نظریہ مفرد اعضاء۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ذرا بچ کے

hakimkhalid نے 'طب اور صحت' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 31, 2010

  1. حکیم ایم رضوان

    حکیم ایم رضوان محفلین

    مراسلے:
    16
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    DEFFINATION:

    Universes is composed of four elements like air, fire, water and earth same as human body, which is composed of four basic tissues like muscular tissue, epithelial tissue, nervous tissue and connective tissue. The Muscular tissues, the epithelial tissues and the nervous tissues bind together with the help of the connective tissues to make the compound body organs like stomach, intestine, heart, liver, eyes and lungs etc. According to Simple Organs Theory the root cause of any disease always lies in the basic tissues (life organ). And the disease can be treated by balancing the body systems and supporting the sedated organ with the help of specific food and herbs.
    The unique feature of this theory is its diagnostic authority. Pulse is considered to be the most important feature along with urine and tongue examination. Laboratory test are also considered in relation of the three basic body systems.
    In this theory, diseases, herbs and foods are divided into three groups in collaboration to the elements of the universe and humors of a body.
    Human Anatomy:
    Dr Dost Muhammad Sabir Multani also proposed analogy of the human body and the universe as;
    Embryology:
    The human body is composed of following tissues
    " Epithelium Tissue
    " Connective Tissue
    " Cartilage
    These three basic tissues combined together with the help of connective tissues to makes the compound organs like lungs, stomach, kidney etc. All these compound organs can be classified in three basic groups of organs based on having proportionally more tissues of the particular type.
    Cause of Disease
    According to the "Simple Organ Theory", a person catches a certain disease when any of the basic body systems like Muscular system, Endocrine system or nervous system starts malfunctioning due to change in the proportion of the humors, black bile (Souda), yellow bile (Saffra), phlegm (Balgham) in blood because of the factors like specific food, pathogens or environment etc.
    Souda (Black bile) is dry in nature, saffra (Bile salt) is warm (hot) and balgham (Phlegm) is damp.
    Souda or black bile is the fluid of muscular system and nourishes the body muscles. Saffra or yellow Bile is the fluid of glands and nourish the endocrine system. Balgham or phlegm is the fluid of nervous system and enhances the nervous activity.
    The proportion of these humors in the blood affects the body system.
    According to Simple Organ Theory all the diseases are classified into three basic types in relation with three-body system or the life organs.
    " Diseases of Muscular system (Muscular disease like ulcers, constipation, piles, TB etc.)
    " Diseases of Nervous system (Nerves diseases like epilepsy, diabetes, Diarrhea).
    " Diseases of Endocrine system (Liver related diseases such as jaundice, dysentery).
    All the herbs and food are divided into three types, in relation with their temperaments, which tonify the related body system. Note: According to "Simple Organ Theory" Pulse Examination is based upon the
    following 6 observation

    1. Depth 2. Length 3. Volume 4. Speed 5. Pressure 6. Tension

    Treatment Principle:
    According to the Simple Organ Theory hyperactivity of life organ (system) is called disease. When the proportion of humors (black bile, yellow bile and phlegm) changes in the blood because of the factors like specific food, pathogens and environment, the raised humour over-activate its respective body system and due to these changes, it disturbs the condition of other two body systems, one of them goes to lethargic while the 2nd one sedates.
    The disease can be treated by supporting the sedated organ and harmonizing the body system with the help of specific food and herbs. The optimal combination of food and herbs for the sedated system is recommended to bring the system back in an active state and eliminates the symptoms
    If muscular system is hyperactive which is actually due to excessive amount of black bile in the blood, according to Simple Organ Theory, the endocrine system is sedated and nervous system is in lethargic state. The specific combination of herbs and food is advised which produce more yellow bile and so enhances the endocrine system and the symptoms vanish.
    If endocrine system is hyperactive which is actually due to excessive amount of bile salts, according to Simple Organ Theory, the Nervous system is sedated and muscular system is in lethargic state. The specific combination of herbs and food is advised which produce more phlegm and so tonify the endocrine system to cure the disease.
    If nervous system is hyperactive because of excessive amount of phlegm in the blood, according to Simple Organ Theory, the muscular system is sedated and endocrine system is in lethargic state. Those herbs and food are advised which produce more black bile (Sauda) that tonify the muscular system and ultimately the symptoms cured.
     
  2. حکیم ایم رضوان

    حکیم ایم رضوان محفلین

    مراسلے:
    16
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    Discussion:

    In this system of treatment food is considered to play the most important role in treating disease along with herbs and environment.
    From the previous observations it is obvious that when herbs were taken without specific food chart the rate of recovery was very slow in chronic problems. While in acute symptoms because there is very short time to treat them otherwise it would be fatal, so the herbs play major role in treating the acute problems but in the meantime food must be taken with cautions. e.g., in cholera if patient takes damp type of food such as milk, it will be lethal to him.
     
  3. حکیم ایم رضوان

    حکیم ایم رضوان محفلین

    مراسلے:
    16
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    FAMOUS STUDENTS & REFORMERS OF (SOT):

    Any theory could not spread without the efforts of its followers. Although there are many students of Sabir Multani, but Hakim Muhammad Sadique Shaheen, Hakim Chuhdry Dilawar Ali bhalli, Hakim Ghulam Rasool Bhutta , Hakim Muhammad Shareef , Hakim Muhammad Yasin Chawla , Hakim Malik Khair-ul-Din Dogar , Hakim Nazar Hussain Qureshi, Hakim Ghulam Haider Sohail, Hakim Chuhdry Barkat Ali, Hakim Zafar Ullah Qamar Lakhwi Okara , Dr Akhtar ,Hakim Akbar Ali Naseem , Hakim Rahmat Ali Rahat , Hakim Noor Muhammad Hairvi ,Hakim Ilahi Bakhsh Multan are some famous names in the list of his students. They all performed their entire services for the "SOT" in different ways
     
  4. حکیم ایم رضوان

    حکیم ایم رضوان محفلین

    مراسلے:
    16
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    تجدید طب یونانی قانون مفرد اعضاء کی نبض(PULSE SYSTEM OF S.O.P)

    اعصابی عضلاتی :بلغم سوداوی1:
    یہ نبض کلائی کی ہڈی کے پاس بالکل تہہ میں چوڑی ےعنی حالت عرض میںہوتی ہے۔ایک یا دو انگلیوں پر محسوس ہوتی ہے۔اس کی ٹھوکر نہائیت کمزور ہوتی ہے۔حرکت بہت سست ہوتی ہے۔اس کا وقفہ بھی ایک جیسا نہیںہوتا اور ا س میںجوقوام ہوتا ہے،وہ نہائیت نرم ہوتا ہے اور نبض رطوبت سے بھری ہوئی معلوم ہوتی ہے اور ہاتھ رکھتے ہی سردی کا واضح احساس ہوتا ہے۔
    (۲)عضلاتی اعصابی:سودائ:
    ےہ نبض اوپر اوپر کلائی پر ہاتھ رکھتے ہی معمولی دباﺅ سے واضح طور پرایک ےا دو انگلیوںپر محسوس ہوتی ہے۔ اس کا عرض نصف پورے تک محسوس ہوتا ہے۔اور رطوبت کے لحاظ سے بہ تو ممتلی ہوتی ہے اور نہ ہی خالی بلکہ معتدل حیثیت رکھتی ہے اور کیفیت نہ تو گرم محسوس ہوتی ہے اور نہ ہی سرد اس لحاظ سے بھی معتدل ہوتی ہے۔البتہ مقدار کے لحاظ سے ےہ دو انگلیوں سے آگے تک کراس نہیں کرتی ہے اس لئے قصیر کہتے ہیں،اس کا قرع قوی ہوتا ہے اورےہ حرکت میں سریع ہوتی ہے اور سکون کے لحاظ سے متفاوت ہوتی ہے۔اس کا قوام صلب ہوتا ہے ےعنی اسے دبانے پر سختی کا اظہار کرتی ہے نرمی کا نہیں۔
    (۳)عضلاتی غدی:سوداءصفراوی:
    کلائی پر ہاتھ رکھتے ہی معمولی ٹچ کرنے پر اوپر اوپر ۳ اور کبھی ۴ انگلیوں پو محسوس ہوتی ہے ۔مقدار طویل،عرض نصف پورے تک محوس ہوتا ہے،رطوبت میں نہ تو ممتلی،نہ ہی بلکل خالی،معتدل ہوتی ہے۔قرع قوی ہوتا ہے۔حرکت تیز،سکون متواتر،قوام صلب،دبانے پر پوروں کو زور سے اوپر دھکیلتی ہے
    (۴)غدی عضلاتی :صفراءسوداوی:
    کلائی پر ہاتھ رکھ کر اگر نبض کو دبائیں تو اسے تین حصوں میں تقسیم کر لیں۔اوپر اوپر(مشرف) عضلاتی اور بالکل تہہ میں(منخفص) اعصابی ہوتی ہے۔اس کے درمیان میں(متوسط)مقام پر غدی نبض ہوتی ہے۔اب اسے اگر بار بار دبائیں تو اس کا رجحان اوپر کی جانب ہوتا ہے۔(ےعنی مائل با مشرف)
    اور اس کا زمانہ سکون نہ متواتر اور نہ ہی متفاوت بلکہ معتدل ہوتا ہے ۔اس کی حرکت نہ سریع نہ بطی بلکہ معتدل ہوتی ہے اور اس کا قرع نہ قوی نہ ضعیف بلکہ معتدل ہوتا ہے اور اس کا قوام نہ صلب اور نہ لیں بلکہ معتدل ہوتا ہے اور مقدار کے لحاظ سے ضیق ہوتی ہے ےعنی اس کا عرض نصف پورے سے کم ہوتا ہے۔رطوبت کے لحاظ سے بلکل خالی ہوتی ہے اور کیفیت کے لحاظ سے بالکل گرم ہوتی ہے۔
    (۵)غدی اعصابی: صفراءبلغمی:
    کلائی کی نبض پر ہاتھ کی انگلیاں رکھ کر دبائیں تو یہ درمیان میں مائل بہ منخفص ہوتی ہے ےعنی اسے باربار دبائیں تو اس کا رجحان اوپر کی طرف نہیں بلکہ نیچے کی طرف ہوتا ہے۔جب دبانا چھوڑ دیں تو یہ اپنے درمیانی مقام پر آجاتی ہے اوریہ مقدار کے لحاظ سے عریض اور معتدل نہیں بلکہ ضیق ہوتی ہے البتہ اس کا قرع ،اس کا زمانہ حرکت وزمانہ سکون اورقوام معتدل ہوتے ہیں جبکہ رطوبت نہیں ہوتی اور کیفیت اس کی بارد اور معتدل نہیں بلکہ حار ہوتی ہے جب بھی نبض پر ہاتھ رکھیں تو وہ گرم گرم ہی محسوس ہوتی ہے۔
    (۶)اعصابی غدی:بلغم صفراوی:
    کلائی پر انگلیاں رکھ کر دبائیں اور منخفص مقام پر ےعنی ہڈی کے پاس تہہ میںمحسوس ہوتی ہے۔اس میں چونکہ حرارت نہیںہوتی اس لئے یہ نبض قصیر (چھوٹی)ہوتی ہے اور رطوبت زیادہ ہونے کی وجہ سے چوڑی(عریض)محسوس ہوتی ہے البتہ اس کا قرع ضعیف ہوتا ہے اور حرکت بھی اس کی سست(بطی) ہوتی ہے اور زمانہ سکون ےعنی اس کا وقفہ بھی ایک جیسا نہیں ہوتا ےعنی متفاوت ہوتا۔اس کا قوام سخت نہیں بلکہ نرم(لین) ہوتا ہے اور رطوبت کے لحاظ سے ممتلی ےعنی بھری ہوئی معلوم ہوتی اور کیفیت بھی بارد ےعنی ٹھنڈی ہوتی ہے۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  5. حکیم ایم رضوان

    حکیم ایم رضوان محفلین

    مراسلے:
    16
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    ●▬▬▬▬▬▬ஜ۩۞۩ஜ▬▬▬▬▬▬▬●
    غذاء Nutrition

    To live one must eat. But, we not only eat to live, what we eat also affects our ability to keep healthy, do work, to be happy and to live well. Knowledge of what to eat and in what quantities is a prerequisite to the healthy and happy life...

    Nutrition is the science that deals with all the various factors of which food is composed and the way in which proper nourishment is brought about. The science of foods, the nutrients and the substances therein, their action, interaction and balance in relation to health and diseases. Nutrition science is the area of knowledge regarding the role of food in the maintenance of good health. Thus nutrition is the study of food at work in our body.

    Food is anything solid or liquid that has a chemical composition which enables it, when swallowed to do one or more of the following

    1. Provide the body with the material from which it can produce heat, or any for m of energy.
    2. Provide material to allow growth, maintenance, repair or reproduction to proceed.
    Supply substances, which normally regulate the production of energy or the process of growth, repair or reproduction.
    Good nutrition requires a satisfactory diet, which is capable of supporting the individual consuming it, in a state of good health by providing the desired nutrients in required amounts. It must provide the right amount of fuel to execute normal physical activity. If the total amount of nutrients provided in the diet is insufficient, a state of under nutrition will develop.

    Nutrition is one key to developing and maintaining a state of health that is optimal for you. In addition, poor diets coupled with a sedentary lifestyle are known to be risk factors for life- threatening chronic diseases and death: Heart disease, Stroke, Hypertension, Diabetes and some forms of Cancer. The major health problems are largely caused by excessive energy intake and not enough physical activity.

    There is increasing evidence that nutrition—what we eat and what we don't eat— may be related to as many cases of avoidable cancers as tobacco use. Nutrition stresses the use of whole food as a medicine. Nutrition is an essential part of healing in many indigenous societies. Whole food and natural diet is an effective answer to many health complaints and conditions

    Prevention is preferable to cure

    Food Charts:

    Group 1:

    BREAKFAST:

    Milk, Butter, Carrot Pudding, Almond Pudding, Pumpkin Pudding, Oats, Herbal Tea,

    LUNCH:

    Curry of: Radish, Carrot, Turnip, Beet Root , Pumpkins, Okra, Courgette, Boiled Rice, Moong Daal (Yellow Lentils), Chapatti, Lettuce, Custard, Oats

    DINNER:

    Same as Lunch, including Herbal Tea

    FRUITS:

    Banana, melon, Guava, water melon, leachy, Sugar cane, Cucumber

    Group 2:

    BREAKFAST:

    Egg Pudding, Pistachio, walnuts, Dates, Mango Pulp in Syrup, Honey

    LUNCH:

    Lamb, Black Gram, Onion, Ginger, Mint, Garlic, Methi (Fenugreek), Green Lentils, Chapatti

    DINNER:

    Same as Lunch, including Herbal Tea

    FRUITS:

    Mango, Papaya, Apricot, Grapes, Mulberry, Coconut

    Group 3:

    BREAKFAST:

    Peanuts, Sultans, Fried Egg, egg omelet with gram flour, Yogurt, Gooseberry in Syrup,

    Herbal tea: boil 2 Cloves and a piece of cinnamon in 1 cup of water for 3 minutes and add 3 drops of lemon juice

    LUNCH:

    Fish, Chicken, Beef, Bitter Gourd, Peas, Cabbage, Tomato, Aubergine, Spinach, Mango, lemon and green pepper pickles, Cauliflower, Potatoes, Gram Flour, Corn

    DINNER:

    Same as Lunch, including Herbal Tea

    FRUITS:

    Apple, Orange, Jambulam, Peach, Pomegranate, Plum, Pineapple, Cherries, Strawberries

    ●▬▬▬▬▬▬ஜ۩۞۩ஜ▬▬▬▬▬▬▬●
     
  6. حکیم ایم رضوان

    حکیم ایم رضوان محفلین

    مراسلے:
    16
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    ●▬▬▬▬▬▬ஜ۩۞۩ஜ▬▬▬▬▬▬▬●
    The Life of Avicenna

    Ibn Ali Al Hosain Ibn Abdullah Ibn Sina, or in Latin abbreviated to Avicenna. Arabian physician and philosopher, born at Kharmaithen, in the province of Bokhara, 980; died at Hamadan, in Northern Persia, 1037. The life of Avicenna is well documented in the book the "Life of Avicenna", which is based on his autobiography, written by his follower and student Jorjani (Sorsanus), and which was published in the early Latin editions of his works. Bu Ali Sina lived during a period of great political instability, which profoundly influenced his life. The Samanid dynasty, the first Iranian native dynasty to arise after the Muslim Arab conquest, controlled Transoxania and Khorasan from about 900.
    Bukhara their capital, together with another of their great cities, Samarqand were the cultural centres of the empire. By the middle of the 10th century, however, the power of the Samanids began to weaken. By the time Avicenna was born, Nuh ibn Mansur, the Sultan in Bukhara, was struggling to retain control of his empire. Avicenna's father was the governor of a village in one of Nuh ibn Mansur's estates and was a respected and learned man, whose home was a meeting place for other men of learning in the area. Avicenna was therefore, as was the custom of the time educated by his father.
    Avicenna was a very talented youth; by the age of ten he had memorised the Koran and most of the Arabic poetry which he had read. At the age of thirteen he began to study medicine and by the age of sixteen he commenced treating patients.
    Avicenna also studied logic and metaphysics, in which he received instruction from some of the best teachers of his day, but also continued to study a wide variety of subjects on his own. Avicenna stresses in his autobiography that he was more or less self-taught but received assistance in his studies at crucial times in his life.
    Avicenna's skill in medicine proved to be of great value to him; his reputation caused the Samanid ruler Nuh ibn Mansur to seek him out to treat an illness that the court physicians had been unable to deal with. After Avicenna's treatment proved successful, he was, as a reward, allowed to use the Royal Library of the Samanids (books were very precious before the advent of printing, as they had to be hand copied). This was an unequalled opportunity for Avicenna and assisted him in the development of his great diversity of learning.
    Unfortunately civil strife commenced in the empire and city after city of the Samanid Empire fell. Bukhara was finally taken in 999, which effectively spelled the end of the reign of the Samanids. These events, and another traumatic event, the death of his father, changed Avicenna's life completely.
    Without either his father or a patron to support him, he began a life of wandering from town to town in Khorasan, acting as a physician and administrator by day and a teacher during each evening. He served as a jurist in Gurganj, was in Khwarazam, then was a teacher in Gurgan and next an administrator in Ray. Despite these upheavals, this remarkable man continued to produce the highest standards of scholarship.
    After this period of wandering, Avicenna moved to Hamadan in west-central Iran, where he worked for a while as a court physician. He so impressed the ruling Buyid prince, Shams ad-Dawlah, that he appointed him twice as minister.
    Although Avicenna commenced writing his major literary works in Hamadan, his life was far from easy. The difficult political scene of the time and rival jealousies forced Avicenna to go into hiding for a while and he also spent some time as a political prisoner from which he escaped to Isfahan, disguised as a Sufi.
    After his flight to Isafan in 1022, Avicenna entered the court of the local prince Ala al-Dwla and spent the last years of his life in comparative peace. At Isfahan he completed the literary works that he had begun at Hamadan and also wrote many other works on philosophy, medicine and the Arabic language. It was customary for a court physician to accompany his patron on military campaigns and many of Avicenna's works were composed on these campaigns. It was on one such military campaign that he took ill and, despite his efforts to save himself, died of a mysterious illness, reportedly colic. He may, however, have been poisoned by one of his servants.
    Important works of Avicenna are The Book of Healing and The Canon of Medicine, both of which he commenced in Hamadan. The Book of Healing is a scientific encyclopaedia which covers logic, the natural sciences, psychology, geometry, astronomy, arithmetic and music. The Canon of Medicine is the most famous single book in the history of medicine, which remained the principal authority in medical schools in both Europe and Asia until the late 18th Century.
    In all, Avicenna wrote about 450 works, of which around 240 have survived. Of the surviving works, 150 are on philosophy while 40 are devoted to medicine, the two fields in which he contributed most. He also wrote on psychology, geology, mathematics, astronomy, and logic. His most important work as far as mathematics is concerned, however, is his immense encyclopaedic work, the Kitab al-Shifa' (The Book of Healing). One of the four parts of this work is devoted to mathematics and Avicenna includes astronomy and music as branches of mathematics within the encyclopaedias. Another of his works is "Al Nadja" (Deliverance)
    Avicenna also made a number of discoveries related to astronomy. For example, he deducted from his observation of Venus crossing the surface of the Sun that Venus must be closer to the Earth than the Sun. He also correctly postulated that light travels at a finite velocity.
    Avicenna sought to integrate all aspects of science and religion in a grand unified philosophy. With this philosophy he attempted to reconcile the natural science of the day with religious law, the organization of state and metaphysics and to answer the question of the ultimate destiny.
    ●▬▬▬▬▬▬ஜ۩۞۩ஜ▬▬▬▬▬▬▬●
     
  7. حکیم ایم رضوان

    حکیم ایم رضوان محفلین

    مراسلے:
    16
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    • علامات تحقیقات کی روشنی میں

      • چہرہ سرخ،کان سرخ،کنپٹیوں پر بوجھ یا درد ہو تو یہ ہائی بلڈ پریشر کی دلیل ہے تحریک غدی عضلاتی ہے
      • چہرے پر سیاہیاں ،سیاہ یا جلد کے رنگ کے موہکےہوں تو سودا کی زیادتی اور عضلاتی اعصابی ہیں
      • چہرے پر دانے جو جلدی نہیں پکتے تو وہ عضلاتی اعصابی ہیں
      • چہرے پر دانے جن کا حلقہ سرخ، اندر سے خون یا خون امیز پیپ نکلے یا سیاہ تل ہوں تو عضلاتی غدی ہیں
      • چہرے پر نوکیلے دانے جن سے خالص پیپ نکلے تو غدی عضلاتی ہیں
      • ہونٹ کے کنارے زخم بننا اور پک کر ختم ہو جانا کسی بڑے بخار کے جانے کی دلیل ہے
      • مردوں کے چہرے پر بال نہ اآنا (داڑھی مونچھ) تو اعصابی تحریک ہے
      • عورتوں کے چہرے پر بال اآنا ہارموننز کی خربی یا ایام کو جاری کرنے کی انگریزی ادویہ کھاتی ہیں اور یہ عضلاتی غدی ہے
      • بخار کے وقت بائیں رخسار پر سرخ دھبے نظر آیئں تو مرض سل ہے اور غدی عضلاتی ہے
      • زات الریہ میں دائیں رخسار سرخ دکھائی دیتا ہے تحریک عضلاتی اعصابی ہے
      • عورتوں کا چہرہ بے رونق اور طبعی عمر سے زائد لگے تو پرانے امراض رحم کی دلیل ہے
      • ہونٹوں کا موٹا ہونا عضلاتی تحریک
      • ہونٹوں پر ورم ہونا سوزش جگر کی علامت ہے تحریک غدی عضلاتی ہے
      • ہونٹوں کی غیر معمولی سرخی امراض شش کی علامت ہے
      • ہونٹوں پر سیاہی مائل پھنسی سوزش دماغ کی علامت ہے
      • ہونٹوں پر گہری چمکدار سرخی سل کی علامت اور تحریک عضلاتی اعصابی ہے
      • اگر ہونٹ سفید ہون تو قلت الدم کی علامت ہے اور تحریک عضلاتی اعصابی ہے
      • ہونٹ خشک ہوں اور ان پر پپڑی کی تہ جم جائے تو سوزش معدہ کی علامت ہے تحریک عضلاتی اعصابی ہے
      • ہونٹوں پر اگر زردی مائل سفید پپڑی تہہ بہ تہہ جم جائے توصفراوی بخاروں کی علامت ہے
      • آنکھوں کے سفید حصے اگر میلے کچیلے دکھائی دیں تو عضلاتی اعصابی سوزش امعاء کی دلیل ہے
      • آنکھوں کے سفید حصے اگر پیلے نظر آیئں تو یرقان اصفر غدی عضلاتی تحریک ہے
      • آنکھیں اندر کی جانب دھنس جانا منی کے زیادہ اخراج کی دلیل ہے
      • آنکھیں باہر کی طرف ابھر نا اگر نبض غدی عضلاتی ہے تو جگر سکڑ گیا ہے اور اگر نبض عضلاتی اعصابی ہے تو تھائیرائیڈ گلینڈز بڑھنے کی دلیل ہے
      • اٹھتے بیٹھتے آنکھوں کے سامنے اندھیرا چھا جانا تسکین غدد کی علامت ہے
      • آنکھوں کے سامنے چنگاریاں محسوس ہونا تحریک غدد یا بلڈ پریشر ہائی ہونے کی علامت ہے
      • آنکھوں کے نیچے سیاہ حلقے ،سوزش امعاء،پرانے بخار،ٹائی فائیڈ مزمن، سیلان رحم مزمن جریان منی کی علامت ہے تحریکات الگ الگ ہوتی ہیں
      • روشنی سے نفرت ہونا سووزش دماغ اعصابی تحریک اور احتناق الرحم عضلاتی تحریک کی علامت ہے
      • آنکھوں کے نچلے پپوٹے سوج جاتے ہوں تو ورم گردہ کی دلیل ہے عضلاتی اعصابی تحریک کی علامت ہے
      • ناک کے دائیں طرف جڑمیں رخسار پر اگر دانہ نکل آے تو عضلاتی قبض کی علامت ہے
      • ناک کے دائیں طرف اندرونی حصہ میں دانہ نکل آئے تو نقرس کی علامت ہے
      • معدے سے کوئی چیز اچھل کر ناک کی طرف آئے تو تیزابیت کی علامت ہے
      • زبان پر سفید تہہ یا سفید دانے ہونا ضعف ہضم کی دلیل ہے اور اعصابی تحریک ہے
      • زبان پر کٹ پڑنا عضلاتی تحریک کی علامت ہے
      • زبان پر بھوری زرد تہہ چڑھنا ٹائیفائیڈ کی علامت ہے تحریک غدی عضلاتی ہے
      • منہ کھولتے ہی بدبو آنا شوگر یا مسوڑھوں کی علامت ہے تحریک عضلاتی اعصابی ہے
      • زبان متورم ہونا عضلات کے متورم ہونے کی دلیل ہے
      • عام صحت مند آدمی اگر بات کرتے ہوے اٹکتا ہو تو عضلات اللسان میں تشنج یا گردہ میں پتھری ہے
      • زوردار آواز میں سوتے ہوئے خراٹے آنا تبخیر معدہ ،گیس کی وجہ ہے تحریک عضلاتی ہے
      • مستقل ہاتھ پاوں ٹھنڈے رہنا لو بلڈپریشر،کمی خون،جریان،سیلان مزمن اعصابی کی علامت ہے
      • ہاتھ پاوں اور سارے جسم پر کثرت سے پسینا آنا تسکین قلب کی علامت ہے
      • ناخن او ر ہاتھ سفید یا پیلے نظر آنا کمی خون کی علامت ہے
      • ناخنوں پر سفید نشان ہونا کیلشیم کی کمی کی علامت ہے تحریک اعصابی ہے
      • ناخن پر مستقل کٹ رہنا وجع المفاصل نقرسی کی علامت ہے
      • ناخن پر سیاہ لکیریں،کنارے نتھوریں پھوٹنا، ناخن جھڑنا کثرت سودا اور عضلاتی تحریک کی علامت ہے
      • ہاتھ پاوں سن ہو جانا تسکیں کبد کی علامت ہے
      • ہاتھ پاوں کی انگلیوں کے سرے سن ہونا پیشاب میں کیٹوں خارج ہونے کی دلیل ہے
      • ناخن پھٹے ہوئے نظر آتے ہوں تو یہ بواسیری زہر کی علامت ہے
      • ہاتھ پاوں کی انگلیوں کے جوڑ اوپر سے سیاہ نظر آتے ہوں تو نقرسی مواد کی علامت ہے
      • خام کشتے اور شدید انٹی بائیوٹک کھانے سے جلد کا رنگ خاکستری ہو جاتا ہے
      • جلد پر جھریاں پڑنا پروٹیں کی کمی کی دلیل ہے
      • جلد کا مردگی دکھائی دینا کثرت اسہال یا کثرت پیشاب کی علامت ہے
      • سیاہ تل یا سرخ موہکے بواسیری زہر کی وجہ سے نکلتے ہیں
      • بواسیری زہر سے سر کے بال درمیان سے گر جاتے ہیں
      • آتشکی زہر سے سارے سر کے بال گر جاتے ہیں
      • انگلیوں کے درمیانی حصے گلے رہنا ،کان کے پیچھےزخمدار خارش فنگس کی علامت ہے
      • سر میں پھنسیاں سوزش امعاء کی دلیل ہیں
      • اگر بخار کے چار دن بعد دانے نکل آئیں اور ین میں پیپ نہ پڑےصرف پانی ہو اور پت نما ہوں تو یہ خسرہ کی علامت ہے
      • اگر بخار کے پانچویں دن جلد پار دانے نکل آئیں تو یہ ٹائیفس فیور کی علامت ہے
      • اگر بخار میں دانے ساتویں روز نکلیں تو یہ ٹائیفائیڈ کی علامت ہے
      • جلد پر گلٹی بغیر درد کے عضلاتی اصابی تحریک کی علامت ہے
      • جلد پر گلٹی درد والی عضلاتی غدی تحریک کی علامت ہے
      • گردن کے اوپر نیچے دائیں بائیں گلٹی نکلنا اکثر دقی مادے کی علامت ہوتی ہے

      نوٹ: یہ علامات تشخیص میں مددگار تو بن سکتی ہیں مگر مکمل تشخیص کیلیے نبض و قاروہ کی جانچ بہت ضروری ہے
     
    • معلوماتی معلوماتی × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  8. حکیم ایم رضوان

    حکیم ایم رضوان محفلین

    مراسلے:
    16
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    کمال علم و فنِ طب -- مجددِ طب حکیمِ انقلاب جناب دوست محمد صابر ملتانی ؒ

    یہ حقیقت مسلمہ ہے کہ علم و فن طب بلکہ ہر علم و فن کا کمال یہ ہے کہ اس میں یقینی صورتیں قائم ہو جائیں جس سے ان کو سمجھنے اور ذہن نشین کرنے میں سہولتیں اور آسانیاں پیداہو جائیں ۔ یہ اس وقت عمل میں آسکتا ہے جب اصول و قواعد مقرر کئے جائیں اور یہ اصول و قواعد کسی قانون فطرت کے مطابق ہوں ۔کیونکہ قانون فطرت قدرت خدا وندی کی طرف سے ہدایت و رُشد اور نعمت ہے جس میں سلامتی ہے اور اس کے اعمال کے نتیجہ میں کبھی تبدیلی واقع نہیں ہوتی ۔ اسی امر کو قرآن حکیم نے اس طرح واضح کیا ہے لاتبدیل لخلق اللہ ’’اللہ تعالیٰ کی تخلیق میں کبھی تبدیلی واقع نہیں ہوتی ‘‘اور دوسری جگہ تاکیداً کہا گیا ہے لن تجدلسنت اللہ تبدیلا ’’اللہ تعالیٰ کے کسی عمل میں کبھی کوئی تبدیلی ہرگز ممکن نہیں ہے‘‘ ۔اس حقیقت کا مقصد یہ ظاہر کرتا ہے کہ قانون فطرت قدرت کے تحت عمل کرتا ہے اور اس کے اعمال میں کبھی بھی تبدیلی ممکن نہیں ہے اس لئے جو اعمال اس کے مطابق ہوں گے وہ نہ صرف یقینی اور بے خطا ہوں گے بلکہ ان میں سلامتی اور امن بھی بلا شک و شبہ کے ہوگا ۔ یہی علم و فن کا کمال ہے ۔
    اسی حقیقت کو پانے کے لئے اہل علم اور صاحب فن نے ہمیشہ تلاش و جستجو اور تحقیق و تدقیق جاری رکھی تاکہ علم و فن میں یقینی اور بے خطا نتائج پیدا ہوں اور اس کا کمال حاصل ہوسکے ۔ اس لئے قرآن کریم نے جہاں اپنی ابتدا میں یہ کہا ہے کہ ذالک الکتب لاریب فیہ ’’اس کتاب (کے علم و حکمت ) میں کسی قسم کا شک و شبہ نہیں ۔ وہاں جب اس کے علم و حکمت اور رشد و ہدایت کو ختم کیا ہے تو لکھ دیا ہے،الیوم اکملت لکم دینکم ’’آج کے دن ہم نے تمہارے دین (عمل ورد عمل ) کو کمال تک پہنچا دیا ‘‘گویا کمال حاصل کرنا انسانی نفسیات میں داخل ہے ۔
    یہی وجہ ہے کہ گذشتہ ہزاروں سالوں سے علم و حکمت اور رشدو ہدایت کی حقیقت کے کمال کو حاصل کرنے کے لئے انسان خصوصاًحکماء و فلاسفہ اورمحققین جدو جہد میں مصروف ہیں ۔ اس لئے ہرزمانہ اور دور میں خاص قسم کے علوم و فنون اور تحقیقات سامنے آتی رہیں ۔ کبھی یونانیوں نے اپنے علم و فن اور فلسفہ و حکمت کو فخر سے ظاہر کیا ۔کبھی اسلامی دور نے اپنی تحقیقات کے کمالات کوپیش کیا ۔اور یہ کمالات یونانیوں کے علم وفن اور فلسفہ و حکمت کی بنیادوں پر تحقیق و تدقیق اور تلاش و انکشاف پر کئے گئے اور یہاں تک کئے گئے کہ مزید کوئی گنجائش نہیں چھوڑی ۔ ان تحقیقات و تدقیقات اور انکشافات میں صرف مادی جدو جہد کو دخل نہیں بلکہ روحانی طور پر الہام و کشف اور قرآن کریم اور حدیث شریف سے بھی استفادہ اور یقین حاصل کیا گیا ۔ جس کے نتیجہ میں علم وحکمت اپنے کمال کی بلندیوں پر پہنچ گئے ۔
    جب فرنگی دور آیا تو انہوں نے اپنے علم و فن تحقیق و تدقیق اور تلاش و انکشاف کی بنیاد تجربہ و مشاہدہ اور تجربہ و تحلیل پر رکھی (جس کا نام سائنس اور ریسرچ رکھاگیا )اور نئے سرے سے علم و فن اور حکمت و طب کو سمجھنے کی کوششیں شروع کردیں اور یونانی و اسلامی دور کی تحقیقات و تجربات اور مشاہدات و بنیادوں کو نظر انداز کردیا ۔ یہ عمل انہوں نے نفرت اور تعصب سے کیا اس دور کی تحقیقات اور واقعات نے ان کا رخ اس طرف پھیر دیا۔ انہوں نے اپنی ابھرتی طاقت اور جذبہ میں یہ حقیقت فراموش کر دی کہ یونانی اور اسلامی دور کے کمالات کہاں تک پہنچ گئے تھے ۔ دوسری طرف ہندوستان میں ایورویدک جو اپنے آپ کو الہامی طب کہتی ہے اور باکمال سمجھی جاتی ہے ۔جس کا ثبوت یہ ہے اسلامی دور میں اس سے پورے طور پر استفادہ کیا گیا ۔ ظاہری طور پر دونوں میں مماثلت بھی پائی جاتی ہے ۔ مگر فرنگی حکومت نے ایورویدک کے کمالات کو بھی نظر انداز کر دیا ۔ نتیجہ یہ ہوا کہ گذشتہ ہزاروں سالوں کی تحقیقات و تدقیقات اور تجربات و مشاہدات کے ساتھ ساتھ روحانی کمالات اور الہامی انکشافات سے بھی محروم ہوگیا ۔اور اس کا رخ مادیت سے آگے نہ بڑھ سکا ۔
    ان کے علاوہ ان میں تین رجحانات ایسے پیدا ہوئے کہ ان کو قدیم علوم و فنون کی خوبیوں سے بہت دور کر دیا اور خود ایسے مقام پر پہنچ گیا ہے جہاں سے واپس آنا مشکل ہے اس کا علاج اس کی خود کشی یا ایٹم بم سے تباہی ہے ۔ وہ رجحانات یہ ہیں:
    1. جراثیم کی تلاش جس کی معلومات سے قدیم علوم و فنون کے کمالات سے استفادہ کا سوال ہی ختم ہوگیا ۔
    2. روحانیت سے انکار اور مادیت پر اصرار جس کے نتیجہ میں دین سے فرار عمل میں آگیا ۔
    3. اخلاق کی بنیاد حظ پر قائم کردی گئی۔ جس سے ہر فر د اور جماعت لذت و لطف اور عریانی کی طرف مائل ہوگئی ۔اب روز بروز اسی اخلاق پر اصرار کیا جارہا ہے ۔اور جو فرد یا قوم اس اخلاق کو اختیار نہیں کرتا اس کو غیر مہذب اور وحشی کہا جاتا ہے۔اب یہ بداخلاقی اور بد تہذیبی اپنے کمال کو پہنچ گئی ہے ۔
    ہم نے سولہ برس تک فرنگی طب کے ذریعے مریضوں کا علاج معالجہ کیا ہے جس میں کوئی دس سال طب جدید کے بھی شامل ہیں اور خاندانی طریق علاج طب یونانی تھا جس میں ایورویدک بھی شریک ہے اس کے علاوہ ہومیو پیتھی کو باقاعدہ حاصل کیا گیا ۔ مگر باوجود ان تمام علوم و فنون اور طریق علاج کے علاج معالجہ میں یقینی مقام اور صحیح بصیرت حاصل نہ ہوئی اس کی چند وجوہات بھی تھیں جن کا علم بعد میں ہوا ۔ اول وجہ یہ کہ خاندانی طریقہ علاج یونانی اور ایورویدک تھا مگر مطب فرنگی طریق اور انگریزی ادویات سے کیا جاتا تھا ۔ اس وجہ سے طب اور ایورویدک پر غور و خوض کا ان دنوں موقعہ ہی نہیں ملا تھا ۔
    دوسری حقیقت یہ تھی کہ ابتدائی چند سالوں میں طب جدید سے تعلق پیدا ہوگیا جس میں طب اور ایورویدک کو غلط ثابت کیا گیا ۔ علاج زیادہ تر فرنگی طب اور ہومیو پیتھی طریق پر کیا جاتا تھا ۔ قدرت کو کچھ ایسا ہی منظور تھا کہ طب اور ایور ویدک پر بعد میں غور وخوض اور تحقیقات کی جاسکے ۔ غرض سولہ سال کے بعد جب یہ یقین ہوگیا کہ جس طریق پر ہم علاج معالجہ کر رہے ہیں یہ غیر یقینی اور بے اصولاہے ۔ بلکہ اندھیرے میں تیر چلانا ہے ۔یہ بنی نوع انسان کے لئے نقصان کا باعث ہے ۔ بہتر ہے کہ اس کو چھوڑ کر کوئی اور کام کیا جائے کیونکہ غلط علاج میں ضمیر میں ندامت ،دوسروں سے شرمندگی اور خدا اور رسول کی ناراضگی ہے ۔
    جب یہ طریقہ علاج چھوڑنے کا پختہ ارادہ کرلیا تو ایک مریض ہیضہ کے علاج کا اتفاق ہوا ۔ اس میں پہلے ناکامی ہوئی ۔ مگر جب طب اور ایورویدک کے اصول کے تحت پھر علاج شروع کیا تو مریض بہت جلد اچھا ہوگیا ۔ اس واقعہ سے دور ایک روشنی نظر آئی پھر اس پر غور و فکر شروع کردیا ۔ اس سے یہ روشنی قریب آتی گئی اور اس طرح نظریہ مفرد اعضاء نے جنم لیا ۔ جس کے تحت بیس سال تک طب و ایورویدک اور فرنگی طب و ہومیوپیتھی پر تحقیقات کرتا رہا اور ساتھ ساتھ علاج معالجہ میں بھی یقینی اور بے خطا اصول اور صورتیں سامنے آتی گئیں پھر ان کی اشاعت اور تبلیغ شروع کردی گئی اور تقریبا عرصہ بارہ سال سے نظریہ مفر داعضاء کے تحت علم و فن طب دنیا کے سامنے پیش کیا جارہا ہے ۔

     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  9. حکیم ایم رضوان

    حکیم ایم رضوان محفلین

    مراسلے:
    16
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    مسلّمہ حقیقت ---- حکیمِ انقلاب مجددِ طب جناب دوست محمد صابر ملتانی

    یہ ایک مسلمہ حقیقت ہے کہ جس علم و فن میں تجدید و احیاء کا سلسلہ قائم نہیں رہتا وہ فنا اور ختم ہو جاتا ہے ۔ کیونکہ دنیا میں ہمیشہ تغیر و تبدل ہوتا رہتا ہے اور نئی نئی دریافتیں بھی ہوتی رہتی ہیں ۔جن کو علوم و فنون کی کلیات و جزئیات سے جوڑنا، نکھارنا اور ان میں حسن پیدا کرنا پڑتا ہے باقی علوم کو تو چھوڑئیے خود دین میں بھی تجدید ہوتی رہتی ہے اور اس بارے میں مذہب اسلام کی چودہ سو سالہ تاریخ ہمارے سامنے ہے ۔مثلاً امام غزالی نے فلسفہ یونان کی یلغار کو روکا اور اس کے متبادل زمانہ کے حالات کے مطابق دین کو سمجھایا ۔ اس طرح اگر سیاست ،اخلاق ، حکمت ،فلسفہ اور معاشرت کی طرف توجہ نہ دی جائے تو یہ علوم بھی رفتہ رفتہ ختم اور فنا ہوجاتے ہیں۔
    ایک بات جو خاص طور پر توجہ طلب ہے وہ یہ ہے کہ فنون کی تجدید و احیاء حفظ و بقا و ارتقا کی طرف اس وقت توجہ دی جاتی ہے یا ان کی ضرورت اس وقت محسوس ہوتی ہے جب کبھی کسی متبادل متحارب یا مخالف نظام سے ٹکر ہوجائے اسلام میں بھی تجدید اسی وقت ہوئی جب دیگر فلسفوں نے اس سے ٹکر لی اور امامین نے ان کی غلطیوں کو واضح کیا اور اسلام کی خوبیوں کو نمایاں کیا۔
    میں نے طب قدیم میں تجدید و احیاء کا کام کیا ہے یہ علم و فن ہزاروں سال پرانا ہے ۔بابل ونینوا ،مصر و چین اور یونان و ہند وغیرہ کی مختلف تہذیبوں میں یہ فن زمانہ کی رفتار کے ساتھ ساتھ ترقی کرتا چلا گیا ۔جو اسلام کی روشنی سے منور ہو کر تمام عالم میں ایک فنی آب و تاب سے پھیل گیا ۔ اس کی ٹکر کسی متبادل نظام سے نہیں ہوئی تھی لیکن انگریز کی رہبانی اور مکارانہ ذہنیت کے مظاہرہ کے ساتھ دیگر فنون کی طرح اس فن کو بھی حادثہ پیش آیا ۔ خاص کر ہمارے ملک میں جب فرنگی غدار فاتح کی حیثیت سے وارد ہوا تو اس نے یہاں کے باشندوں کو ذہنی و علمی اور فنی غرض کہ ہر لحاظ سے غلام بنانے میں کوئی کسر اُٹھا نہ رکھی ۔اور یہ حقیقت ہے کہ غلاموں کے علوم و فنون ،سیاست و معاشرت ،معیشت و اخلاق غرضیکہ سب کچھ فاتح کی مرضی کے تابع ہوتا ہے ۔اسی طرح فرنگی کی آمد سے فرنگی کا علم و فن ، سیاست و اخلاق تیزی سے پھیلنے لگا ۔
    ان کی سیاست کے ساتھ ساتھ معاشرہ میں ان کا فلسفہ اور ملک میں ان کا طریقہ علاج رائج ہوا ہر فرد ان راہوں کی سوچنے لگا جن سے اس کا مرتبہ بلند اور حکومت سے تعلق ہو اس لئے حکومت کی ہر جائز و ناجائز بات تسلیم کی جانے لگی ۔
    محکوم قوم نے ان کا لباس ،وضع قطع ،اخلاق ،سیاست ، معاشرت اور فنون کو اندھا دھند اپنا لیا اور نتیجتاً اپنے علوم و فنون فراموش کر بیٹھی ۔ ہمارے اچھے اور ذہین لوگ ختم ہوتے چلے گئے اور نئی نسلوں نے ایم ۔اے ۔ وغیرہ کر کے باہر جانا شروع کر دیا ملک میں واپس آکر دیکھا کہ فرنگی اپنی تہذیب میں رنگے ہوئے ان نوجوانوں کی توقیر کرتا ہے تو انہوں نے اپنی تہذیب و تمدن کو چھوڑ دیا اور فرنگی تہذیب کو پھیلانے میں اپنی تمام قوتیں صرف کردیں ۔
    سائنس کو اس طرح پیش کیا جانے لگا کہ گویا یہ مذہب سے بھی بلند و برتر ہے جس کی چکا چوند کو ہمارے علماء و فقہا نے بھی قبول کر لیا اور دین میں کمال رکھنے والوں نے سائنس کے اس سیلِ رواں کے سامنے سر جھکا دیا۔ یہ سب کچھ غلامانہ ذہینت کی بنیاد پر بلا تحقیق ہی قبول کرلیا گیا ورنہ اگر تحقیق کرتے تو قرآن حکیم کی عظمت ان پر ظاہر ہوجاتی اور حکمت و سائنس خود قرآن میں نظر آجاتی لیکن افسوس کہ لوگ اصل حقائق بھول گئے اور اُلٹا طب قدیم کو جنگلی اور وحشی طریقہ علاج ثابت کیا جانے لگا۔یہ ذہنیت مسلسل تین سو سال لگاتار کوششوں سے پیدا کی جو علم و فن کی تباہی کا پیش خیمہ تھی۔
    سب سے بڑی دکھ کی بات یہ ہے کہ خود اطباء و معالجین اور حکماء نے فن کو نظر انداز کردیا اور فرنگی طریق علاج کو اپنایا ۔ حتیٰ کہ جگادری اور ماہرین فن ہونے کے داعی اس سیلاب میں بہہ گئے ۔ عوام کا رونا کیا رویا جائے(جگادری حکیم) فرنگی ادویہ برتتے ہیں ۔ جبکہ انہوں نے ان ادویہ کو طبی کلیات سے نہ تو تطبیق دی اور نہ ہی مزاج و کیفیات کے علاوہ فرنگی طریق پر انہیں سمجھتے ہیں ۔
    چونکہ یہ قانون قدرت ہے کہ ہر کمالے راز والے اورز والے راکمالے ، اللہ تعالیٰ کے اسی قانون کی صداقت کے لئے طب یونانی کے زوال اور فرنگی طب کے کمال کا جادو توڑنے کے لئے اللہ تعالیٰ نے مجھے آگے بڑھایا تاکہ فن طب میں از سر نو زندگی پیدا ہو ۔لہذا میری زندی کا مقصد اور میری تمام کوششیں تجدید طب اور احیائے فن کے لئے ہیں میں فن کو زندہ کرنے آیا ہوں کیونکہ فن طب ختم ہو رہا تھا اور دنیا میں ایک نیا ذہن ابھر آیا تھا جو شکست خوردہ ذہنیت کا مظاہرہ تھا ۔وہ یہ تھا کہ اب تجدید فن اس کا نام رکھا جائے کہ فرنگی تحقیقات کو بلا کسی اصول اور قاعدے کے اپنایا جائے اور تمام فرنگی ادویات و آلات کو یونانی میں ضم کر دو ۔
    لیکن یاد رکھیں کہ طب یونانی اور فرنگی طب میں اصولی و بنیادی طور پر بعد المشرقین ہے ۔ ان ابنیادی و اصولی اختلافات کو طے کئے بغیر ہمارے نادان دوستوں نے فن کو برباد کرنا شروع کر دیا ہے اور ایک دوسرے کو خلط ملط کردیا ہے کیونکہ ان میں سے ایک طب مزاج واخلاط اعضاء کے افعال کے تحت ازالہ مرض کرتی ہے ۔تو دوسری جراثیم کے نظریہ کے تحت ۔یہ سب اصول ایک دوسری طب میں خلط سمجھے جاتے ہیں ۔
    پھر طب میں ہزاروں سالوں سے ادویہ کے جو مزاج تھے وہی آج بھی تسلیم کئے جاتے ہیں ۔وہی خواص ہیں لیکن فرنگی طب میں ہر پانچ سال بعد نئی ادویہ و مرکبات کی با زار میں آ مد پر پرا نی غلط قرا ر پا جا تی ہیں ۔ اور یہ دعویٰ کیا جاتا ہے کہ سات ہزار ماہر ڈاکٹروں نے اب یوں ارشاد کیا ہے ۔کونین اور اسپرو کے ہزاروں مرکبات اس بات کے شاہد ہیں ۔لہذا یہ کمال فن نہیں ہے بلکہ زوال فن ہے ۔
    طب یونانی میں یہ نہیں ہے کہ اب سات ہزار ڈاکٹر اٹھ کر کسی چیز کو صحیح یا غلط قرار دے دیں تو وہ تسلیم کر لی جائے کہ اس فن کا کمال یہ ہے کہ ہزاروں سال قبل بقراط ،رازی ،جالینوس اور ابن سینا اجوائن ،نمک ،مرچ وغیرہ کے جو مزاج و خواص اور افعال و اثرات بیان کر چکے ہیں ،انہیں آج تک کوئی نہیں جھٹلا سکا ۔
    طب یونانی کا مدارِ مزاج کوئی لمبا چوڑا بھی نہیں ہے جسے سمجھنا ناممکن یا مشکل ہو ۔ یہ بڑا مختصر اور جامع ہے جسے ہر بچہ اور بوڑھا جانتا ہے اور سمجھتا بھی ہے ۔ یہ صرف چار کیفیات ہیں جو گرمی سردی اور خشکی و تری ہیں یہی بیماری کی وجہ ہیں اور انہیں کا اعتدال اور کمی بیشی دور کرنا علاج ہے ۔ لیکن فرنگی طب نے چرس ،افیون ،بھنگ اور دھتورہ جیسی نشیلی ادویہ کو معمول بنا رکھا ہے جو نہ صرف عارضی اور علامات کو رفع کرنے والی ادویات ہیں ۔بلکہ رد عمل کے طور پر مہلک اور تباہ کن اثرات کی حامل ہیں اور ان کی مضرت سے بے خبر شہر سے دیہاتوں تک وبا کی شکل میں ان کو پھیلا دیا گیا ہے ۔
    دوستو! فرنگی طب کے پاس ٹی بی ۔شوگر اور بلڈ پریشر تو چھوڑئیے ،نزلہ زکام کا بھی کوئی علاج نہیں ہے ۔دوسرے یہ امراض نہیں بلکہ علامات ہیں ۔وہ اس حقیقت کو بھی نہیں سمجھتے ۔طب یونانی میں جہاں دواؤں کے مزاج ہین وہاں امراض و اعضاء کے بھی مزاج ہیں جن کا علاج آسان ترین ہے ۔ حتیٰ کہ اکثر و بیشتر امراض میں تو حاذق اطباء صرف غذا کے ہیر پھیر سے علاج کر لیتے ہیں ۔ اب جو میٹھے سے آرام حاصل کر سکتا ہے اسے کیا ضرورت ہے کہ زہر کھاتا پھرے ۔
    ہم صرف عضو و پرزہ کے فعل کو ازروئے مزاج درست کردیتے ہیں ۔کیونکہ اعضاء و اخلاط میں کوئی فرق نہیں ہے ۔ یہ صرف قوام و استحالہ کی فرق ہے ۔ کیونکہ جب اخلاط مجسم ہوتے ہیں تو اعضاء بنتے ہیں ۔اب طبیب جہاں ادویہ کے مزاج سے آگاہ ہے وہاں وہ اخلاط و اعضاء کے مزاج سے بھی واقف ہے ۔لیکن نیا طبقہ ڈاکٹروں کے ٹھاٹھ دیکھ کر فریفتہ ہو جاتا ہے ۔یا سو سو روپے کی دوا اور رقم کا نفسیاتی اثر ہوتا ہے ۔ جب کہ سمجھدار حکیم سونف ، اجوائن،مکھن وغیرہ سے وہی کام لیتا ہے ۔
    حد تو یہ ہے کہ حیوانات کے لئے ادویات ہوں یا فصلوں اور نباتات کے لئے کھادیں ،سب کچھ یورپ سے منگوایا جاتا ہے ۔ مرغی اور گائے کو لگانے کے لئے ٹیکے بھی یورپ سے درآمد کرنے پڑتے ہیں ۔ ملکی دوائیں چھوڑ کر غلط طور پر ان کے پیچھے بھاگے چلے جارہے ہیں اور جب ادھر سے مکمل طور پر مایوس ہوجاتے ہیں تو پھر طبیب کا رخ کرتے ہیں۔
    ہمارے ہاں ایک طبقہ اصحاب خلیط کا ہے ۔میری مراد ان بوجھ بجھکڑوں سے ہے جو ان دواؤں کی ترویج کی کوشش اس وقت جزو ایمان سمجھتے ہیں جب وہ یورپ میں بے اثر ثابت ہو کر متروک ہو چکی ہوتی ہیں ۔
    میں نے احیائے فن کے لئے پچیس سال تک تحقیق کیا ہے اور اللہ تعالیٰ کی مہربانی سے نظریہ مفرد اعضاء کو پا لیا ہے یہ نظریہ کوئی نئی چیز نہیں ہے بلکہ طبی قوانین میں سے ہی ایک قانون ہے کیونکہ تجدید کا مطلب فن کو خس و خاشاک سے پاک کرنا ہوتا ہے ۔کوئی نئی چیز نہیں ہے ۔اور تحقیق کی بنیاد بھی اگر طبی قانون پر ہی ہو تو کامیاب تجدید ہو سکتی ہے ورنہ نہیں ۔ اس لئے میں نے بارہا دوستوں کو دعت دی ہے اور اب بھی دیتا ہوںکہ یا تو اس سے اچھا نظریہ پیش کریں میں ان کے ساتھ کام کرنے کو تیار ہوں ورنہ وہ میرے ساتھ آملیں کیونکہ ملک اور قوم کا مفاد اسی میں ہے ۔
    دوستو! ہم دولت اکٹھی کرنے نہیں بلکہ خدمت کرنے آئے ہیں اور مریضوں کو بھی یہی ہدایت کرتے ہیں کہ حرص و طمع کو چھوڑدو ۔اللہ تعالیٰ کو ناراض نہ کرو ۔بھوک ہو تو کھاؤ ۔بلاضرورت اور بھوک کے بغیر کھاؤ گے تو امراض کی آماجگاہ بن جاؤ گے۔ اور بلا ضرورت کھانے سے ہاتھ کھینچ لو گے تو اس وقت سے شفا ہونا شروع ہوجائے گی ۔اور تین دن میں مکمل آرام ملے گا یہ یقینی امر ہے اور اس میں اعجازِ مسیحائی ہے ۔یہی قانون فطرت ہے ۔
    قدرت نے ہمیں فن بخشا ہے ۔۔۔۔اور فن بھکاری یا کسی کا محتاج نہیں ہوتا ۔ہم فن ہی کی لاج کے لئے آج تک امرأ و وزراء سے نہیں ملتے بلکہ صحیح راستہ دکھاتے ہیں۔
    ہم نے بار بار حکومت کو مشورہ دیا ہے کوہائی کورٹ کے ججوں کی نگرانی میں سائنسی اور فنی ماہرین کو بلا کر مناظرہ کروالے ہم فرنگی طب کو غلط ثابت کر دکھائیں گے اور اس غلط فن کو اپنانے سے ملک و قوم کی جو دولت برباد ہو رہی ہے وہ دیگر رفاہی کاموں میں صرف ہو سکے اور قوم کو صحت کی نعمت بھی میسر ہو اور نشیلی ادویہ کا استعمال ختم کرایا جا سکے اور بلا خرچ چند کوڑیوں میں پبلک ہیلتھ بحال کی جا سکے ۔ لیکن اس نے اس طرف کوئی توجہ نہیں کی ۔ لہذا ہم عوام اطباء سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ صحیح فن کو اپنائیں اور اسے دوسروں تک بھی پہنچائیں ۔افسرانِ بالا کو صحیح فن سمجھائیں اور قوم کا کامیاب کرائیں ۔
    یہ مسلمہ حقیقت ہے کہ تجدید کے بغیر فن مردہ ہوجاتے ہیں اور ہم نے فن میں تجدید کی ہے جو فطری اصولوں کے عین مطابق ہے اور ساتھ ہی ثابت کیا ہے کہ فرنگی طریق علاج عطائیانہ اور غلط ہے ۔
    وما علینا الاالبلاغ
    (ماہنامہ رجٹریشن فرنٹ لاہور جنوری ۱۹۷۱ء)

     
    • زبردست زبردست × 2
  10. حکیم ایم رضوان

    حکیم ایم رضوان محفلین

    مراسلے:
    16
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    بحضور حکیمِ انقلاب ؒ -- حکیم دلاور علی بھلی

    آج ۲۷ اپریل ۱۹۷۰؁ء پیر کا دن ایک تاریخی دن ہے ۔اور یہ اجتماع علم و فن طب کے لئے تاریخ ساز بھی ہے ۔ آج ہمارے سر فخر سے بلند ہیں اور ہمارے دل جذبۂ خود اعتمادی سے معمور ہیں ۔ آخر ایسا کیوں نہ ہو آج اقلیم طب کی نظریاتی سرحدوں کا محافظ ،سفینۂ طب اسلامی کا نا خدا ،کائنات تحقیق فن کا مہر منور ،مایوس العلاج مریضوں کا مسیحا،عظمت اسلاف کا مظہر ،عروج مشرق کا مبشر اور غیرت و حمیت فن کا پیمبر ہمارے درمیان جناب حکیم انقلاب المعالج صابر ملتانی صاحب کی صورت میں جلوہ افروز ہے۔ بلکہ ہماری خوش قسمتی کی انتہا ہے کہ آج کنواں پیاسوں کے پاس خود آپہنچا ہے اور ساقی بادۂ علم و فن سے لبریز جام ہاتھ میں لئے تشنۂ لبوں کی تلاش میں ہمارے دروازوں پر دستک دینے کے لئے خود تشریف لے آیا ہے ۔
    حضرات !یہ ایک مسلمہ حقیقت ہے کہ طب اسلامی بلاشرکت غیرے صدیوں تک علمی و فنی عظمتوں کی بلندیوں پر فائز رہی ہے اطباء کی علمی و فنی دسترس ،تحقیق و تدقیق کا مثبت رجحان ، حکومت کی سرپرستی اور عوام کا اعتماد اسے حاصل رہے ہیں لیکن برصغیر پاک و ہند میں فرنگی حکومت کے قیام کے بعد حالات میں انقلابی تبدیلیوں نے جنم لینا شروع کر دیا ۔ انگریز نے مغربی علوم و فنون کی بالا دستی ،اپنی مصنوعات کی کھپت اور مقبوضہ علاقوں کے مالی استحکام کے مقاصد کے حصول کی خاطر تمام مقامی علوم و فنون اور علم و فن کے خاتمہ کے لئے ہر ممکن طریقۂ کار اختیار کیا ۔علم و فن طب بھی انگریز کے استحصالی ہتھکنڈوں سے محفوظ نہ رہ سکا ۔
    معزز حاضرین!مادی وسائل کی کمی کسی قوم کی ذہنی غربت اور افلاس کا معیار نہیں ہے ۔بلکہ کوئی قوم حقیقی معنوں میں اس وقت قلاش اور مفلس کہلاتی ہے جب وہ اپنے مخصوص دینی عقائد و روایات اور تہذیبی و ثقافتی ورثہ سے تہی دامن ہو جاتی ہے۔ اس قوم کی حالت اس کٹی ہوئی پتنگ سے مختلف نہیں ہوتی جو آوارہ و سرگرداں بے رحم ہواؤں کے دوش پر آسمان کی وسعتوں میں بھٹکتی پھرتی ہے ۔ ماضی سے بیگانگی ،حال کی آشفتگی اور مستقبل کی مایوس تاریکیاں ایسی قوم کا تہذیبی مرقع ہوتی ہیں ۔اور پھر اس مرقع میں بیرونی تحریکات اور خارجی نظریات کے غالب اثرات بھی جا بجا بکھرے ہوئے نظر آتے ہیں ۔ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ یہ اثرات گہرے ہوتے چلے جاتے ہیں ۔اور ایک وقت ایسا بھی آجاتا ہے جب ملی و قومی افکار و نظریات کو اپنا کر اپنا قومی تشخص کھو بیٹھتی ہے ۔
    علم وفن طب اسلامی کے میدان میں بھی ہمارے ساتھ یہی کچھ ہوا ہے ۔ انگریز کے سامراجی اور سازشی ہتھکنڈوں کے تحت اس کی اصلی شکل و صورت کو مسخ کرنا شروع کر دیا گیا اور اس میں اکثر اطبائے کرام بھی آہستہ آہستہ شامل ہوتے گئے ۔ کچھ توذاتی مصلحتوں کے تحت ،کچھ سادہ لوحی کے سبب اور کچھ عام رجحانات کی تاب نہ لا سکنے کے باعث ۔ اور نوبت بایں جارسید کہ ملک میں اطباے کرام کی بجائے طبیب نما ڈاکٹر جنم لینے لگے اور ان کے ہاتھوں میں مریض کی نبض کی بجائے سٹیتھو سکوپ اور تھرمامیٹر نظر آنے لگے اس کا نتیجہ یہ نکلا کہ اطباء حضرات کی غالب اکثریت اصلی علم و فن طب سے بیگانہ خود اعتمادی سے محروم ،علمی و فنی عظمتوں سے بے بہرہ اور تحقیق و تدقیق سے نابلد ہونے کے باعث معاشرہ میں کسمپرسی کا شکار ہو گئی اور علم و فن طب اپنی صدیوں کی عظمت سے محروم ہوگئی ۔ اور اس کی بے روح لاش پر طب فرنگی کا کفن پہنا دیا گیا ۔ اور ستم بالائے ستم یہ کہ اس صورت حالات کو باعث فخر اور ارتقائے طب کا ضامن سمجھ لیا گیا ۔ لیکن طب اور اطباء کی بد قسمتی یہاں ہی ختم نہیں ہو جاتی بلکہ رجسٹریشن ایکٹ ۱۹۶۵؁ء کے ذریعہ اس تابوت میں آخری میخ لگانے کی انتہائی گھناؤنی سازش کی گئی اور معاشرہ میں انتہائی قابل احترام اطباء حضرات کو ایک جرائم پیشہ گروہ کی حیثیت دے دی گئی ۔
    لیکن قدرت کو یہ منظور نہ تھاکہ انبیاء اور اولیاء کی یہ وراثت دم توڑ کر ابدی نیند سو جائے ۔ مشیت ایزدی کے مطابق مشرق کا عروج واضح طور پر نظر آرہا ہے ۔اس لئے قدرت خود بخود ایسے حالات پیدا فرما رہی ہے کہ مشرق کے مکمل غلبہ کے لئے اس کے علوم و فنون کی تکمیل ہوجائے ۔ یہ تکمیل کادور ہے اور ہمارے علوم و فنون کی تکمیل لازم ہے ۔ علم و فن طب پر چھائی ہوئی مایوسیوں اور نامرادیوں کی ان طلسمات کو پاش پاش کرنے کے لئے دست قدرت نے افق مشرق سے خورشید تاباں کے طلوع کی صورت پیدا فرما دی اور مہر صابری نمودار ہوا جس کے ذمے طب اسلامی کی گم شدہ علمی و فنی عظمت کو از سر نو بحال کرنے کا فریضہ ہی نہیں بلکہ اس کو انتہائی ارتقائی بلندیوں تک پہنچانا بھی مقصود ہے ۔ جب حکیم انقلاب نے عمر عزیز کا ایک معتدد بہ حصہ غور و فکر کرنے کے بعد یہ دعویٰ کیا کہ تمام دنیا کے مختلف طریقہ ہائے علاج میں صرف طب اسلامی ہی صحیح طریق علاج ہے (یا پھر ایورویدک) اور اپنی معجزنما اور انقلاب آفریں تحقیق ’’نظریہ مفرد اعضاء ‘‘ کے ذریعے تجدید طب کی وہ صورت پیدا کردی ہے جس سے ایک طرف ہر مرض کا یقینی اور بے خطا علاج ممکن ہوگیا اور کوئی بیماری لاعلاج نہیں رہی اور دوسری طرف طب فرنگی اور دیگر طریق ہائے علاج کو غیر علمی اور غلط ثابت کر دیا گیا ہے ۔ آپ کا دعویٰ ہے کہ :۔
    1. اللہ تعالیٰ نے مجھے اس تصور کی نفی کے لئے پیدا فرمایا ہے کہ اعلیٰ دماغ صرف مغربی ممالک یا روس اور چین میں ہی پیدا ہوتے ہیں۔
    2. اللہ تعالیٰ نے مجھے علم و فن طب اسلامی کی تکمیل کے لئے مامور فرمایا ہے اور میں طب قدیم کا نمائندہ ہوں۔
    چیلنج

    اور پھر طب قدیم کی خارجی نظریات سے تطہیر کی خاطر آپ نے ذیل کے حقائق کو غلط ثابت کرنے والوں کو چیلنج کیا ہے:۔
    1. یہ سمجھنا قطعاً غلط ہے ہے کہ مغربی طب یعنی داکٹر ی طب یونانی کی ترقی یافتہ صورت ہے ۔البتہ ڈاکٹری اب تک طب یونانی سے ضرور مستفیذ ہو رہی ہے ۔
    2. ایسا خیال بھی درست نہیں ہے کہ دونوں طریق ہائے علاج ایک ہی قانون کے تحت کام کرتے ہیں اور دونوں کو اکٹھا کیا جا سکتا ہے ۔ایسا خیال کرنے والے طریق ہائے علاج سے ناواقف ہیں۔
    3. یہ تصور بالکل بے بنیاد ہے کہ یونانی طب کے لئے ’’قدیم ‘‘ کا لفظ صرف زبانی امتیاز اور فضیلت کے لئے استعمال ہوتا ہے جہاں تک اس کے قوانین اورا فادیت کا تعلق ہے وہ آج بھی قانون فطرت کے مطابق ہے ۔
    4. یہ عقیدہ بھی بالکل بے اصل ہے کہ یونانی طب کے قوانین ، تشخیص،خواص الادویہ اور طریق علاج وغیرہ میں مغربی طب کے ذریعے اصلاح و تجدید ہو سکتی ہے ۔
    تحریک تجدید طب

    حکیم انقلاب المعالج جناب صابر ملتانی صاحب نے تجدید طب اور اطبائے کرام کے لئے شایان شان مقام کے حصول کی خاطر ایک تحریک کی بنیاد ڈالی ۔جس کا نام تحریک تجدید طب ہے ۔ اس کے اغراض و مقاصد درج ذیل ہیں :۔
    1. یونانی طب کی فوقیت مغربی طب (ڈاکٹری)پر نمایاں طور پر واضح کرنا ۔
    2. ماڈرن سائنس کی روشنی میں مغربی طب کو عملی طریق پر غلط ثابت کرنا ۔
    3. ملکی ادویات کی خوبیوں کو بیان کرنا اور استعمال کی تحریک دینا۔ مغربی طب کی ادویات کو ظاہر کرنا ۔
    4. عوام کو مغربی طریق علاج (ڈاکٹری)کی خرابیوں سے پوری طرح آگاہ کرنا ۔
    5. یونانی طب کی غلط قیادت اور بے عمل جماعتوں کو ختم کرنا ۔
    6. ملک بھر میں فری شفا خانے اور صحیح تعلیم کے لئے علمی اور طبی درسگاہوں کا قیام عمل میں لانا ۔
    7. رجسٹریشن میں یونانی طب اور اطباء کے لئے وہی حقوق حاصل کرنا جو مغربی طب اور ڈاکٹروں کو حاصل ہیں ۔
    8. یونانی طب کا صحیح علم رکھنے والے اطباء کو ملک بھی میں پھیلانا جو مغربی طب کے غلط اصولوں سے پورے طور پر واقفیت رکھتے ہوں ۔
    9. حکومت اور عوام کو یونانی طب سے روشناس کرا کے انہیں اس فن کی سرپرستی امداد اور ہمدردی پر آمادہ کرنا ۔
    10. یونانی طب کے قوانین کے تحت اس میں ضرورت کے مطابق اصلاح و تجدید کرنا ۔
    دعوت

    حضرات !اس تحریک کے دروازے ہر اس شخص کے لئے کھلے ہیں جو اس کے اغراض و مقاصد سے متفق ہو جس کے دل میں طب اسلامی کی عظمت کے لئے تڑپ ہو اور جو اطبائے کرام کے لئے شایان شان مقام کے حصول کا خواہش مند ہو ۔ ہم اس تحریک میں شمولیت کے لئے تمام اطبائے کرام اور شائقین فن حضرات کو دل کی گہرایوں سے دعوت دیتے ہیں ۔ ہمارے سامنے صرف علم و فن طب کی عظمت کی بحالی اور اس علمی و فنی تکمیل کے مقاصد ہیں ۔
    یقین کیجئے کہ ’’نظریہ مفرد اعضاء‘‘ آپ کے تمام تر فنی مسائل کا حل پیش کرتا ہے ۔اس کو سمجھئے ۔کوئی مرض لاعلاج نہیں ہوگا اور آپ خود پیچیدہ سے پیچیدہ اور عسیر العلاج امراض مثلاً دمہ،اپنڈے سائٹس ،تپ دق و سل ، ذیابیطس (شوگر) غرضیکہ ہر مرض کا یقینی اور بے خطا علاج کامل اعتماد سے کریں گے اور آپ کے اندر وہ علمی و فنی اعتماد بحال ہوگا جس سے نہ صرف طب اسلامی کی عظمت بحال ہوجائے گی بلکہ طب مغربی یعنی ڈاکٹری کی نام نہاد بالا دستی ہمیشہ کے لئے ختم ہوجائے گی۔

     
    • زبردست زبردست × 1
  11. Zubair Hashmi

    Zubair Hashmi محفلین

    مراسلے:
    16
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Tolerant
    السلام علیکم! سب افراد کو میرا سلام۔
    میں حکیم صابر حاحب کی تمام کتب پر مشتمل ایک ویب سائٹ بنا رہا ہوں لیکن میں خود نیٹ بہت کم استعمال کرتا ہوں (مصروفیت کی وجہ سے)۔ جب میں اپنی سائٹ کو آن لائن کروں گا توسب کو معلوم ہوگا کہ نظریہ مفرد اعضاء کیا سائنسی میزان پر پورا اُترتا ہے یا نہیں۔ کسی کے بارے بغیر تحقیق و تصدیق کے بعد بات کرنا درست ہوتا ہے ؟ ہمیں یہ بات سوچنی چاہیے ۔ رہی بات تحقیق کی تو انسان ابھی تک کسی بھی علم میں حرف آخر نہ لکھا سکا اور نہ ہی لکھ سکے گا کیونکہ تحقیق کا دروازہ کبھی بند نہیں ہوتا۔ لیکن ایک بات ہے کہ حکیم جالینوس کی جوارش آج بھی خاصیت اور اثرات میں وہی اثرات کی حامل ہے جو اس زمانے میں تھی۔ القانون کی ًمستند حیثیت آج بھی مصدقہ ہے۔ بہر حال میری سائٹ کا انتظار کریں ۔ حقیقت خود کو خود تسلیم کرا لے گی کیا سچ ہے اور کیا جھوٹ۔
    والسلام
    خیر اندیش: زبیر خالد ہاشمی ۔ ایم اے ۔ ایم ایڈ
     
    • متفق متفق × 2
  12. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,625
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    زبیر صاحب اردو محفل میں خوش آمدید۔

    اپنا تعارف تو دیں۔
     
    • متفق متفق × 1
  13. hakimkhalid

    hakimkhalid محفلین

    مراسلے:
    546
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    جس نظریہ یا جس فن کے مخالفین نہ ہوں وہ کبھی عوج ثریا تک نہیں پہنچتا۔۔۔۔۔۔۔۔اسی حوالہ سے میں اس نظریہ کا ناقد رہا ۔۔۔تنقید برائے تنقید کا قائل نہیں ۔۔۔۔وہ تمام باتیں بھی سچ ہیں۔۔جو ناچیز کی طرف سے کہی گئی ہیں۔۔۔۔۔۔تاہم اس نظریہ کی خرابیوں کو دور کرنے کی بجائے اکثریت نے اسے ذاتی اور اپنی انا کا مسئلہ سمجھا۔۔۔۔۔۔۔بہت کم لوگ معاملہ کی اصل تہہ تک پہنچے۔۔۔کہ بہ ظاہر دشمن نظر آنے والا بھی" اندر "سے دوست ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔۔اسی نظریہ سے تعلق رکھنے والے بعض لوگوں نے اس کا ادراک کیا ۔۔۔۔۔اور بعض گروپ ۔۔۔زہروں کو تریاق یعنی ان کی تدبیر کے قائل ہوئے۔لیکن حاملین نظریہ ہذا کی اکثریت کی طرف سے۔۔ذاتیات سے بالاتر نہ ہونے پر اس کی مخالفت بھی اب چھوڑ دی ہے۔۔۔۔۔

    ۔۔۔۔تاہم یہ حقیقت اب بھی اپنی جگہ موجود ہے کہ دنیا میں کہیں بھی کسی بھی جگہ اس نظریہ کو سائنسی طور پر تسلیم نہیں کیا گیا۔۔۔۔۔۔۔نہ ہی اس کی کوئی تحقیق طب یونانی کی طرح عالمی سائنس جنرلز کا حصہ بنی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور نہ ہی کہیں اس کا کوئی ایک بھی کلینکل ٹرائل سائنسی طور پر موجود ہے۔۔۔۔۔

    ۔۔۔۔اردو محفل کو یہ کریڈٹ جاتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔کہ اس نظریہ کے حوالہ سے تائید و تردید کے حوالہ سے یہ پہلا مکالمہ ہے۔۔۔۔۔۔اس کے بعد ہی اس کے حاملین اس طرف متوجہ ہوئے ۔۔بذریعہ سائبر ورلڈ و ویب سائٹس۔۔نظریہ ہذا کے لٹریچر کی نشرو اشاعت اور شعور بہم پہنچانا انتہائی اہم ہے۔۔۔۔۔۔۔ تاہم یہ نظریہ تبھی عالمی سطح پر ترویج حاصل کر سکتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔جب عالمی مروجہ طریق کار کے مطابق ڈبلیو ایچ او میں اپنی انڈوسمنٹ کے بعد سائنسی طور پر اپنے آپ کو منوائے۔۔۔صرف حکیم خالد کا ماننا یا نہ ماننا کوئی معنی نہیں رکھتا۔۔۔۔۔۔۔۔نظریہ ہذا کے بعض کم تعلیم یافتہ ۔۔۔۔۔۔۔اور بعض "بہت زیادہ "تعلیم یافتہ افراد۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کی جارحیت اور تشدد پسندانہ رویہ اس نظریہ کی ترویج میں بہت بڑی رکاوٹ ہے۔۔۔۔۔۔میں یہ بھی دیکھ رہا ہوں کہ "واقعی" اعلی تعلیم یافتہ افراد بھی اس نظریہ میں دلچسپی لے رہے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔جو اسے عالمی سطح پر سائنسی طور پر تسلیم کروانے میں اپنا اہم کردار ادا کر سکتے ہیں۔۔۔۔۔۔
     
  14. عبیداللہ عبید

    عبیداللہ عبید محفلین

    مراسلے:
    242
    تعارف ِ نظریہ مفرد اعضا
    مرتّب: حکیم محمد شریف و حکیم محمد یٰسین

    سائز:30x20

    16

    ضخامت:80 صفحات

    قیمت : پچاس نئے پیسے

    پتا: حلقہ تحریک تجدید طب ، دینا پور ، ضلع ملتان

    بقول مولفین ،حکیم محمد صابر ملتانی صاحب نے ایک نیا نظریہ علاج دریافت کیا ہے جس کی تشریح انہوں نے اپنی ڈیڑھ درجن کتابوں میں کی ہے ۔مزید تشریح وتعارف کے لیے ان کے دو شاگردوں نے پیش نظر رسالہ تالیف کیا ہے ۔مولفین نے اس نّظریے کی جو تشریح کی ہے ، اس کا خلاصہ یہ ہے کہ اخلاط سے انسجہ بنتی ہیں پھر انسجہ سے مفرد اعضابنتے ہیں اور دراصل مبتلائے مرض مفرد اعضا ہی ہوتے ہیں ۔ مرکب اعضا نہیں ۔ امراض صرف تین ہیں ،اعصابی ،عضلاتی ، غدی ۔ باقی سب امراض نہیں اعراض ہیں ۔

    مولفین نے اس نظریے کی دریافت کو تجدید ِ طب سے تعبیر کیا ہے اور اس کے واضع کو وہ "مجددطب حکیمِ انقلاب المعالج "کے خطابات دیتے ہیں ۔ساتھ ہی تجدید طب کی افادیت و اہمیت پر زور بھی دینا چاہا ہے ۔

    تجدید طب کی ضرورت سے شاید کسی ہوش مند کو اختلاف ہو اور ہم تو اس کی فرضیت کے قائل ہیں ، مگر ساتھ ہی منصبِ تجدید کی اہلیت و استحقاق کے لیے چند شرائط کو بھی ضروری سمجھتے ہیں مثلاً موجودہ دور میں وہ شخص تجدید طب کے لیے موزوں ہوسکتا ہے جو :

    (الف ) اردو کے ساتھ فارسی وعربی پر بھی اتنا عبور رکھتا ہو کہ طب کے بنیادی مآخذ اور متقدمین اطبا کے کتب و صحائف کا بلا واسطہ اور بے تکلف مطالعہ کرسکے۔

    (ب)اسے قدیم یونانی اور اسلامی فلسفہ میں بھی درک ہو کیونکہ طبِ قدیم کی بنیاد قدیم طبیعات پر رکھی گئی ہے ۔

    (ج)اس کا مذکورہ فنون و السنہ سے صرف واقفیت ہونا کافی نہیں ہے بلکہ وہ طبی مخطوطات و مطبوعات پر وسعتِ نظر تدریس و تالیف اور بحث و مذاکرہ کی بنا پر خاصانِ فن میں ایک بلند علمی مقام بھی حاصل کرچکا ہو ۔

    (د)اسے ابلاغ پر اتنی قدرت بھی حاصل ہوکہ اپنے نتائج ِ فکر و تحقیق کو دلائل و شواہد کے زور سے منوا بھی سکے ۔

    (ہ)دوسرے نظامہائے طب (ویدک اور خصوصاً ایلو پیتھی)سے براہ راست اور بخوبی واقف ہو ، نیز جدید سائنسی نظریات پر بھی اس کی نظر ہو ،تاکہ جدید و قدیم نظریات کی تطبیق کی گھاٹی میں ٹھوکریں نہ کھائے۔

    افسوس کہ جناب صابر صاحب کی کوئی کتاب ہماری نظر سے نہیں گزری اس لیے ہمیں معلوم نہیں کہ وہ منصبِ تجدید کے کس حد تک اہل ہیں ؟ انہوں نے کیا نظریہ پیش کیا ہے اور وہ کس حد تک معقول ، قابلِ غور و فکر اور لائقِ قبول ہے ، مگر پیشِ نظر کتابچے میں ان کے تلامذہ اور شارحین نے جو نظریہ ان سے منسوب کرکے پیش کیا ہے ، وہ قابلِ اعتنا اور التفات نہیں ہوسکتا۔ وہ مفکر اور مجدد بڑا خوش نصیب ہوتا ہے جسے ایسے شارح اور مبلغ میسر آجائیں جو اپنے فضل وکمال ، زور تحریر ، حسن بیان اور قدرت اظہار سے اس کے تفکر و تجدید کی تشریح و تصویب کا حق ادا کرسکیں ، فکر میں جہاں خلا رہ گیا ہو اسے پر کرسکیں ۔جہاں اجمال ہو وہاں تفصیل سے کام لیں ۔ضعیف دلائل کی جگہ قوی دلائل پیش کریں ، نئے دلائل کا اضافہ کریںاور اس طرح قاری پر اتمامِ حجت کرکے چھوڑیں، مگر یہاں صورت برعکس ہے۔ نظم ہے تو وہ طفلانہ ، اغلاط سے پُر اور غیر معیاری، نثر ہے تو وہ بے جان و بے رنگ ،اندازِ بیان بے اثر ، استدلال سے گریز کا خاص اہتمام، تضاد ِ بیان کی افراط ، الفاظ و مصطلحات کے استعمال میں کوئی سلیقہ نہیں۔آداب وقیود تجدید و تطبیق سے بے زاری کا یہ عالم کہ ایلو پیتھی، طب اور ویدک کی طرف جو بات چاہی منسوب کردی ۔ پوری کتاب میں کہیں کسی اُردو، فارسی، عربی،انگریزی اور ہندی کتاب کا حوالہ اور اقتباس نہیں ملتا۔

    اصلاح و تطبیق اگر جرم نہیں تو کھیل بھی نہیں ، یہ اگر جوئے شیر نہیں ہے جس کے لیے کسی فرہاد کی ضرورت ہوتو میدان میں پڑی ہوئی گیند بھی نہیں کہ جس بچے کا جی چاہے اسے ٹھوکر ماردے ۔

    ماخوذ:

    انتقاد۔۔۔۔حکیم محمود احمد برکاتی ، ص:174 تا 175

    ہمدرد ڈائجسٹ، فروری 1970۔۔شمارہ نمبر2
     
  15. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    14,590
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    دونون کا انداز بہتر نہیں ہے. یه صرف علمی بحث ہوتی تو کتنی اچهی لگتی. ہمارے پاکستانی معاشرہ کا المیه ہی یہ ہے ہم فورا`` انا کی جنگ شروع کردیتے ہیں. اتنے اونچے لوگ ،،،اور یہ رویہ.... صد افسوس....
     
    آخری تدوین: ‏ستمبر 16, 2015
  16. x boy

    x boy محفلین

    مراسلے:
    6,208
    جھنڈا:
    UnitedArabEmirates
    موڈ:
    Breezy
    زبردست اور سب گمنام
     
  17. آبی ٹوکول

    آبی ٹوکول محفلین

    مراسلے:
    3,502
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Drunk
    واہ جی واہ اتنی "طبیبانہ " اور حکیمانہ گفتگو اور ہم نے آج دیکھی۔
     
  18. x boy

    x boy محفلین

    مراسلے:
    6,208
    جھنڈا:
    UnitedArabEmirates
    موڈ:
    Breezy
    السلام علیکم

    جناب آپکی جائے وقوع مکڑی (ویپ سائٹ) کا انتظار ہے
     
  19. موجو

    موجو لائبریرین

    مراسلے:
    1,128
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    سبحان اللہ
    اردو محفل زندہ باد
    جس کی بدولت قدماء و جدت پسندوں کی لفظی جنگیں تو دیکھیں
    اب اطباء کی بھی دیکھیں گے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  20. موجو

    موجو لائبریرین

    مراسلے:
    1,128
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    فیصل آباد ملت روڈ پر ایک حکیم صاحب ہوا کرتے تھے جو حکیم صابر کے طریق علاج کو استعمال کرتے تھے۔
    ہماری مسجد کے قاری صاحب کی کوئی اولاد نہیں تھی وہ ان کے ہاں ایک عرصہ زیر علاج رہے ہری مرچ کے کثیر استعمال کے باعث ایلوپیتھک کے مزے بھی لیتے تھے۔ ایک دفعہ لمباعرصہ ہسپتال رہنے کے بعد ان حکیم صاحب سے تائب ہوئے۔
    شائد مرچوں سے سی سی کے ساتھ اولادکا کوئی تعلق حکیم صاحب نے دریافت فرمالیا تھا۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1

اس صفحے کی تشہیر