میرے والد صاحب کی ایک غزل ۔ضیائے خورشید سے انتخاب۔جِس آستاں پہ میری جبیں کا نشاں نہیں

میرے والد صاحب سید خورشید علی ضیاء عزیزی جے پوری کی ایک غزل احباب کے لیے۔ضیائے خورشید سے انتخاب۔

جِس آستاں پہ میری جبیں کا نشاں نہیں
وہ اور آستاں ہے، ترا آستاں نہیں

وہ اضطراب و شوق، وہ طرزِ بیاں نہیں
میری زباں نہ ہو تو میری داستاں نہیں

تیرا خیال ،تیرا تصور، ترا جمال
کیوں کر کہوں شریکِ غم جاوداں نہیں

کیوں بارہا سجائے گئے تیرے بام و در
کیا اب بھی شوق دید مرا کامراں نہیں

کچھ لوگ لوٹ آئے یہ کہتے ہوئے ضیاؔء
اب اہلِ گلستاں کے لئے گلستاں نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سید خورشید علی ضیاء عزیزی جے پوری
 
آخری تدوین:

loneliness4ever

محفلین
کیوں بارہا سجائے گئے تیرے بام و در
کیا اب بھی شوق دید مرا کامراں نہیں

کیا کہنے ہیں جناب، بہت عمدہ غزل اور بالا شعر نے تو کیا رنگ جمایا ۔۔۔ شاندار جناب

قبول فرمائیں ڈھیروں داد اس تخلیق کو شئیر کرنے پر ۔۔۔۔۔
اللہ پاک آپکے والد صاحب کے درجات بلند فرمائے ۔۔۔۔۔ آمین
 

x boy

محفلین
زبردست
اس وقت میرے لئے یہ بہت اہمیت کا حامل ہے


تیرا خیال ،تیرا تصور، ترا جمال
کیوں کر کہوں شریکِ غم جاوداں نہیں
 
کیوں بارہا سجائے گئے تیرے بام و در
کیا اب بھی شوق دید مرا کامراں نہیں
کیا کہنے ہیں جناب، بہت عمدہ غزل اور بالا شعر نے تو کیا رنگ جمایا ۔۔۔ شاندار جناب
قبول فرمائیں ڈھیروں داد اس تخلیق کو شئیر کرنے پر ۔۔۔۔۔
اللہ پاک آپکے والد صاحب کے درجات بلند فرمائے ۔۔۔۔۔ آمین
جی بہت شکریہ مخمور صاحب۔
 

نایاب

لائبریرین
واہہہہہہہہ
بہت خوب
جِس آستاں پہ میری جبیں کا نشاں نہیں
وہ اور آستاں ہے، ترا آستاں نہیں

بہت دعائیں
 

کاظمی بابا

محفلین
سبحان اللہ
کلام تو کمال ہے ہی، "ضاءِ خورشید" کا عنوان بھی بڑھیا ہے۔

یہ شعر تو دل کو چھو گیا:
تیرا خیال ،تیرا تصور، ترا جمال
کیوں کر کہوں شریکِ غم جاوداں نہیں
 

فرحت کیانی

لائبریرین
میرے والد صاحب سید خورشید علی ضیاء عزیزی جے پوری کی ایک غزل احباب کے لیے۔ضیائے خورشید سے انتخاب۔

جِس آستاں پہ میری جبیں کا نشاں نہیں
وہ اور آستاں ہے، ترا آستاں نہیں

وہ اضطراب و شوق و طرزِ بیاں نہیں
میری زباں نہ ہو تو میری داستاں نہیں

تیرا خیال ،تیرا تصور، ترا جمال
کیوں کر کہوں شریکِ غم جاوداں نہیں

کیوں بارہا سجائے گئے تیرے بام و در
کیا اب بھی شوق دید مرا کامراں نہیں

کچھ لوگ لوٹ آئے یہ کہتے ہوئے ضیاؔء
اب اہلِ گلستاں کے لئے گلستاں نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سید خورشید علی ضیاء عزیزی جے پوری
واہ۔ بہت خوب خصوصاً
وہ اضطراب و شوق و طرزِ بیاں نہیں
میری زباں نہ ہو تو میری داستاں نہیں


کچھ لوگ لوٹ آئے یہ کہتے ہوئے ضیاؔء
اب اہلِ گلستاں کے لئے گلستاں نہیں

کلام شیئر کرنے کے لیے بہت بہت شکریہ اور مجھے یاد رکھنے کے لیے خصوصی شکریہ عاطف بھائی۔ آپ کے والد صاحب کا کلام پڑھ کر ہمیشہ بہت اچھا محسوس ہوتا ہے۔:)
 
Top