس ارتقاء کے ہونے یا نہ ہونے کے بارے میں آپ قرآن و حدیث سے کوئی حتمی نتیجہ اخذ ہی نہیں کر سکتے، اس کے لیے آپ "شرعی تناظر" کی گردان کیوں کیے جا رہے ہیں؟
    کوئی ہے جو مجھے یہ منطق سمجھائے؟

    یا چلو ان علماء کو ہی سمجھا دے۔
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. آصف اثر

    آصف اثر معطل

    مراسلے:
    3,060
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    اسی ختمی نتیجے کو اخذ کرنے کے لیے ہی تو دو دن سے آپ کو قائل کرنے کی کوشش کررہاہوں، لیکن آپ ہے کہ ماخذ کو چھوڑ کر ڈیٹا کے بخار میں مبتلا ہیں۔
    جب یہ ختمی نیتجہ نکل آئے گا تو ہی آپ کے مشاہداتی ڈیٹا کو استعمال کیا جاسکے گا۔
    اب آپ بتائیں اتنے آسان مسئلے کے لیے شیخ عبدالوہاب الطریری صاحب کی تحقیقاتی کمیٹی کی کیا ضرورت باقی رہتی ہے؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  8. محمد سعد

    محمد سعد محفلین

    مراسلے:
    2,189
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bored
    اور آپ یہ بتائیں کہ ارتقاء، جو کہ ایک خالصتاً طبیعی دنیا کا مسئلہ ہے اور طبیعی نوعیت کے اوزاروں اور تجربات کے ذریعے بہ آسانی جانچا جا سکتا ہے، اس کو جانچنے کے لیے مجھے یہ جاننے کی ضرورت کیوں ہونی چاہیے کہ دین کی آپ کی انٹرپرٹیشن درست ہے، شیخ عبد الوہاب الطریری کی، ڈکٹر حمید اللہ کی، فاروق سرور خان کی، صبور احمد کی، زاہد مغل کی، یا میری اپنی؟
    پہلے آپ کو دکھا چکا ہوں کہ جلال الدین سیوطی جیسے جید علماء بشمول ان کے دور کے جمہور علمائے دین بھی غلطی کر گئے جب انہوں نے طبیعی مظاہر کو طبیعی طریقے سے جانچنے کے بجائے اپنے طور پر تکے لگائے اور زبردستی ان کو قرآن سے کشید کرنے کی کوشش کی۔ آپ وہی غلطی دہرا رہے ہیں۔ جلالین اپنے تمام تر دینی علم کے باوجود زمین کے چپٹے یا گول ہونے جیسے سادہ معاملے میں غلطی کر گئے۔ آپ ان سے بڑے عالم تو نہیں۔ تو کیوں نہ ایک طبیعی مظہر کو اسی طریقے سے جانچیں جیسے ایک طبیعی مظہر کو جانچنے کا حق بنتا ہے؟
    ورنہ گنتی بڑھتی ہی رہے گی کہ چھبیس تبصرے لکھ ڈالنے کے باوجود آپ محض ایک بھی ایسی دلیل پیش کرنے سے قاصر رہے ہیں جو ایک طبیعی مظہر کو طبیعی طریقوں سے جانچتے ہوئے وہ کمزوری بتا سکے جو آپ کے نزدیک اس میں ہے۔
     
    آخری تدوین: ‏دسمبر 19, 2019
    • زبردست زبردست × 2
  9. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    17,175
    غلط۔ بنیادی سیل کا بھی ارتقا ہوا ہے۔ اربوں سال قبل بنیادی سیل اس حالت میں نہیں تھا جیسا کہ آج ہے۔
    [​IMG]
    Abiogenesis - Wikipedia
     
  10. محمد سعد

    محمد سعد محفلین

    مراسلے:
    2,189
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bored
    ڈیزائن سے ان کی مراد غالباً یہ ہے کہ اس کے بنیادی اجزاء اور ان پر کام کرنے والے اصول بائے ڈیزائن ایسے ہیں کہ وہ فطری طور پر ارتقاء سے گزرے اور زیادہ پیچیدہ جاندار تیار کرے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  11. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    17,175
    یعنی اہل ایمان کے نزدیک نظریہ ارتقا کو نہ ماننے کی اصل وجہ یہ ہےکہ وہ انسانی مخلوق کو دیگر جانداروں سے الگ تھلگ خیال کرتے ہیں۔ جبکہ نظریہ ارتقا نے اس ایمانی نظریہ کی مکمل نفی کی ہے جس کی وجہ سے یہاں سائنس اور مذہب کا ٹکراؤ پیدا ہوا ہے۔
     
  12. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    14,844
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    یعنی اگر ناچنے سے بچنا ہے تو علموں بس کریں او یار کہہ دیں
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  13. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    17,175
    اسے بہرحال بائی ڈیزائن نہیں کہا جا سکتا ۔ ہاں زندہ رہنے کیلئے Cooperation کہہ سکتے ہیں جو نیچرل سلیکشن کے تحت ہی عمل میں آیا ہے۔
     
  14. فاروق سرور خان

    فاروق سرور خان محفلین

    مراسلے:
    2,979
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Breezy
    سورۃ النساء کی آیت نمبر ایک پڑھ لیجئے، آدم ، ایک نفس واحدہ سے تخلیق ہوا۔ میرا مراسلہ اسی دھاگہ میں ہے۔ اس کے بعد انسان آدم و حوا کی اولاد ضرور ہیں
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • غمناک غمناک × 1
  15. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    17,175
    سائنسی نظریہ ارتقا ہر لحاظ سے تخلیق کی نفی کرتا۔ تخلیق بائے ڈیزائن ہوتی ہے۔ جبکہ سائنس کے مشاہدہ میں ایسی کوئی چیز نہیں آئی۔
     
  16. آصف اثر

    آصف اثر معطل

    مراسلے:
    3,060
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    حضرت جس مسئلے پر آپ اپنا ڈیٹا پیش کرنا چاہتے ہیں، شریعت بالکل اس کے برعکس ایک اور بیانیہ رکھتی ہے۔ یعنی ارتقا مخالف۔
    اب اصل نکتہ یہ ہے کہ شروع میں آپ جو بڑا دعوی کررہے تھے کہ قرآن میں ارتقا کا نظریہ موجود ہے مگر خدا کے احکامات کا محتاج ہے:
    اس دعوے کا کیا ہوگا؟

    اگر آپ ایسا نہیں سمجھتے تو میرا آپ سےایک سادہ سوال ہے پھر ڈیٹا پر آجاتے ہیں۔
    کیا آپ کو یہ بالکل علم نہیں کہ قرآن ارتقا کی تائید کرتا ہے یا تردید؟
    اگر آپ کو علم نہیں تو کہہ دیجیے کہ مجھے اس حوالے سے بالکل علم نہیں، اس میں کیا جھجھک ہورہی ہے آپ کو؟
    اور اگر آپ کو علم ہے تو اس رو سے دلائل دیجیے۔
    میں پھر کہہ رہا ہوں کہ میں آپ کے ڈیٹا پر تب آؤں گا جب مجھے شریعت کے تناظر میں ارتقا کے ہونے یا نہ ہونے کے حوالے سے آپ کے واضح مؤقف کا پتا چلے گا۔

    جہاں تک یہ سوال ہے کہ میں شریعت کو مقدم کیوں رکھتا ہوں، تو اس کی وجہ میں پہلے بھی بتاچکاہوں اور ایک بار پھر دہرادیتاہوں کہ
    • بحیثیت مسلمان میرا ایمان ہے کہ انسان جیسے عظیم مخلوق کے حوالے سے اتنے اہم قضیے پر قرآن میں صریح احکامات موجود ہیں جن کو کسی بھی ڈیٹا کی ضرورت نہیں۔ اور نہ یہ ممکن ہے کہ ہر شرعی حکم کے لیے ڈیٹا کا سہارا لیا جاسکے۔
    جب کہ ارتقا کا جو دعوی آپ کررہے ہیں
    • وہ ہزار سال سے اوپر تک بغیر کسی ڈیٹا کے رہا ہے، لہذا اس صورت میں آپ کو کم از کم گیارہ بارہ سو سال تک ارتقا کے دعوے کو بغیر ڈیٹا کے قرآن سے ثابت کرنا ہوگا۔
    اگر آپ ایسا نہیں کرسکتے تو یہ اس بات پر دلالت ہوگی کہ آپ قرآن کو اتنے اہم مسئلے میں مبہم یا بالکل ناقابلِ بھروسہ کہہ کر ابہام پھیلانے اور دھوکا دہی کا مرتکب ہورہے ہیں۔
     
    آخری تدوین: ‏دسمبر 19, 2019
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  17. آصف اثر

    آصف اثر معطل

    مراسلے:
    3,060
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    جہاں تک محمد سعد نے زمین کے مسطح ہونے پرعلامہ جلال الدین سیوطی رح کی رائے کی جانب توجہ دلائی ہے تو یہ صرف اور صرف علامہ جلال الدین سیوطی رح کی اپنی رائے ہے قرآن کا نص نہیں ہے۔ جب کہ جمہور علما کہہ کر بھی موصوف نے یہ نہیں بتایا کہ اور کتنے علما زمین کو مسطح سمجھنے کی رائے رکھتے تھے؟
    یہاں یہ بات ملحوظ رہے کہ زمین کے گول یا مسطح ہونے کا تخلیق یا ارتقا کے قرآنی نظریے سے کوئی تعلق نہیں بن سکتا کیوں کہ
    • نہ تو زمین کی گولائی پر قرآن میں کوئی واضح احکام موجود ہیں اور نہ ہی زمین کے فلیٹ ہونے پر۔
    جب کہ
    • قرآن مجید تخلیق کو اہمیت دے کر بار بار بیان کرتا ہے اور اسے ایک عظیم واقعہ قرار دیتا ہے۔
    لہذا اس طرح کے غیرمتعلقہ دلائل کو ایک دوسرے کے لیے بطورِ ثبوت استعمال کرنا بحث کے بنیادی اصولی سے حد درجے ناواقفیت یا قصدا دھوکا دہی کا پتا دیتی ہے۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  18. محمد سعد

