وحدت الوجود کیا ہے؟

ابرار احمد نے 'تاریخ اسلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 22, 2009

  1. ابرار احمد

    ابرار احمد محفلین

    مراسلے:
    31
    یہاں پر اس موضون کا دھاگا کھولنے کا مقصد مذہبی پنڈتوں سے اس کے حق میں یا اس کے خلاف رائے لینا نہیں بس صرف آپ یعنی ممبران سے یہ معلوم کرنا ہے کہ آخر وحدت الوجود آپ کے نزدیک ہے کیا ؟
    آپ صرف اپنی رائے دیجئے یا اس اصطلاح کی وہ تعریف کر دیجئے جو آپ کی رائے میں اس اصطلاح کا مفہوم بنتا ہو۔ اگر کسی کی رائے آپ کو پسند نہ بھی آئے تو برائے مہربانی اس کو گالیاں مت دیجئے اور مذہب کے ٹھیکے دار کی حیثیت سے اس کے پیچھے نہ لگ جائیے بہت شکریہ صرف اپنا نقطہ نظر بیان کریں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  2. فاتح

    فاتح لائبریرین

    مراسلے:
    15,751
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    صوفی ازم میں تمام موجودات کو وجودِ باری تعالیٰ کا حصہ سمجھنا۔
    (اس سے زیادہ لکھنا اس عقیدے کے حق میں یا اس کے خلاف ٹھیکے داری کے زمرہ میں آ جائے گا;) اس لیے اسی پر قناعت کیجیے)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
  3. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    رانجھا رانجھا کر دی نی میں آپے رانجھا ہوئی
    سدّو مینوں دھیدو رانجھا، ہیر نہ آکھو کوئی

    (بلھے شاہ)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  4. دوست

    دوست محفلین

    مراسلے:
    13,076
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Fine
    تجھ میں رب دکھتا ہے یارا میں کیا کروں
    معذرت میرے ذہن میں فٹ یہ گانا چکرانے لگا سو لکھ دیا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. ابرار احمد

    ابرار احمد محفلین

    مراسلے:
    31
    دوسرے لفظوں میں تمام موجودات کو وجود باری تعالی سے موجود سمجھنا ؟ یا وجود صرف باری تعالی کا سمجھنا ؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  6. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    تصوف میں خدا کائنات میں جاری و ساری ہے جبکہ شریعت میں خدا کا وجود کائنات سے علیحدہ اور شخصی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  7. ابرار احمد

    ابرار احمد محفلین

    مراسلے:
    31
    تصوف ، شریعت

    دونوں میں کیا کچھ فرق ہے ؟ میرا مطلب ہے تصوف اور شریعت میں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  8. ابرار احمد

    ابرار احمد محفلین

    مراسلے:
    31
    یہی تو سوال ہے کہ آپ کے ذہن میں کیا آتا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    ایمان کا۔ کیسی کو شریعت پر ایمان ہے کسی کو تصوّف پر۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. ابرار احمد

    ابرار احمد محفلین

    مراسلے:
    31
    تو کیا شریعت والے تصوف پر ایمان نہیں رکھتے اور صوفی شریعت پر ایمان نہیں رکھتے ؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  11. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    میرے خیال میں خدا کا تصور ان دونوں میں مختلف ہے۔ اور کچھ صوفیوں کا شریعت کی طرف زیادہ جھکاؤ ہے اور کچھ کا تصوف کی طرف زیادہ ۔ جیسے حضرت علی ہجویری صوفی ہوتے ہوئے بھی شریعت کی طرف زیادہ مائل دکھائی دیتے ہیں اسی طرح بلھے شاہ شریعت کی بجائے، طریقت اور تصوف کی طرف مائل نظر آتے ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  12. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,496
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    طریقت ساڈی مائی اے
    شریعت ساڈی دائی اے
    شاید یہ شعر بلھے شاہ کا ہے۔ یا یہ شعر ایسے ہوگا صحیح ترتیب یاد نہیں
    شریعت ساڈی مائی اے
    طریقت ساڈی دائی اے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  13. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    یہ شعر بلھے شاہ کا ہرگز نہیں ہے۔ ایسے شعر بلھے شاہ نے کبھی نہیں‌ کہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  14. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,568
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    جہاں تک میرے ناقص علم میں ہے یہ شعر بلھے شاہ کا ہی ہے، اور ترتیب یہ ہے

    شریعت ساڈی مائی اے
    طریقت ساڈی دائی اے

    (بحوالہ بحرِ بلّھا از صوفی صوفی محمد الدین چشتی نظامی قصوری، بر سبیلِ تذکرہ، یہ کتاب بلھے شاہ کی ایک کافی 'عشق دی نویوں نویں بہار' کی عارفانہ تشریح ہے!)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  15. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    16,496
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    سخنور صاحب آپ کے مطالعہ کے لئے:
    بحوالہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  16. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    وارث صاحب بلھے شاہ اور امیر خسرو سے لاتعداد اشعار منسوب کئے جاتے ہیں۔ ضروری نہیں کہ کسی بھی کتاب میں اگر کوئی شعر بلھے شاہ کے حوالے سے لکھ دیا جائے تو بلھے شاہ کا ہی کہلائے گا۔ میرے پاس پنجابی ادبی بورڈ کی چھپی ہوئی "آکھیا بلھے شاہ" نے ہے اور آصف صاحب نے اسے مرتب کیا تھا۔ آصف صاحب ہر لحاظ سے معتبر اور متفقہ طور پر ایک بہترین محقق کے طور پر جانے جاتے ہیں۔ اس کتاب میں میں نے ایسا کوئی شعر نہیں پڑھا ویسے تو ایک اور شعر بھی بلھے شاہ سے منسوب کیا جاتا ہے۔
    جے توں پتر سائیں دا
    وسا نہ کھائیں ارائیں دا
    اوراسی طرح کے اور بھی بہت سے اشعار ہیں جو بلھے سے منسوب کئے جاتے ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  17. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    نظامی صاحب یہ بھی مطالعہ کیجئے گا کہ تصوّف کی اصل اور بنیاد یونانی اور ہنود کا فلسفہ ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  18. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,568
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed

    جی اسی لیے لکھا تھا کہ 'جہاں تک میرے "ناقص علم" میں ہے'!

    منسوب کی خوب کہی، امیر خسرو کی مشہور و معروف و شہرہ آفاق نعت "نمی دانم چہ منزل بود شب جائے کہ من بودم' متفقہ طور پر تحقیق شدہ ہے کہ ان کے غزلیات کے پانچوں دواوین اور کلیات میں، جنہیں بڑے بڑے علماء و فصحاء نے مرتب کیا ہے، نہیں ہے، لیکن مانی انہی کی جاتی ہے۔

    عرض کرنے کا مقصد یہ کہ جب تک کسی منسوب کلام کی بالتحقیق تردید نہ ہو جائے، چاہے وہ کسی کے مرتب کردہ کتاب میں ہو یا نہ ہو، منسوب الیہ ہی کی مانی جاتی ہے!

    باقی مجھے اس سے کوئی غرض نہیں ہے کہ مذکورہ شعر کیا ہے اور کس کا ہے، میں نے فقط اپنی معلومات شیئر کی تھیں!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  19. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,857
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    حضور اگر میری کوئی بات بری لگی ہو تو معذرت چاہتا ہوں میں نے آج کے ایک مستند مجموعے کے حوالے سے بات کی تھی کہ اس مجموعے میں حشو و زوائد کو الگ کیا گیا ہے۔ اور اس مجموعے میں ایسا کوئی شعر نہیں ہے۔ ویسے بھی یہ تو شعر ہی بتا رہا ہے کہ وہ بلھے شاہ کا نہیں‌ ہے۔ یہ شعر کم اور نعرہ زیادہ نظر آتا ہے۔ جبکہ وہ نعت پکار پکار کر کہتی ہے کہ امیر خسرو ہی ایسی نعت لکھ سکتے ہیں۔ اس شعر اور اس نعت میں زمین و آسمان کا فرق ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • متفق متفق × 1
  20. ابرار احمد

    ابرار احمد محفلین

    مراسلے:
    31
    الف نظامی صاحب کے جواب سے یہ بات واضح ہوئی کہ شریعت اور طریقت دونوں ایک ہی ہیں۔

    الف نظامی صاحب آپ کے اس تفصیلی جواب سے یہ بات تو واضح ہو گئی کہ طریقت اور شریعت دونوں ایک ہی ہیں دونوں میں کوئی فرق نہیں اور اسلام میں صوفیہ بھی شریعت کے اتنے ہی پابند اور ایمان رکھنے والے ہیں جتنے کہ غیر صوفیہ ہیں اس سلسلے میں کسی تفریق کی کوئی گنجائش نہیں۔ اور نہ ہی تصوف اور شریعت کو دو الگ چیزیں کہہ کر فقہا کو شریعت اور صوفیا کو تصوف یا طریقت پر ایمان رکھنے والا جاننا چاہیے۔
    لیکن سوال پھر بھی وہی ہے کہ وحدت الوجود کیا ہے ؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر