نوکیا فون کے زوال کے بعد

احمد علی خان نے 'انفارمیشن ٹیکنالوجی کی دنیا' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 30, 2016

ٹیگ:
  1. احمد علی خان

    احمد علی خان محفلین

    مراسلے:
    31
    فِن لینڈ کا چھوٹا سا شہر نوکیا انتہائی غیر دلچسپ منظر پیش کر رہا ہے۔ موسم سرما کی برف میں چند بلاکز پر محیط فلیٹوں کا سلسلہ ہے اور مرکزی سڑک کے ساتھ ہی دکانوں کی ایک چھوٹی سی پٹی ہے۔ یہاں ہوٹل اور سستے دام والا سپر سٹور بھی ہے۔

    اسے دیکھ کے ایسا محسوس نہیں ہوتا کہ 90 کے عشرے میں اس شہر نے موبائل فون کی صنعت میں انقلاب لانے والی کمپنی کو اپنا نام دیا تھا اور فن لینڈ کی معیشیت کو دنیا میں سب سے زیادہ خوش حال بنانے میں مدد دی تھی۔

    اپنے عروج کے وقت سنہ 2000 کے عشرے میں دنیا کے 40 فیصد موبائیل فون نوکیا نے مہیا کیے تھے اور فن لینڈ کو عالمی سطح پر تسلیم شدہ صارفین کی پہلی برانڈ دی تھی۔

    اندرون ملک اس کے ثمرات اور بھی زیادہ اچھے تھے۔ ریسرچ انسٹی ٹیوٹ آف فِنش اکانومی کے مطابق سنہ 1998 سے سنہ 2007 کے دوران فن لینڈ کی شرح نمو میں نوکیا کا حصہ ایک چوتھائی تھا۔ اس دورانیے کو فن لینڈ کے وزیر خزانہ 146معیشیت کا معجزہ145 کہتے ہیں۔

    تاہم جس تیزی سے یہ ابھرا تھا، اسی تیزی سے موبائیل فون کے بازار میں نوکیا کی برتری نیچے بھی آگئی تھی۔ اس سے نہ صرف فن لینڈ کی معیشیت کو دھچکا لگا بلکہ ملک کی تاریخ کی طویل ترین کساد بازاری میں بھی اس نے اہم کردار ادا کیا۔

    نوکیا سے تقریباً 15 منٹ کے فاصلے پر ہی ٹیمپیئر ہے جہاں کمپنی کے تحقیق و ترقی کی سب سے بڑے شعبے قائم ہیں۔ کمپنی کے اچھے دنوں میں یہاں چار ہزار انتہائی ہنرمند افراد کام کرتے تھے۔

    ٹیمپیئر شہر کے معاشی اور شہری ترقی کے ڈائریکٹر کاری کنکالا کہتے ہیں 146یہ یہاں کی ہر شے کی ریڑھ کی ہڈی تھا۔ یونیورسٹیاں نوکیا کے ساتھ مل کے کام کرنے پہ انحصار کرتی تھیں، ذیلی ٹھیکیداروں کا انحصار بھی نوکیا پر ہی تھا، بچے بھی نوکریوں کے لیے نوکیا کی جانب دیکھتے تھے۔145

    146اور اب ہمیں 14 سے 15 فیصد بیروزگاری کی شرح کے ساتھ مشکل ترین صورت حال کا سامنا ہے۔

    ٹیمپیئر میں نوکیا کے آر ایند ڈی منصوبے کے سابق سینیئر مینیجر مِکا گرنڈسٹورم کہتے ہیں 146میرے خیال میں ہماری سب سے بڑی کامیابی موٹورولا سے بھی چھوٹی جسامت کے موبائیل فون کی تیاری تھی۔ یہ سنہ 1997-1998 کی بات ہے۔ یہ ایک طرح سے انجینیئرنگ خواب تھا۔145

    تاہم موبائیل فون کی صنعت میں سمارٹ فون متعارف ہونے کے بعدصورت حال بالکل تبدیل ہوگئی۔ خاص طور پر سنہ 2007 میں ٹیکنالوجی کی کمپنی ایپل کی جانب سے آئی فون متعا رف کروانے کے بعد۔

    مِیکا کہتے ہیں 146اگر آپ فون کی بیٹری کی زندگی کے بارے میں سوچیں تو ہمارے پاس ایسے فون تھے جو ایک ہفتے تک چل سکتے تھے۔ لیکن پھر ایسےنئے فون آگئے جو کارکردگی میں بہترین تھے لیکن صرف ایک دن ہی چلتے تھے۔ اچھا، ایسی کوئی شے خریدنے پر آپ اپنے صارف کو کیسے آمادہ کرسکتے ہیں؟145

    نوکیا نے سمارٹ فون کے بازار میں اپنی بقا کی لڑائی جاری رکھی، تاہم سنہ 2014 میں نوکیا کا موبائیل فون کا کاروبار مائیکروسوفٹ نے خرید لیا تھا اور ڈیوائس پر سے نوکیا کا نام یکسر مٹا دیا گیا تھا۔

    نوکیا شہر کے جنوب میں دو گھنٹے کے فاصلے پر ہیلسنکی شہر ہے جہاں نوکیا کے دور کے بعد کی نئی کاروباری تہذیب کے آثار نمودار ہونا شروع ہوگئے ہیں۔

    ٹامس کیٹوما ایک سافٹ ویئر انجینیئر ہیں، انھوں نے اپنی پیشہ ورانہ زندگی کا بیشتر حصہ نوکیا کے لیے کام کرتے ہوئے گزارا ہے جن میں امریکہ اور جرمنی میں گزرا وقت بھی شامل ہے۔

    گذشتہ سال وہ آن لائن صارفین کی کمپنی زُولینڈو کے لیے کام کرنے کی غرض سے فِن لینڈ واپس لوٹے ہیں۔ انھوں نے فِن لینڈ کے دارالحکومت میں ایک پرانی فیکٹری کو ایک زبردست دفتر میں تبدیل کردیا ہے جہاں انھوں نے ٹیکنالوجی کی کمپنی شروع کی ہے۔

    ٹامس کیٹوما کہتے ہیں 146فنی مہارت کہیں نہیں گئی ہے۔ فِن لینڈ میں نوکیا کا عروج کا وقت گزرا ہے اس کا مطلب یہ ہے کہ یہاں ٹیکنالوجی کا علم اور اس میں مہارت رکھنے والوں کا زخیرہ موجود ہے۔145

    فِن لینڈ کی ٹیکنالوجی کی صنعت کا مستقبل جو بھی ہو کچھ لوگوں کے خیال میں نوکیا جیسی بڑی اور متاثرکن کمپنی پھر سے ابھر سکتی ہے۔

    نوکیا کے تحقیق اور ترقی کے شعبے کے ایک اور سابق مینیجر سیپّو ہاتایا کہتے ہیں 146جب نوکیا اس کاروبار کا اہم کھلاڑی تھا فِن لینڈ میں بہت سی اچھی چیزیں ہوئی تھیں۔ اب صورت حال تبدیل ہورہی ہے۔ نئی ایجادات بڑی کمپنیوں کے ذریعے نہیں ہورہی ہیں بلکہ چھوٹی اور نئی کمپنیوں کے ذریعے ہورہی ہیں۔

    بشکریہ : روزنامہ پاکستان اسلام آباد
     
    • معلوماتی معلوماتی × 4
    • زبردست زبردست × 1
  2. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    نوکیا کا محض دس سالوں میں جو حال ہوا ہے وہ تیل اور گیس سے مالا مال عرب ممالک کا رفتہ رفتہ ہو رہا ہے۔ تیل کی قیمتیں گرنے اور توانائی کے دیگر ذرائع ملنے کی وجہ سے یہ ممالک بھی اپنا انجام نوکیا سے بد تر دیکھیں گے۔

    فاتح یا حمیرا عدنان نے کہیں ذکر کیا تھا کہ آئی فون کی آمد سے بھی قبل اینڈروئیڈ فونز نوکیا کی اجارہ داری ختم کر چکے تھے۔ البتہ کریڈٹ آئی فون لے گیا۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 2
  3. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    37,934
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Amused
    فاتح یا حمیرا سے ایسی توقع نہیں کہ اینڈرائڈ کی پیدائش ہی 2008 کی ہے۔
     
    • متفق متفق × 6
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. عثمان

    عثمان محفلین

    مراسلے:
    9,730
    موڈ:
    Cheerful
    اینڈرائڈ آپریٹنگ سسٹم آئی فون اور آئی او ایس کے بعد آیا تھا۔
     
    • متفق متفق × 3
    • معلوماتی معلوماتی × 2
  5. حمیرا عدنان

    حمیرا عدنان محفلین

    مراسلے:
    6,682
    جھنڈا:
    Kuwait
    موڈ:
    Angelic
    یہ تو الزام ہے ہم پر :unsure:
     
    • پر مزاح پر مزاح × 4
  6. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    24,770
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    آئی فون اور آئی او ایس اینڈرائڈ سے پہلے آئے تھے۔
    مگر نوکیا کو صحیح معنوں میں نقصان اینڈرائڈ سے ہی پہنچا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 2
    • متفق متفق × 2
  7. یاز

    یاز محفلین

    مراسلے:
    18,114
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    اس داستان سے ایک ہی بات سمجھ میں آتی ہے جو علامہ اقبال نے کچھ یوں بیان فرمائی ہے
    جنبش سے ہے زندگی جہاں کی
    یہ رسم قدیم ہے یہاں کی
    ہے دوڑتا اشہبِ زمانہ
    کھا کھا کے طلب کا تازیانہ
    اس رہ میں مقام بے محل ہے
    پوشیدہ قرار میں اجل ہے
    چلنے والے نکل گئے ہیں
    جو ٹھہرے ذرا، کچل گئے ہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 1
    • متفق متفق × 1
  8. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    24,770
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    اور دوسری بات یہ کہ 2007 میں تنزلی کیسے شروع ہو سکتی ہے، جب کہ نوکیا کا ایک کامیاب ترین فون ای-71 2008 میں لانچ ہوا.
     
    • متفق متفق × 4
  9. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    اب وہ پوسٹ ڈھونڈنی پڑے گی جس میں فاتح بھائی نے کسی اسمارٹ فون کا ذکر کیا تھا جسے ایپل نے کاپی کرکے آئی فون بنایا۔
     
  10. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    اینڈروئیڈ نہیں اسمارٹ فون لکھنا تھا ٹچ اسکرین والا۔
     
    • متفق متفق × 1
  11. یاز

    یاز محفلین

    مراسلے:
    18,114
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    درست فرمایا۔
    نوکیا کا مارکیٹ شیئر 2009 سے سکڑنا شروع ہوا۔ 2008 میں یہ شیئر 38.6 فیصد تھا، جو 2013 میں 13.9 فیصد رہ گیا۔ وکی پیڈیا آرٹیکل ملاحظہ کریں۔

    لیکن یہ بھی حقیقت ہے کہ 2008 میں E71 سے زیادہ ایپل آئی فون فروخت ہوئے تھے۔ یعنی اسی وقت سے ہی نوکیا کی تنزلی کے آثار ہویدا تھے۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • متفق متفق × 1
  12. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    24,770
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    کہیں کوئی ایچ ٹی سی والا تو نہیں تھا؟
     
    • معلوماتی معلوماتی × 3
  13. یاز

    یاز محفلین

    مراسلے:
    18,114
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    یہ تو مشکل کام ٹھہرا۔
    اس سے آسان کام یہ ہے کہ فاتح بھائی وہ پوسٹ ڈھونڈیں جس میں انہوں نے کسی اسمارٹ فون کا ذکر نہیں کیا تھا، تا کہ مذکورہ بالا مقدمے سے بری ہو سکیں۔ یہی صلاح حمیرا عدنان بہن کو بھی دی جانی چاہئے۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  14. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    آئی فون کی اس زمانہ میں ایسی دھوم مچی ہوئی تھی کہ جو اسے خریدنے کی صلاحیت نہ رکھتے وہ کوئی دوسرا اسمارٹ فون لے لیتے۔ اب ایسا نہیں ہے کہ نوکیا نے اس میدان میں اپنے آپ کو منوانے کی کوشش نہیں کی۔ ۲۰۱۰ میں میں جس کمپنی میں کام کرتا تھا انکے پاس نوکیا کا سیمبیان آپریٹنگ سسٹم والا اسمارٹ فون تھا۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • متفق متفق × 1
  15. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    24,770
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    صرف ای-71 سے موازنہ درست نہیں، نوکیا کے تمام فونز کی سیل سے موازنہ کریں
     
    • متفق متفق × 2
  16. یاز

    یاز محفلین

    مراسلے:
    18,114
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    بالکل درست فرمایا۔
    میں بھی "تقریباََ" یہی کہنا چاہ رہا تھا کہ نوکیا 2008 میں بھی ٹاپ پہ تھا، تاہم اسی سال ایک نیا جِن بوتل سے نمودار ہو چکا تھا۔
     
    • متفق متفق × 1
  17. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    اور یہی اسٹریجی نوکیا کے زوال کی وجہ بنا۔ نوکیا کے ریسرچ ڈویژن فون کو چھوٹا اور دیر پا بیٹری والا بنا نے میں اتنے مشغول تھے کہ انہیں پتا ہی نہیں چلا کہ دیگر فون کمپنیز بالکل اور کانسیپٹ پر کام کر رہیں جس میں نوکیا بہت پیچھے ہے
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  18. یاز

    یاز محفلین

    مراسلے:
    18,114
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    یہ بھی درست فرمایا۔ میں 2010 میں چائنہ گیا تو وہاں آئی فون یا اس کی نقول چینیوں کا من بھاتا کھاجا تھیں۔ ہر کوئی آئی فون کا مجنوں بنا ہوا تھا۔ اصل آئی فون اس وقت عام چینی کی مالی دسترس سے کچھ اوپر ہی تھا، تاہم اس کی بے شمار نقول مارکیٹ میں آ چکی تھی۔ تقریباََ 25 ڈالر سے شروع ہو کر 150 اور 200 ڈالر تک کی نقلیں دستیاب تھیں۔ اور اپنی قیمت کے لحاظ سے کچھ ہفتوں یا مہینوں تک چل جاتی تھیں۔
    جب تک چل جائے تو کام چلائیں، اس کے بعد اس سے سٹاپو کھیلنے کا کام بھی لیا جا سکتا تھا۔
     
  19. احمد علی خان

    احمد علی خان محفلین

    مراسلے:
    31
    یہ بالکل ٹھیک پکڑا۔۔ حمیرا کے جنرل نالج کا ناس مار دیا o_O
     
  20. احمد علی خان

    احمد علی خان محفلین

    مراسلے:
    31
    تب چراغ ٹمٹما رہا تھا۔
     

اس صفحے کی تشہیر