    محمد سعد محفلین

    مراسلے:
    2,189
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bored
    بالکل یہی کہہ رہا ہوں کہ ہمیں کیسے پتہ چلے گا کہ آپ کی ارتقاء کے متعلق رائے قرآن کا نص ہے یا آپ کی اپنی محدود سمجھ پر مبنی رائے ہے۔ علامہ جلال الدین سیوطی اور ان کے دور کے تمام علماء کو یہی لگتا تھا کہ زمین کا چپٹا ہونا قرآن کا نص ہے۔ اس بات پر ہی غور کر لیں کہ تفسیر دو جانے مانے جید علماء نے لکھی ہے اور اس میں جمہور علماء کی رائے بتائی ہے۔ اگر اتنے بڑے علماء غلطی کر سکتے ہیں تو آپ بھی کر سکتے ہیں۔
    ارتقاء کے موضوع پر ہم دیکھ چکے ہیں کہ عرب کے شیخ عبد الوہاب الطریری جیسے جید علماء تک آپ سے اتفاق نہیں کرتے۔ ڈاکٹر حمید اللہ جیسے محدث و فقیہ آپ سے اتفاق نہیں کرتے۔ کیا ان سب پر بھی آپ ملحد اور قادیانی کے لیبل لگائیں گے؟ یہ سب کافر ہیں اور ایک آپ مسلمان ہیں؟ یہ سب جاہل ہیں اور ایک ایسے شخص کو قرآن کا اچھی طرح پتہ ہے جو ہر جگہ قادیانی قادیانی کی گردان لگائے رکھتا ہے؟
    ایک ریسرچ پیپر پہلے ہی دکھا چکا ہوں جس میں مختلف سکولز آف تھاٹ کا ذکر ہے۔ کس کو قرآن کا نص سمجھا جائے اور کس کو غلطی پر مبنی ذاتی رائے؟

    بہتر یہی ہے کہ طبیعی دنیا کے معاملے کو، جسے طبیعی طریقے سے نہایت آسانی اور درستگی کے ساتھ پرکھا جا سکتا ہے، طبیعی مشاہدے اور تجربے کی روشنی میں ہی دیکھا جائے۔ ارتقاء کا موضوع نہایت آسانی کے ساتھ سائنسی طریقے سے جانچا جا سکتا ہے۔ سوال کو ڈاج کرنے کے لیے غیر ضروری پیچیدگیاں پیدا کرنے کا آپ کا مقصد سوائے اس کے اور کچھ نظر نہیں آتا کہ انٹرپرٹیشن کی پرپیچ جھاڑیوں میں بات کو الجھا کر اصل سوال کو ڈاج کرتے رہیں۔
    آپ کے اب تک کے رویےسے صرف یہی ثابت ہوتا ہے کہ آپ صرف اس لیے نہیں ماننا چاہتے کہ آپ کو ارتقاء کا تصور ذاتی طور پر پسند نہیں۔ شریعت وغیرہ سب محض بہانے ہیں آپ کے لیے۔ ورنہ اگر نظریہ غلط ہے تو سائنسی طریقے سے بھی نہایت آسانی کے ساتھ غلط ثابت کیا جا سکتا ہے۔

    اٹھائیس۔
     
    • زبردست زبردست × 2
  19. محمد سعد

    محمد سعد محفلین

    مراسلے:
    2,189
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bored
    آصف اثر
    اگر یہ گنتی تیس تک پہنچ جانے کے بعد بھی آپ حقیقی مشاہدے اور تجربے پر مبنی کسی طرح کی دلیل نہ دے پائے تو یہی سمجھا جائے گا کہ آپ محض ضد میں موضوع کو گھما رہے، اصل سوال کو ڈاج کر رہے ہیں، اور آپ کے پاس کوئی حقیقی دلیل نہیں ہے جس سے آپ ارتقاء کو غلط ثابت کر سکیں۔ ایسے میں آپ سے بحث کا کوئی فائدہ نہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  20. آصف اثر

    آصف اثر معطل

    مراسلے:
    3,060
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    میرا مؤقف مکمل طور پر واضح ہوچکا ہے۔ اب آپ کتنا ہی ڈیٹا ڈیٹا کا رٹ لگاتے رہیں، اس سے کچھ فرق نہیں پڑتا۔
    جو شخص خود کو مسلمان ظاہر کرکے لوگوں کو قرآن کے حوالے سے ابہام کا شکار کرکے دھوکا دہی کررہا ہو اور جس کے دلائل ہی ایک دوسرے سے مطابقت پذیر نہ ہوں وہ چاہے کتنا ہی ڈیٹا سے چمٹ جائے، کوئی فائدہ نہیں۔
     
    • مضحکہ خیز مضحکہ خیز × 2
    • غمناک غمناک × 1
    • نا پسندیدہ نا پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر