نثری نظم کا عہدِ موجود

محمد خرم یاسین نے 'تعلیم و تدریس' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 30, 2016

  1. محمد خرم یاسین

    محمد خرم یاسین محفلین

    مراسلے:
    2,151
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    کرونا کے حوالے سے "عہد وبا کی نظمیں" میری مکمل کتاب نثری نظموں پر محیط ہے۔۔۔جی چاہتا ہے آپ ان سے بھی انتقام لیں :)
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2
  2. محمّد احسن سمیع :راحل:

    محمّد احسن سمیع :راحل: محفلین

    مراسلے:
    952
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    جی حضرت آپ نے بجا فرمایا، میں قلتِ مطالعہ کا مارا ایک نیم خواندہ شخص ہوں، جس کو اتفاق سے وقت کی کمی کا بھی سامنا ہے۔
    میرا بس ایک چھوٹا سا سوال تھا، باقی باتیں ضمناً آگئیں۔
    نثری ’’نظم‘‘ میں جو کچھ بھی قلم برداشتہ کیا جاتا ہے، اس کو روایتی نثر کی ہئیت میں لکھنے سے کیا امر مانع ہوتا ہے؟؟؟ مختصر اور ’’آبجیکٹو‘‘ جواب عنایت ہوجائے ہم کم علموں کا بھی کچھ بھلا ہو! ابھی تک تو جواب میں ’’لفظوں کی نفسیاتی حرکت‘‘ جیسی ’’ارفع‘‘ باتیں ہی پتہ چلی ہیں۔
     
  3. محمد خرم یاسین

    محمد خرم یاسین محفلین

    مراسلے:
    2,151
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    بھائی اسی لیے آپ کے مطالعے کے لیے دو کتابیں مہیا کی ہیں۔ ان شا اللہ ان کے مطالعے سے آپ کے سوالات کا حل نکل آئے گا کیوں کہ مجھے معلوم ہے کہ جلد بازی میں پڑھا گیا جواب مطمئن نہیں کرپاتا۔دوسری بات ضمناً عرض ہے کہ اس سوال اطلاق محض نثری نظم پر ہی کیوں کیا جائے؟ آپ یہ سوال کیوں نہیں کرتے کہ غزل کے بعد نظم کیوں وجود پذیر ہوئی ؟ پابند نظم کے بعد آزاد نظم کیوں سامنے آئی، کیا پابند نظم مضامین کے بیان کے لیے کافی نہیں تھی جو آزاد نظم وجود میں آئی ؟ یہی نہیں ایسے بہت سارے سوالات ادب کی جملہ اصناف کے حوالے سے کیے جاسکتے ہیں۔۔۔۔ اس لیے پہلے ان سوالات کے جوابات کے سلسلے میں اردو ادب کی تھوڑی سی تاریخ، اسلوب اور ہیت کے مسائل کا مطالعہ کیجیے ان شا اللہ پھر اس سلسلے کو آگے بڑھایا جاسکتا ہے۔مزید یہ کہ جس روایتی نثر کی بات کر رہے ہیں، اگر اس سے مراد کلاسیک نثر ہے، تو وہ بھی یکسر تبدیل ہوچکی ہے اور تدوین کا باب روشن ہے۔ کائنات کی ہر شے ارتقا سے گزر رہی ہے، کیوں سے پہلے کیا کا معمہ حل کرلیا جائے تو چیزیں آسانی سے سمجھ آجاتی ہیں۔واللہ اعلم!
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  4. محمّد احسن سمیع :راحل:

    محمّد احسن سمیع :راحل: محفلین

    مراسلے:
    952
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    ایڈ ہومنم :)
    سوال یہ ہے ہی نہیں کہ نثری ’’نظم‘‘ ’’کیوں وجود میں آئی‘‘۔
    شعر کی جتنی بھی اصناف گنوا لیں، ان سب میں کم از کم ایک قدر مشترک ہے جس کی وجہ سے ان کو بطور شعر شمار کیا جاتا ہے!
    روایتی نثر سے آپ قدیم کلاسیکی نثر مراد لیں، یا نسبتاً جدید تحاریر ۔۔۔ اس سے میرے سوال پر کوئی فرق نہیں پڑتا۔

    لیجیے ایک نثری ’’نظم‘‘ ہم نے بھی کہی ہے۔

    آخری انسان کی موت (’’نظم‘‘)

    آج صبح صبح میں نے
    دفتر جاتے ہوئے
    عین سرِ راہ ایک لاوارث لاش دیکھی
    لاش بھی ایسی کہ جس کو
    کفن تک میسر نہ تھا
    اردگرد کے لوگوں کا یہ حال تھا کہ
    اپنی مستی میں یوں بے پروا چلے جاتے تھے
    جیسے کہ وہ لاش کسی جانور کی ہو
    یکلخت میرے دل میں یہ خیال آیا
    یہ شاید وہ مرنے والا ہی دنیا کا آخری ’’انسان‘‘ تھا
    جس کے ساتھ انسانیت بھی دم توڑ گئی
    اگر انسانیت باقی ہوتی
    تو کوئی ایک تو ہوتا
    جو
    بڑھ کر اس بے گور و کفن لاش کو ڈھانپ دیتا!
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    اسی کتھا کو حسبِ ذیل لکھنے سے کون سی معنویت مسدود ہوجاتی ہے؟؟؟

    ’’آج صبح میں نے دفتر جاتے ہوئے، بیچ سڑک پر، ایک لاوارث لاش پڑی دیکھی جس کو کفن تک میسر نہیں تھا۔ اردگرد کے لوگوں کا یہ حال تھا کہ ہر کوئی اپنی مستی میں، لاش کے وجود سے بے پروا یوں چلا جارہا تھا جیسے کہ وہ لاش کسی انسان کی نہیں، جانور کی ہو۔ یکلخت مجھے یہ احساس ہوا کہ شاید وہ مرنے والا ہی اس دنیا کا آخری انسان تھا، جس کے ساتھ انسانیت بھی دم توڑ گئی۔ اگر انسانیت باقی ہوتی تو کوئی تو ایک ہوتا جو بڑھ کر اس بے گور و کفن لاش کو ڈھانپ ہی دیتا‘‘۔

    بہت نوازش۔

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. سید عاطف علی

    سید عاطف علی لائبریرین

    مراسلے:
    10,087
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Cheerful
    :LOL:
     

اس صفحے کی تشہیر